منہاس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search


منہاس راجپوت تاریخ

منہاس سوریہ بنسی راجپوت ہیں۔

سورج بنسی راجپوتوں میں سب سے اعلیٰ نسل کے راجپوت ہیں جس کی ہندو بڑی حرمت کرتے ہیں۔

منہاس راجپوتوں کی ایک عظیم شاخ کا نام ہے۔ منہاس قوم کے جد امجد "لمہن ہنس" کا زمانہ 800 قبل مسیح بتایا جاتا ہے گویا مدت کے لحاظ سے یہ راجپوتوں کی بے حد قدیم قوم ہے۔

منہاس قوم راجا جوگ رائے نامی راجے کی اولاد ہیں۔

جو راجا جامبو لوچن (بانی شہر جموں و کشمیر)کی 71 ویں پشت میں تھا۔ [1] جامبو لوچن نے جموں کا شہر اپنے نام کی نسبت سے آباد کیا.

منہاس, جموال یہ راجپوت قبائل آپس میں بھائی بند ہیں اور ان کا نسبی تعلق رام چندر جی کے بیٹے " کُش" سے ہے۔  


راجا جامبو لوچن کی اولاد پشت در پشت ریاست جموں پر حکومت کرتی رہی.

جامبو لوچن کی اولادوں کا تعلق چونکہ شاہی گھرانے سے تھا لہذا وہ بھی اپنے باپ کی نسبت سے جموال کہلایں.

منہاس در حقیقت راجپوتوں کے جموال خاندان ہی کی ایک شاخ ہیں۔  گویا نسل کے اعتبار سے منہاس اور جموال ایک ہی شخص کی اولاد ہیں۔

منہاس قوم کو منہاس اس کے جد امجد "لمہن ھنس" کے نام سے کہا جاتا ہے۔ لفظ "لمہن ھنس" کثرت استعمال سے "منہاس " بن گیا ہے۔

راجا جوگ رائے کے 2 بیٹے تھے بڑے بیٹے کا نام لمہن ہنس اور چھوٹے بیٹے کا نام سورج ہنس تھا۔ لمہن ہنس بہت طاقتور آدمی تھا اس کی اولاد بہت کثرت سے ہوئی۔ اُس نے ہر ایک لڑکے کو اپنی جاگیر تقسیم کر دی۔ اُس کی اولاد نے برخلاف آئین راجپوتاں کھیتی شروع کر دی۔ چنانچہ موضع پرگوال، چپراڑ، تھب اُن کے نام پر آباد ہیں۔ اور اس قوم کو منہاس کہتے ہیں۔

لمہن ہنس اپنے باپ کی حیات میں فوت ہوا اور راجہ جوگ رائے نے راج کمک اپنے چھوٹے بیٹے سورج ہنس کو دیا۔ اپنے باپ کے بعد وہ راجہ ہوا۔

منہاس قوم کے اب بھی جموں و کشمیر کے علاقوں میں کافی خاندان آباد ہیں۔

منہاس قوم پنجاب کے کم و بیش تمام اضلاع میں آباد ہے۔  منہاس سب سے زیادہ ضلع جہلم اور اس کے نواح میں آباد ہیں۔  دوسرے نمبر میں راولپنڈی کے اضلاع میں آباد ہیں۔  جبکہ آبادی کے لحاظ سے تیسرے نمبر پر سیالکوٹ میں آباد ہیں۔  ان اضلاع کے علاوہ یہ لوگ لاہور,  گوجرنوالہ,  گجرات,  شخوپورہ,  سرگودھا,  شاہ پور, ملتان, مظفر گڑھ کے علاوہ ڈیرہ اسماعیل خان , بنوں اور مڑرہ میں بھی آباد ہیں۔

منہاس،  جموال اور جسروٹیہ کا جد امجد ایک ہی ہے اس لیے پاکستان میں سب منہاس ہی کہلواتے ہیں اور راجا ، رانا، چودھری ٹائٹل استعمال کرتے ہیں جبکہ جموں و کشمیر میں انھیں ڈوگرہ راجپوت کہا جاتا ہے اور یہ راجا کا لقب استعمال کرتے ہیں اور پنجاب انڈیا میں ٹھاکر کا لقب استعمال کرتے ہیں۔

منہاس قوم کے سات خاندان مشہور ہیں اور پنجاب میں جتنے بھی منہاس آباد ہیں اِنہیں سات خاندانوں میں سے ہی نکلے ہیں۔  

منہاسوں کے سات خاندانوں کی تفصیل حسب ذیل ہے.

1: براہ راست لمہن ہنس کی اولاد[ترمیم]

پہلے پہل یہ خاندان کشمیر میں چپراڑ,  بھت اور پرگوال کے مقامات پر آباد ہوا. پرگوال کا نام راجا پرگو منہاس کے نام پر رکھا گیا، راجا پرگو منہاس پرگوال کا فرمانروا بھی تھا۔ بعداز راجا پرگو منہاس کی اولادیں اسلام سے متاثر ہو کر مسلمان ہو گئیں اور پاکستان کے شہر سیالکوٹ، جہلم، گوجرخان، راولپنڈی اور دیگر علاقوں میں قیام پزیر ہوئیں۔

2: منہاس جسروٹیہ[ترمیم]

پہلے پہل یہ خاندان جموال سے الگ ہو کر کشمیر میں موضع مالتی تحصیل سوہلی میں آباد ہوا.

3: خاندان راجا چک دیو[ترمیم]

یہ خاندان راجا چک دیو کے دوسرے فرزند رام دیو سے نکلا ہے۔  رام دیو کے دو بیٹے سنگا دیو اور جگو تھے۔  ان دونوں کی اولادیں سیالکوٹ,  گورداسپور اور ہوشیار پور میں آباد ہوئیں.  اس خاندان کو مہتہ کالقب بھی دیا جاتا ہے.

4: خاندان راجا سنگرام دیو[ترمیم]

یہ خاندان کانگڑہ اور گورداسپور میں آباد ہوا.

5: راجا برج دیو کے بیٹے المل دیو کا خاندان[ترمیم]

یہ خاندان راجا برج دیو کے دوسرے بیٹے المل دیو کی نسل سے ہے۔ اور پہلے پہل موضع سمبل پور میں آباد ہوا.

6: سیدو اور جنکھر دیو کے خاندان[ترمیم]

راجا برج دیو کے بیٹے راجا نرسنگ دیو کے تین بیٹے تھے جن میں ایک بیٹا راجا ارجن دیو تو راج پاٹ کا مالک بنا جبکہ دوسرے دو بھائی جن کے نام سیدو اور جنکھر دیو تھے ایک منہاس خاندان کے بانی بنے.  ان کی اولادیں مواضعات سم,  توپ,  جنڈیالہ اور سوہانجنہ میں آباد ہوئیں.

7: حکمان دیو کا خاندان[ترمیم]

منہاس راجپوتوں کا یہ خاندان حکمان دیو کلیان دیو کی اولادوں پر مشتمل ہے جو مہاراجا مالدیو کا چھوٹا بھائی تھا۔  راجا مالدیو کی وفات 1513 ء کے لگ بھگ ہوئی.  یہ خاندان پہلے پہل کشمیر کے علاقہ بلاوڑہ چندرکوٹ,  عاقل پور اور کاستی گڑھ وغیرہ میں آباد ہوا.  جموں کا مشہور راجا عجائب دیو یا عجب دیو اسی خاندان کا طشم و چراغ تھا۔

منہاسوں کے متذکرہ بالا ساتوں خاندان ابتدا میں زیادہ تر کشمیر میں آباد ہوئے تھے لہذا یہ بات یقینی حد تک درست یے کے یہ لوگ کشمیر سے پنجاب کی طرف نقل مکانی کر کے آئے ہوں گے.  گویا پنجاب میں آباد تمام منہاس خاندان انہیں سات خاندانوں کے ابناؤ اخلاف ہیں۔  اب بھی جموں کشمیر میں منہاس قوم کی کئی گڑھیاں ملتی ہیں.

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مختصر تاریخ جموں و کشمیر۔ مصنف: مولوی حشمت اللہ خاں لکھنوی

تواریخِ راجپوتاں ملک پنجاب۔ مصنف: ٹھاکر کاہن سنگھ۔

راجپوت (تاریخ کے آئینے میں)۔ مصنف: غلام اکبر ملک