کم سنی کی شادی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

کم سنی کی شادی یا بچوں کی شادی (انگریزی: Child Marriage) کا تعلق عام طور پر بھارت، پاکستان اور کئی ترقی پزیر ممالک کے کچھ معاشروں میں رائج رسم سے ہے، جس میں ایک نوجوان بچے (عام طور پر 15 سال سے کم عمر کی لڑکی) کی شادی ایک بالغ مرد سے کی جاتی ہے۔ اس میں کبھی دونوں لڑکا اور لڑکی اس سے بھی کم عمر کے ہوتے ہیں۔[1]

وجوہ[ترمیم]

  • غربت۔
  • لڑکیوں کی کم سطح کی تعلیم۔
  • لڑکیوں کو کم حیثیت دینے اور انہیں مالیاتی بوجھ کے طور پر دیکھا جانا۔
  • سماجی رسم و رواج اور روایات[1]

کم سنی کی شادی کے مضر اثرات[ترمیم]

  • کم عمر میں شادی کرنے والے اکثر ایچ آئی وی، امراض نسواں سمیت چھوٹی عمر میں، جنسی اور حمل کے آغاز سے متعلق صحت سے متعلق مسائل کا شکار ہوتے ہیں.
  • اندرونی صحت، طاقت اور پختگی نہیں ہوتی ہے، اکثر گھریلو تشدد، جنسی حملے اور بگڑتے رشتے دیگھے گئے ہیں۔
  • ابتدائی عمر میں شادی تقریبًا ہمیشہ تعلیم یا باوقعت کام سے لڑکیوں کو محروم کرتی ہے، جس سے انہیں غربت کی زندگی گزارنا پڑتا ہے۔
  • جنسی تعلقات، بیماری اور غربت کے علاوہ بھوک پرورش پانے والے زیر تربیت بچے اکٹر جنسی معاملوں میں عمر سے پہلے حساس اور فعال ہوتے ہیں۔ وہ جنسی اور دیگر جرائم کا میلان رکھتے ہیں۔
  • جب وہ جسمانی طور پر بالغ نہیں ہوتے، ابتدائی عمر میں شادی شدہ لڑکیوں کی حالت میں، زچگی اور بچہ کی موت کی شرح زیادہ ہوتی ہے۔[1]

یونیسیف کی ایک رپورٹ[ترمیم]

2007ء میں یونیسیف کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ کو بتایا گیا ہے کہ اگرچہ بھارت جیسے ملک میں شادی کی اوسط عمر آہستہ آہستہ گزشتہ 20 سالوں میں بڑھ رہی ہے، تاہم کم سنی کی شادی کا دائرہ ابھی تک وسیع ہے۔

رپورٹ کے مطابق، اوسطًا بھارت میں 46 فیصد خواتین 18 سال سے پہلے شادی کر چکی ہیں جبکہ اس میں دیہی علاقوں میں یہ 55 فی صد اوسط ہے. یہ بات قابل ذکر ہے کہ 2001 کی مردم شماری کے مطابق، 18 سال کی عمر سے کم 64 لاکھ لڑکوں اور لڑکیوں کی شادی کی اطلاع ملی ہے۔ کم سے کم 18 ملین (49 لاکھ لڑکیاں اور 69 لڑکے) قانونی عمر سے پہلے شادی شدہ ہیں۔ ان میں سے 18 لاکھ سے زائد ایک لاکھ 30 ہزار بیوہ ہیں اور 24 ہزار لڑکیاں طلاق شدہ ہیں یا انہیں ان کے شوہر چھوڑ چکے ہیں. نہ صرف یہ، 21 سال کی عمر کے نیچے تقریبًا 90 ہزار لڑکے ایسے ہیں جن کی بیویاں مر چکی ہیں اور 75 ہزار طلاق شدہ ہیں۔ 2001ء کی مردم شماری کے مطابق، راجستھان ملک کے تمام ریاستوں میں کم سنی کی شادی میں سرفہرست ہے اور یہاں یہ روایت صدیوں سے چلی آ رہی ہے۔ ریاست کی کل آبادی کا 5.6 ​​فیصد حصہ اس طرح کی شادیوں کا ریکارڈ رکھتا ہے. اس کے بعد مدھیہ پردیش، بہار، اتر پردیش، جھارکھنڈ، اڑیسہ، گوا، ہماچل پردیش اور کیرلا آتے ہیں۔[2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]