فضل محمود

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
فضل محمود
Fazalmehmood.JPG
پاکستان.svg.png پاکستان
ذاتی معلومات
اصل نام فضل محمود
تاریخ پیدائش 18 فروری 1927ء (عمر 91 سال)
لاہور, پاکستان
کردار گیند باز
طریقہ بلےبازی دائیں ہاتھ سے
طریقہ گیندبازی تیز رائٹ آرم
بین الاقوامی کرکٹ
پہلا ٹیسٹ (کیپ 3) 16 اکتوبر 1952: بمقابلہ بھارت
آخری ٹیسٹ 16 اگست 1962: بمقابلہ برطانیہ
بین الا قوامی کرکٹ شماریات
فرسٹ کلاس ٹیسٹ
کل میچ 112 34
کل دوڑیں 2662 620
اوسط بلے بازی 23.35 14.09
50/100 1 / 13 -- / 1
بہترین اسکور *100 60
کل گیند کرائے 9834 9834
وکٹ 466 139
اوسط گیند بازی 18.96 24.70
5 وکٹ 38 13
10 وکٹ 8 4
بہترین گیند بازی 9/43 7/42
کیچ/سٹمپ 39 / -- 11 / --

آخری ترمیم 1 جنوری, 2008
حوالہ: [1]

پاکستانی کرکٹر فضل محمود 18 فروری، 1927 میں لاہور میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے متحدہ ہندوستان میں شمالی پنجاب کی کرکٹ ٹیم سے رانجی ٹرافی میں حصہ لے کر فرسٹ کلاس کرکٹ کا آغاز کیا اور قیام پاکستان کے بعد 16 اکتوبر 1952 میں بھارت کے خلاف کھیل کر پاکستان ٹیم سے اپنا کیرئر شروع کیا اور دس سال بعد سولہ سے بیس اگست انیس سو باسٹھ میں انگلستان کے خلاف آخری ٹیسٹ میچ کھیل کر کرکٹ کو الوداع کہا۔

لکھنؤ میں پاکستان نے بھارت کے خلاف جو ٹیسٹ میچ جیتا اس میں فضل محمود نے چورانوے رنز دے کر بارہ وکٹیں لیں اور جیت میں اہم کردار ادا کیا۔

فضل محمود دائیں ہاتھ کے بلے باز اور دائیں ہاتھ سے گیند کرانے والے فاسٹ میڈیم باؤلر تھے۔ انہوں نے چونتیس ٹیسٹ میچوں میں ایک سو انتالیس وکٹیں حاصل کیں اور تیرہ اننگز ایسی ہیں جن میں انہوں نے پانچ وکٹیں حاصل کیں۔

انہوں نے ایک سو بارہ انٹرنیشنل میچ بھی کھیلے جن میں انہوں نے چار سو چھیاسٹھ وکٹیں حاصل کیں۔

فضل محمود نے اوول کے میدان پر انگلستان کے خلاف ننانوے رنز دے کر بارہ وکٹیں حاصل کیں اور پاکستان نے انگلینڈ (ایم سی سی) کے خلاف اپنا پہلا ٹیسٹ میچ جیتا۔ اس میچ میں ان کے لیگ کٹرز نے بہت شہرت حاصل کی۔

وہ آف کٹر اور لیگ کٹر دونوں طرح کی گیندیں کرانے کے لیے بہت مشہور تھے اور میٹ کی پچوں پر خاص طور سے بہت مؤثر باؤلر سمجھے جاتے تھے۔ گیند پر زبردست کنٹرول اور پچ پر مسلسل موومنٹ کرانا ان کا امتیاز سمجھا گیا۔

جب انیس سوپچپن میں انہیں وزڈن کرکٹ کھلاڑی آف دی ائیر کا خطاب دیا گیا تھا تو کہا گیا تھا کہ وہ مردوں اور لڑکوں کے ہیرو اور عورتوں کے دلوں کی دھڑکن ہیں۔ وہ اپنے وقت کے عمران خان تھے۔

30 مئی، 2005 کو لاہور میں دل کا دورہ پڑنے پر انتقال ہوا۔

حوالہ جات[ترمیم]

متعلقہ مضامین[ترمیم]