"جاوید منزل" کے نسخوں کے درمیان فرق

Jump to navigation Jump to search
1,272 بائٹ کا اضافہ ،  11 مہینے پہلے
کوئی ترمیمی خلاصہ نہیں
(1 مآخذ کو بحال کرکے 0 پر مردہ ربط کا ٹیگ لگایا گیا) #IABot (v2.0.7)
(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم)
 
جاوید منزل کو اب اقبال میوزیم عجائب گھر کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ [[1977ء]] میں جب علامہ اقبال کا صد سالہ جشن ولادت منایا جا رہا تھا تو حکومت نے [[اقبال منزل]] سیالکوٹ، اقبال کی میکلوڈ روڈ والی رہائش گاہ اور جاوید منزل کو تحویل میں لینے کا منصوبہ بنایا۔ اس کے بعد ان تینوں مقامات کو میوزیم میں بدل دیا گیا۔ حکومت نے اس سلسلے میں ان عمارتوں کو خرید لیا تھا۔ مئی [[1935ء]] میں [[علامہ اقبال]] اور ان کے اہل خانہ [[میکلوڈ روڈ]] والی کوٹھی سے جاوید منزل میں منتقل ہو گئے ۔ [[علامہ اقبال]] نے [[میکلوڈ روڈ]] والے گھر میں 13 سال گزارے،وہ یہاں [[1922ء]] میں آئے تھے۔ آخری عمر میں علامہ کو اپنا گھر ملا تو اسے اپنے چہیتے صاحبزادے ''جاوید'' کے نام سے موسوم کر دیا ۔ حکومت [[جاپان]] نے اس ضمن میں بہت مدد کی اور [[اقبال میوزیم]] کے لیے جاپان کے ثقافتی فنڈ سے شوکیسوں اور ائیر کنڈیشنروں کے علاوہ متعلقہ سامان اور دیگر امور کی انجام دہی کے لیے 54 لاکھ روپے کی اضافی امداد بھی مہیا کی ۔ میوزیم کی تیاری کے بعد اسے [[محکمہ آثار قدیمہ]] حکومت پاکستان کے سپرد کر دیا گیا ،جو اب بھی اس کی تحویل میں ہیں ۔ [[اقبال میوزیم]] ، 9 گیلریوں پر مشتمل ہے۔ میوزیم میں علامہ کی کئی اشیا موجود ہیں، جو ان کے صاحبزادے [[جاوید اقبال]] نے میوزیم کو عطیہ کی تھیں۔ ان اشیاء میں اقبال کا پاسپورٹ، دستخط کی مہر، ملاقاتی کارڈوں والا بٹوا، بنک کی کتاب، عینکیں ، انگوٹھیاں، کف لنکس، پگڑی، قمیض، جوتے، کوٹ، تولیے ، چھڑیاں، ٹائیاں، کالر، دستانے، وکالتی کوٹ ، جناح کیپس، گرم سوٹ جو لندن کی ریجنٹ سٹریٹ سے سلوائے گئے تھے۔ پشمینہ شیروانی، حیدرآباد دکن کے وزیر اعظم مہاراجا سرکرشن پرشاد کی جانب سے ارسال کردہ قالین، قلم، مسودے،خطوط، دستاویزات، تصاویر اور متعدد دیگر اشیاء شامل ہیں۔ میوزیم کا رقبہ تقریباً سات کنال ہے۔ <ref>''پاکستان کے آثارِ قدیمہ''شیخ نوید اسلم </ref>
 
جاوید منزل (علامہ اقبال کی رہائش گاہ) کو 26 ستمبر 1984ء کو علامہ اقبال میوزیم میں تبدیل کر دیا گیا تھا‘ جس کا باقاعدہ افتتاح اُس وقت کے صدرِ پاکستان جنرل محمد ضیا الحق نے کیا تھا۔ علامہ اقبال اپنے خاندان کے باقی افراد کے ہمراہ اس مکان میں 20 مئی 1935ء کو سکونت پذیر ہوئے تھے اور اپنی وفات 21 اپریل 1938ء تک آپ یہی مقیم رہے۔ 23 مئی 1935ء کو سردار بیگم کی وفات اسی گھر میں ہوئی. یہ گھر انہی کی خواہش پر اقبال نے تعمیر کروایا تھا. اسی جگہ محمد علی جناح نے فاطمہ جناح کے ساتھ آپ سے ملاقات کی تھی۔ آپ نے یہ گھر اپنے فرزند جاوید کے نام ہبہ کر دیا تھا۔ اب یہاں علامہ اقبال کے زیر استعمال رہنے والی اشیاء کو عوام الناس کے لیے ایک عجائب گھر کی صورت میں نمائش کر دیا گیا ہے.
<ref >(تحریر و تحقیق: میاں ساجد علی' علامہ اقبال سٹمپ سوسائٹی)</ref >
 
== مزید دیکھیے ==

فہرست رہنمائی