2018 پاکستانی عام انتخابات میں تشدد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
2018 پاکستانی عام انتخابات میں تشدد
تاریخجولائی 2018
مقام
پاکستان
اختتام31 افراد ہلاک اور 35 سے زائد زخمی
متاثرین
اموات31
زخمی35 سے زیادہ
گرفتار7

25 جولائی 2018 کو ہونے والے پاکستانی عام انتخابات 2018 سے پہلے اور اس دن کئی پرتشدد واقعات رونما ہوئے۔

الیکشن کے دن پہلا پرتشدد واقعہ صبح سویرے لاڑکانہ میں پاکستان پیپلز پارٹی کے کیمپ پر پیش آیا جس میں دستی بم حملے میں کم از کم تین افراد زخمی ہوئے۔ دوسرا واقعہ ضلع صوابی میں پیش آیا جب پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور عوامی نیشنل پارٹی (اے این پی) کے ایجنٹوں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا جس میں پی ٹی آئی کا ایجنٹ گولی لگنے سے ہلاک ہوگیا۔ بعد ازاں دن میں صوبہ بلوچستان میں دو حملے ہوئے۔ پہلا دھماکا دارالحکومت کوئٹہ میں ہوا جس میں 31 افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوئے۔ اس کے بعد ضلع نصیر آباد میں دو افراد زخمی ہوئے۔ سندھ میں پاکستان پیپلز پارٹی اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس کے ارکان کے درمیان متعدد پرتشدد جھڑپیں ہوئیں جس میں متعدد افراد شدید زخمی ہوگئے۔

قبل از انتخابات تشدد[ترمیم]

یہ حملے عام انتخابات سے 12 روز قبل ہوئے تھے۔ ماہ کے آغاز میں شمالی وزیرستان کی تحصیل رمزک میں پاکستان موومنٹ آف جسٹس کے امیدوار برائے NA-48 (ٹرائبل ایریا-IX) ملک اورنگ جیب خان کے دفتر پر ایک بم حملہ ہوا، جس میں 10 افراد زخمی ہوئے۔ بنوں میں حالیہ حملے سے ایک ہفتہ قبل، شہر کے علاقے تختی خیل میں متحدہ مجلس عمل کے PK-89 کے امیدوار شین ملک کی انتخابی مہم کے دوران موٹر سائیکل میں نصب بم کو دور سے پھٹایا گیا۔ ان حملوں سے دو روز قبل پشاور میں عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما ہارون بلور کی انتخابی ریلی پر خودکش بم حملے میں بلور سمیت 20 افراد ہلاک اور 63 زخمی ہو گئے تھے۔ 12 جولائی کو، خضدار میں بلوچستان عوامی پارٹی (بی اے پی) کے دفتر پر بم دھماکے سے قبل فائرنگ کی گئی جس میں 2 افراد زخمی ہوئے۔ اسی روز پشاور میں ترجمان کی گاڑی پر نامعلوم افراد کی فائرنگ سے سابق رکن قومی اسمبلی الحاج شاہ جی گل آفریدی کے ترجمان جاں بحق اور ایک شہری زخمی ہوگیا۔ [1]

13 جولائی کو مستونگ اور بنوں میں انتخابی جلسوں پر دو الگ الگ بم دھماکوں میں 154 افراد جاں بحق اور 220 سے زائد زخمی ہوئے۔ بنوں میں جے یو آئی (ف) کے امیدوار اکرم خان درانی کی گاڑی کے قریب نصب بم پھٹنے سے 4 شہری جاں بحق اور 10 زخمی ہوگئے۔ [2] مستونگ میں، اسلامک اسٹیٹ آف عراق اینڈ دی لیونٹ (داعش) سے وابستہ ایک خودکش بمبار نے بی اے پی کے بلوچستان اسمبلی کے امیدوار نوابزادہ سراج رئیسانی کی انتخابی ریلی میں خود کو دھماکے سے اڑا لیا، جس میں وہ اور 148 دیگر افراد ہلاک اور 186 سے زائد زخمی ہوئے۔ 22 جولائی کو، پی ٹی آئی کے امیدوار برائے حلقہ PK-99 اکرام اللہ گنڈا پور اور ان کا ڈرائیور ڈیرہ اسماعیل خان کے مضافات میں کارنر میٹنگ کی طرف جا رہے تھے کہ ان کی گاڑی کے قریب خودکش بمبار نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا ۔ اسی روز بنوں میں نامعلوم مسلح افراد نے درانی کی گاڑی پر فائرنگ کردی۔ گاڑی بلٹ پروف ہونے کی وجہ سے فائرنگ کے دوران کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔ درانی کو قتل کرنے کی یہ دوسری ناکام کوشش تھی اور دو ہفتوں کے دوران شہر میں دہشت گردی کا تیسرا واقعہ۔ 24 جولائی کو مشرقی بلوچستان کے علاقے دشتوک میں 3 فوجیوں اور ایک شہری کو گھات لگا کر پولنگ عملے کی حفاظت کے دوران ہلاک کر دیا گیا، 14 مزید زخمی ہوئے، 10 کی حالت تشویشناک ہے۔

2018 کوئٹہ خودکش دھماکہ[ترمیم]

Location of incidents in Pakistan
Swabi
Swabi
Larkana
Larkana
Faisalabad
Faisalabad
Kohistan
Kohistan
Khanewal
Khanewal
Badin
Badin
Rajanpur
Rajanpur
Sanghar district
Sanghar district
Dadu
Dadu
Nasirabad District
Nasirabad District
Quetta
Quetta
Karachi
Karachi
پاکستان کے نقشے پر دکھائے گئے واقعات کا مقام


25 جولائی کو عام انتخابات کی پولنگ کے دوران کوئٹہ میں پولنگ اسٹیشن کے باہر بم دھماکے کے نتیجے میں 31 افراد جاں بحق اور 35 سے زائد زخمی ہوئے۔ گروپ کی عماق نیوز ایجنسی کے مطابق، اسلامک اسٹیٹ آف عراق اینڈ دی لیونٹ نے حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

دیگر پرتشدد واقعات[ترمیم]

خیبر پختونخواہ[ترمیم]

صوبہ خیبر پختونخوا کے شمالی شہر صوابی میں پی ٹی آئی کے حامیوں کی سیکولر عوامی نیشنل پارٹی (اے این پی) کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں ایک شخص ہلاک اور تین زخمی ہو گئے۔

کوہستان میں آزاد امیدواروں کے دو مختلف گروپوں میں ہاتھا پائی کے نتیجے میں کم از کم سات افراد زخمی ہو گئے۔ [3]

سندھ[ترمیم]

لاڑکانہ میں، جنوبی صوبہ سندھ کے شہر لاڑکانہ میں پولنگ اسٹیشن کے باہر دستی بم حملے میں کم از کم تین دیگر افراد زخمی ہوگئے۔

ضلع سانگھڑ میں پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس (جی ڈی اے) پارٹی کے ارکان کے درمیان پرتشدد تصادم ہوا۔ جھگڑا اس وقت شروع ہوا جب تکنیکی وجوہات کی بنا پر ایک خاتون کو ووٹ ڈالنے سے روک دیا گیا۔ اس واقعے میں متعدد افراد زخمی ہو گئے۔

صوبہ سندھ کے شہر دادو میں فائرنگ سے تین افراد زخمی ہوگئے۔ پولیس نے فائرنگ کرنے والے سمیت سات افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔ [4]

بدین میں پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس (جی ڈی اے) پارٹی کے ارکان کے درمیان ایک اور تصادم ہوا۔ واقعے میں چھ افراد زخمی ہوگئے۔ [5]

کراچی میں نامعلوم افراد کے ایک گروپ نے عمران خان کے اپنے مخالف پاکستان مسلم لیگ (ن) کے حامیوں کو گدھا کہنے کے بیان کے بعد گدھے پر 'نواز' کا لفظ رنگ دیا۔ گدھے کو بعد میں ہجوم نے تشدد کا نشانہ بنایا اور گاڑی سے ٹکرایا۔ جانوروں کی فلاحی تنظیم عائشہ چندریگر فاؤنڈیشن نے گدھے کو بچانے کی کوشش کی لیکن وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا۔

پنجاب[ترمیم]

خانیوال میں سیاسی تصادم میں فائرنگ سے ایک شخص جاں بحق اور ایک زخمی ہوگیا۔

راجن پور میں پاکستان مسلم لیگ (ن) اور پاکستان تحریک انصاف کے کارکنوں میں تصادم کے نتیجے میں متعدد افراد زخمی ہوگئے۔

فیصل آباد میں پولیس نے این اے 105 کے باہر سے اسلحہ لے جانے والے دو ملزمان کو گرفتار کر لیا۔ AK-47 کلاشنکوف اور میگزین، جو ان کے شخص پر پائے گئے، پولیس نے ضبط کر لیے۔ [6]

بلوچستان[ترمیم]

ضلع نصیر آباد میں فائرنگ سے دو افراد زخمی ہوگئے۔

مزید مطالعہ[ترمیم]

  • 2013 کے پاکستان میں انتخابات کے دن بم دھماکے ، پچھلے انتخابات میں اسی طرح کے مہلک ترین حملے۔
  • 2018 میں پاکستان میں دہشت گردی کے واقعات

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Political worker shot dead in Peshawar". Tribune.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 12 جولا‎ئی 2018. 
  2. "Four killed as blast targets JUI-F leader Akram Khan Durrani's convoy in Bannu". www.geo.tv. اخذ شدہ بتاریخ 13 جولا‎ئی 2018. 
  3. "Live Blog - DAWN.COM". www.dawn.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 25 جولا‎ئی 2018. 
  4. "Live Blog - DAWN.COM". www.dawn.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 25 جولا‎ئی 2018. 
  5. "Live Blog - DAWN.COM". www.dawn.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 25 جولا‎ئی 2018. 
  6. "Live Blog - DAWN.COM". www.dawn.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 25 جولا‎ئی 2018.