مندرجات کا رخ کریں

عبدالکبیر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
عبدالکبیر
 

افغانستان کے قائم مقام تیسرے نائب وزیر اعظم
آغاز منصب
4 اکتوبر 2021ء
وزیر اعظم محمد حسن اخوند (قائم مقام)
افغانستان کی سپریم کونسل کے قائم مقام نائب سربراہ
مدت منصب
16 اپریل 2001 – 13 نومبر 2001
محمد ربانی
دفتر ختم کر دیا گیا
افغانستان کے قائم مقام وزیر اعظم
مدت منصب
16 اپریل 2001 – 13 نومبر 2001
نائب محمد حسن اخوند
محمد ربانی
محمد حسن اخوند (قائم مقام، 2021)
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1958ء (عمر 65–66 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پکتیا   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت افغانستان   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت تحریک الاسلامی طالبان   ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مولوی محمد عبد الکبیر طالبان قیادت کے ایک سینئر رکن ہیں[1] اور 4 اکتوبر 2021ء سے امارت اسلامیہ افغانستان کے عبدالغنی برادر اور عبد الاسلام حنفی کے ساتھ قائم مقام تیسرے نائب وزیر اعظم ہیں۔[2][3] وہ اس سے قبل 16 اپریل 2001ء سے 13 نومبر 2001ء تک افغانستان کے قائم مقام وزیر اعظم رہے۔[4][5][6]

اقوام متحدہ کی رپورٹ ہے کہ وہ طالبان کی وزراء کونسل کے دوسرے نائب تھے۔ صوبہ ننگرہار کے گورنر؛ اور مشرقی زون کے سربراہ تھے۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق کبیر 1958ء اور 1963ء کے درمیان صوبہ پکتیا، افغانستان میں پیدا ہوئے تھے اور اس کا تعلق زدران قبیلے سے ہے۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ ہے کہ کبیر مشرقی افغانستان میں دہشت گردانہ کارروائیوں میں سرگرم ہے۔

کیرئیر[ترمیم]

اپریل 2002ء میں عبد الرزاق نے ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ کبیر کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ احمد سعید خضر کے ساتھ ننگرہار سے پکتیا چلے گئے تھے[7]

چینی خبر رساں ایجنسی شنہوا نے رپورٹ کیا کہ عبد الکبیر کو 16 جولائی 2005ء کو پاکستان کے شہر نوشہرہ سے پکڑا گیا تھا۔[8][9] عبد الکبیر کے ساتھ ان کے بھائی عبد العزیز، ملا عبدالقدیر، ملا عبد الحق اور طالبان قیادت کا پانچواں نامعلوم رکن پکڑے گئے تھے۔

19 جولائی 2006ء کو ریاستہائے متحدہ کے رکن کانگریس روسکو بارٹلیٹ نے عبد الکبیر کو ایک سابق مشتبہ دہشت گرد کے طور پر درج کیا جسے امریکی حکومت اب خطرہ نہیں سمجھتی۔[10]

ان رپورٹس کے باوجود، ایشیا ٹائمز کے حوالے سے انٹیلی جنس حکام نے اشارہ کیا کہ کبیر اور دیگر سینئر طالبان رہنما رمضان 2007ء کے دوران پاکستان کے شمالی وزیرستان میں تھے، جو جنوب مشرقی افغانستان میں حملے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔[11]

شنہوا نے 21 اکتوبر 2007ء کو ڈیلی افغانستان کے ایک اکاؤنٹ کے حوالے سے اطلاع دی کہ عبد الکبیر کو ننگرہار، لغمان، کنڑ اور نورستان صوبوں میں کمانڈر مقرر کیا گیا ہے۔[12]

21 فروری 2010ء کی ایک رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ کبیر کو پاکستان میں ملا برادر سے حاصل کردہ انٹیلی جنس معلومات کے نتیجے میں پکڑے گئے تھے، جسے اس مہینے کے شروع میں خود حراست میں لیا گیا تھا۔ کبیر کو بعد میں رہا کر دیا گیا۔[13][14][15]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. The list of individuals belonging to or associated with the Taliban آرکائیو شدہ اکتوبر 23, 2006 بذریعہ وے بیک مشین, اقوام متحدہ, October 4, 2006
  2. "Afghanistan's Acting Taliban Cabinet Holds First Meeting"۔ RFE/RL 
  3. "د اسلامي امارت په تشکیلاتو کې نوي کسان پر دندو وګومارل شول"۔ باختر خبری آژانس۔ October 4, 2021 
  4. Israr Ahmad (May 10, 2001)۔ "Reflections on a Visit to Afghanistan"۔ IslamiCity۔ In addition to these, we had a detailed meeting with Mulla Abdul Kabir, the acting Prime Minister. 
  5. "World briefs: Fourth Taliban leader arrested"۔ Pittsburgh Post-Gazette۔ February 25, 2010 
  6. Christopher Heffelfinger (March 2010)۔ "CTC Sentinel"۔ UFDC۔ Baradar’s arrest was followed by the capture of the Taliban’s shadow governors for Afghanistan’s Kunduz and Baghlan provinces—Mullah Abdul Salam and Mullah Mir Muhammad—in addition to former Taliban acting Prime Minister Maulawi Kabir and former Zabul Province shadow governor and head of “the commission” Maulawi Muhammad Yunos. 
  7. Kathy Gannon (2002-04-28)۔ "Dangerous feuds threaten Afghan war"۔ Associated Press۔ 03 نومبر 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 نومبر 2010۔ Abdul Razzak, a former loyalist of dissident Afghan leader Gulbuddin Hekmatyar, told The Associated Press he met Abdul Kabir, the former governor of Nangarhar province and the No. 3 man in the Taliban, just two weeks ago in Paktia province. Razzak also said Saeed Al Khadr, an Egyptian Canadian and one of the 20 most-wanted al-Qaida members, is in Paktia after fleeing Nangarhar with Kabir. Khadr was implicated in the suicide bombing of the Egyptian Embassy in Pakistan in the 1990s that killed 17 people. 
  8. "Top Taliban commander held in Pakistan"۔ شینہوا نیوز ایجنسی۔ 2005-07-19۔ 15 دسمبر 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  9. Top Taliban leaders captured آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ shianews.com (Error: unknown archive URL), Shia News, July 19, 2005
  10. Roscoe G. Bartlett (2006-07-19)۔ "jihadists who are no longer a threat"۔ Congressional Record۔ 14 دسمبر 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  11. Pakistan plans all-out war on militants, Asia Times, October 19, 2007
  12. Report: Taliban appoint new regional chief in Afghanistan, شینہوا نیوز ایجنسی, October 21, 2007
  13. "Major Taliban Operative Captured in Pakistan"۔ Fox News۔ 2010-02-21۔ 03 نومبر 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 فروری 2010۔ Mulvi Kabir, the former Taliban governor in Afghanistan's Nangahar Province, and a key figure in the Taliban regime was recently captured in Pakistan, two senior U.S. officials tell Fox News. Kabir, considered to be among the top ten most wanted Taliban leaders, was apprehended in the Naw Shera district of Pakistan's Northwest Frontier Province by Pakistani police forces in recent days. 
  14. Amir Mir (2010-03-01)۔ "Pakistan wipes out half of Quetta Shura"۔ دی نیوز۔ 04 مارچ 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ According to well-informed diplomatic circles in Islamabad, the decision-makers in the powerful Pakistani establishment seem to have concluded in view of the ever-growing nexus between the Pakistani and the Afghan Taliban that they are now one and the same and the Tehrik-e-Taliban Pakistan (TTP) and the Quetta Shura Taliban (QST) could no more be treated as two separate Jihadi entities. 
  15. Dexter Filkins (2010-03-24)۔ "After Arrests, Taliban Promote a Fighter"۔ The New York Times 
سیاسی عہدے
ماقبل  قائم مقام وزیراعظم افغانستان
2001
خالی
عہدے پر اگلی شخصیت
حسن اخوند (قائم مقام، 2021)
نئی نشست قائم مقام افغانستان کے تیسرے نائب وزیر اعظم
برائے سیاسی امور

2021–2023
ماتحتی: حسن اخوند (قائم مقام وزیر اعظم)
خالی
ماقبل 
حسن اخوند (قائم مقام)
قائم مقام وزیراعظم افغانستان
2023–موجودہ
برسرِ عہدہ