تیزاب سے حملہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
تہران میں زیر علاج ایک ایرانی تیزاب سے متاثرہ خاتون ، جس کی تصویر اپریل 2018 کو لی گئی ہے۔

تیزاب سے حملہ، ، تیزاب پھینکنا، ایسڈ اٹیک یا جسے vitriolage کہا جاتا ہے، کی ایک متشدد حملہ [1] کی قسم ہے جس میں بدنامی، قتل، بدصورتی یا تشدد کی نیت سے تیزاب یا اس جیسی پھینک کر حملہ کیا جاتا ہے۔ [2] ان حملوں کے مرتکب ان کے شکار افراد پر عام طور پر ان کے چہروں پر جلانے اور جلد کے بافتوں کو نقصان پہنچانے والے جسم پر تیزابی مائع پھینک دیتے ہیں ، جو اکثر اوقات ہڈیوں کو بے نقاب اور تحلیل کرتے ہیں۔ تیزاب کے حملے اکثر مستقل اندھا پن کا باعث بن سکتے ہیں۔

ان حملوں میں عام طور پر استعمال ہونے والے تیزاب سلفورک اور نائٹرک ایسڈ ہیں ۔ ہائیڈروکلورک ایسڈ کبھی کبھی استعمال ہوتے ہیں ، لیکن یہ بہت کم نقصان دہ ہے۔ مضبوطی سے الکلین مادوں کے مایہ محلول، جیسے کاسٹک سوڈا (سوڈیم ہائڈرو آکسائڈ) استعمال کیا جاتا ہے ، خاص طور پر ان علاقوں میں جہاں مضبوط تیزاب مادے پر گرفت ہوتی ہیں۔ [3]

ان حملوں کے طویل مدتی نتائج میں اندھے پن کے ساتھ ہی آنکھوں میں جلن ، چہرے اور جسم کی مستقل داغ کے ساتھ [4] [5] دور رس معاشرتی ، نفسیاتی اور معاشی مشکلات شامل ہوسکتی ہیں۔ [2]

آج ، دنیا کے بیشتر حصوں میں تیزاب کے حملوں کی اطلاع ملتی ہیں ، حالانکہ ترقی پزیر ممالک میں یہ زیادہ عام ہے۔ 1999 اور 2013 کے درمیان ، مجموعی طور پر 3،512 بنگلہ دیشی لوگوں پر تیزاب سے حملہ کیا گیا [6] 2002 کے بعد سے ہر سال 15--20 فیصد تک کی کمی واقع ہوئی ہے جس کی وجہ مجرموں کے خلاف سخت قانون سازی اور تیزاب کے ضوابط ہے. [7] [8] ہندوستان میں تیزاب کے حملوں میں ہر وقت اضافہ دیکھا گیا ہے اور ہر سال 250 سے 300 واقعات رپورٹ ہوتے ہیں جبکہ ایسڈ سروائیور ٹرسٹ انٹرنیشنل کے مطابق ، "اصل تعداد ایک ہزار سے تجاوز کر سکتی ہے"۔ [9]

اگرچہ تیزاب کے حملے پوری دنیا میں ہوتے ہیں ، لیکن اس قسم کا تشدد جنوبی ایشیاء میں سب سے زیادہ عام ہے۔ [10] برطانیہ میں دنیا میں فی کس تیزاب کے حملوں کا سب سے زیادہ شرح میں سے ایک ہے یہ ایسڈ سروائورز ٹرسٹ انٹرنیشنل (Asti کے مطابق ہے. [11] 2016 میں برطانیہ میں ASTI کے اعدادوشمار پر مبنی 601 سے زائد تیزاب کے حملے ہوئے اور متاثرین میں 67٪ مرد تھے ، لیکن ASTI کے اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ دنیا بھر میں 80 فیصد متاثرین خواتین ہیں۔ [12] پچھلے پانچ سالوں میں 1،200 سے زیادہ کیسز ریکارڈ کیے گئے۔ 2011 سے 2016 تک صرف لندن میں ایسڈ یا سنکنرن مادہ سے متعلق 1،464 جرائم تھے۔

مجرموں کا محرک[ترمیم]

حملہ آور کا ارادہ اکثر شکار کو مارنے کی بجائے ذلیل کرنا ہوتا ہے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ برطانیہ میں اس طرح کے حملوں ، خاص طور پر مردوں کے خلاف ہونے والے حملوں کی خبر نہیں دی جاتی ہے اور اس کے نتیجے میں ان میں سے بیشتر سرکاری اعدادوشمار میں ظاہر نہیں ہوتے ہیں۔ مجرموں کے کچھ عمومی محرکات میں یہ شامل ہیں:

افراد کے مذہبی عقائد یا معاشرتی یا سیاسی سرگرمیوں پر مبنی حملے بھی ہوتے ہیں۔ ان حملوں کو کسی مخصوص فرد کے خلاف نشانہ بنایا جاسکتا ہے ، ان کی سرگرمیوں کی وجہ سے یا غیر مخصوص افراد کے خلاف اس کا ارتکاب اس لیے کیا جاسکتا ہے کہ وہ کسی خاص معاشرتی گروہ یا برادری کا حصہ ہیں۔ یورپ میں ، اس وقت یورپی پارلیمنٹ کے ممبر کونسٹنٹینا کونیفا پر سنہ 2008 میں تیزاب پھینک دیا تھا ، جسے"یونان میں 50 سالوں سے ٹریڈ یونینسٹ پر ہونے والا سب سے شدید حملہ" قرار دیا گیا تھا۔ [16] خواتین طلبہ کو اسکول جانے کی سزا کے طور پر ان کے چہروں پر تیزاب پھینک دیا جاتا ہے۔ [17] مذہبی تنازعات کی وجہ سے تیزاب حملوں کی بھی اطلاع ملتی ہیں۔ [18] مرد اور خواتین دونوں ہی دوسرے مذہب میں تبدیل ہونے سے انکار کرنے پر تیزاب حملوں کا نشانہ بنے ہیں۔

املاک کے امور ، زمین کے تنازعات اور وراثت سے متعلق تنازعات کو بھی تیزاب کے حملوں کی ترغیب کے طور پر بتایا گیا ہے۔ جرائم پیشہ گروہوں کے مابین تنازعات سے متعلق تیزابیت کے حملے برطانیہ ، یونان اور انڈونیشیا سمیت متعدد مقامات پر ہوتے ہیں۔ [19]

جرم کا پھیلاؤ[ترمیم]

محققین اور کارکنوں کے مطابق ، عام طور پر تیزاب کے حملوں سے وابستہ ممالک میں بنگلہ دیش ، ہندوستان ، [20] [21] نیپال ، کمبوڈیا ، [22] ویتنام ، لاؤس ، برطانیہ ، کینیا ، جنوبی افریقہ ، یوگنڈا ، پاکستان اور افغانستان شامل ہیں۔ تاہم ، دنیا بھر کے ممالک میں تیزاب سے حملوں کی اطلاع ملی ہے ، جن میں یہ ممالک شامل ہیں: [23]

مزید برآں ، تیزاب سے حملوں کے قصوروار ثبوت دنیا کے دوسرے خطوں جیسے جنوبی امریکہ ، وسطی اور شمالی افریقہ ، مشرق وسطی اور وسطی ایشیاء میں موجود ہیں ۔ تاہم ، جنوبی ایشیائی ممالک میں تیزاب حملوں کے سب سے زیادہ واقعات ملتے ہیں۔ [7]

برطانیہ میں پولیس نے نوٹ کیا ہے کہ بہت سے متاثرین حملوں کی اطلاع دینے کے لیے آگے آنے سے خوفزدہ ہیں ، جس پتہ لگایا جاسکتا کہ اس مسئلے کے اصل پیمانے کا پتہ نہیں ہوسکتا ہے۔

جنس[ترمیم]

متاثرین اور قصورواروں کے صنفی تناسب کا صحیح اندازہ لگانا مشکل ہے کیونکہ بہت سے تیزاب حملوں کی اطلاع حکام کے پاس درج نہیں ہوتی ہے۔ مثال کے طور پر ، دی لانسیٹ میں 2010 کے ایک مطالعے میں بتایا گیا ہے کہ پاکستان میں تیزاب کے حملوں کے بارے میں "کوئی قابل اعتماد اعداد و شمار" موجود نہیں ہیں۔ [13]

ایک اور عنصر جو متاثرین کو تیزاب حملہ کے خطرے میں ڈالتا ہے وہ ان کی سماجی و اقتصادی حیثیت ہے ، کیونکہ غربت میں رہنے والوں پر حملہ ہونے کا زیادہ امکان ہوتا ہے۔ [55] [7] بمطابق 2013 ، تینوں ممالک - تیزابیت کے حملوں کے سب سے زیادہ مشہور واقعات میں - بنگلہ دیش ، ہندوستان اور کمبوڈیا - عالمی صنف گیپ انڈیکس میں 136 ممالک میں سے بالترتیب 75 ویں ، 101 اور 104 ویں نمبر پر ہیں ، جو اس پیمانے کے مابین مواقعوں میں مساوات کو طے کرتا ہے۔ قوموں میں مرد اور عورتیں۔ [56]

بہ لحاظ[ترمیم]

افغانستان[ترمیم]

افغانستان میں ایسے خواتین یا خواتین کے خلاف دھمکیاں جو حجاب پہننے ، "عزتدار لباس" پہننے میں ناکام یا روایتی اصولوں کی پاسدار نہیں رہی ہیں ۔ [57] نومبر 2008 میں ، انتہا پسندوں نے اسکول جانے کی وجہ سے لڑکیوں کو تیزاب سے نشانہ بنایا۔ [58]

بنگلہ دیش[ترمیم]

بنگلہ دیش میں تیزاب کا شکار افراد

کمبوڈیا[ترمیم]

کمبوڈیا میں تیزاب حملہ کی شکار خاتون

پاکستان[ترمیم]

نیو یارک ٹائمز کے رپورٹر نکولس ڈی کرسٹوف کے مطابق ، پاکستان میں تیزاب کے حملوں کا رجحان ہر وقت بلند رہتا ہے۔ پاکستان میں حملے عام طور پر بیویوں کے خلاف شوہروں کی جانب سے سے کی جاتی ہے جن کی بیویوں نے بظاہر " ان کی بے عزتی کی ہوتی ہیں"۔ ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان (ایچ آر سی پی) کے مرتب کردہ اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ 2004 میں پاکستان میں تیزاب کے 46 حملے ہوئے اور 2007 میں ہونے والے صرف 33 ایسڈ حملوں تک یہ کمی واقع ہوئی۔ نیو یارک ٹائمز کے ایک مضمون کے مطابق ، 2011 میں پاکستان میں تیزاب کے 150 حملے ہوئے تھے ، جو 2010 میں 65 تھے۔ تاہم ، ہیومن رائٹس واچ اور ایچ آر سی پی کے تخمینے میں تیزاب حملہ کے متاثرین کی تعداد 40-70 سالانہ زیادہ بتائی گئی ہے۔ تیزاب حملوں کے پیچھے محرک شادی بیاہ کی تجویز سے لے کر مذہبی بنیاد پرستی تک ہے ۔ 2019 میں تیزاب کے حملوں میں نصف کمی واقع ہوئی ہے [59]

شرمین عبید چنوئی کی سیونگ فیس (2012) کے نام سے ایک دستاویزی فلم کی ریلیز کے بعد پاکستان میں تیزاب حملوں پر بین الاقوامی توجہ اس طرف آیا۔ شہناز بخاری کے مطابق ، یہ حملےزیادہ تر گرمیوں میں ہوتے ہیں جب تیزاب کو کچھ بیجوں کو بھیگانے کے لئے بڑے پیمانے پر استعمال کیا جاتا ہے ۔ اس طرح کے حملوں کی متعدد وجوہات دی گئیں ہیں ، جیسے عورت نامناسب لباس زیب تن کرتی ہے یا شادی کی تجویز کو مسترد کرتی ہے۔ تیزاب کے حملے کی پہلی معلوم مثال مشرقی پاکستان میں 1967 میں ہوئی تھی۔ [60] ایسڈ سروائیور فاؤنڈیشن کے مطابق ، ہر سال 150 تک حملے ہوتے ہیں۔ فاؤنڈیشن نے رپورٹ کیا ہے کہ حملے اکثر گھریلو زیادتیوں میں اضافہ کی وجہ سےہوتی ہے اور زیادہ تر متاثرین خواتین ہیں۔

2019 میں ، ایسڈ سروائیور فاؤنڈیشن پاکستان (اے ایس ایف پی) نے کہا ہے کہ خواتین پر تیزاب حملوں کے مبینہ معاملات میں گذشتہ پانچ سالوں کے مقابلہ میں تقریبا 50 50 فیصد کی کمی واقع ہوئی ہے۔

قانون سازی[ترمیم]

کئی ممالک میں اس جرم سے متعلق قوانین موجود ہیں جبکہ کچھ اس حوالے سے قانون سازی کر رہے ہیں۔[7] پاکستان کے قصاص قانون کے تحت مجرم کو ایسے ہی طریقہ سے سزا دی جاسکتی ہے اس میں مجرم کے آنکھوں میں تیزاب ڈالی جاسکتی ہے۔[61] یہ سزا نیویارک ٹائمز کے مطابق لازمی نہیں ہے اور بہت کم ہی اس کا نفاذ کیا جاتا ہے۔[62] پاکستان کی ایوان زیریں نے متفقہ طور پر 2011 میں انسداد تیزاب حملہ منظور کی۔ اس قانون کے تحت مجرم کو جرم ثابت ہونے پر بڑے جرمانے اور عمر قہد کی سزا دی جاسکتی ہے۔ لیکن اس جرم کے انسداد کے سلسلے میں سب سے موثر قانون سازی بنگلہ دیش میں دیکھی گئی ہے جہاں اس جرم میں 20 تا 30 فیصد کمی دیکھی گئی۔ < ref name=12a2/> 2013 میں بھارت میں ایک قانون متعارف کیا گیا خسکے تحت ایسے جرائم کی سزا پر جرمانے اور کم از کم سزا 10 سال تا عمر قید رکھی گئی۔[63]

پاکستان[ترمیم]

پاکستانی قصاص قانون کے تحت مجرم کا وہی حال کیا جاسکتا ہے جو متاثرہ فرد کے ساتھ ہوا ہے اگر لواحقین راضی ہوں تو مجرم کی آنکھوں میں تیزاب کے قطرے بھی ڈالے جاسکتے ہیں۔[42][64] پاکستان پینل کوڈ کے سیکشن 365بی کے تحت مجرم کی سزا کم از کم 14 سال قید اور جرمانہ 10 لاکھ رکھی گئی ہے۔"[64] جبکہ قصاص قانون کے 299 سیکشن کے مطابق ولی رضامندی پر مجرم کو بھی یہیسزا دی جاسکتی ہے۔ "[64]

بھی دیکھو[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Karmakar، R.N. (2010). Forensic medicine and toxicology (ایڈیشن 3rd). Kolkata, India: Academic Publishers. ISBN 9788190908146. 
  2. ^ ا ب CASC (May 2010). Breaking the silence: addressing acid attacks in Cambodia (PDF). Cambodian Acid Survivors Charity (CASC). 19 دسمبر 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 اپریل 2016. 
  3. Brown، Malcolm (17 July 2009). "Acid attack accused is refused bail". The Sydney Morning Herald. اخذ شدہ بتاریخ 11 اکتوبر 2017. 
  4. ^ ا ب Bandyopadhyay، Mridula؛ Rahman Khan، Mahmuda (2003). "Loss of face: violence against women in South Asia". In Manderson، Lenore؛ Bennett، Linda Rae. Violence against women in Asian societies. London New York: Routledge. صفحات 61–75. ISBN 9781136875625. 
  5. ^ ا ب Bahl، Taur؛ Syed، M. H. (2003). Encyclopaedia of Muslim world. New Delhi: Anmol Publications. ISBN 9788126114191. 
  6. UN Women (2014). Acid Attack Trend (1999–2013) (PDF). UN Women, United Nations. 
  7. ^ ا ب پ ت ٹ Avon Global Center for Women and Justice at Cornell Law School؛ Committee on International Human Rights of the New York City Bar Association؛ Cornell Law School International Human Rights Clinic؛ Virtue Foundation (2011). "Combating Acid Violence In Bangladesh, India, and Cambodia" (PDF). Avon Foundation for Women. صفحات 1–64. اخذ شدہ بتاریخ 06 مارچ 2013. 
  8. "Acid Survivors Foundation (ASF)". Acidsurvivors.org. اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2017. 
  9. Dhar، Sujoy. "Acid attacks against women in India on the rise; survivors fight back". USA TODAY (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 فروری 2020. 
  10. "Q&A: Acid attacks around the world". Edition.cnn.com. اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2016. 
  11. "ASTI - A worldwide problem". www.asti.org.uk. 
  12. "Everything you know about acid attacks is wrong". BBC Three (بزبان انگریزی). 2017-11-17. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2019. 
  13. ^ ا ب Solberg، Kristin. DEFINE_ME_WA. doi:ڈی او ئي. 
  14. ^ ا ب پ "Acid Violence in Uganda: A Situational Analysis" (PDF). Acid Survivors Foundation Uganda. November 2011. صفحات 1–21. 17 جون 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 مارچ 2013. 
  15. ^ ا ب (PDF). 6 February 2017 https://web.archive.org/web/20170206231722/http://www.kln.ac.lk/medicine/depts/forensic/images/stories/ques_1/chemical_assaults_worldwide.pdf. 06 فروری 2017 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ.  مفقود أو فارغ |title= (معاونت)
  16. "Kuneva case – the most severe assault on trade unionist in Greece for 50 years". FOCUS Information Agency. اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2016. 
  17. Shaan Khan, CNN (3 November 2012). "Pakistani Taliban target female students with acid attack". CNN. اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2016. 
  18. "Acid attack injures Catholic priest". The Media Project. 15 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2016. 
  19. "Acid attacks intensify Indonesia gang fights". En-maktoob.news.yahoo.com. اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2016. 
  20. "Harassment's New Face: Acid Attacks". ABC News. 16 April 2008. اخذ شدہ بتاریخ 08 نومبر 2017. 
  21. "Still smiling The women fighting back after acid attacks" برطانوی نشریاتی ادارہ. Naomi Grimley.
  22. "風俗行くのやめてみる". Licadho.org. 27 اگست 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 نومبر 2017. 
  23. "Syraattack mot pojke i Norsborg – DN.SE". DN.SE (بزبان سونسکا). 2016-05-18. اخذ شدہ بتاریخ 18 مئی 2016. 
  24. Scholte، Marianne (17 March 2006). "Acid Attacks in Bangladesh: A Voice for the Victims". Spiegel Online. 
  25. (PDF). 6 February 2017 https://web.archive.org/web/20170206231722/http://www.kln.ac.lk/medicine/depts/forensic/images/stories/ques_1/chemical_assaults_worldwide.pdf. 06 فروری 2017 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ.  مفقود أو فارغ |title= (معاونت)
  26. "Cambodian victim on her acid attack". 21 March 2010 – news.bbc.co.uk سے. 
  27. "Hospital offers surgery to victim of acid attack". Chinadaily.com.cn. اخذ شدہ بتاریخ 08 نومبر 2017. 
  28. "The Standard - Hong Kong's First FREE English Newspaper". 28 May 2009. 28 مئی 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  29. "Hunt intensifies for acid attacker - The Standard". 4 June 2011. 04 جون 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  30. "Survivors of acid attacks in Colombia fight for justice". america.aljazeera.com. اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2020. 
  31. "Harassment's New Face: Acid Attacks". ABC News. 16 April 2008. 
  32. "Combating Acid Violence" (PDF). اخذ شدہ بتاریخ 17 مئی 2018. 
  33. "Police to Complete Case Files on Novel Baswedan Acid Attack". Tempo.co. اخذ شدہ بتاریخ 05 فروری 2020. 
  34. "Iranian acid attack victim pardons culprit". www.aljazeera.com. 
  35. "Acid attacks against Iranian women: Protests in Isfahan, arrest of journalists.". Slate Magazine. اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2016. 
  36. "De frente y de perfil". 
  37. ^ ا ب "Archived copy". 12 جون 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2005. 
  38. Rob Harris. "Acid Attacks". Video.nytimes.com. 31 مارچ 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 مئی 2018. 
  39. "TimesLIVE". www.timeslive.co.za. 
  40. Bleaney، Rob (9 August 2013). "Zanzibar acid attack: Recap updates as British teenagers Katie Gee and Kirstie Trup land back in Britain". 
  41. "Cape Argus". Capeargus.co.za. اخذ شدہ بتاریخ 08 نومبر 2017. 
  42. Kirkland، Faye (30 September 2015). "Acid attack hospital admissions have almost doubled in last 10 years". دی گارڈین. اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2017. 
  43. "Father 'broken' after acid attack on son". Bbc.co.uk. 17 May 2018. 
  44. "Pizza delivery driver 'blinded for life' after acid attack". Khaleejtimes.com. 
  45. Reporters، Telegraph (22 April 2017). "True scale of acid attacks hidden as victims too scared to come forward, police say". The Daily Telegraph – www.telegraph.co.uk سے. 
  46. "The Press: Answer by Acid". Time.com. 16 April 1956. 
  47. "Copycat Acid Attack?". CBS News. September 6, 2010. اخذ شدہ بتاریخ July 26, 2018. 
  48. "Int'l school accountant victim of acid attack in Ho Chi Minh City". Tuoitrenews.vn. اخذ شدہ بتاریخ 17 مئی 2018. 
  49. Naripokkho؛ Bangladesh Mahila Parishad. "Baseline Report: Violence Against Women in Bangladesh" (PDF). International Women's Rights Action Watch Asia Pacific. 22 ستمبر 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 مارچ 2013. 
  50. "The Global Gender Gap report" (PDF). 3.weforum.org. 2013. 
  51. Chivas، Melody Ermachild (2003). Meena, heroine of Afghanistan: the martyr who founded RAWA, the Revolutionary Association of the Women of Afghanistan. New York, N.Y.: St. Martin's Press. صفحہ 208. ISBN 978-0-312-30689-2. 
  52. Chivas, Melody Erma child (2003). Meena, heroine of Afghanistan: the martyr who founded RAWA, the Revolutionary Association of the Women of Afghanistan. New York, N.Y.: St. Martin's Press. صفحہ 208. ISBN 978-0-312-30689-2. 
  53. "Pakistan: Cases of acid attacks on women drop by half". gulfnews.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 فروری 2020. 
  54. Weightman، Barbara A. (2012). Dragons and Tigers: A Geography of South, East, and Southeast Asia (ایڈیشن 3rd). Wiley. صفحہ 77. ISBN 978-0470876282. 
  55. Juliette Terzieff (July 13, 2004). "Pakistan's Acid-Attack Victims Press for Justice". Women's eNews. 12 جون 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 مئی 2008. 
  56. "Criminal Law (Amendment) Act, 2013" (PDF). Government of India. 17 اپریل 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 اپریل 2013. 
  57. ^ ا ب پ "Pakistan Penal Code (Act XLV of 1860)". www.pakistani.org. اخذ شدہ بتاریخ 03 دسمبر 2018. 

مزید پڑھیے[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]