ہمزہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

اردو کا پینتیسواں حرف ء (ہمزہ) ہے۔ بعض لوگ اسے الگ حرف نہیں سمجھتے مگر حقیقت میں یہ دو طریقے سے اردو میں استعمال ہوتا ہے۔ حرف کے طور پر اور وقف مزمار (glottal stop) یعنی حلق سے ہلکے سے جھٹکے کے ساتھ ادا کیے جانے والے لہجے کے طور پر[1]۔ حرف کے طور پر 'دائرہ' جیسے الفاظ میں استعمال ہوتا ہے۔ لہجے کے طور پر 'واؤ' یا 'مؤخر' جیسے الفاظ میں استعمال ہوتا ہے۔ جب یہ الگ حرف کے طور پر استعمال ہو تو حروفِ ابجد کے حساب سے اس کے اعداد الف کے برابر 1 شمار ہوتے ہیں۔ اسے عیسوی سال کے نشان کے طور پر بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ تاریخی طور پر یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ہمزہ اصل میں آرامی زبان کے ابجد کی صوتیات سے عربی میں آیا جس میں کہ وقف مزمار کے لئے ایک حرف aleph استعمال ہوتا تھا جو کہ عربی میں الف بنا اور چونکہ عربی میں الف سے وقف مزمار کے ساتھ ساتھ طویل مصوتہ (vowel) یعنی حرف علت کے طور پر بھی استعمال ہوتا تھا، جس کی وجہ سے اسے الگ شناخت دینے کے لئے یا یہ ظاہر کرنے کے لئے مذکورہ الف محض مصوتہ نہیں بلکہ وقف مزمار ہے اس کے ساتھ ء کا اضافہ کیا گیا۔ عربی میں یہ ہمزہ ، الف کے اوپر بھی آسکتا ہے اور نیچے کی جانب بھی جس میں بالترتیب اس کے ساتھ زبر اور زیر کے مصوتات (vowels) بھی شامل ہوجاتے ہیں۔

صوتیاتِ لسانیات[ترمیم]

ابتدائیہ میں دیے گئے حوالہ برائے وقف مزمار کی حیثیت ہمزہ کے استعمال کو سمجھنے کے لئے انتہائی اہم ہے؛ حقیقت تو یہ ہے کہ ہمزہ بنیادی طور پر دو مصوتات (vowels) کو الگ کرنے کے مقام پر پیدا ہونے والی glottal stop کی آواز ہی کو کہا جاتا ہے۔ ہمزہ کا تعلق علم الصوتیات سے اس قدر گہرا ہے کہ اردو اور فارسی متکلمین ہی نہیں بلکہ اہل زبان عرب سے بھی اس کے درست استعمال میں غلطی کا امکان مکمل رد نہیں کیا جاسکتا۔ وقف مزمار عام طور پر اس وقت پیدا ہوتا ہے کہ جب دو مصوتات المختصر یعنی short vowels (جن کو عربی اور اردو میں خصوصاً اعراب کہا جاتا ہے) ایک ساتھ آتے ہوں ؛ ایسی صورت میں انسانی حلق کی تشریح کے اعتبار سے لازم ہے کہ صوتی طنابیں (vocal cords) اپنے ارتعاش میں تبدیلی لے کر آئیں ، اگر ایسا نا ہو تو کبھی بھی دو مسلسل مصوتات المختصر (اعراب) ایک ساتھ ادا نہیں کیے جاسکتے اور وہ آپس میں مدغم ہوکر کسی بھی مصوتات الطویلہ (long vowels) کی آواز پیدا کریں گے جو کہ الف بھی ہوسکتا ہے واؤ بھی اور یے بھی۔ مذکورہ بالا سطور میں آنے والے ایسے الفاظ جن میں اعراب ایک کے بعد ایک آتے ہوں ان کو دوتاخیری (bimoraic) کہا جاتا ہے۔ یہاں bi کا مطلب ہے دو اور moraic بنا ہے mora سے جس کی جمع تاخرات (morae) کی جاتی ہے، mora کا مطلب delay یا تاخیر ہوتا ہے یعنی وہ وقفہ یا تاخیر جو کہ صوتی طنابوں کو دو ایک ساتھ آنے والے اعراب کی قابلِ شناخت آوازیں پیدا کرنے کے لئے درکار ہو[2]۔ طویل مصوتات کو عام طور پر bimoraic ہی تسلیم کیا جاتا ہے۔ باالفاظ دیگر کسی مقطعیہ (syllable) میں دو مصوتات کو دوتاخیری کہا جاتا ہے۔ bimoraic کی صورتحال پیدا ہونے کو bimoraicity یا دوتاخریت کہا جاتا ہے۔ اس طرح کے دوتاخیری الفاظ تین اقسام کے ہوا کرتے ہیں؛

  1. وہ دوتاخیری الفاظ جن میں دونوں اعراب (یا مصوتات) ایک جیسے ہوں تو ایسی صورت میں ان کو وتارہ (monophthong) کہا جاتا ہے اور اس کی جمع وتارات کی جاتی ہے۔ اس کی ایک آسان مثال جاپانی شہر کا نام saitama کی ہے جس کو اگر کلمہ نویسی میں لکھا جائے گا تو یہ سائیتاما بنے گا اور قابل توجہ بات یہ ہے کہ اگر اس کو glottal stop یعنی ہمزہ کے بغیر لکھ دیا جائے (یعنی سایتاما) تو پھر یہ monophthong پر مشتمل bimoraic لفظ نہیں بلکہ خود ایک diphthong بن جائے گا[3]۔ عربی ، اردو ، انگریزی یا کسی بھی زبان کے monophthong لفظ کو اگر درست تلفظ کے ساتھ لکھا جائے گا تو اس میں لازمی طور پر glottal stop آئے گا جس کے لئے ہمزہ لگانے کی شرط ضروری ہے ورنہ وہ تلفظ یا تو ایک طویل مصوتہ بن کر monomoraic ہو جائے گا یا پھر diaphthong بن جائے گا۔
  2. وہ دوتاخیری الفاظ جن میں دونوں اعراب (یا مصوتات) ایک دوسرے سے مختلف ہوں تو ایسی صورت میں ان کو دغامہ (diphthong) کہا جاتا ہے جس کی جمع دغامات (diphthongs) کی جاتی ہے، diphthong کا لفظ di بمعنی دو اور phthongos سے بنا ہے جس کے معنی صوت کے ہوتے ہیں یعنی دو (جدا) آوازیں؛ انہیں دغامہ کہنے کی وجہ دو آوازوں کا مدغم ہونا ہے۔ مثال کے طور پر انگریزی لفظ loud (لاؤڈ / لاوڈ) میں ou کی آوازیں۔ ان دغامات کی آوازوں کو اردو میں لکھنے کے لئے دونوں کے درمیان آنے والے glottal stop کے مقام پر ہمزہ بھی استعمال کیا جاسکتا ہے (لاؤڈ) اور دو مصوتات الگ الگ بھی استعمال کئے جاسکتے ہیں (لاوڈ) کیونکہ ایسا کرنے سے تلفظ (اگر معلوم ہو تو اس) پر کوئی اثر نہیں پڑتا۔

اس کے علاوہ بعض زبانوں میں بہت کم ایسے الفاظ جن میں تین اعراب (یا مصوتات) ایک روانی میں ہوں یا یوں کہہ لیں کہ ان میں تین یکساں مصوتات کی آوازیں ایک کے بعد ایک آتی ہوں تو ان کو سہ صوتی (triphthong) کہا جاتا ہے؛ جیسے انگریزی لفظ flower کی مثال جس کو درست صوتیات سے سمجھنے والا اگر کوئی واطن مکلم (native speaker) اگر درست تلفظ سے ادا کرے تو اس میں تین مصوتات owe آتے ہیں۔ ایسے الفاظ میں اگر glottal stop آتا ہو تو ہمزہ آئے گا۔

ہمزہ کی اقسام[ترمیم]

ہمزہ کی عربی میں دو اقسام ہوتی ہیں جن کا خیال قرآن کی قرات کے دوران بھی ملحوظ رکھا جاتا ہے۔

  • پہلی قسم تو وہی ہے جس کا ذکر اوپر بھی آیا کہ جسے وقف مزمار کے لئے استعمال کیا جاتا ہے، اسے ہمزۃ القطع (cutting hamzah) کہا جاتا ہےاور اسے الف کے اوپر یا نیچے ہمزہ کی علامت لگا کر لکھا جاتا ہے یعنی جیسے أ اور إ اس قسم کے ہمزہ الف کا استعمال عربی اور قرآن میں ہی نہیں بلکہ اردو زبان میں بھی مستعمل ہے مثال کے طور پر لفظ ، قِرأت میں [4] یہی ہمزۃ القطع استعمال ہوتا ہے۔
  • دوسری ہمزہ کی قسم کو ہمزۃ الوصل (joining hamzah) کہا جاتا ہے اور اسے بلا کسی ء کی علامت کے محض الف کی مانند لکھا جاتا ہے لیکن اس الف پر کوئی دیگر مصوتہ بھی نہیں ہوتا اور نہ ہی اسکی خود کی آواز بطور حرف علت نکلتی ہے۔ عربی تلفظ کے دوران یہ کوئی دانستہ وقف مزمار نہیں ہوتا بلکہ ایک بیساختہ سی حلقی آواز ہوتی ہے۔ مثال کے طور پر ؛ البیت الکبیر لکھا جائے اور پڑھنے میں البیتلکبیر آئے تو ایسی جگہ الف کی آواز مفقود ہو جاتی ہے اور اسی الف کی صورت کو ہمزۃ الوصل کہا جاتا ہے۔ اسی طرح عربی سابقہ ، ال (لام تعریف) میں بھی یہی ہمزۃ الوصل آتا ہے جیسے الکتاب۔

ہمزہ کی اشکال[ترمیم]

عام طور پر عربی اور اردو دونوں میں ہی ہمزہ کا لفظ (خواہ تنہا ہو یا حامل کے ساتھ) ایک چھوٹے سے عین کے ابتدائی سر کی طرح سے لکھا جاتا ہے جیسے ؤ یا ء لیکن بعض اوقات (بطور خاص اردو نستعلیق نویسہ میں اسے ایک مائلہ چھوٹے سے انگریزی s کی مانند بھی لکھا جاتا ہے۔

ہمزہ کے مقامات[ترمیم]

ہمزہ کا مقام ایک تحریر کے دوران کسی متعدد اشکال میں سامنے آتا ہے۔ اسے بطور انفرادی محرف (یعنی بطور حرف) بھی استعمال کیا جاتا ہے اور بسا اوقات یہ کسی حامل (carrier) پر ہی رکھا جاتا ہے۔ اگر وہ حامل کسی لفظ کی ابتداء میں ہو تو وہ الف ہی ہوتا ہے اس کے علاوہ یہ ناقل و ، ہ ، ی اور ے بھی ہوسکتا ہے۔

  • تنہا (حرف کی مانند):
    • ء --- جیسے جزء ، انشاء اور ماشاء اللہ وغیرہ کے الفاظ
  • حامل کے ساتھ:
    • أ اور إ --- یہ زبر کا اظہار بھی ہوسکتا ہے جیسے أَساس ، زیر کا بھی جیسے إِفَادَە اور پیش کا بھی جیسے أريد
    • ؤ جیسے کھاؤ ، گاؤ وغیرہ کے الفاظ
    • ئ جیسے مسئلہ ، کئی وغیرہ کے الفاظ
    • ئے جیسے روئے سخن ، روۓ زمین اور روئے خط وغیرہ کے الفاظ
    • ۀ اردو میں مثلِ طویل زیر یعنی بطور اضافت دو انداز میں آتا ہے
      • گول ہ برقرار: ایسی صورت میں اسے ہ کے اوپر لکھا جاتا ہے جیسے بادۂ احمر قابل توجہ بات یہ ہے کہ ۂ زیرِ اضافت کا متبادل نہیں ہے یعنی ۂ کے نیچے زیرِ اضافت کا اضافہ بھی لازم ہے (بادۂِ احمر) جو عام طور پر (بطور خاص دست نویسی میں) لکھا نہیں جاتا۔ بعض اردو لغات میں دو رنگی بھی ملتی ہے کہ ان میں ہمزہ کو ہ سامنے بھی (بادہء احمر) دیا جاسکتا ہے[4]، لیکن اس صورت میں بھی زیرِ اضافت لازم ہے۔
      • گول ہ کھلی: ایسا عموماً اس وقت ہوتا ہے جب ۂ سے قبل کوئی ساکن آئے جیسے معاملۂ گذر اور اس صورت میں بھی زیرِ اضافت آتا ہے یعنی معاملۂِ گذر ، جو کہ عموماً نہیں بھی لکھا جاسکتا۔
جیسا کہ ذکر آیا کہ گول ہ برقرار اور گول ہ کھلی؛ دونوں میں ہی زیر اپنی جگہ لازم ہے یعنی ہمزہ برائے اضافت نہیں آتا، پھر سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ہمزہ کا کیا مقصد ہے؟ اس کا جواب لسانی صوتیات کے فہم کے بغیر سمجھنا ممکن نہیں۔ یہاں ہمزہ اصل میں دوالفاظ جوڑنے کے لئے زیرِ اضافت کا متبادل نہیں بلکہ یہاں ہمزہ کی ضرورت وقف مزمار کو واضح کرنے کے لئے اور دو وتارات (monophthongs) کی انفرادیت قائم کرنے اور ان میں الگ الگ تمیز کرنے کے لئے آتا ہے، جو عام بول چال میں استعمال نہیں بھی ہو تب بھی علم صوتیات اور درست تلفظ کے لحاظ سے ضروری ہے۔

مذکورہ بالا بیان میں الفاظ أَساس اور إِفَادَە میں گو کہ بالترتیب الف ہمزہ کے ساتھ زبر اور زیر لگائے گئے ہیں لیکن بسا اوقات ان حرکات کو تحریر سے موقوف کر کہ صرف الف پر اوپر یا نیچے ہمزہ دیا جانا ہی کافی سمجھا جاتا ہے۔ یہاں یہ بات قابل غور ہے کہ اردو میں ان ہی عربی الفاظ پر سے اس ہمزہ کو بھی موقوف کردیا جاتا ہے اور بلا ہمزہ و حرکات صرف اساس اور افادہ ہی لکھ دیا جاتا ہے۔ اگر تلفظ میں دشواری ہونے کا اندیشہ ہو اور ان کا استعمال کیا بھی جائے تو عام طور پر زبر اور زیر کو لگا کر تلفظ میں آسانی کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔ اردو میں الف ہمزہ (بطور ابتدائی حامل) کے ساتھ نہایت ہی کمیاب اور صرف مذہبی اور قرآنی الفاظ میں ہی ملتا ہے۔ فارسی میں ہمزہ طویل مصوتات یا حروف علت جیسے ا ، و اور ی کے ساتھی ہی آتا ہے۔ جبکہ اردو میں بکثرت عربی قواعد موجود ہونے کی وجہ سے ہمزہ کا استعمال عربی سے نہایت ملتا جلتا ہے۔

مفصلۂ ہمزہ (نُطق)[ترمیم]

  • Crystal Clear app kdict.png تفصیلی مضمون کے لئے ملاحظہ کریں: ہمزہ

مفصلہ (articulator) اس مقام کا تعین کہ جہاں سے کوئی بھی لسانی آواز نکلتی ہے اسے مفصل (articulation) کہا جاتا ہے اسے بعض اوقات نطق بھی کہتے ہیں۔ جبکہ منہ ، حلق اور ناک کا وہ حصہ (حصے) جو اس آواز کو پیدا کرتے ہیں انہیں مفصلہ (جمع:مفصلات) کہتے ہیں۔ ہمزہ کے مفصلہ کا موجودہ عام مقام گو مزمار (glottis) کو مانا جاتا ہے لیکن اس میں یہ بات ماہرین نحو میں تاریخی طور پر متنازع ہے کہ مزمار کے کس مقام سے ہمزہ کی تشکیل ہوتی ہے۔

  1. خلیل بن احمد (718ء تا 793ء) نے اپنی تصنیف کتاب العین (جسے عربی کی پہلی لغت تسلیم کیا جاتا ہے)[5] میں ہمزہ کو—ہوا—کہا ہے اور اسے و اور ی کی مانند آواز کو کھینچنے والا قرار دیا ہے اور اس کا کوئی مفصلہ نہیں بیان کیا۔
  2. جبکہ خلیل بن احمد ہی کے شاگرد اور عربی کے سب سے نمایاں ماہر نحو، سیبویہ (760ء تا 796ء) نے اپنی کتاب ، الکتاب[6] میں ہمزہ کے مختلف قواعد بتاتے ہوئے اسے حلق کے اس حصے سے نکلنے والی آواز قرار دیا ہے جو کہ مزمار کہلایا جاتا ہے۔

ہمزہ کے قواعد[ترمیم]

عربی زبان میں بنیادی طور پر طے ہے کہ ہمزہ کی خود کوئی آواز نہیں ہوتی اور یہ صرف اپنے اردگرد موجود مصوتات اور حروف علت کی آوازوں کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔ اس کے قواعد عربی زبان میں خاصے پیچیدہ ہیں اور بعض اوقات وہ افراد بھی اس کے استعمال میں غلطی کا ارتکاب کر جاتے ہیں کہ جن کی مادری زبان عربی ہے اور وہ عربی قواعد کی نزاکتوں سے مکمل آگاہ نا ہوں[7]۔ لیکن اردو میں ایسے الفاظ کافی تعداد میں ملتے ہیں جن میں ہمزہ علیحدہ سے بطور حرف استعمال ہوتا ہے۔ اگر اردو کے نقطۂ نظر کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے ہمزہ کے قواعد ذکر کیے جائیں تو انہیں آسان انداز میں یوں لکھا جاسکتا ہے۔

  1. ہمزہ کے لئے مفترض (default) مقام (کرسی) الف ہی ہوتا ہے جبکہ لیکن اگر لفظ کی تشکیل میں ضرورت ہو تو ی اور و بھی آسکتے ہیں، جبکہ اردو میں ے بھی۔
  2. اگر اس سے قبل حرف علت آتا ہوں ، جیسے الف ، اور اگر یہ حرف کے اختتام پر ہو تو بلا کرسی (یعنی تنہا) بھی آسکتا ہے؛ مثال، ماشاء اللہ ، جزء وغیرہ۔
  3. بعض اوقات (بطور خاص اگر لفظ کی ابتداء میں ہو تو) اس کو تحریر میں نہیں لایا جاتا اور صرف اس پر موجود اعرب لکھ دیا جاتا ہے۔ جیسے أَساس کے بجائے صرف اَساس۔

اردو میں ہمزہ بطور حرف[ترمیم]

اردو میں ایسے الفاظ کافی تعداد میں ملتے ہیں جن میں ہمزہ علیحدہ سے بطور حرف استعمال ہوتا ہے۔ اردو کی پرانی کتب میں ہمزہ کو علیحدہ حرف سمجھا جاتا تھا۔ ہمزہ سے انحراف کی ایک وجہ شمارندہ پر استعمال کی خودساختہ مشکل ہے۔ ایسے حرف جن میں ہمزہ علیحدہ حرف کے طور پر استعمال ہوتا ہے ان کی کچھ مثالیں درج ذیل ہیں:
دائرہ، مشائخ، ایشیاء، ماشاء اللہ، جائزہ، فائدہ، نوزائیدہ، آئینہ، رائتہ، جزائر، مسئلہ، بچائی، ہوئی، تحائف، طوائف، طوائف الملوکی، لطائف، خائف، فہمائش، فرمائش، آسائش، نمائش، ستائش، پیدائش،آرائش، رہائش، ستائیس، اٹھائیس، زائچہ، پائمال، صائب، نائب، سائل، مائل، گھائل، شمائل، وسائل، مسائل، رسائل، ملائم، دکھائیں، سنائیں ، آئے، جائے، پائے، سوائے، آئیے، جائیے، پائیے، سمجھائیے، شائستہ، کمائی، نائی،قصائی، حلوائی، مٹھائی، دھلائی، سلائی، شہنائی، کڑھائی، بھائی، تائی، ڈھائی، بجھائی، روئی، کھوئی، گویائی، گہرائی، اونچائی، اترائی، جمائی، آرائی (ستم آرائی، انجمن آرائی، ہنگامہ آرائی)، لڑائی، اڑائی، دلجوئی،
کچھ نام جو اردو میں مستعمل ہیں: عائشہ، سائرہ، مائدہ، نائمہ، فائزہ، نائلہ،
موجودہ زمانے میں ایسے الفاظ جن کے آخر میں ہمزہ بطور علیحدہ حرف کے آتا ہے اب عموماً انٹیرنیٹ پر ہمزہ کے بغیر لکھے جاتے ہیں مگر ہمزہ ابھی بھی بعض لہجوں میں محسوس ہوتا ہے مثلاً غرباء، فقراء، صلحاء، اثناء وغیرہ۔
ایسے الفاظ بے شمار ہیں جن میں ہمزہ کسی لفظ پر استعمال ہوا ہو مگر بولتے ہوئے صاف علیحدہ سے محسوس ہوتا ہے۔ مثال کے طور پر ‎

جرأت  کو بغیر ہمزہ بول کر دیکھا جائے تو بالکل مختلف لفظ ہوگا۔

چند مزید مثالیں: مآرب، مآخذ، تأثر، مآل، تأسف، تأمل، بِئس، بأس، شأن؛ وغیرہم

مستند کیا ہے؟[ترمیم]

مستند لغات اور ان پرانی کتب میں کہ جو اردو کے الفاظ کا ماخذ عربی زبان کی صوتیات کو سمجھنے والوں نے لکھی ہیں ان میں ہر اس مقام پر ہمزہ آتا ہے جہاں قواعد کی رو سے وقف مزمار پیدا ہو اور ضروری نہیں کہ اس وقف مزمار کا احساس عام بول چال میں اجاگر ہوتا ہو کیونکہ اردو میں تلفظ کی ادائیگی اس طرح قواعدی صوتیات کے مطابق عام بولنے والے نہیں کرتے۔ ایسی درست ادائیگی عموماً قرآن کی قرات یا پھر کسی بہت اہم محفل یا تقریر میں ہی دیکھنے میں آتی ہے۔ عربی زبان کی صوتیات کا خیال رکھ کر لکھی جانے والی بیشتر کتب اسلامی موضوعات پر ہی ہیں کیونکہ اسلامی کتب لکھنے والے علماء یقینی طور پر زبان صوتیات کا خیال رکھتے ہیں۔ متعدد لغات جو کہ روئے خط دستیاب ہیں وہ عمومی لغات ہیں، یعنی وہ صوتیات یا کسی اور سائنس پر پیشہ ورانہ لحاظ سے نہیں بلکہ جو الفاظ دیگر اردو کتب میں جس طرح آئے ہیں ان کو اسی طرح درج کر دیتی ہیں اور اکثر اس کتاب کا حوالہ بھی دے دیا جاتا ہے[4]۔ ایسی لغت کو کسی بھی طور پر صوتیات کے معاملات میں بطور حوالہ تسلیم نہیں کیا جاسکتا خواہ وہ لغت کسی حکومت یا کسی ادارے کی سرپرستی میں ہی تیار کی گئی ہو؛ اس بات سے مقصد اس لغت پر اعتراض یا اس کی توہین ہرگز نہیں کیونکہ وہ لغت علم صوتیات کی پیشہ ورانہ لغت نہیں اور صرف دیگر کتب میں آنے والے ان الفاظ کو حوالہ جات کے ساتھ بیان کر رہی ہے جو اردو میں مستعمل ہیں، یعنی صرف اس کا ہدف جدا ہے۔ جیسا کہ ابتداء میں مذکور ہوا کہ ہمزہ کے درست استعمال میں اہل زبان عرب سے بھی غلطی کا احتمال ناممکنات میں سے نہیں ہے، اسی وجہ سے کوئی اردو دان عالم اس کے استعمال میں غلطی کر سکتا ہے۔ ایک مثال کے طور پر بابائے اردو مولوی عبدالحق کا بیان ، ہمزہ کے بارے میں درج کیا جارہا ہے۔

ہمزہ کو غلطی سے حروف میں شامِل کرلیا گیا ہے۔ یہ درحقیقت ی اور واؤ کے ساتھ وہی کام کرتا ہے جو مدّ الف کے ساتھ کرتی ہے۔ یعنی جہاں ی یا واؤ کی آوازیں کھینچ کر نکالنی پڑیں وہاں بطور علامت ہمزہ لکھ دیتے ہیں[8]۔

یہ بیان ایک انتہائی فاش غلطی ہے؛ ہمزہ کبھی بھی مد کا کام نہیں کرتا بلکہ یہ bimoraic الفاظ کے مصوتات جدا کرنے اور یا پھر کسی عرب (عموماً الف) یا مصوتہ (ا و ی) کی کرسی پر آکر وقف مزمار کی شناخت کرواتا ہے یا یوں کہہ سکتے ہیں کہ دو آوازوں یا الفاظ کو ایک دوسرے سے جداگانہ شناخت دیتا ہے[9]۔ یعنی معاملہ الٹ کہ ہمزہ تو بذات خود بکثرت monophthong کو diphthong کی طویل آواز بننے سے روکنے کے لئے آتا ہے (دیکھیے قطعہ ، صوتیاتِ لسانیات)۔ عرض مکرر ہے کہ یہاں مقصود کسی بھی شخصیت پر اعتراض نہیں بلکہ جو صورت حال ہے اس کو بیان کرنا ہے۔

چند متنازع الفاظ[ترمیم]

اردو میں ایسے متعدد الفاظ ملتے ہیں کہ جن کو ہمزۃ القطع (cutting hamzah) کے ساتھ اور اس کے بغیر دونوں طرح لکھ دیا جاتا ہے، ایسا صرف آج کل شمارندی اردو پر ہی نہیں بلکہ اردو کی کتب میں بھی دیکھنے میں آتا ہے لہذا بنیادی طور پر اس کی وجہ ایک تو یہ ہے کہ اردو میں عام تلفظ کی روانی میں جو الفاظ جاری ہوتے ہیں ان کا مفہوم سمجھنے کے لئے ہمزہ کے نا ہونے کی وجہ کوئی دشواری پیدا نہیں ہوتی؛ مثال کے طور پر لفظ ؛ کیئے اور کیے دونوں طرح دیکھنے میں آتا ہے۔ اب صورتحال کچھ یوں ہے کہ وہ اشخاص جو کہ اردو کے ایسے الفاظ کی صوتیات سے واقف ہیں یا کم از کم اس کو برقرار رکھنا چاہتے ہیں وہ تو اردو کے ان الفاظ پر ہمزہ لگاتے ہیں اور جو اس بات پر زور دیتے ہیں کہ جب ہمزہ نا لگانے سے مفہوم سمجھنے میں کوئی ابہام یا دشواری نہیں آتی تو پھر ہمزہ درج نا کر کے سادہ الفاظ اختیار کیئے جاسکتے ہیں؛ اس مضمون کا مقصد کسی بھی ایک کی حمایت یا مخالفت نہیں بلکہ صرف صورت حال کو سامنے لانا ہے۔

قواعدی وجوہات[ترمیم]

اگر ایک عام سے لفظ ؛ لِئے کو دیکھا جائے مذکورہ بالا مضمون میں اب تک دی گئی صوتیات کی توجیہات کو اس مثال سے سمجھنے میں آسانی ہوگی۔ لِئے کو اردو میں ل پر زیر کے ساتھ بڑی یے کو جوڑ کر liye یا liey ادا کیا جاتا ہے اور اگر اس میں موجود آوازوں کو صوتیات کے لحاظ سے دیکھا جائے تو اس مقطعیہ (syllable) میں دو وتارہ (monophthong) موجود ہیں (1- لِ اور 2- ئے) یعنی یہ ایک دوتاخیری (bimoraic) لفظ ہے جس میں پہلا وتارہ ، ل پر زیر یعنی عرب یا short vowel کے ذریعے لی کی چھوٹی آواز پیدا کر رہا ہے جبکہ دوسرا وتارہ بڑی یے یعنی مصوتہ یا vowel کے ذریعے سے طویل آواز پیدا کر رہا ہے۔ غور کرنے پر یہ بات سامنے آتی ہے کہ اس کے دو مقطعیات (syllables) جس مقام پر الگ ہوتے ہیں وہاں وقف مزمار (جو عام طور پر غیرمحسوس گذر جاتا ہے) آنا لازمی ہے اور اسی وجہ سے عربی تجوید کو جاننے اور اسلامی کتب لکھنے والے علماء بکثرت لئے کو ہمزہ کے ساتھ لکھتے ہیں کیونکہ اگر لی ( li ) اور ے ( ye ) کی آواز کو ہمزہ سے الگ نا کیا جائے تو کس طرح ی کی آواز ے پر ختم ہوگی؟ اس لئے اردو میں اسی صورت حال کی وجہ سے بعض جگہ اس کو ل پر زیر کے بجائے مکمل مصوتہ ی کے ساتھ لی + ے لکھا جاتا ہے[4]۔ لیے کی صورت میں آواز اور لئے کی صورت میں آواز ؛ دونوں میں ایک واضح فرق ہے اور دونوں انداز کے لہجے اردو میں سننے کو ملتے ہیں؛ بطور خاص ہندوستان کی پرانے انداز کی اردو میں۔

چند الفاظ[ترمیم]

شکل الف: حوالہ برائے وقف مزمار بحالتِ تسلسل اعراب ی اور ے (جیسے ؛ کیجیئے اور دیجیئے)۔ واضح عبارت کو دیکھنے کے لئے تصویر پر طق کیجیئے۔

درج میں چند ایسے الفاظ دیے جارہے ہیں کہ جن میں عموماً ہمزہ کے بارے میں غلط فہمی پیدا ہوجاتی ہے۔ اس کی ایک وجہ ان الفاظ کے لغوی ماخذ میں ابہام سے پیدا ہوتی ہے جس کی ایک مثال یوں ہے کہ لئے کے بارے میں سمجھا گیا کہ یہ لفظ لیا سے اخذ ہے اور بتائیے ، بتائی سے بنا ہے اس لئے چونکہ لیا میں ہمزہ نہیں اور بتائی میں ہمزہ ہے اس وجہ سے لئے پر ہمزہ نہیں آسکتا اور بتائی کی وجہ سے بتائیے پر ہمزہ درست ہے؛ یہاں پہلا ابہام تو ان کے ماخذات کے سلسلے میں ہے کہ بتائیے بھی بغیر ہمزہ کے لفظ بتا (بتانا) سے اخذ ہے نا کہ بتائی سے اور دوسرا ابہام یہاں یہ ہے کہ یہ سمجھنا کہ اگر اصل منبع لفظ میں ہمزہ ہے تو ہی ماخوذ لفظ پر ہمزہ آئے گا۔ یہ بات بھی درست نہیں کیونکہ اگر ماخذ پر ہمزہ نا ہو لیکن اس سے ماخوذ کئے جانے والے لفظ پر وقف مزمار آتا ہو تو اردو قواعد کی رو سے ہمزہ لگایا جائے گا [1]۔

  • لئے / لیے : دونوں ہی درست ہیں اور ایک دوسرے کے مکمل متبادل آسکتے ہیں۔ صوتیات کے اعتبار سے پہلی صورت احسن ہے کہ جس میں ل زیر کے عرب کی آواز کو وقف مزمار سے الگ کیا جاتا ہے جبکہ دوسری صورت میں ی اور ے کے مصوتات کو الگ الگ پڑھا جاتا ہے جس میں لاکھ کوشش کے باوجود حلق کا جھٹکا شامل ہو جاتا ہے اور لی ئے کی سی آواز سنائی دیتی ہے۔ عربی صوتیات کا خیال رکھ کر لکھی جانے والی متعدد کتب میں یہ دونوں الفاظ متبادل آتے ہوئےملتے ہیں اور ان کے استعمال میں ، کسی ایک کے لئے ، لینا (فعل) یا برائے (متعلق فعل) کی تمیز نہیں پائی جاتی[10]۔
  • دیے / دئے : صورت اول صوتیاتی اعتبار سے احسن ہے[10][11] جبکہ صورت دوم بھی ملتی ہے[12] ان دونوں متبادلات میں بھی فعل یا متعلق فعل کا لئے خصوصیت نہیں ملتی۔
  • بنائیے : اس کے بارے میں بھی یہ ابہام سننے میں آیا ہے کہ یہ بنائی سے بنا ہے اس لئے اس میں ہمزہ استعمال ہونا درست ہے، صورت حال یوں ہے کہ یہ بنانا سے ماخوذ لفظ ہے جس میں ہمزہ نہیں آتا لیکن بنائیے میں وقف مزمار آجانے کی وجہ سے ہمزہ لگایا جاتا ہے۔
  • گئے
  • سنیئے : ہمزہ ی کے بعد آئے گا یعنی ؛ س ن ی ء ے کیونکہ وقف مزمار ی اور ے کے مابین ہے
  • سنائیے : ہمزہ ی سے قبل آئے گا یعنی س ن ا ء ی ے کیونکہ وقف مزمار الف اور ی کے مابین ہے
  • لیجئے / لیجیے / لیجیئے : تینوں انداز میں ملتا ہے ؛ حوالہ برائے اول ؟ ، برائے دوم [4] اور برائے سوم [11]
  • کیجیئے / کیجیے / کیجئے : بالائی مثال کے بعد حوالوں کی ضرورت تو نہیں پر پھر پہلی (احسن) کیفیت کی حجت تمام کے لئے ایک مستند سمجھی جانے والی لغت پر فنی خرابی کا عکس ملاحظہ کیجیئے جو شکل الف میں دیا گیا ہے۔
  • دیجیئے/ دیجیے / دیجئے : بالائی مثال کے بعد حوالوں کی ضرورت تو نہیں پر پھر پہلی (احسن) کیفیت کی حجت تمام کے لئے ایک مستند سمجھی جانے والی لغت پر فنی خرابی کا عکس ملاحظہ کیجیئے جو شکل الف میں دیا گیا ہے۔
  • چاہیئے / چاہیے : حوالہ برائے اول [13] اور دوم [4]
  • ٹھہریئے (ٹھہرئیے) / ٹھہریے : اول[14] اور دوم [4]

تاہم ایسے الفاظ میں اس امر کا اہتمام ہونا چاہئے کہ: (ی ء ے) یا (ء ی ے) کا اجماع نہ ہو؛ (ء ے) یا (ی ے) درست ہے۔ مثال کے طور پر: چاہیے، چاہئے (درست) اور چاہیئے، چاہئیے (غلط)؛ لیے، لئے (درست) اور لیئے، لئیے (غلط)؛ دیجیے، دیجئے (درست) اور دیجیئے، دیجئیے (غلط) ہیں، وعلیٰ ہٰذاالقیاس

مزید[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ 1.0 1.1 سید رضا شاہد کا وقف مزمار کے بارے میں ایک مقالہ (پیڈی ایف ملف)
  2. ^ انگریزی وکشنری پر mora کا اندراج
  3. ^ عربی صوتیات کے بارے میں ایک مضمون (پیڈی ایف ملف)
  4. ^ 4.0 4.1 4.2 4.3 4.4 4.5 4.6 ایک اردو لغت روئے خط میں ہمزۃ القطع کا استعمال
  5. ^ خلیل بن احمد کی کتاب العین کے بارے میں ایک موقع روئے خط (عربی)
  6. ^ سیبویہ کی الکتاب ایک موقع روئے خط پر (عربی)
  7. ^ ایک موقع روئے خط پر عربی ، اردو حروف کا بیان (انگریزی)
  8. ^ بی بی سی موقع پر داستان غریب ہمزہ
  9. ^ Rules of recitation of al-qur'an پر روئے خط کتاب
  10. ^ 10.0 10.1 اصحابِ صُفّہ اور تصوف کی حقیقت از امام ابن تیمیہ ؛ ترجمہ عبدالرزاق ملیح آبادی : المکتبۃ السلفیۃ ۔ شیش محل روڈ لاہور
  11. ^ 11.0 11.1 علامہ اقبال اور فلسفۂ زندگی اور موت روئے خط مضمون
  12. ^ ایک روئے خط لغت میں دیے
  13. ^ یوم اقبال 1954ء کی تقریر روئے خط پیڈی ایف)
  14. ^ اقبال کی کہانی خود اقبال کی زبانی (روئے خط پیڈی ایف)