عبد الباری ندوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

مولانا عبد الباری1886ء میں ہندوستان کے علاقے بارہ بنکہ میں وہاں کے ریاستی طبیب حکیم عبد الخالق کے گھر پیدا ہوئے ۔آبائی  وطن لکھنؤ  تھا ۔ ابتدائی  تعلیم  مولانا ادریس  گرامی سے حاصل کی ۔1902ء میں ندوہ میں داخل ہوئے ۔سید سلمان ندوی ؒ کی رفاقت میں علامہ شبلی کی نگرانی میں علمی مدارج طے کیے۔عربی زبان اور علم فلسفہ میں زبردست مہارت تھی۔دارالمصنفین،دکن کالج پونہ اورجامعہ عثمانیہ حیدرآباد میں تدریسی خدمات سرانجام دیں۔مولانا حسین احمد مدنیؒ اور مولانا اشرف علی تھانویؒ سے تصوف و سلوک  کا تعلق تھا ۔کئی کتب تصنیف کیں۔30جنوری 1976ء کو 90 سال  کی عمر میں فوت ہوئے ۔[1]

عبد الباری ندوی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1886  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بارہ بنکی ضلع  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 30 جنوری 1976 (89–90 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لکھنؤ  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ فلسفی،  استاد جامعہ،  جامعہ عثمانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P islam.svg باب اسلام

عبد الباری ندوی (1396ھ / 1976 ء) ایک بھارتی عالم دین، فلسفی، صوفی اور کئی کتابوں کے مصنف تھے۔ دار العلوم ندوۃ العلماء سے تعلیم حاصل کی۔ جامعہ عثمانیہ حیدرآباد میں جدید فلسفہ کے استاد رہے اور 27 محرم 1396ھ مطابق 1976ء کو وفات پائی۔  کئی تصنیفات یادگار چھوڑیں جن میں مذہب اور جدید سائنس، تجدید معاشیات، تجدید تصوف وغیرہ شامل ہیں۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Nadwi (March 1976). Molana Abdul Bari. Nadwatul musannifeen,Azam Garh,Delhi: Monthly Marif. صفحات 229–232. ISBN Pdf.format تأكد من صحة |isbn= القيمة: invalid character (معاونت). 
  2. یوسف، محمد خیر رمضان۔ المستدرك على تتمة الأعلام (پہلا ایڈیشن). بیروت: دار ابن حزم۔ صفحہ 54.