زمینی کرۂ ہوا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
"فضاء" سے رجوع مکرر؛ دیگر استعمال کے لئے دیکھئے: فضاء (ضد ابہام).
فضائی گیسیں دوسرے رنگوں کے نسبت نیلا رنگ زیادہ مقدار میں منتشر کرتی ہیں، جس کی وجہ سے خلاء سے دیکھے جانے پر زمین کے گرد ایک نیلا ہالہ نظر آتا ہے۔

زمینی کرۂ ہوا، زمین کے گرد گیسوں کا ایک غلاف ہے۔ زمین کی کششِ ثقل ان گیسوں کو اپنے گرد ایک کرہ کی مانند سموۓ رکھے ہے۔ عام فہم الفاظ میں اِسے عموماً صرف فضاء بھی کہا جاتا ہے؛ چنانچہ زمین کی طرح دوسرے اجرامِ فلکی کے بھی کرۂ ہوا اور فضائیں ہیں۔ یہ گیسوں کا غلاف، سورج سے پیدا ہونے والی خطرناک شمسی اور بالائے بنفشی شعاعوں سے زمین کی حفاظت کرتا ہے۔ یہ نہ صرف زمین کو باہر کی مضر شعاعوں سے بچاتا ہے بلکہ یہ زمین پر گرمی کو بھی خلاء میں خارج ہونے سے روک لیتا ہے۔

فضاء کی کیمیائی بناوٹ[ترمیم]

فضاء کا خُشک حصٌہ ٪78.09 نائٹروجن، ٪20.95 آکسیجن، ٪0.93 آرگان، ٪0.039 کاربن ڈائی آکسائیڈ اور قلیل مقدار میں دوسری گیسوں پر مبنی ہے۔ فضاء کا نم حصٌہ تقریباً ٪1 آبی بخارات پر مُشتمل ہے۔ گیسوں کے اِس میل یا آمیزے کو اکثر ہوا کہا جاتا ہے۔

گیس کیمیائی صیغہ حجم (فی ملین) فیصد
فضاء کا خُشک حصٌہ
نائٹروجن N2 780,840 78.084٪
آکسیجن O2 209,460 20.946٪
آرگان Ar 9,340 0.9340٪
کاربن ڈائی آکسائیڈ CO2 394.45 0.0384٪
نیون Ne 18.18 0.001818٪
ہیلیم He 5.24 0.000524٪
میتھین CH4 1.79 0.000179٪
کرپٹون Kr 1.14 0.000114٪
ہا‏ئڈروجن H2 0.55 0.000055٪
نائٹرس آکسائڈ N2O 0.325 0.0000325٪
کاربن مونو آکسائیڈ CO 0.1 0.00001٪
زینون Xe 0.09 9 × 10−6٪
اوزون O3 0.0 تا 0.07 0٪ تا 7 × 10−6٪
نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ NO2 0.02 2 × 10−6٪
آئیوڈین I2 0.01 1 × 10−6٪
آمونیا NH3 قلیل مقدار
فضاء کا نم حصٌہ
آبی بخارات H2O قلیل مقدار تقریباً ٪0.40

کرۂ ہوا کی ساخت[ترمیم]

کرۂ ہوا کی ساخت اور اسکی دیگر پرتیں۔

بنیادی پرتیں[ترمیم]

زمین کے کرۂ ہوا کی پانچ پرتیں ہوتی ہیں۔ عموماً، اونچائی اور بلندی کے ساتھ ہوائی دباؤ اور کثافت میں کمی آتی ہے، لیکن جب فضاء کو مختلف پرتوں میں بانٹنا ہو تو درجہِ حرارت ایک مستقل مقدار سمجھی جاتی ہے۔ درجہِ حرارت اونچائی کے ساتھ نسبتاً دائمی انداز میں کم ہوتا ہے، چناچہ فضائی پرتوں کو بانٹنے کے لئے درجہِ حرارت کا استعمال کیا جاتا ہے۔ مندرجہ ذیل فضائی پرتیں ملاحظہ کیجئے؛ نچلی پرت سے لیکر اونچی ترین پرت تک:

کرۂ متغیرہ[ترمیم]

اس زمرے کے اصل مضمون کے لئے ملاحظہ کریں: کرۂ متغیرہ

کرۂ متغیرہ (انگریزی: Troposphere)، کرۂ ہوا کی سب سے نچلی پرت ہے۔ یہ زمین کی قریب ترین فضائی پرت ہے۔ یہ پرت یا کرہ زمینی سطح سے شروع ہوتی ہے اور شمالی و جنوبی قطبین سے تقریباً 9 کلومیٹر (30،000 فٹ) کی بلندی تک جبکہ خط استوا سے 17 کلومیٹر (56،000 فٹ) کی بلندی تک پھیلی ہوئی ہے۔ یہ زمین کی سطح سے منتقل ہونے والی توانائی سے گرم رہتی ہے اور نیچے سے اوپر جاتے ہوئے یہاں درجہ حرارت میں بھی کمی واضح طور پر محسوس ہوتی ہے۔ نیچے سے اوپر تک درجہ حرارت میں 17 ڈگری سینٹیگریڈ سے لیکر 52– ڈگری سینٹیگریڈ تک کی کمی محسوس کی جا سکتی ہے۔

اِس پرت کا کمیتی وزن کُل کرۂ ہوا کا 80 فیصدی کمیتی وزن ہوتا ہے یعنی گیسوں کی اکثریت اِسی پرت میں پائی جاتی ہے۔ اِس کرہ کی خاص بات یہ بھی ہے کہ اِس میں موسمی تبدیلیاں خُوب واضح ہوتی ہیں اور اِسلئے اِسے موسمی پرت بھی کہتے ہیں۔ بادل، بارش اور ہوا - اِن سب کا تعلق اِسی پرت سے ہے۔

کرۂ قائمہ[ترمیم]

اس زمرے کے اصل مضمون کے لئے ملاحظہ کریں: کرۂ قائمہ

کرۂ قائمہ (انگریزی: Stratosphere)، کرۂ ہوا کی دوسری پرت ہے۔

کرۂ میانی[ترمیم]

اس زمرے کے اصل مضمون کے لئے ملاحظہ کریں: کرۂ میانی

کرۂ میانی (انگریزی: ‏Mesosphere)، کرۂ ہوا کی تیسری اور درمیانی پرت ہے۔

کرۂ حراری[ترمیم]

اس زمرے کے اصل مضمون کے لئے ملاحظہ کریں: کرۂ حراری

کرۂ حراری (انگریزی: ‏Thermosphere)، کرۂ ہوا کی چوتھی پرت ہے۔ مختلف پرتوں کے برعکس اس کرہ میں نیچے سے اوپر جاتے ہوئے درجہِ حرارت میں کمی کے بجائے اضافہ ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اِسے کرۂ حراری کہا جاتا ہے۔ اِس اُلٹ رُجحان کی وجہ دیگر گیسوں کے سالمات کی ادنا اور کم درجہ کی کثافت ہے۔ اِس پرت کا درجہِ حرارت 1،500 ڈگری سینٹگریڈ تک پہنچ سکتا ہے۔ چونکہ اس کرہ میں گیسوں کے سالمات میں کافی فاصلہ ہوتا ہے، درجہِ حرارت حسبِ معمول کام نہیں کرتا۔

کرۂ روانیہ[ترمیم]

اس زمرے کے اصل مضمون کے لئے ملاحظہ کریں: کرۂ روانیہ

کرۂ حراری کے بیچ ہوا کا ایک اور غلاف بھی ہوتا ہے جسے کرۂ روانیہ یا آئونی کرہ (انگریزی: ‏Ionosphere) کہا جاتا ہے۔ اس کرہ میں آئونی مادہ شمسی اشعاع کی وجہ سے حرکت کرتا ہے۔ اس کا پھیلاؤ زمین سے 500 تا 1،000 کلومیٹر (160،000 تا 3،300،000 فٹ) کی بلندی پر ہے۔ بین الاقوامی خلائی مرکز بھی اسی کرہ میں واقعہ ہے۔ اس کے کچھ حصّے کرۂ بیرونی کی سرحد سے بھی متجاوز کر بیٹھتے ہیں۔ یہ کرہ اہمیت کا حامل اسلئے بھی ہے کیونکہ یہ برقناطیسی امواج، خاص طور پر مشعوی امواج، کی نشریات میں بیشمار مدد دیتا ہے۔ اس پرت میں قطبی اشفاق بھی دیکھتے ہیں۔

کرۂ بیرونی[ترمیم]

اس زمرے کے اصل مضمون کے لئے ملاحظہ کریں: کرۂ بیرونی

کرۂ بیرونی (انگریزی: ‏Exosphere)، کرۂ ہوا کی آخری پرت ہے۔

مزید دیکھئے[ترمیم]