متحدہ مجلس عمل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
متحدہ مجلس عمل
صدر فضل الرحمٰن
سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ
بانی جمعیت علمائے پاکستان
تحریک جعفریہ
جمیعت علمائے اسلام
جمیعت اہل حدیث
جماعت اسلامی پاکستان
تاسیس 2002ء، 2018ء (دوبارہ بحالی)
نظریات اسلامیت
سماجی قدامت پسندی
قدامت پرستی
مغرب کی مخالفت
قوم پرستی
سیاسی حیثیت انتہائی-دائیں
مذہب قدامت پسندانہ اسلام
ایوان بالا
7 / 104
قومی اسمبلی
16 / 342
بلوچستان اسمبلی
10 / 65
خیبر پختونخوا اسمبلی
13 / 124
سندھ اسمبلی
1 / 168
پنجاب اسمبلی
0 / 371
گلگت بلتستان اسمبلی
4 / 33
آزاد کشمیر اسمبلی
2 / 49
انتخابی نشان
ترازو، کتاب
جماعت کا پرچم
Jamaat-e-Islami Pakistan flag.PNG
سیاست پاکستان
State emblem of Pakistan.svg
مضامین بسلسلہ
سیاست و حکومت
پاکستان
آئین

متحدہ مجلس عمل کا قیام ریاست پاکستان کو بانی اسلام اور بانی پاکستان کے نظریہ اسلامی و فلاحی مملکت کی عملی صورت دینے کے لیے ہوا۔ یہ ایک سیاسی جماعت تھی یا سیاسی جماعتوں کا مجموعہ جس نے صدر پرویز مشرف اور سابق وزیر اعظم شوکت عزیز کی مخالفت کی۔ اس میں صرف ایک پارٹی نہیں بلکہ کہیں پارٹیوں کا اتحاد تھا۔

متحدہ مجلس عمل کا اتحاد 2002ء میں بطور حزب اختلاف ہوا جس کا مقصد پرویز مشرف کی امریکا نواز پالیسی کی مخالفت کرنا تھا، یہ اتحاد دینی جماعتوں کا تھا جس میں جمعیت علمائے اسلام،تحریک جعفریہ پاکستان ،جمعیت علمائے اسلام (ف)،جمعیت اہل حدیث اور جماعت اسلامی پاکستان شامل تھے۔ 2002ء میں پرویز مشرف کے خلاف بھرپور انداز میں انہوں نے الیکشن لڑا مگر پارلیمان میں ایک تہائی اکثریت بحی حاصل نہ کرسکے۔ پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا میں قومی اسمبلی کے تین نشستوں کے علاوہ صوبے کے تمام قومی اسمبلی کے نشستیں انہوں نے جیت لیے اور اسی صوبے میں ان کی صوبائی حکومت بنی، اس کے علاوہ انہوں نے صوبہ سندھ 5،صوبہ پنجاب میں 3 اور صوبہ بلوچستان میں قومی اسمبلی کے 6 نشستیں حاصل کیے۔ قومی اسمبلی میں انہوں نے کل 342 میں سے 63 نشستیں اور سینیٹ میں 100 میں سے 6 نشستیں حاصل کیے۔

مزید[ترمیم]