مشتاق محمد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مشتاق محمد ٹیسٹ کیپ نمبر 31
Mushtaq muhammad.jpeg
ذاتی معلومات
پیدائش22 نومبر 1943ء (عمر 78 سال)
جوناگڑھ، گجرات، برطانوی ہند (اب بھارت)
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا لیگ بریک، گوگلی گیند باز
حیثیتآل راؤنڈر
تعلقاتوزیر محمد (بھائی)
رئیس محمد (بھائی)
حنیف محمد (بھائی)
صادق محمد (بھائی)
شعیب محمد (بھتیجا)
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 31)26 مارچ 1959  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
آخری ٹیسٹ24 مارچ 1979  بمقابلہ  آسٹریلیا
پہلا ایک روزہ (کیپ 5)11 فروری 1973  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
آخری ایک روزہ3 نومبر 1978  بمقابلہ  بھارت
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 57 10 502 180
رنز بنائے 3643 209 31,091 4,471
بیٹنگ اوسط 39.17 34.83 42.07 29.22
100s/50s 10/19 – /1 72/159 1/24
ٹاپ اسکور 201 55 303* 131
گیندیں کرائیں 5260 42 47,226 2,090
وکٹ 79 936 49
بالنگ اوسط 29.22 24.34 30.24
اننگز میں 5 وکٹ 3 39
میچ میں 10 وکٹ n/a 2 4/30
بہترین بولنگ 5/28 7/18
کیچ/سٹمپ 42/– 3/– 349/– 48/–
ماخذ: ESPNcricinfo، 14 مارچ 2013

مشتاق احمد انگریزی:Mushtaq Mohammad(پیدائش:22 نومبر1943ءجوناگڑھ، گجرات، بھارت) سابق مشہور پاکستانی کرکٹ کھلاڑی اور کوچ ہیں[1] انہوں نے 1959 ء سے 1979ء تک 57 ٹیسٹ اور 10 ایک روزہ میچ کھیلے وہ بیٹنگ کے علاوہ سپن باؤلنگ بھی کرتے تھے۔ وہ 19 ٹیسٹ میچوں میں کپتان بھی رہے۔ایک دائیں ہاتھ کے بلے باز اور لیگ اسپنر جن کا شمار سب سے کامیاب پاکستانی آل راؤنڈر میں کیا جاتا ہے وہ ایک ہی ٹیسٹ میچ میں دو بار سنچری بنانے اور ایک اننگز میں پانچ وکٹیں لینے والے پہلے اور آج تک واحد پاکستانی ہیں۔ وہ پانچ محمد بھائیوں حنیف محمد، صادق محمد اور رئیس محمد میں سے ایک ہیں، جنہوں نے پاکستان کے لیے کرکٹ کھیلی۔ مشتاق محمد نے ریاستہائے متحدہ کی قومی کرکٹ ٹیم کی کوچنگ بھی کی تھی، لیکن بعد میں پاکستانی ٹیلی ویژن کے لیے کرکٹ کمنٹری میں واپس آگئے۔

ابتدائی زمانہ[ترمیم]

مشتاق محمد ریاست جوناگڑھ تب ہندوستان میں پیدا ہوئے اس موقع پر بی بی سی اردو کے عبد الرشید شکورکا بیان کردہ ایک دلچسپ واقعہ بیان کرتے ہیں کہ یہ پاکستان بننے سے پہلے کی بات ہے۔ جونا گڑھ ریاست کے لیڈیز کلب کی ایک خاتون ممبر ایک دن گھر میں داخل ہوئیں تو ان کے ہاتھوں میں دو چمکتی ٹرافیاں تھیں جو انھوں نے کیرم بورڈ اور بیڈمنٹن کے مقابلوں میں جیت کر حاصل کی تھیں۔ یہ خاتون دونوں ٹرافیاں اپنے بیٹوں کو دکھاتے ہوئے بڑے فخر سے بولیں ایک عورت ہوتے ہوئے میں نے یہ ٹرافیاں جیتی ہیں، اب آپ لوگوں کی باری ہے اپنے بیٹوں کی ہمت بڑھانے کا اس سے زیادہ مناسب انداز کچھ اور نہیں ہو سکتا تھا۔ یہ خاتون امیر بی تھیں اور ان کی بات توجہ سے سننے والے بیٹے آنے والے برسوں میں کرکٹ کی دنیا کے مشہور محمد برادران کے طور پر پہچانے گئے۔ دراصل محمد برادران کو کھیلوں سے دلچسپی ورثے میں ملی تھی۔ والدہ امیر بی خود دو کھیلوں کی چیمپئین تھیں جبکہ والد شیخ اسماعیل بھی بہت اچھے کلب کرکٹر تھے۔ مشتاق نے بچپن میں کراچی کے چرچ مشن ہائی اسکول میں تعلیم حاصل کی۔

فرسٹ کلاس کرکٹ[ترمیم]

مشتاق محمد نے اپنے فرسٹ کلاس کیریئر کا آغاز 13 سال اور 41 دن کی عمر میں کیا، انہوں نے 87 رنز بنائے اور ڈیبیو پر 28 رنز دے کر 5 وکٹیں لیں۔ وہ کراچی اور پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز کے لیے کھیلے اور 1966ی سے 1977ء تک کاؤنٹی کرکٹ میں نارتھمپٹن ​​شائر کی نمائندگی کرتے ہوئے ہر سیزن میں 1,000 سے زیادہ رنز بنائے۔ 1967ء اور 1971ء دونوں میں وہ انگلینڈ کے پاکستان دوروں کے دوران میں کاؤنٹی کے ساتھ رہے، صرف ٹیسٹ میچوں اور چند دیگر میچوں میں دورہ کرنے والی ٹیم کے لیے کھیلے۔ مشتاق محمد نے 1975ء اور 1977ء کے درمیان میں نارتھمپٹن ​​شائر کی کپتانی کی، اور 1976ء میں کاؤنٹی کی پہلی ٹرافی، جیلیٹ کپ، اور کاؤنٹی چیمپیئن شپ میں دوسری پوزیشن حاصل کرتے ہوئے، بہترین پوزیشن کے برابر رہ کر ٹیم کی قیادت کی۔ لیکن ان کی کپتانی کچھ تنازعات میں ختم ہوئی۔ وزڈن کے مطابق، مشتاق محمد نے یہ دعویٰ کرتے ہوئے استعفا دے دیا کہ ان کا مستقبل واضح نہیں ہوا تھا اور یہ افواہیں تھیں جو سچ ثابت ہوئیں کہ سابق کپتان جم واٹس کو 1978ء کے لیے دوبارہ تعینات کیا جانا تھا۔ مشتاق نے کسی بھی صورت میں ورلڈ سیریز کے لیے دستخط کیے تھے۔ آسٹریلیا میں کرکٹ، لیکن ڈریسنگ روم کی سیاست کے بارے میں کاؤنٹی کے چیئرمین کی طرف سے سخت الفاظ آئے اور مشتاق دوبارہ نارتھمپٹن ​​شائر کے لیے پھر کبھی نہیں کھیلے۔ مشتاق محمد نے سب سے زیادہ فرسٹ کلاس سنچریاں بنائیں، اپنے سے زیادہ باصلاحیت حنیف محمد سے بھی زیادہ، اس کی ایک وجہ نارتھمپٹن شائر کے ساتھ کاؤنٹی کرکٹ میں انہیں زیادہ مواقع ملنے کی بدولت بھی ہوا کیونکہ انہوں نے ملنے والے مواقع کو قطعی ضائع نہیں کیا کرکٹ ماہرین یہ بھی کہتے ہیں کہ وہ پہلے ریورس سویپرز میں سے ایک تھا (ایک اسٹروک جو اس نے حنیف محمد سے سیکھا تھا) اور کریز پر پہلے بلے بازوں میں سے ایک تھا۔ لیگ بریک، گوگلی اور فلیپر کے باؤلر کے طور پر، اس نے اپنے کسی بھی بھائی سے زیادہ فرسٹ کلاس وکٹیں حاصل کیں۔ 1968ء میں نارتھمپٹن ​​شائر والے اس سے کافی متاثر ہوئے مشتاق محمد 1984-85ء میں شاپ شائر کے لیے مائنر کاؤنٹی کرکٹ میں فرسٹ کلاس لیول میں بھی نظر آئے ان کے لیے 15 میچوں میں کھیل کر ایک میچ میں سنچری حاصل کی ساتھ ہی 1980ء کی دہائی میں کلب کی سطح پر اسٹافورڈشائر اور نارتھمبرلینڈ کے لیے وہ میدان میں نظر آئے انگلینڈ میں بھی اس نے کریڈلی ہیتھ میں والسال اور اولڈ ہل کے لیے برمنگہم لیگ میں کرکٹ کھیلی۔

ٹیسٹ کرکٹ[ترمیم]

26 مارچ 1959ء کو ویسٹ انڈیز کے خلاف لاہور میں مشتاق نے اپنے بڑے بھائیوں وزیر محمد اور حنیف محمد کی جگہ ٹیسٹ کرکٹ میں حصہ لیا۔ وہ اس وقت 15 سال اور 124 دن کے تھے، جو اس وقت ٹیسٹ کرکٹ کھیلنے والے سب سے کم عمر شخص تھے، یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ان کی تاریخ پیدائش کے درست ہونے پر کچھ شک موجود ہے۔ انہوں نے میچ میں 18 رنز بنائے اور پاکستان کو اننگز اور 156 رنز سے شکست ہوئی۔ ان کی دس ٹیسٹ سنچریوں میں سے پہلی سنچریاں ان کے چھٹے ٹیسٹ میں آئیں جب فیروز شاہ کوٹلہ میں بھارت کے خلاف 101 ان کے بلے سے امڈے جب ان کی عمر 17 سال اور 78 دن تھی جو ٹیسٹ سنچری کی سب سے کم عمر تھی ان کا یہ ریکارڈ 40 سال تک قائم رہا جب تک کہ محمد اشرفل (بنگلہ دیشی) کرکٹر نے اسے بہتر نہیں کیا۔ ان کی اگلی سنچری 1962ء میں انگلینڈ کے خلاف آئی اور یہ ایک حیرت انگیز حقیقت تھی کہ انہیں اپنی اگلی سنچری کے لیے مزید 9 سال انتظار کرنا پڑا 1970ء میں وہ انگلینڈ کے خلاف سیریز میں کھیلے جسے بعد میں اس کی ٹیسٹ حیثیت سے محروم کر دیا گیا۔ 1973 کے اوائل میں، انہوں نے سڈنی میں آسٹریلیا کے خلاف 121 اور ایک ماہ بعد نیوزی لینڈ کے خلاف 201 رنز بنائے۔ بعد کے کھیل میں، وہ ڈینس اٹکنسن کے علاوہ واحد کرکٹر بن گئے جنہوں نے ایک ٹیسٹ میچ میں ڈبل سنچری اسکور کی اور پانچ وکٹیں لیں۔ انہوں نے 86.33 کی اوسط سے 777 رنز بنا کر سال کا اختتام کیا۔ مشتاق محمد نے 1976–77 سے 1978–79 تک 19 ٹیسٹ میچوں میں پاکستان کی کپتانی کی۔ اس وقت کے دوران، اس نے 121 اور 56 رنز بنائے اور 1976–77 میں پورٹ آف اسپین میں ویسٹ انڈیز کے خلاف آٹھ وکٹیں لے کر ویسٹ انڈیز کو گھر میں غیر معمولی شکست دی۔ انہوں نے پاکستان کو ہندوستان کے خلاف 2-0 سے فتح دلانے کی قیادت کی جب دونوں ممالک نے 1978–79 میں اٹھارہ سالوں میں ایک دوسرے کے خلاف پہلی سیریز کھیلی۔ مشتاق محمد کو 1970ء کی دہائی میں ریورس سویپ استعمال کرنے والے پہلے کرکٹرز میں شمار کیا جاتا ہے۔ انہوں نے ستر کی دہائی کے آخر میں کیری پیکر کی ورلڈ سیریز کرکٹ میں شمولیت اختیار کی۔

ون ڈے کرکٹ[ترمیم]

مشتاق محمد نے ایک روزہ مقابلوں میں اپنے کیرئیر کا آغاز 1973ء میں نیوزی لینڈ کے خلاف کرائسٹ چرچ کے مقام پر کیا تھا جس میں انہوں نے 27 رنز سکور کئے تھے 1974ء میں انگلستان کے خلاف دو میچوں میں 24 ناقابل شکست اور 1 ناقابل شکست بنائے 1975ء کے ون ڈے عالمی کپ میں بھی مشتاق محمد ٹیم کا حصہ تھے انہوں نے 3 میچوں میں ویسٹ انڈیز کے خلاف 55 اور سری لنکا کے خلاف 26 رنز کی قابل ذکر باریاں کھیلیں 1976ء میں سیالکوٹ کے مقام پر نیوزی لینڈ کے خلاف 46 بھی قابل دید تھے تاہم 1978ء وہ بھارت کے خلاف تین میچوں کی سیریز میں آخری دفعہ محدود اوورز کی کرکٹ میں نظر آئے مگر یہ متاثر کن پرفارمنس کے ساتھ اختتام نہیں تھا۔

اعداد و شمار[ترمیم]

مشتاق محمد نے 57 ٹیسٹ میچوں کی 100 اننگز میں 7 مرتبہ ناٹ آئوٹ رہ کر 3643 رنز بنائے جس میں 201 ان کا سب سے زیادہ سکور تھا۔ 39.17 کی اوسط سے بنائے گئے ان رنزوں میں 10 سنچریاں اور 19 نصف سنچریاں بھی شامل تھیں انہوں نے 502 میچز کے فرسٹ کلاس کیریئر میں 72 سنچریاں اور 159 نصف سنچریاں اسکور کیں۔ مشتاق محمد پہلے پاکستانی تھے جنہوں نے 25,000 یا اس سے زائد فرسٹ کلاس رنز بنائے انہوں نے 31,091 بنائے تھے، ان میں سے نصف سے زیادہ نارتھمپٹن ​​شائر کے لیے سکور کئے ان کے ریکارڈ میں 303 ناٹ آؤٹ کا سب سے زیادہ اسکور شامل ہے اسی طرح مشتاق محمد نے 10 ایک روزہ مقابلوں میں 9 اننگز میں 3 مرتبہ ناٹ آوٹ رہتے ہوئے 209 رنز بنائے 55 ان کا سب سے زیادہ انفرادی سکور تھا مجموعی طور پر انہوں نے 542 کیچز پکڑے جن میں 349 فرسٹ کلاس میں ان کے ہاتھ آئے تاہم ٹیسٹ میں انہوں 42 کیچز پکڑے باولنگ میں انہوں نے 79 ٹیسٹ وکٹ حاصل کئے 28/5 کی بہترین بولنگ کے ساتھ ان کی اوسط 29.22 تھی ایک میچ میں ان کی بہترین کارکردگی 119/9 تھی یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ انہوں نے چھ مرتبہ کسی ایک اننگ میں چار وکٹ لیے اور فرسٹ کلاس میچوں میں ان کی وکٹوں کی تعداد 936 تھی جس کے لیے ان کو 22789 رنز دینے پڑے تھے[2]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

ماقبل  پاکستان قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان
1978–1979
مابعد