ابن کلیم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

معروف اُردو و سرائیکی ادیب، شاعر، خطاط، کالم نگار (وِلادت:3 جنوری 1946ء  وفات:  12 مارچ 2017ء ملتان)

Ibne Kaleem Ahsan Nizami
ابن کلیم احسن نظامی [1]

حافظ محمد اِقبال المعروف اِبنِ کلیم احسن نظامی[2][3] ملتان کے معروف خطاط"احسنُ التحریر" محمد حسن خان کلیم رقم (خطاطِ ایشیا) کے گھر پیدا ہوئے۔ حفظِ قرآن کے بعد ایم اے عربی کی تعلیم مکمل کی اور ساتھ ہی خطاطی کی تمام مروّجہ اصناف پر عبور حاصل کیا۔ خطاطِ  ہفت قلم ہونے کے ساتھ ساتھ آپ کو ایک نئے طرزِ تحریر ’’خطِ رعنا‘‘ کی ایجاد کا اعزاز حاصل ہے جسے دُنیا بھر کے صاحبانِ علم و فن اور معروف اِداروں کی جانب سے  خطِ نستعلیق کی ایجاد کے 700 سال بعد ایک با ضابطہ خط تسلیم کیا گیا[4] ۔ 1960ء میں دبستان فروغِ خطاطی رجسٹرڈ کے نام سے پاکستان میں خطاطی کی ترویج کا پہلا اِدارہ قائم کیا جس کے تحت دُنیا بھر میں خطاطی کے فن کی نمائشیں، مقابلے اور معروف جامعات میں ورکشاپس کیں۔ آپ نے فنِ خطاطی کے موضوع پر متعدد مقالات اور 30 معرکہ آرا کتب تخلیق کیں۔ آپ نے اپنے فن کی 60 سے زائد قومی و بین الاقوامی نمائشیں کیں اور 80 سے زائد قومی و بین الاقوامی اجتماعی نمائشوں میں حصہ لیا۔ آپ کو فن اور خدمات کے اعتراف میں قومی و بین الاقوامی اِداروں کی طرف سے 35 سے زائد ایوارڈز و اعزازات سے نوازا جا چکا ہے۔ خصوصاً ترکی کے معروف اِدارہ آرسیکا نے آپ کو 1982 ء  میں ’’نادر القلم‘‘ کے اعزاز سے نوازا۔ آپ نے عمران سیریز کے بھی چند مشہور ناول لکھے ہیں اور عمران سیریز کے ایک ادھ مصنف کے چند ناول آپ کی زیر نگرانی بھی شائع ہو چکے ہیں۔

ابنِ کلیم احسن نظامی (1946 تا 2017)

سوانح

پیدائشی نام

حافظ محمد اقبال خان لنگاہ

معروف نام

ابنِ کلیم احسن نظامی

ولادت

3-جنوری- 1946

وفات

12-مارچ - 2017

جائے ولادت و وفات

مدینۃ الاولیاء ملتان شریف

والدِ کانام

محمد حسن خان کلیم رقمؔ (خطاطِ ایشیا)

تعلیم

حفظِ قرآن، ایم اے عربی

فنی و اَدبی خدمات و اعزازات

عمران سیریز

عمران سیریز اور جاسوسی دنیا (فریدی حمید سیریز) اردو ادب اور اردو جاسوسی ادب کے بین الاقوامی شہرت یافتہ عظیم مصنف ابن صفی صاحب کے تخلیق کردہ دو الگ الگ مشہور و معروف سلسلے ہیں، ابن صفی صاحب کے تخلیق کردہ کرداروں میں اردو ادب کے عالمی شہرت یافتہ کردار کرنل فریدی، کیپٹن حمید و علی عمران وغیرہ ہیں، ابن صفی کی تخلیق کردہ عالمی شہرت یافتہ دونوں سیریز پر ڈیڑھ سو ’’150‘‘ کے لگ بھگ مصنفین نے لکھا اور بہت ساروں نے شہرت حاصل کی ان مصنفین میں سے ایک ابن کلیم صاحب بھی ہیں۔

ایک اندازے کے مطابق ابن کلیم نے 1964ء کے لگ بھگ عمران سیریز ناول لکھنے کا آغاز کیا، اسی طرح ابن کلیم نے جمال پبلشرز بوہر گیٹ ملتان کے اشاعتی ادارے سے تقریباً 1971ء یا 1972ء میں عمران سیریز کے چند ناول لکھے جنہیں بہت شہرت ملی، اس ادارے کو چلانے والے کوئی بی اے جمال تھے، تقریباً 1973ء و 1974ء میں اسی اشاعتی ادارے ’’جمال پبلشرز ملتان‘‘ سے ابن کلیم صاحب کی زیرنگرانی ایک یا ایک سے زائد عمران سیریز مصنفین کے ناول بھی شائع ہوئے۔

ایک تحقیق کے مطابق اظہر کلیم و ابن کلیم کے ناموں کی پیروی میں چند دوسرے عمران سیریز مصنفین بھی سامنے آئے جن کے ناموں میں ’’کلیم‘‘ نام شامل تھا ان ناموں میں سے عمران سیریز کے ایک مصنف مظہر کلیم کا نام کافی مشہور ہوا، ان کے علاوہ اسد کلیم وغیرہ نام بھی عمران سیریز مصنفین میں سامنے آئے۔ تفصیلات کے لیے عمران سیریز کے مصنفین دیکھ سکتے ہیں۔

وجہ شہرت

اسلامی خطاطی کے فن میں تحقیقی و تخلیقی خدمات اَنجام دیں اور ہزاروں فن پارے تخلیق کیے۔ بحیثیت شاعر ، اَدیب و صحافی بھی معروف ہیں۔

فنی خصوصیات

خطاط  ہفت قلم، موجدِ خطِ رعنا  (خطِ نستعلیق کی ایجاد کے سات سو سال بعد آپ نے  خطِ رعنا ایجاد کیا۔ یہ نیا باضابطہ طرزِ تحریر عربی، فارسی، اُردو، پنجابی و سرائیکی زبانوں کی تحریر کا نمائندہ خط ہے).

چیف آرگنائزرـ

1960ءسے اسلامی و قرآنی خطاطی کی ترویج و ترقی کا ادارہ ’’دبستان فروغِ خطاطی رجسٹرڈ‘‘ آرگنائز کیا۔

مقالہ جات

مختلف موضوعات پر 200کے قریب آپ کے تحریر کردہ مقالہ جات /آرٹیکلز قومی و بین الاقوامی اخبارات و جرائد میں شائع ہوئے۔

اعزازی لقب

’’نادرُالقلم‘‘ (بین الاقوامی کمیشن اسلامی ثقافتی وِرثہ ترکی ، کی طرف سے)، شاہ خالد گولڈ میڈل (پاکستان سوسائٹی فار یونیٹی آف مسلم ورلڈ لاہور کی جانب سے)

فنِ خطاطی میں نمایاں خدمات

گذشتہ نصف صدی سے دبستان فروغِ خطاطی رجسٹرڈ و دیگر خطاطی کی تنظیموں سے وابستگی کے ساتھ فن خطاطی (اسلامک کیلی گرافی) کی تعلیم و تربیت اور ترویج کا فریضہ انجام دے رہے ہیں۔اس ضمن میں مختلف مقامات پر بارہا خطاطی کی نمائشیں اور ورکشاپس (ڈیمونسٹریشن) کا اہتمام بھی کیا۔ فنِ خطاطی میں آپ کی خدمات سے مستفیض ہونے والے شاگردوں کی تعداد ہزاروں میں ہے۔

تخلیقات کی نمائشیں

ایک سو بیس سے زائد پاکستان کے بیشتر شہروں میں، غالب اَکیڈمی نیو دہلی میں 1982, 1980اور 1997ء میں صرف اِبنِ کلیم کے فن پاروں پر مشتمل نمائشیں۔ اس کے علاوہ دمشق، استنبول، اسٹاک ہولم (سویڈنکوپن ہیگن (ڈنمارک) تہران، مشہد (ایران) اور جدہ ، ریاض (سعودی عرب ) و دیگر ممالک میں نمائش ہائے خطاطی۔

سند و ٹرافی

  • ’’بارانِ غدیر ایوارڈ‘‘ حوزہ ہنری ایران 2012ء
  • لیگ آف عرب اسٹیٹس نیو دہلی و عرب کلچرل سنٹر نیو دہلی 1980ء
  • ہجویری ایوارڈ (پاکستان کیلی گراف آرٹسٹس گلڈ کی جانب سے)2004ء

گولڈ میڈلسٹ

قومی مقابلۂ خطاطی 1984ء میں، پاکستان نیشنل کونسل آف دی آرٹس اسلام آبادکی جانب سے، خطِ رعنا کی ایجاد پر بین الاقوامی آرٹ بینال میں اوّل انعام 1987ء میں منعقدہ الحمرا آرٹ گیلری لاہور میں دیا گیا۔

حوالہ جات

  1. Ibne Kaleem۔ "https://dailypakistan.com.pk/13-Mar-2017/541912"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ External link in |title= (معاونت)
  2. سچ نیوز ٹی وی کا خصوصی تعارفی مضمون۔مورخہ 15مارچ 2017۔ بر موقع انتقالِ پُر ملال۔
  3. "https://www.suchtv.pk/urdu/pakistan/punjab/item/38318-ibne-kaleem-died-in-multan.html"۔ 15-مارچ-2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ Check date values in: |date= (معاونت); External link in |title= (معاونت)
  4. "http://kaleemmag.blogspot.com/2012/02/"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ External link in |title= (معاونت)