مندرجات کا رخ کریں

پیپلز یونیورسٹی آف میڈیکل اینڈ ہیلتھ سائنسز برائے خواتین، نوابشاہ

متناسقات: 26°14′36.5″N 68°24′14.7″E / 26.243472°N 68.404083°E / 26.243472; 68.404083
آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
پیپلز یونیورسٹی آف میڈیکل اینڈ ہیلتھ سائنسز برائے خواتین، نوابشاہ’s University of Medical and Health Sciences for Women
سابقہ نام
People’s Medical College (PMC) Nawabshah Medical College
شعارAccess of Women to Knowledge
قسمMedical education and research institution
قیام1974
بانیZulfiqar Ali Bhutto
انڈومنٹGovernment-funded
چانسلرگورنر سندھ
وائس چانسلرProf. Dr. Gulshan Ali Memon
پتہNear New Doctor's Housing Society People's Road,(نوابشاہ)، ضلع شہید بینظیر آباد، ، پاکستان
کیمپسUrban
وابستگیاںPeople’s Medical University Hospital (PMUH), ہائر ایجوکیشن کمیشن، Pakistan Medical Commission, Pharmacy Council of Pakistan, Pakistan Nursing Council، کالج آف فزیشنز اینڈ سرجنز پاکستان
ویب سائٹpumhs.edu.pk

پیپلز یونیورسٹی آف میڈیکل اینڈ ہیلتھ سائنسز برائے خواتین، (PUMHSW) ( (سندھی: پيپلز يونيورسٽي آف ميڊيڪل اينڊ هيلٿ سائنسز فار وومين)‏ ) ایک پبلک میڈیکل یونیورسٹی ہے جو شہید بینظیر آباد ضلع ( نواب شاہسندھ، پاکستان میں واقع ہے۔ یہ سندھ کی پہلی خواتین کی میڈیکل یونیورسٹی ہے۔ یہ یونیورسٹی پیپلز میڈیکل یونیورسٹی ہسپتال (پہلے پیپلز میڈیکل کالج ہسپتال یا سول ہسپتال نواب شاہ کے نام سے جانا جاتا تھا) اور نورین کینسر ہسپتال سے منسلک ہے۔[1][2][3][4]

تعلیم[ترمیم]

یونیورسٹی کی طرف سے پیش کردہ MBBS کے علاوہ، انڈرگریجویٹ پروگرام جیسے DPT, PharmD، بیچلر آف نرسنگ، BS پبلک ہیلتھ پیش کیے جاتے ہیں۔[5][6][7] میڈیسن، اینستھیزیالوجی، پبلک ہیلتھ اور کمیونٹی میڈیسن میں پوسٹ گریجویٹ کورسز بھی 2004 سے پیش کیے جا رہے ہیں۔ نتیجے کے طور پر، اسے برٹش میڈیکل ایسوسی ایشن، ای سی ایف ایم جی اور دیگر بین الاقوامی اداروں سے تسلیم کیا گیا۔

تحقیق[ترمیم]

پیپلز یونیورسٹی آف میڈیکل اینڈ ہیلتھ سائنسز برائے خواتین کا سرکاری تحقیقی جریدہ ہے جو 2011 میں شروع ہوا تھا۔ یہ ایک سہ ماہی شائع ہونے والا، کثیر الشعبہ اور ہم مرتبہ جائزہ لینے والا جریدہ ہے۔[8]

تاریخ[ترمیم]

خواتین کی اعلیٰ تعلیم کے حصول کی اشد ضرورت کے نتیجے میں، نواب شاہ میں ایک میڈیکل کالج، پیپلز میڈیکل کالج، 1974 میں ذوالفقار علی بھٹو نے خصوصی طور پر خواتین کے لیے قائم کیا، [9] یہ صوبے کا پہلا خواتین کا میڈیکل کالج بنا۔ کالج نے اپنے ابتدائی سالوں میں انڈر گریجویٹ میڈیکل کورس (ایم بی بی ایس) کی پیشکش کی تھی اور یہ یونیورسٹی آف سندھ سے منسلک تھا۔ یہ 1983 میں پیپلز میڈیکل کالج ہسپتال سے منسلک ہوا۔ میڈیکل کالج ابتدائی طور پر ڈسٹرکٹ کونسل (ڈی سی) ہائی اسکول (شہر کا سب سے قدیم سرکاری ہائی اسکول) میں واقع تھا، جس میں مسلم بورڈنگ ہاؤس کی مرکزی عمارت کے ساتھ ایک آڈیٹوریم اور چند ہاسٹل بھی شامل تھے۔

2004 میں پوسٹ گریجویٹ کورسز متعارف کرائے گئے۔ [9] محکمہ صحت سندھ کی جانب سے کالج میں مخلوط تعلیم متعارف کرانے کی تجویز کی کالج کی اکیڈمک کونسل نے 2005 میں شدید مخالفت کی تھی [10] 2006 میں صوبائی حکومت کی جانب سے کالج کا نام اچانک تبدیل کر کے نواب شاہ میڈیکل کالج کر دیا گیا، جس سے ہنگامہ برپا ہو گیا کیونکہ اس کا نام نشتر میڈیکل کالج کے ساتھ آسانی سے الجھ گیا تھا۔ [10] 2009 میں، سندھ حکومت نے ایک ایکٹ کے ذریعے میڈیکل کالج کی حیثیت کو ایک یونیورسٹی میں اپ گریڈ کیا اور بعد میں اس کا نام پیپلز یونیورسٹی آف میڈیکل اینڈ ہیلتھ سائنسز برائے خواتین رکھ دیا گیا۔[11][12][13] یونیورسٹی کو 2020 میں میڈیسن اور ڈینٹسٹری میں داخلے کے لیے صوبائی کمیٹی نے صوبے کی سینٹرلائزڈ ایڈمٹنگ یونیورسٹی بنا دیا تھا[14][15]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "NAWABSHAH: PMCH directed to suspend medico-legal work"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ 2004-01-21۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2022 
  2. Bhagwandas (2017-07-25)۔ "Nawabshah medical college receives MRI machine after 7 years, PA told"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  3. "NAWABSHAH: Water plant set up at hospital"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ 2004-02-27۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  4. Dawn Report (2005-11-27)۔ "Viral fever Hospitals set up isolation wards"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  5. The Newspaper's Correspondent (2016-11-14)۔ "Test for entry to PUMHS conducted"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2022 
  6. "Academic Convocation Held At PUMHS"۔ UrduPoint (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جون 2021 
  7. "!!! PEOPLES UNIVERSITY OF MEDICAL & HEALTH SCIENCES FOR WOMEN- SHAHEED BENAZIRABAD !!!"۔ pumhs.edu.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2022 
  8. "Journal of Peoples University of Medical & Health Sciences for Women- Nawabshah Shaheed Benazirabad"۔ www.jpumhs.pumhs.edu.pk۔ 29 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  9. ^ ا ب "!!! PEOPLES UNIVERSITY OF MEDICAL & HEALTH SCIENCES FOR WOMEN- SHAHEED BENAZIRABAD !!!"۔ pumhs.edu.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2022 
  10. ^ ا ب Zulfiqar Memon (2005-05-25)۔ "Plan for PMC co-education opposed"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  11. "KARACHI: Draft bill to ban disposable syringes okayed"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ 2009-08-12۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  12. The Newspaper's Correspondent (2009-07-15)۔ "Body to upgrade Sindh hospitals visits Larkana"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  13. The Newspaper's Staff Reporter (2008-12-29)۔ "KARACHI: Plan to upgrade People`s Medical College"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2021 
  14. "PUMHS to conduct admission tests"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2020-08-12۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جون 2021 
  15. The Newspaper's Correspondent (2020-10-17)۔ "Tests for admission to medical colleges, varsities put off on court order"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جون 2021