بحر (شاعری)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

علم عروض کے وہ مقررہ پیمانے جن کے اوزان میں شعر کہا جا سکے۔

تاریخ[ترمیم]

عروض کی مروجہ بحروں کا مدون خلیل بن احمد عروضی ( متوفی 175ھ / 791ء ) ہے۔ اساتذہ نے وقتاً فوقتاً اس کی مدونہ بحروں میں ارکان و زحافات کا تغیر کر کے نئی بحریں نکالیں چناچہ آج کل غزل، قصیدہ، قطعہ وغیرہ کے لیے 19 بحریں اور مثنوی کے لیے 7 بحریں رائج ہیں۔

ارتقاء[ترمیم]

بیسویں صدی عیسوی کے آغاز میں اردو شعراء نے ہندی عروض (پنگل) سے متاثر ہو کر نئی بحریں وضع کی جو لطافت و تاثر سے خالی نہیں۔ ان شعراء میں عظمت اللہ خان کا نام خصوصاً قابل ذکر ہے۔