آصف اقبال (کرکٹ کھلاڑی)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(آصف اقبال (کرکٹر) سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
آصف اقبال رضوی ٹیسٹ کیپ نمبر 42
Asif iqbal cricketer.jpg
ذاتی معلومات
مکمل نامآصف اقبال رضوی
پیدائش6 جون 1943ء (عمر 79 سال)
حیدرآباد, ریاست حیدرآباد, برطانوی ہند
(اب بھارت تلنگانہ, بھارت)
قد1.75 میٹر (5 فٹ 9 انچ)
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا تیز گیند باز
حیثیتآل راؤنڈر
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 42)24 اکتوبر 1964  بمقابلہ  آسٹریلیا
آخری ٹیسٹ29 جنوری 1980  بمقابلہ  بھارت
پہلا ایک روزہ (کیپ 1)11 فروری 1973  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
آخری ایک روزہ20 جون 1979  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
1968ء – 1982ءکینٹ
1964ء – 1980ءپاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز
1976ء –1977ءنیشنل بینک آف پاکستان
1961ء– 1969ءکراچی کی کرکٹ ٹیموں کی فہرست
1959ء–1961ءحیدرآباد
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 58 10 440 259
رنز بنائے 3575 330 23329 5989
بیٹنگ اوسط 38.85 55.00 37.26 27.98
100s/50s 11/12 0/5 45/118 3/33
ٹاپ اسکور 175 62 196 106
گیندیں کرائیں 3864 592 18899 5017
وکٹ 53 16 291 126
بالنگ اوسط 28.33 23.62 30.30 25.96
اننگز میں 5 وکٹ 2 0 5 1
میچ میں 10 وکٹ 0 n/a 0 n/a
بہترین بولنگ 5/48 4/56 6/45 5/42
کیچ/سٹمپ 36/– 7/– 301/– 101/–
ماخذ: ESPNcricinfo، 8 مارچ 2013

آصف اقبال رضوی انگریزی: Asif Iqbal Razvi(پیدائش: 6 جون 1943ءحیدرآباد، آندھرا پردیش، ہندوستان) پاکستان کے کرکٹ کھلاڑی تھے جو پاکستان کے کپتان بھی رہ چکے ہیں [1]اب وہ آئی سی سی کے ریفری ہیں۔ ان کے والد مجید رضوی حیدرآباد کے لیے کھیلتے تھے اور ان کے ماموں مشہور آف اسپنر غلام احمد تھے، جنہوں نے ہندوستان کے لیے 22 ٹیسٹ کھیلے، آصف اقبال نے پاکستان کی طرف سے 58 ٹیسٹ میچوں میں شرکت کی جبکہ 10 ون ڈے انٹرنیشل میچ بھی کھیلے آصف اقبال حیدر آباد اس وقت بھارت میں پیدا ہوئے اور ان کا تعلق بھارت کے سابق ٹیسٹ کپتان غلام احمد اور بھارتی ٹینس اسٹار ثانیہ مرزا کے خاندان سے ہے۔ وہ ایک آل راؤنڈر کے طور پر اپنی الگ پہچان رکھتے ہیں جس نے دائیں ہاتھ سے بلے بازی کی اور دائیں ہاتھ سے میڈیم پیس گیندیں کیں۔انہوں نے پاکستان کی قومی کرکٹ ٹیم اور کینٹ کاؤنٹی کرکٹ کلب کی کپتانی کی۔ بعد میں وہ میچ ریفری بن گئے انہوں نے اپنی تعلیم مدرسہ عالیہ اسکول حیدرآباد، عثمانیہ یونیورسٹی حیدرآباد،اور سندھ مسلم کالج کراچی سے مکمل کی ان کا قد 5 فٹ 9 انچ تھا اور ان کا نک نیم جمی تھا[2] ان کے صاحبزادے ہشام اقبال (پیدائش:19 جنوری 1975ء فرنبورو، کینٹ) کینٹ کرکٹ بورڈ کے لسٹ اے کھلاڑی تھے جنہوں نے 8 فرسٹ کلاس میچوں میں شرکت کی ہے۔

فرسٹ کلاس کرکٹ[ترمیم]

آصف اقبال کو 1959-60ء کے سیزن میں حیدرآباد کے لیے 16 سال کی کم عمر میں رنجی ٹرافی کھیلنے کے لیے منتخب کیا گیا تھا۔ اگلے سیزن میں، 17 سال کی عمر میں، انھیں فضل محمود کی زیر قیادت دورہ کرنے والی پاکستانی ٹیم کے خلاف ساؤتھ زون کی جانب سے نمائندگی کرنے کے لیے منتخب کیا گیا۔ پہلی اننگز میں 52 رنز دے کر 4 وکٹیں لے کر میچ میں 6 وکٹیں لے کر سب کو متاثر کیا۔ فضل محمود نے غلام احمد کو مشورہ دیا کہ وہ آصف اقبال کو پاکستان بھیجیں جہاں انہیں اپنی صلاحیتوں کو دکھانے کے بہتر مواقع ملیں گے۔ آصف اقبال کے خاندان کے بہت سے افراد بشمول ان کے بھائی، پہلے ہی ہجرت کرکے کراچی میں آباد ہوچکے تھے اور آصف اقبال جلد ہی وہاں ان کے ساتھ شامل ہوگیا۔ ان کی آمد کے فوراً بعد ایمپائر ادریس بیگ نے ان سے رابطہ کیا جس نے انہیں پی ڈبلیو ڈی میں ملازمت دلائی اور آصف کو ان کے شاندار کیریئر پر لانچ کیا۔ آصف اقبال نےحیدرآباد، کراچی، کینٹ، نیشنل بینک آف پاکستان اور پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز کے لیے بھی کرکٹ کھیلی۔حیدرآباد ،ہندوستان میں کرکٹ سیکھنے کے بعد، وہ 1961ء میں پاکستان ہجرت کرکے پاکستان آگئے، جہاں انہوں نے بیٹنگ پر توجہ دینے سے پہلے سوئنگ باؤلنگ کے ساتھ باؤلنگ کا آغاز کیا آصف اقبال کو اپنے فٹ ورک اور متحرک کور ڈرائیونگ کے لیے مشہور خیال کیا جاتا ہے آصف اقبال کو 1963ء میں پاکستان ایگلٹس ٹیم کے ساتھ دورہ انگلینڈ کے لیے منتخب کیا گیا تھا۔ وہ اس دورے پر سب سے کامیاب باؤلر تھے اور انہوں نے ایک ہینڈی بلے باز کے طور پر بھی اپنی صلاحیت کا مظاہرہ کیا، جس نے منیجر میاں محمد سعید کو متاثر کیا جنہوں نے ان کے لیے ٹیسٹ کیریئر کی پیش گوئی کی تھی۔ یہ دعویٰ غلط نہیں تھا کیونکہ آصف نے 1964ء میں کراچی میں آسٹریلیا کے خلاف واحد واحد ٹیسٹ میں پاکستان کی ٹیم میں جگہ حاصل کی تھی۔ باؤلنگ آل راؤنڈر کے طور پر کھیلتے ہوئے، انہوں نے ایک اور ابھرتے ہوئے ٹیلنٹ، ماجد جہانگیر خان کے ساتھ باؤلنگ کا آغاز کیا۔ اوپننگ باؤلر کے طور پر دو وکٹوں کے علاوہ 41 اور 36 کی کارآمد اننگز نے قومی ٹیم کے دورہ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کے لیے آصف کا انتخاب جیت لیا۔1977ءمیں آصف اقبال نے ورلڈ الیون ٹیم کے لیے ورلڈ سیریز کرکٹ مقابلہ کھیلا۔

ٹیسٹ کرکٹ[ترمیم]

نیوزی لینڈ میں گیلے حالات اور سبز وکٹیں ان کی سوئنگ باؤلنگ کے لیے موزوں تھیں، اس نے تین ٹیسٹ سیریز میں صرف 13.77 رنز کی اوسط سے 18 وکٹیں حاصل کیں۔ وہ اپنا پہلا ٹیسٹ ففٹی بنانے میں بھی کامیاب رہے اور خود کو ٹیم کے باقاعدہ رکن کے طور پر قائم کیا۔ جب انگلینڈ کی انڈر 25 ٹیم نے 1967ء کے اوائل میں تین میچوں کی سیریز کے لیے پاکستان کا دورہ کیا تو آصف کو ایک مضبوط پاکستانی انڈر 25 اسکواڈ کی کپتانی سے نوازا گیا جو مستقبل قریب میں اس کی ٹیسٹ ٹیم کا مرکز بنے گا۔ ان کی ٹیم بہت سارے ٹیلنٹ پر مشتمل تھی، بشمول خود آصف، ماجد خان، مشتاق محمد، صادق محمد، وسیم باری، پرویز سجاد، سلیم الطاف اور شفقت رانا۔ آصف نے سامنے سے قیادت کی، اور ایک بلے باز کے طور پر شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے، اپنی پہلی فرسٹ کلاس سنچری اسکور کی، جو اپنے مخصوص شاندار انداز میں تیار کی گئی، جب اس نے دوسرے میچ میں اپنی ٹیم کو ممکنہ شکست سے بچانے کے لیے صرف 160 گیندوں پر 117 رنز بنائے۔اس موسم گرما کے بعد پاکستان کا دورہ انگلینڈ تھا جب آصف واقعی ایک بین الاقوامی سٹار کے طور پر بڑے ہوئے تھے۔ دورہ شروع ہونے سے پہلے اس کی کمر میں تکلیف ہوئی اور اس لیے انہوں نے اپنی بیٹنگ پر زیادہ توجہ دینے کا فیصلہ کیا۔ لارڈز میں ابتدائی ٹیسٹ میں، ابر آلود حالات نے ان کی درمیانے درجے کی تیز رفتار سیون اور سوئنگ باؤلنگ کی مدد سے انہیں تین وکٹیں حاصل کیں، جس نے ایک مرحلے پر 2 وکٹوں پر 283 رنز بنانے کے بعد انگلینڈ کا مجموعی اسکور 369 تک محدود کر دیا۔ جواب میں پاکستان کے ہچکچاہٹ کا خطرہ تھا جب آصف نے حنیف محمد کو 7 وکٹوں پر 139 رنز کے اسکور کے ساتھ کریز پر جوائن کیا۔ محتاط دفاع کو شاندار اسٹروک کھیل کے ساتھ ملاتے ہوئے آصف نے حنیف کے ساتھ 130 رنز کی شراکت میں 76 رنز بنائے جس سے پاکستان کو 354 رنز تک پہنچانے میں مدد ملی۔ باہر نکلیں اور ایک باعزت ڈرا حاصل کریں۔ تاہم، اوول میں یہ تیسرا ٹیسٹ تھا جہاں آصف نے واقعی ایک نایاب نسل کے کھلاڑی کے طور پر اپنے نشان پر مہر ثبت کی۔ پہلی اننگز میں انگلینڈ سے 224 رنز سے پیچھے، پاکستان اپنی دوسری اننگز میں 65 رنز 8 وکٹوں پر تباہی کے قریب تھا جب انتخاب عالم نے آصف کا ساتھ دیا۔ درحقیقت، ابتدائی اننگز کی شکست اتنی قریب تھی کہ اسپانسرز نے پہلے ہی ٹیسٹ کے اختتام کے بعد 20 اوور فی سائیڈ نمائشی میچ کا اہتمام کر رکھا تھا۔ یہ ممکنہ بدنامی آصف کے لیے بہت زیادہ تھی۔ اس نے انتقامی جذبے کے ساتھ انگریزوں کے حملے کا آغاز کیا، ڈرائیونگ، ہکنگ، کٹنگ اور کھینچتے ہوئے ریشمی فضل اور نایاب وحشیانہ امتزاج کے ساتھ ایک پرجوش امتزاج ملا۔ وزڈن نے اسے "خالص بیٹنگ جینیئس اور خوش گوار گال کا امتزاج" کے طور پر بیان کیا۔ دو گھنٹے اور انیس منٹ میں اس نے اپنی پہلی ٹیسٹ سنچری مکمل کی، جس میں 19 چوکے لگے۔ جب وہ نویں نمبر پر تھے تو پاکستان کا اسکور 255 تھا اور آصف اور انتخاب نے نویں وکٹ پر 190 رنز کی عالمی ریکارڈ شراکت قائم کی تھی۔آصف کا اپنا مجموعہ تین گھنٹے دس منٹ میں 21 چوکوں اور دو چھکوں کی مدد سے 146 تھا۔ یہ نمبر نو پوزیشن پر کھیلنے والے کسی بلے باز کا اب تک کا دوسرا سب سے زیادہ ٹیسٹ سکور تھا۔ انگلینڈ نے دوبارہ بیٹنگ کرنے پر مجبور ہو کر صرف 32 رنز کا اپنا جیتنے کا ہدف بخوبی عبور کر لیا، لیکن اس سے پہلے کہ ناقابل شکست آصف نے دونوں اوپنرز کو صرف 14 رنز پر آوٹ کر دیا۔ حیرت کی بات نہیں کہ وہ وزڈن کے سال کے پانچ کرکٹرز میں سے ایک کے طور پر نامزد ہوئے اور کاؤنٹی کرکٹ سرکٹ میں شامل ہونے کی پیشکشوں سے بھر گئے۔ اس نے کینٹ کا انتخاب کیا پاکستان کی ٹیم کی ایک مقررہ خصوصیت کے طور پر آصف نے اپنے برانڈ کی بیٹنگ جادوگرنی کے ساتھ شائقین کو محظوظ کرنا جاری رکھا، ولو کو ایک ایسے سکیمیٹر کے طور پر استعمال کیا جس سے دنیا بھر کے باؤلنگ اٹیک کو ختم کیا جا سکتا ہے۔ 1965ء میں نیوزی لینڈ کے اپنے پہلے دورے پر انہوں نے باؤلر کے طور پر شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔

اعدادوشمار[ترمیم]

آصف اقبال نے 58 ٹیسٹ میچوں کی 99 اننگز میں 7 مرتبہ ناٹ آئوٹ رہ کر 3575 رنز بنائے جس میں 175 ان کا سب سے زیادہ سکور تھا۔ 38.85 کی اوسط سے بنائے گئے ان رنزوں میں 11 سنچری اور 12 نصف سنچریاں بھی شامل تھیں جبکہ 440 فرسٹ کلاس میچوں کی 701 اننگز میں 75 بار ناٹ آئوٹ رہ کر انہوں نے 23329 رنز بنائے۔ 196 ان کا بہترین سکور تھا۔ 37.25 کی اوسط سے بنائے گئے ان رنزوں میں 45 سنچریاں بھی شامل تھیں۔اسی طرح انہوں نے 10 ون ڈے میچوں 330 رنز بنائے 62 کے بہترین انفرادی سکور کے ساتھ ان کو 55.00 رنز کی۔اوسط حاصل تھی۔انہوں نے ٹیسٹ کرکٹ میں 1502 رنز دے کر 53 وکٹیں حاصل کی تھیں۔ 48 رنز کے عوض 5 وکٹیں ان کا کسی ایک اننگ میں بہترین ریکارڈ تھا جبکہ 75 رنز کے عوض 6 وکٹوں کا حصول ان کے کسی میچ میں بہترین کارکردگی تھی۔ 328.33 کی اوسط سے لی گئی وکٹوں میں 2 دفعہ کسی ایک اننگ میں 5 یا 5 سے زائد وکٹ اور ایک دفعہ 4 وکٹ بھی شامل تھے اسی طرح فرسٹ کلاس کرکٹ میں 8776 رنز کے عوض 291 وکٹ 30.15 کی اوسط سے حاصل کئے 45/6 ان کی کسی ایک اننگ کی بہترین کارکردگی تھی جبکہ ون ڈے میچز میں 16 وکٹیں ان کی گیندوں پر وجود میں آئی تھیں اس کے علاوہ انہوں نے ایک ٹیسٹ اور 3 ون ڈے میچوں میں ایمپائرنگ کے فرائض بھی ادا کئے[3]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]