دعوت (اسلام)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Basmala White.png
170PX

بسلسلہ مضامین:
اسلام

دعوت اسلام[1][2] سے مراد کسی کو اسلام قبول کرنے کی دعوت دینے سے ہے۔ اسلام میں داخل ہونا اور اس بات پر یقین رکھنا کہ جو کچھ نبی محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے بتایا ہے اس پر ان کا اعتقاد ہے اور جس طرح اس کا حکم دیا گیا ہے اس کی تعمیل کرنا ہے۔ اسلامی تصور کے مطابق، ایک ایسا مسلمان جو اہل علم اور مذہب میں لوگوں کو دینی امور کے بارے میں روشن کرتا ہے، انہیں نیک کام کرنے کی تاکید کرتا ہے اور انہیں برائیوں سے بچاتا ہے۔

شریعت میں دعوة[ترمیم]

شریعت میں دعوۃ کا مطلب ہے لوگوں کو نیکی اور ہدایت کی ترغیب دینا، برائیوں کو چھوڑنا اور لوگوں کو غلط کاموں سے متنبہ کرنا۔

قرآن میں[ترمیم]

اس کا ذکر قرآن مجید کی بہت ساری آیات میں آیا ہے۔

  • Ra bracket.png فَبِمَا رَحْمَةٍ مِّنَ اللّهِ لِنتَ لَهُمْ وَلَوْ كُنتَ فَظًّا غَلِيظَ الْقَلْبِ لاَنفَضُّواْ مِنْ حَوْلِكَ فَاعْفُ عَنْهُمْ وَاسْتَغْفِرْ لَهُمْ وَشَاوِرْهُمْ فِي الأَمْرِ فَإِذَا عَزَمْتَ فَتَوَكَّلْ عَلَى اللّهِ إِنَّ اللّهَ يُحِبُّ الْمُتَوَكِّلِينَ Aya-159.png La bracket.png
  • ترجمہ: (اے پیغمبر ) یہ اللہ کی بڑی رحمت ہے کہ تم ان لوگوں کے لیے بہت نرم مزاج واقع ہوئے ہو  ۔  ورنہ اگر کہیں تم تندخو اور سنگ دل ہوتے تو یہ سب تمہارے گردوپیش سے چھٹ جاتے ،  ان کے قصور معاف کر دو ،  ان کے حق میں دعائے مغفرت کرو ،  اور دین کے کام میں ان کو بھی شریکِ مشورہ رکھو ،  پھر جب تمہارا عزم کسی رائے پر مستحکم ہو جائے تو اللہ پر بھروسہ کرو ،  اللہ کو وہ لوگ پسند ہیں جو اسی کے بھروسے پر کام کرتے ہیں  ۔  
  • Ra bracket.png وَمَنْ أَحْسَنُ قَوْلًا مِّمَّن دَعَا إِلَى اللَّهِ وَعَمِلَ صَالِحًا وَقَالَ إِنَّنِي مِنَ الْمُسْلِمِينَ Aya-33.png La bracket.png
  • ترجمہ:اور اس شخص کی بات سے اچھی بات اور کس کی ہوگی جس نے اللہ کی طرف بلایا اور نیک عمل کیا اور کہا کہ میں مسلمان ہوں
  • Ra bracket.png كُنتُمْ خَيْرَ أُمَّةٍ أُخْرِجَتْ لِلنَّاسِ تَأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ وَتَنْهَوْنَ عَنِ الْمُنكَرِ وَتُؤْمِنُونَ بِاللّهِ وَلَوْ آمَنَ أَهْلُ الْكِتَابِ لَكَانَ خَيْرًا لَّهُم مِّنْهُمُ الْمُؤْمِنُونَ وَأَكْثَرُهُمُ الْفَاسِقُونَ Aya-110.png La bracket.png
  • ترجمہ: اب دنیا میں وہ بہترین گروہ تم ہو جسے انسانوں کی ہدایت و اصلاح کے لیے میدان میں لایا گیا ہے ۔ تم نیکی کا حکم دیتے ہو ،  بدی سے روکتے ہو اور اللہ پر ایمان رکھتے ہو  ۔  یہ اہل کتاب ایمان لاتے تو انہی کے حق میں بہتر تھا ۔ اگرچہ ان میں کچھ لوگ ایمان دار بھی پائے جاتے ہیں مگر ان کے بیشتر افراد نافرمان ہیں  ۔  
  • Ra bracket.png وَلْتَكُن مِّنكُمْ أُمَّةٌ يَدْعُونَ إِلَى الْخَيْرِ وَيَأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ وَيَنْهَوْنَ عَنِ الْمُنكَرِ وَأُوْلَـئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ Aya-104.png La bracket.png
  • ترجمہ: تم میں کچھ لوگ تو ایسے ضرور ہی ہونے چاہیں جو نیکی کی طرف بلائیں  ،  بھلائی کا حکم دیں  ،  اور برائیوں سے روکتے رہیں  ۔  جو لوگ یہ کام کریں گے وہی فلاح پائیں گے  ۔  
  • Ra bracket.png ادْعُ إِلِى سَبِيلِ رَبِّكَ بِالْحِكْمَةِ وَالْمَوْعِظَةِ الْحَسَنَةِ وَجَادِلْهُم بِالَّتِي هِيَ أَحْسَنُ إِنَّ رَبَّكَ هُوَ أَعْلَمُ بِمَن ضَلَّ عَن سَبِيلِهِ وَهُوَ أَعْلَمُ بِالْمُهْتَدِينَ Aya-125.png La bracket.png
  • ترجمہ: اے نبی ،  اپنے رب کے راستے کی طرف دعوت دو حکمت اور عمدہ نصیحت کے ساتھ ،  اور لوگوں سے مباحثہ کرو ایسے طریقہ پر جو بہترین ہو  ۔  تمہارا رب ہی زیادہ بہتر جانتا ہے کہ کون اس کی راہ سے بھٹکا ہوا ہے اور کون راہ راست پر ہے  ۔  [3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Dakwah (Malaysia)". Oxford Islamic Studies Online (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 02 نومبر 2018. 
  2. Kahin، Audrey (2015). Historical Dictionary of Indonesia (بزبان انگریزی). Rowman & Littlefield. صفحہ 112. ISBN 9780810874565. 
  3. مودودی، مولانا. تفہیم القرآن.