ہندو شادی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ہندو شادی کے موقع پر سجاوٹ سے بھرا منڈپ

ہندو شادی یا ویواہ کے حسب ذیل مقاصد ہیں:

  1. دھرم (فریضہ)
  2. پرجا (اولاد)
  3. رتی (لطف)

ان تین باتوں میں فریضے کی ادائیگی کو اولیت دی گئی ہے۔ تناسل یا اولاد کے حصول کو دوسرا مقام دیا گیا ہے۔ جنسی تسکین کو تیسرا اور آخری مقام دیا گیا ہے۔

پسندیدہ یا مقبول شادی کے طریقے[ترمیم]

بھارت کے نوشادی شدہ ہندو زوجین کی تصویر

ہندو مذہب کی رو سے حسب ذیل شادیاں منظور کردہ یا مقبول قرار پائے پیں، جنہیں پرہستا کہا گیا ہے:

  1. برہما ویواہ: یہ مقدس ترین شادی کا طریقہ ہے۔ اس میں ایک باپ اپنی بیٹی کو اچھے کردار اور پڑھے لکھے لڑکے کو بیاہ دیتا ہے۔
  2. دَیْوَا ویواہ: اس شادی کی روسے ایک باپ اپنی بیٹی کو ایک نوجوان پروہت کو دَکشِنا (عطیہ) کے طور پر دیتا ہے جس نے اس کی ایما پر یگنا کی رسم انجام دی ہو۔
  3. ارشا ویواہ: اس شادی کی رو سے ایک باپ ایک گائے بیل کے عوض یا ان چوپایوں کے دو جوڑوں کے بدلے اپنی بیٹی کی شادی مذہبی رسم ورواج کے مطابق کردیتا ہے۔
  4. پْرَجاپَتْیَا ویواہ: اس شادی کی رو سے بات اپنی کو اس منتر کے ساتھ سوغات کے طور پر دیتا ہے کہ: "تم دونوں اپنے دھرم (فریضے) کو انجام دے پاؤ"۔

مکروہ شادی کے طریقے[ترمیم]

  1. اَسُورَا ویواہ: اس شادی کی رو سے دولہے کو دلہن کے لیے دھن دولت دینا پڑتا ہے۔ یہ ہندو عقائد کی رو سے دلہن کی خریداری ہے۔
  2. گَنْدھَرْوَا ویواہ: اس شادی کی رو سے لڑکی خود اپنے بَر کا انتخاب کرتی ہے۔ دراصل لڑکا لڑکی دونوں ایک دوسرے کو جانتے ہیں۔ یہ ہمالیہ پربت کی نچلی ڈھلان کے علاقے میں عام ہے۔
  3. رَاکْشَسْ ویواہ: اس شادی کی رو سے لڑکی کے عزیزواقارب کے قتل کے بعد لڑکی سے آبدیدہ حالت میں زبردستی شادی کی جاتی ہے۔ یہاں مرضی کا کوئی دخل نہیں ہوتا ہے، بس لڑکی کو شادی کے لیے مجبور کیا جاتا ہے۔
  4. پَیْسَچا ویواہ: اس شادی کی رو سے ایک آدمی خوابیدہ، مخمور یا عقلاً معذور لڑکی کو رجھاکر شادی کرتا ہے۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. “Indian Society: Issues, Policies and Welfare Schemes”, Dr Vinita Pandey, BSC Publishers & Distributors, Hyderabad, P. 1.20-21