انڈین نیشنل کانگریس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
انڈین نیشنل کانگریس کا پرچم

انڈین نیشنل کانگریس (انگریزی: Indian National Congress) (جسے کانگریس پارٹی اور آئی این سی بھی کہا جاتا ہے) بھارت کی ایک بڑی سیاسی جماعت ہے۔ جماعت کا قیام دسمبر 1885ء میں عمل میں آیا جب ایلن اوکٹیوین ہیوم، دادابھائی نوروجی، ڈنشا واچا، ومیش چندر بونرجی، سریندرناتھ بینرجی، مونموہن گھوش اور ولیم ویڈربرن نے اس کی بنیاد رکھی۔ اپنے قیام کے بعد یہ ہندوستان میں برطانوی راج کے خلاف جدوجہد کرنے والی ایک اہم جماعت بن گئی اور تحریک آزادئ ہند کے دوران اس کے ڈیڑھ کروڑ سے زائد اراکین تھے۔

پاکستان کے بانی محمد علی جناح بھی مسلم لیگ میں شمولیت سے قبل اس جماعت میں شامل رہے ہیں جبکہ ہندوستان کی تاریخ کی کئی عظیم شخصیات بھی اس جماعت سے وابستہ رہی ہیں جن میں موہن داس گاندھی، جواہر لعل نہرو، ولبھ بھائی پٹیل، راجندر پرساد، خان عبدالغفار خان اور ابو الکلام آزاد زیادہ معروف ہیں۔ ان کے علاوہ سبھاش چندر بوس بھی کانگریس کے سربراہ رہے تھے تاہم انہیں اشتراکی نظریات کی وجہ سے جماعت سے نکال دیا گیا۔

بعد آزاد تقسیم کے معروف کانگریسی رہنماؤں میں اندرا گاندھی اور راجیو گاندھی معروف ہیں۔

1947ء میں تقسیم ہند کے بعد یہ ملک کی اہم سیاسی جماعت بن گئی، جس کی قیادت بیشتر اوقات نہرو-گاندھی خاندان نے کی۔ 15 ویں لوک سبھا (2009ء تا حال) میں 543 میں سے اس کے 206 اراکین ہیں جو تمام جماعتوں میں سب سے زیادہ ہیں۔ یہ جماعت بھارت کے حکمران یونائیٹڈ پروگریسیو الائنس کی سب سے ہم رکن ہے۔ یہ بھارت کی واحد جماعت ہے جس نے گزشتہ تین انتخابات (1999ء، 2004ء، 2009ء) میں 10 کروڑ سے زائد ووٹ حاصل کیے ہیں۔

پارٹی کی موجودہ سربراہ (چیئرپرسن) سابق وزیر اعظم راجیو گاندھی کی اطالوی اہلیہ سونیا گاندھی ہیں جبکہ لوک سبھا میں اس کے رہنما پرناب مکھرجی ہیں۔ راجیہ سبھا میں اس کی قیادت وزیر اعظم منموہن سنگھ کر رہے ہیں۔

کانگریس کو 1975ء میں بھارت میں ہنگامی حالت کے نفاذ اور 1984ء میں سکھ مخالف فسادات (آپریشن بلیو اسٹار) کے باعث شدید تنقید کا باعث بھی بننا پڑا۔

کانگریس سے تعلق رکھنے والے وزرائے اعظم[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]