استصواب رائے برائے پاکستانی عام انتخابات، 2018ء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

پاکستان میں عام انتخابات 25 جولائی 2018ء کو ہوئے۔ پچھلے عام انتخابات کے بعد کچھ رائے شماری کنندگان نے قومی و صوبائی سطح پر عوام کی رائے لی ہے۔

گرافیائی خلاصے[ترمیم]

مختلف رنگین سطور سے سیاسی جماعتوں کو دکھایا گیا ہے اور کس جماعت کی قوم اسمبلی کے لیے قومی سطح پر کتنی ووٹنگ مقبولیت ہے، ان کو تین نکتوں سے دیکھا جا سکتا ہے۔ جماعتیں جن کے حق میں 10% سے کم رائے ملی ان کو نہیں دکھایا گیا ہے۔<div class="div-col columns column-count column-count- " style="-moz-column-count: ; -webkit-column-count: ; column-count: ; ">

قومی سطح پر عوامی رائے[ترمیم]

ذیل میں 2013ء کے بعد عوام کی رائے ہے:

تاریخ رائے شماری کنندہ ناشر سیمپل پی ایم ایل این پی ٹی آئی پی پی پی ایم کیو ایم پی ایم ایم اے* اے این پی دیگر برتری
25 جولائی 2018 2018ء کے انتخابات الیکشن کمیشن پاکستان
12 جولائی 2018 ایس ڈی پی آئی[1] ہیرلڈ 6,004 25% 29% 20% دستیاب نہیں 3% 1% 20% 4%
04 جولائی 2018 آئی پی او آر[2] جی ایس پی 3,735 32% 29% 13% 2% 3% 1% 20% 3%
06 جون 2018 گیلپ پاکستان[3] جیو/جنگ 3,000 26% 25% 16% دستیاب نہیں 2% 1% 30% 1%
28 مئی 2018 پلسی کانسلٹنٹ[3] 3,163 27% 30% 17% 1% 4% 1% 20% 3%
مئی 2018 گیلپ پاکستان[4] گیلپ پاکستان 3,000 38% 25% 15% 22% 13%
مارچ 2018 گیلپ پاکستان[5] وال اسٹریٹ جرنل 2,000 36% 24% 17% 23% 12%
01 نومبر 2017 گیلپ پاکستان[6] جیو/جنگ 3,000 34% 26% 15% 2% 2% 2% 19% 8%
25 اکتوبر 2017 پلسی کانسلٹنٹ[6] 3,243 36% 23% 15% 2% 1% 1% 22% 13%
24 اکتوبر 2017 آئی پی او آر[7][8] جی ایس پی 4,540 38% 27% 17% 3% 1% 1% 14% 11%
24 اپریل 2017 گیلپ پاکستان[9] گیلپ پاکستان 1,400 36% 25% 16% 2% 3% 2% 16% 11%
38% 22% 17% 2% 2% 2% 14% 16%
27 اگست 2015 ایس ڈی پی آئی[10][11] 3,014 27% 33% 14% 1% 2% 1% 20% 6%
17 جولائی 2014 ایس ڈی پی آئی[12] ہیرلڈ 1,354 17% 33% 19% 5% 3% 3% 18% 14%
11 مئی 2013 2013ء کے انتخابات[13] الیکشن کمیشن پاکستان 45,388,404 32.77% 16.92% 15.23% 5.41% 3.22% 1.00% 25.57% 15.85%

*متحدہ مجلس عمل سیاسی جماعتوں کی ایک اتحادی جماعت ہے جو 2002ء میں بنی اور 2008ء کے انتخابات کے بعد یہ ختم ہو گئی۔ یہ اتحادی جماعت دسمبر 2017ء میں دوبارہ بحال ہو گئی۔ مندرجہ بالا رائے شماری اتحادی جماعت کی بحالی سے پہلے کی ہے، اور اس میں زیادہ تر تائید جمعیت علمائے اسلام (ف) کو حاصل ہے۔

صوبائی سطح پر عوامی رائے[ترمیم]

پنجاب[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ اسمبلی کی قسم پی ایم ایل (ن) پی ٹی ائی پی پی پی دیگر برتری
12 جولائی 2018 ایس ڈی پی آئی[1] بے تصریح 40% 33% 7% 20% 7%
04 جولائی 2018 آئی پی او آر[2] قومی 50% 31% 5% 14% 19%
06 جون 2018 گیلپ پاکستان[3] بے تصریح 40% 26% 6% 28% 14%
02 جون 2018 آئی پی او آر[14] بے تصریح 51% 30% 5% 14% 21%
28 مئی 2018 پلسی کانسلٹنٹ[3] بے تصریح 43% 34% 5% 18% 9%
01 نومبر 2017 گیلپ پاکستان[6] بے تصریح 50% 31% 5% 14% 19%
25 اکتوبر 2017 پلسی کانسلٹنٹ[6] بے تصریح 55% 20% 7% 18% 35%
24 اکتوبر 2017 آئی پی او آر[8] قومی 58% 23% 6% 13% 35%
27 اگست 2015 ایس ڈی پی آئی[10][11] قومی 38% 35% 7% 20% 3%
17 جولائی 2014 ایس ڈی پی آئی[12] پنجاب صوبائی اسمبلی 25% 43% 11% 21% 18%
11 مئی 2013 2013ء کے صوبائی انتخابات[13] پنجاب صوبائی اسمبلی 40.8% 17.8% 8.8% 32.6% 23.0%

شمالی پنجاب[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ پی ایم ایل (ن) پی ٹی آئی دیگر برتری
2 جون 2018 آئی پی او آر[14] 49% 29% 8% 20%

اسلام آباد اور جنوبی پنجاب[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ پی ایم ایل (ن) پی ٹی آئی دیگر برتری
2 جون 2018 آئی پی او آر[14] 42% 31% 5% 11%

وسطی پنجاب[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ پی ایم ایل (ن) پی ٹی آئی دیگر برتری
2 جون 2018 آئی پی او آر[14] 55% 30% 3% 25%

مغربی پنجاب[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ پی ایم ایل (ن) پی ٹی آئی دیگر برتری
2 جون 2018 آئی پی او آر[14] 52% 31% 5% 21%

سندھ[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ اسمبلی کی قسم پی پی پی ایم کیو ایم (پ) پاکستان مسلم لیگ (ف) پی ٹی آئی پی ایم ایل (ن) دیگر برتری
12 جولائی 2018 ایس ڈی پی آئی[1] بے تصریح 54% 2% 10% 14% 4% 16% 40%
04 جولائی 2018 آئی پی او آر[2] قومی 35% 7% 5% 18% 10% 25% 17%
06 جون 2018 گیلپ پاکستان[3] بے تصریح 44% دستیاب نہیں 9% 4% 43% 35%
28 مئی 2018 پلسی کانسلٹنٹ[3] بے تصریح 45% 5% دستیاب نہیں 11% 4% 35% 34%
01 نومبر 2017 گیلپ پاکستان[6] بے تصریح 44% 10% دستیاب نہیں 11% 35% 33%
25 اکتوبر 2017 پلسی کانسلٹنٹ[6] بے تصریح 46% 7% دستیاب نہیں 10% دستیاب نہیں 37% 36%
24 اکتوبر 2017 آئی پی او آر[8] قومی 52% 11% 2% 14% 12% 7% 38%
27 اگست 2015 ایس ڈی پی آئی[10][11] قومی 41% 5% دستیاب نہیں 21% 13% 20% 20%
17 جولائی 2014 ایس ڈی پی آئی[12] صوبائی 50% 20% 5% 25% 30%
11 مئی 2013 2013ء کے انتخابات[13] صوبائی 32.6% 25.5% 11.6% 6.2% 6.0% 18.1% 7.1%

خیبر پختونخوا[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ اسمبلی کی قسم پی ٹی آئی پی ایم ایل (ن) جمیعت علمائے اسلام اے این پی دیگر برتری
12 جولائی 2018 ایس ڈی پی آئی[1] بے تصریح 43% 10% 11% 6% 30% 31%
04 جولائی 2018 آئی پی او آر[2] قومی 45% 12% 6% 8% 29% 33%
06 جون 2018 گیلپ پاکستان[3] بے تصریح 57% 9% 6% 6% 22% 48%
28 مئی 2018 پلسی کانسلٹنٹ[3] بے تصریح 57% 10% 9% 7% 17% 47%
01 نومبر 2017 گیلپ پاکستان[6] بے تصریح 47% 10% 43% 37%
25 اکتوبر 2017 پلسی کانسلٹنٹ[6] بے تصریح 53% 13% 34% 40%
24 اکتوبر 2017 آئی پی او آر[8] قومی 62% 10% 1% 5% 22% 52%
27 اگست 2015 ایس ڈی پی آئی[10][11] قومی 50% 15% 7% 7% 21% 35%
17 جولائی 2014 ایس ڈی پی آئی[12] صوبائی 40% دستیاب نہیں 13% 12% 35% 27%
11 مئی 2013 2013ء کے انتخابات[13] خیبر پختونخوا کی صوبائی اسمبلی 19.3% 15.9% 13.6% 10.3% 40.9% 3.4%

بلوچستان[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ اسمبلی کی قسم جمیعت علمائے اسلام پی ایم اے پی پی ایم ایل (ن) بی این پی این پی پی پی پی اے این پی پی ٹی آئی دیگر بی اے پی برتری
12 جولائی 2018 ایس ڈی پی آئی[1] بے تصریح 8% 4% 11% 6% دستیاب نہیں 15% دستیاب نہیں 11% 45% 4%
04 جولائی 2018 آئی پی او آر[2] قومی 12% 10% 5% 5% 5% 16% 4% 8% 35% 7% 4%
06 جون 2018 گیلپ پاکستان[3] بے تصریح 23% 9% 2% 14% 11% 20% 4% 5% 12% 3%
28 مئی 2018 پلسی کانسلٹنٹ[3] بے تصریح 11% 4% 2% 6% 5% 36% 3% 12% 14% 7% 24%
01 نومبر 2017 گیلپ پاکستان[6] بے تصریح 22% 18% 16% 13% 5% 7% 4% 5% 10% دستیاب نہیں 4%
25 اکتوبر 2017 پلسی کانسلٹنٹ[6] بے تصریح 5% 0% 39% 8% 0% 5% 7% 21% 15% 18%
24 اکتوبر 2017 آئی پی او آر[8] قومی دستیاب نہیں 6% 15% 8% 1% 9% 2% 33% 26% 18%
27 اگست 2015 ایس ڈی پی آئی[10][11] قومی 18% دستیاب نہیں 5% دستیاب نہیں 10% 12% 4% 51% 6%
17 جولائی 2014 ایس ڈی پی آئی[12] صوبائی دستیاب نہیں 23% 22% دستیاب نہیں 14% 41% 1%
11 مئی 2013 2013ء کے انتخابات[13] صوبائی 15.8% 12.8% 10.3% 6.2% 5.8% 4.0% 2.4% 1.8% 40.9% 3.0%

حلقوں کی سطح پر عوامی رائے[ترمیم]

رنگ کلید

  dagger ایگزٹ پول

  double-dagger ضمنی انتخابات نتائج

حلقہ این اے۔4[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ سیمپل پی ٹی آئی پی ایم ایل (ن) جے آئی اے این پی پی پی پی دیگر برتری
26 اکتوبر 2017double-dagger 2017ء ضمنی انتخابات 131,298 34.8% 18.9% 5.4% 18.9% 10.0% 12.1% 15.9%
26 اکتوبر 2017dagger سی پی ڈی آئی[15] 1,742 43% 16% 8% 20% 9% 6% 23%
19 اکتوبر 2017 آئی پی او آر[16] 1,313 41% 18% 4% 9% 9% 19% 25%
11 مئی 2013 2013ء کے انتخابات[13] 138,555 39.8% 14.7% 11.9% 11.4% 8.7% 13.5% 25.1%

حلقہ این اے۔53[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ سیمپل پی ٹی آئی پی ایم ایل (ن) پی پی پی دیگر برتری
28 فروری 2018 آئی پی او آر[17] 598 37% 41% 2% 20% 4%
11 مئی 2013 2013ء کے انتخابات[13] 236,624 46.6% 43.2% 6.3% 3.9% 3.4%

حلقہ این اے۔120[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ سیمپل پی ایم ایل (ن) پی ٹی آئی دیگر برتری
17 ستمبر 2017double-dagger ضمنی انتخابات 2017ء 125,129 49.4% 37.6% 13.0% 11.8%
17 ستمبر 2017dagger سی پی ڈی آئی[18] 1,433 46% 40% 14% 6%
12 ستمبر 2017 پلسی کانسلٹنٹ[19] 1,520 62% 23% 15% 39%
10 ستمبر 2017 گیلپ پاکستان[20] 1,500 53% 29% 18% 24%
06 ستمبر 2017 آئی پی او آر[21] 2,198 49% 34% 17% 15%
11 مئی 2013 2013ء کے انتخابات[13] 153,328 60.5% 34.6% 4.9% 25.9%

رائے برائے سیاست دان[ترمیم]

نواز شریف کی نااہلیت/ کا استعفی[ترمیم]

تاریخ رائے شماری کنندہ سیمپل متفق
(صحیح)
غیر متفق
(غلط)
نہیں معلوم برتری
05 اپریل 2018 گیلپ پاکستان[22] 1,586 53% 40% 7% 13%
01 نومبر 2017 گیلپ پاکستان[6] 3,000 55% 33% 11% 22%
54% 31% 15% 23%
25 اکتوبر 2017 پلسی کانسلٹنٹ[6] 3,243 48% 31% 21% 17%
47% 28% 25% 19%
24 اکتوبر 2017 جی ایس پی[8] 4,540 65% 33% 2% 32%
69% 28% 3% 39%
28 جولائی 2017 وزیر اعظم نواز شریف کو عدالت عظمیٰ نے نااہل قرار دے دیا

نواز شریف بمقابلہ عمران خان[ترمیم]

Date رائے شماری کنندہ نواز شریف عمران خان معلوم نہیں برتری
مئی 2018 گیلپ پاکستان[4] 50% 45% 5% 5%
مارچ 2018 گیلپ پاکستان[5] 49% 46% 5% 3%
(غیر معین) 2017 گیلپ پاکستان[5] 51% 39% 10% 12%
(غیر معین) 2016 گیلپ پاکستان[5] 57% 37% 6% 20%
(غیر معین) 2015 گیلپ پاکستان[5] 59% 35% 6% 24%

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ "Survey shows elections too close to call"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  2. ^ ا ب پ ت ٹ "National Survey of Current Political Survey in Pakistan" (پی‌ڈی‌ایف)۔
  3. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ "Elections Exclusive: 3 poll results in! Who will you vote for Pakistan?"۔ geo.tv۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  4. ^ ا ب "Dr. Ijaz Shafi Gilani, Chairman گیلپ پاکستان talks about the changing trends in public opinion and motivations of the voters with respect to the upcoming Election on Jirga with SaleemKhanSafi on Geo News"۔ گیلپ پاکستان۔ 21 مئی 2018۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  5. ^ ا ب پ ت ٹ Saeed Shah (25 اپریل 2018)۔ "Trial of Ex-Leader Rattles Pakistan's Democracy"۔ [www.wsj.com]۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  6. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ Manzar Elahi؛ Sajjad Haider (24 نومبر 2017)۔ "PML-N remains most popular party, Nawaz most favourite leader: survey"۔ جیو ٹی وی۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  7. "Shehbaz favoured by Pakistan's majority to become premier: جی ایس پی survey"۔ دنیا نیوز۔ 28 اکتوبر 2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو ایس پی-survey اصل Check |url= value (معاونت) سے آرکائیو شدہ۔
  8. ^ ا ب پ ت ٹ ث "National Public Opinion Survey"۔ Global Strategic Partners۔ 24 اکتوبر 2017۔
  9. "Gallup Public Pulse on Panama Leaks Verdict – 24 Hours after the Announcement"۔ گیلپ پاکستان۔ 24 اپریل 2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  10. ^ ا ب پ ت ٹ Abid Q Suleri۔ "Political Barometer, 2015" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Sustainable Development Policy Institute۔
  11. ^ ا ب پ ت ٹ Ismail Sheikh (28 اکتوبر 2015)۔ "PTI more popular than PML-N: survey"۔ دی ایکسپریس ٹریبیون۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مارچ 2018۔
  12. ^ ا ب پ ت ٹ "State of the nation: public opinion of the government's first year in power"۔ Dawn۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مارچ 2018۔
  13. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ "Party wise total vote bank" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Government of Pakistan۔ 27 مئی 2013۔ مورخہ 8 اکتوبر 2017 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔
  14. ^ ا ب پ ت ٹ "A Quantative Study Report on the Political Continuum of Punjab" (پی‌ڈی‌ایف)۔ ipor.com.pk۔
  15. "Exit Polls in NA-4 (Peshawar – IV) By-Elections Give Clear Lead to PTI"۔ Centre for Peace and Development Initiatives۔ 26 اکتوبر 2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  16. "NA-04 Peshawar" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Institute for Public Opinion Research۔ 25 اکتوبر 2017۔
  17. "A Quantitative Study Report on the Political Continuum of NA-53" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Institute for Public Opinion Research۔ 1 مارچ 2018۔
  18. "Exit Polls in NA 120 Bye-Elections Show Slender Lead by PMLN NA-120 (Lahore III)"۔ Centre for Peace and Development Initiatives۔ 17 ستمبر 2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  19. "Survey shows easy sailing for PML-N in NA-120 by-polls"۔ The News PK۔ 12 ستمبر 2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  20. "NA-120 Pre-election Survey by گیلپ پاکستان" (پی‌ڈی‌ایف)۔ گیلپ پاکستان۔ 17 ستمبر 2017۔
  21. "71pc won't change their voting behaviour in NA-120: survey"۔ The News PK۔ 6 ستمبر 2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  22. "Public Opinion on Supreme Court Ruling in Elections Reforms Case" (پی‌ڈی‌ایف)۔ 5 اپریل 2018۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔