عامر سہیل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

عامر سہیل ٹیسٹ کیپ نمبر122
Aamir Shoail.jpeg
ذاتی معلومات
مکمل ناممحمد عامر سہیل علی
پیدائش14 ستمبر 1966ء (عمر 55 سال)
لاہور, پنجاب, پاکستان
بلے بازیبائیں ہاتھ
گیند بازیبائیں بازو کی آرتھوڈاکس سپن
حیثیتاوپننگ بلے باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 122)4 جون 1992  بمقابلہ  انگلینڈ
آخری ٹیسٹ5 مارچ 2000  بمقابلہ  سری لنکا
پہلا ایک روزہ (کیپ 80)21 دسمبر 1990  بمقابلہ  سری لنکا
آخری ایک روزہ19 فروری 2000  بمقابلہ  سری لنکا
قومی کرکٹ
سالٹیم
1983–1999لاہور
1987–1992حبیب بینک لمیٹڈ
1995–2001الائیڈ بینک لمیٹڈ
1998–1999کراچی
2000–2001لاہور
2001سومرسیٹ
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس کرکٹ LA
میچ 47 156 195 261
رنز بنائے 2823 4780 12213 7852
بیٹنگ اوسط 35.28 31.86 38.89 31.91
100s/50s 5/13 5/31 29/50 9/50
ٹاپ اسکور 205 134 205 134
گیندیں کرائیں 2383 4836 12063 7840
وکٹ 25 85 157 179
بالنگ اوسط 41.96 43.56 38.10 33.34
اننگز میں 5 وکٹ 0 0 2 0
میچ میں 10 وکٹ 0 n/a 1 n/a
بہترین بولنگ 4/54 4/22 7/53 4/11
کیچ/سٹمپ 36/– 49/– 153/– 92/–
ماخذ: CricketArchive، 30 مارچ 2010

محمد عامر سہیل علی(پیدائش:14 ستمبر 1966ءلاہور ،پنجاب) ایک پاکستانی کرکٹر ہیں۔[1]جنہوں نے پاکستان کی طرف سے 47 ٹیسٹ میچ اور 147 ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں اپنی اعلی کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے وہ پاکستان کرکٹ ٹیم کے بائیں ہاتھ کے اوپننگ بلے باز تھے۔ اور کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے بعد مبصر کی حثیت سے اپنے فرائض ادا کرتے رہے ہیں سہیل نے 1983 میں اپنا فرسٹ کلاس ڈیبیو کیا، وہ بائیں ہاتھ کے اوپننگ بلے باز اور کبھی کبھار بائیں ہاتھ کے اسپن بولر تھے۔عامر سہیل نے پاکستان کے علاوہ الائیڈ آف پاکستان، حبیب بینک آف پاکستان، کراچی، لاہور، راولپنڈی، سرگودھا اور سمر سیٹ کرکٹ کائونٹی کی طرف سے بھی کرکٹ کھیلی۔

ابتدائی سال[ترمیم]

ایک جارحانہ بلے باز، سہیل پہلی بار 1990ء میں سری لنکا کے خلاف ایک روزہ بین الاقوامی میچ میں قومی ٹیم کے لیے نمودار ہوئے اور ایک کامیاب بین الاقوامی کیریئر کا لطف اٹھایا۔ وہ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں 1992ء کا کرکٹ ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیم کا ایک اہم رکن تھا۔

کپتانی[ترمیم]

سہیل نے 1998ء میں چھ ٹیسٹ میں پاکستان کی کپتانی کی، وہ جنوبی افریقہ کو ٹیسٹ میچ میں شکست دینے والے پہلے پاکستانی کپتان بن گئے۔ انہوں نے 1996ء سے 1998ء تک 22 ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں پاکستان کی قیادت کی، نو میں کامیابی حاصل کی اور بلے سے 41.5 کی اوسط تھی۔ انہوں نے شارجہ میں ویسٹ انڈیز کے خلاف پاکستان کے قائم مقام کپتان کے طور پر بھی کام کیا۔

تنازعات[ترمیم]

سہیل نے 1992ء میں پاکستان کی ورلڈ کپ جیتنے میں ایک بڑا کردار ادا کیا تھا، جس نے مشہور طور پر ایان بوتھم کو بتایا کہ وہ اپنی ساس کو بیٹنگ کے لیے بھیجنا چاہتے ہیں، بوتھم کے اس بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہ وہ اپنی ساس کو بھی نہیں بھیجیں گے۔ فائنل میں بوتھم کے متنازعہ طور پر بغیر کسی نقصان کے آؤٹ ہونے کے بعد پاکستان کے لیے قانون۔ 1996ء کے ورلڈ کپ کے کوارٹر فائنل میں بنگلور میں روایتی حریف بھارت کے خلاف سہیل اپنی ٹیم کی کپتانی کر رہے تھے جو 49 اوورز میں 287 رنز کے نسبتاً بڑے ہدف کے تعاقب میں تھے۔ سعید انور کے ساتھی، انہوں نے پاکستان کو شاندار آغاز فراہم کیا۔ ایک وکٹ پر 109 کے اسکور کے ساتھ، اور سعید انور (48) کے پویلین میں واپس، سہیل نے ہندوستانی تیز گیند باز وینکٹیش پرساد کی گیند کو کور کے ذریعے چار رنز پر آؤٹ کیا۔ دونوں کھلاڑیوں میں الفاظ کا تبادلہ ہوا، اور سہیل نے غیر ضروری طور پر پرساد کی طرف جارحانہ انداز میں انگلی اٹھائی۔ اگلی ڈیلیوری نے اسے کلین بولڈ کر دیا اور بلے بازی کی تباہی کو جنم دیا جس سے بالآخر کھیل ہار گیا اور پاکستان کو مقابلے سے باہر کر دیا گیا۔ سہیل 1990ء کی دہائی میں کرکٹ کو ہلا دینے والے میچ فکسنگ سکینڈل کے مرکز میں تھے: قومی ٹیم کے کپتان کے طور پر، ان کے سیٹی بجانے سے ان کے بین الاقوامی کیریئر پر منفی اثر پڑ سکتا ہے۔

کرکٹ انتظامیہ[ترمیم]

2001ء میں کرکٹ سے ریٹائر ہونے کے بعد، سہیل قومی ٹیم کے چیف سلیکٹر بن گئے، ان کا دور جنوری 2004ء میں ختم ہو گیا جب ان کی جگہ قومی ٹیم کے سابق وکٹ کیپر وسیم باری نے لے لی۔ وہ کرکٹ براڈکاسٹر کے طور پر کام جاری رکھے ہوئے ہیں۔ 4 فروری 2014ء کو انہیں دوسری بار قومی ٹیم کا چیف سلیکٹر مقرر کیا گیا۔

سیاست[ترمیم]

18 اگست 2011ء کو سہیل نے اعلان کیا کہ وہ نواز شریف کی سیاسی جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن) میں شامل ہو گئے ہیں۔ سہیل کے مطابق ملک کو تجربہ کار اور تجربہ کار قیادت کی ضرورت ہے جو ان کے خیال میں مسلم لیگ ن پیش کرتی ہے۔

اعداد و شمار[ترمیم]

عامر سہیل نے 47 ٹیسٹ میچوں کی 83 اننگز میں 3 مرتبہ ناٹ آئوٹ رہ کر 2823 رنز سکور کئے۔ 205 اس کا کسی ایک اننگ کا سب سے بہترین انفرادی سکور تھا جبکہ اس کو اس فارمیٹ میں 35.28 کی اوسط حاصل ہوئی جس میں 5 سنچریاں اور 13 نصف سنچریاں بھی شامل تھیں جبکہ 156 ایک روزہ مقابلوں کی 155 اننگز میں 5 دفعہ ناٹ آئوٹ رہ کر اس نے 4780 رنز سکور کئے جس میں 134 اس کا سب سے زیادہ سکور تھا اور 31.86 کی اوسط سے حاصل کردہ ان اعداد و شمار میں 5 سنچریاں اور 31 نصف سنچریاں بھی شامل تھیں۔ عامر سہیل کا فرسٹ کلاس ریکارڈ بھی بہت متاثر کن ہے۔ انہوں نے 195 میچوں کی 331 اننگز میں 17 مرتبہ اپنی وکٹ بچا کر 12213 رنز 38.89 کی اوسط سے حاصل کئے۔ جس میں 205 اس کی کسی ایک اننگ کا بہترین سکور تھا۔ 29 سنچریاں اور 50 نصف سنچریاں بھی اس خوبصورت مجموعے کا حصہ تھیں۔ عامر سہیل نے ٹیسٹ میچوں میں 36، ایک روزہ مقابلوں میں 50 اور فرسٹ کلاس میچوں میں 153 کیچز بھی اپنے محفوظ ہاتھوں میں دبوچے۔

حوالہ جات[ترمیم]

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔