چن وریام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
چن وریام
چن وریام.png
انگریزیChan waream
ہدایت کارجہانگیر قیصر
طاہر رضوی
الطاف قمر
پروڈیوسرمحمد سرور بھٹی
تحریرناصر ادیب
ماخوذ ازدور برطانیہ کا سچا واقعہ
ستارے
راویچوہدری محمد جمیل
موسیقیوجاہت عطرے
سنیماگرافیارشاد بھٹی
مسعودالرحمن
ایڈیٹرہمایوں
حمید راہی
پروڈکشن
کمپنی
تقسیم کارباھو فلمز کارپوریشن
تاریخ اجراء
دورانیہ
2:20:02 دقیقہ
ملکFlag of Pakistan.svg پاکستان
زبانپنجابی
بجٹروپیہ 18 ملین (US$170,000)
باکس آفسروپیہ 30 کروڑ (US$2.8 ملین)

چن وریام (انگریزی: Chann Veryam) پنجابی زبان میں فلم کا آغاز کیا۔ اس فلم كو 2 اگست، 1981ء كو پاکستان میں ریلیز ہوئى۔ پاکستانی اس فلم کا کریکٹر ایکشن اور میوزکل فلموں کے بارے میں فلم کی تکمیل کی گی ہیں۔ یہ فلم باکس آفس میں سپرہٹ ہوئی تھی یہ فلم لاہور کے گلستان سنیما میں ڈائمنڈ جوبلی اس کی دو ڈھائی ماہ تک کامیاب نمائش ہوئی تھی۔ اس فلم کے ڈائریکٹر جہانگیر قیصر تھے۔ پروڈیوسر سرور بھٹی تھے۔ کہانی ناصر ادیب نے لکھی تھی اور موسیقی وجاہت عطرے نے بنائی تھی۔ اس میں سلطان راہی، انجمن، مصطفٰی قریشی، افضال احمد اور الیاس کشمیری وغیرہ تھے۔ اپنے قیام سے لے کر آج تک گلستان سنیما میں لاتعداد سپُر ہٹ فلمیں نمائش کے لیے پیش کی جا چکی ہیں پاکستان فلم انڈسٹری میں کامیابی کی نئی تاریخ رقم کرنے والی شہرہ آفاق فلمیں ’’شیرخان ‘‘اور ’’موتی ڈوگر ‘‘اسی سنیما میں ریلیز ہوئیں۔ لاہور میں چلنے کے بعد لاکھوں شاٸقین کی فرمائش پر [1]

سٹوری[ترمیم]

یہ فلم چن وریام کے نام پر تیار کی گئی ہے جس میں وریام کا کردار (سلطان راہی) نے کیا ہے۔ اور چن کا کردار (اقبال حسن) نے نبھایا۔ چن سکھ قوم سے تعلق رکھتا۔ اور وریام مسلمان گھرانے سے ہوتا۔ وریام کا والد اور چن کا والد دونوں دوست تھے۔ وریام کے والد دنیا سے جانے کے بعد ساری ذمہ داری وریام پر آ جاتی جس میں ایک بھائی اور بہن ہوتا ہے۔ وہاں کے جاگیردار برطانیہ حکومت سے تعلق رکھتے اور غریبوں پر ظلم کی انتہا کرنا۔ پولیس والا وریام سے کہتا کہ یہ سکھ تمہارا کیا لگتا ہے اور وہ کہتا یہ مہمان ہے میرا چن کہتا بھائی کہوں وریام راھی صاحب بولتے اگر میں پولیس آفسیر کو کو بتادوں کہ یہ میرا بھائی ہیں۔ یہ کیسے مانیں گے ایک مسلمان کا سکھ بھائی۔ سکھ بولتا کیا آپ جان تو مانگ کر دیکھو انکار نہیں کر گا۔ اور سب سے بڑی بات یہ ہے کہ (مصطفی قریشی) موتی ڈوگر کے روپ میں آئے۔ دشمنی جگیردار کی ہوتی اور وہ موتی کو چن اور وریام کے پیچھے لگا دیتے۔ اور (ہمایوں قریشی) موتی ڈوگر کا دوست ہوتا ہے۔ مصطفی قریشی کا بات چیت ریکارڈ ” موتی ڈوگر کولوں وریام نہ منگیں موتیاں والیا

اداکار[ترمیم]

ساؤنڈ ٹریک[ترمیم]

فلم کی موسیقی وجاہت عطرے نے ترتیب دی، فلم کے نغمات حزیں قادری نے گیت لکھے۔ فلم کی لسٹ ریکارڈنگ میں شامل ایم ظفر اور ایم امین انہوں نے گیتوں کی بہترین ریکارڈنگ کی اور نورجہاں اور مہناز نے گیت گائے۔ کلام حضرت میاں محمد بخش کے آواز شوکت علی کی ساؤنڈ ٹریک کو پلاننٹ لولی ووڈ نے لولی ووڈ کے 100 بہترین ساؤنڈ ٹری میں شامل کیا ہے۔

نمبر شمارعنوانپردہ پش گلوکاراںطوالت
1."سُن سُن سُن بھابھی ڈھول پیا وجدا"نورجہاں، مہناز5:21
2."وے سونے دیاں کنگناں سودا اکیو جیا"نورجہاں4:31
3."اول حمد سنا الہی"شوکت علی3:44
4."اک پاسے بھین اے دوجے پاسے ویرین"نورجہاں4:44
5."میں اک دھرتی سہڑدی بلدی"نورجہاں4:21
6."رملی وے رملی پچہدی اے کملی"نورجہاں4:57
کل طوالت:27:23

حوالہ جات[ترمیم]

  1. حجرہ شاہ مقیم، عاشق علی (28 اگست 2017ء). "«پاکستانی برطانوی راج فلم چن وریام ڈاؤن لوڈ کریں»". گوگل ڈرائیو. شالیمار کمپنی لمیٹڈ. اخذ شدہ بتاریخ 21 جنوری 2019.  Check date values in: |access-date=, |date= (معاونت)

بیرونی روابط[ترمیم]