تھائی لینڈ میں قحبہ گری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پتایا شہر کے ایک ریسورٹ میں طوائف۔

تھائی لینڈ میں قحبہ گری (انگریزی: Prostitution in Thailand) صدیوں سے جاری ہے۔ سلطنت ایودھیا (1351ء تا 1967ء) میں قحبہ گری کو قانونی درجہ حاصل تھا اور اس پر ٹیکس لگتا تھا[1] یہی نہیں بلکہ سرکاری قحبہ خانے بھی موجود تھے۔[2] تاہم 1960ء سے تھائی لینڈ میں عصمت فروشی غیر قانونی ہے۔ اس کے باوجود 2015ء میں تھائی لینڈ میں قحبہ گری سے $6.4 بلین ڈالر کی آمدنی ہوئی۔[3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Wathinee Boonchalaksi؛ Philip Guest (1994)۔ Prostitution in Thailand (پی‌ڈی‌ایف)۔ Institute for Population and Social Research, Mahidol University۔ آئی ایس بی این 978-9745876569۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2018۔
  2. Chaiyot Yongcharoenchai (2017-02-26)۔ "No Sex Please, We're Thai"۔ Bangkok Post۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2018۔
  3. Siam Voices (3 جولائی 2015)۔ "Prostitution: Thailand's worst kept secret"۔ Asian Correspondent۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 جنوری 2018۔

بیرونی روابط[ترمیم]