وید

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

وید (سنسکرت: वेद ویدا، "علم") ہندو مت کے قدیم الہامی کتب کے مجموعے کا نام ہے جو ممکنہ طور پر پندرھویں اور پانچویں صدی قبل مسیح کے دوران ضبط تحریر میں لائی گئیں۔ اہل ہنود کی مقدس کتب کی دو بنیادی اقسام یعنی شروتی اور سمرتی میں سے ویدوں کو اول الذکر میں داخل سمجھا جاتا ہے۔

یوں تو ویدوں کو ہندو مت کی دھرمی کتب میں شامل کِیا جاتا ہے، البتہ انکو کتب کہنے میں کچھ مشکلات ہیں۔ وید اولاً زبانی کلام ہے لہذا براہمنوں کی ذمہ داری ہوتی ہے کہ ان ویدوں کو حفظ کریں۔

اپنیشدوں کی توحیدی اور فلسفیانہ تعلیمات کے برخلاف ویدوں کا مرکزی خیال منتر، ہون، مذہبی رسومات، آگ اور براہمن کی تقدیس اور قربانی کی اہمیت ہے۔

”وید“ کا مصدر وِد ہے جس کے معنی ہیں عقل، جاننا، سمجھنا وغیرہ، ہندومت میں وید کو منفرد مقام حاصل ہے، ہندوؤں کے عقائد و اعمال اور سماجی و مذہبی رسومات کو ویدوں کی جانب منسوب کیا جانا باعث شرف سمجھا جاتا ہے۔

آریوں کی ہند میں آمد کے بعد پندرہویں صدی ق م سے لے کر چوتھی صدی ق م تک جو مذہبی سرمایہ وجود میں آیا وہ وید یا ویدک ادب کے نام سے معروف ہے، ویدوں میں جن ابدی حقائق اور ناقابل انکار صداقتوں کا تذکرہ ہے ان کو انسانی کاوشوں کی جانب منسوب نہیں کیا جاتا بلکہ ان کے بارے میں یہ خیال کیا جاتا ہے کہ ان میں وہ ابدی اور روحانی صداقتیں اور لازوال حقائق و معارف مرقوم ہیں جن کو دراصل اعلٰی ترین روحانیت کے وصف مزین ہو کر قدیم رشیوں، مُنیوں نے اپنے قلوب میں محفوظ کر لیا تھا جیسا کہ مہاتما گاندھی نے لکھا ہے کہ ”یہ سلسلہ نسل در نسل چلتا رہا یہاں تک کہ آریوں کے ہندوستان میں ورود کے بعد کم و بیش گیارہ سو سالوں میں ان کو انسانی الفاظ کا جامہ پہنایا گیا“۔[1]

ویدوں کی معروف کتب[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

جوالہ جات[ترمیم]

  1. ایم کے گاندھی ”ہندو دھرم“ ص 4، نوجیون پبلشنگ ہاؤس، احمد آباد 1950ء