969 تحریک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
969 تحریک
969 Movement
၉၆၉ လှုပ်ရှားမှု
قائد اشین وراتھو
قسم قوم پرست تنظیم
آغاز Flag of Myanmar.svg میانمار
سیاسی نظریہ انتقاد بر اسلام، بدھ مت احیا
مذہب بدھ مت

969 تحریک (انگریزی: 969 Movement؛ برمی: ၉၆၉ လှုပ်ရှားမှု) ایک قوم پرست تحریک ہے [1] جو بنیادی طور پر برما میں اسلام کی اشاعت کے خلاف ہے۔ برما کا اکثریتی مذہب بدھ مت ہے۔ [2][3] تین اعداد 969 "بدھ کے فضائل، بدھ مت رسومات اور بدھ برادری کی علامت ہیں " [1][2][4]

پہلا ہندسہ 9 گوتم بدھ کی نو خصوصی صفات کی علامت ہے اور ہندسہ 6 اس کے دھرم کی چھ خصوصی صفات یا بدھ مت کی تعلیمات اور آخری ہندسہ 9 بدھ سنگھ (راہب برادری) کے نو خصوصی اوصاف کی نمائندگی کرتا ہے۔ [5]

مختلف ذرائع ابلاغ اور تنظیموں نے اسے اسلاموفوبیا یا مسلم مخالف قرار دیا ہے۔ [6][7][8][9] تحریک کے میانمار بدھ مت حامی اس سے انکار کرتے ہیں کہ یہ مسلمانوں کے خلاف ہے، بلکہ بھگشو اشین وارتھو کی تحریک راکھائن نسلی (بدھ مت پیروکار) کی بنگالیوں کی دہشت گردی سے حفاظت کی تحریک ہے۔ [10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ 1.0 1.1 "969: The Strange Numerological Basis for Burma's Religious Violence – Alex Bookbinder"۔ The Atlantic۔ 9 اپریل 2013۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  2. ^ 2.0 2.1 "Extremism builds among Myanmar’s Buddhists | Seattle Times Newspaper"۔ Seattletimes.com۔ 21 جون 2013۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  3. Matthew J Walton (2 اپریل 2013)۔ "Buddhism turns violent in MyanmarAsia Times۔ http://www.atimes.com/atimes/Southeast_Asia/SEA-01-020413.html۔ 
  4. "Root Out the Source of Meikhtila Unrest"۔ Irrawaddy.org۔ اصل سے جمع شدہ 27 اگست 2013 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  5. "Nationalist Monk U Wirathu Denies Role in Anti-Muslim Unrest"۔ Irrawaddy.org۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  6. Downs، Ray (27 مارچ 2013)۔ "Is Burma's Anti-Muslim Violence Led by Buddhist Neo-Nazis ?"۔ Vice.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  7. Sardina، Carlos (10 مئی 2013)۔ "Who are the monks behind Burma’s ’969′ campaign? | DVB Multimedia Group"۔ Dvb.no۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  8. Lindsay Murdoch (15 اپریل 2013)۔ "Anti-Muslim movement hits Myanmar"۔ Smh.com.au۔ http://www.smh.com.au/world/antimuslim-movement-grows-in-myanmar-20130415-2huze.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  9. "Myanmar’s extremist Buddhists get free rein"۔ Nation.com.pk۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 اکتوبر 2013۔ 
  10. "Religious radicals driving "Myanmar's" unrestGlobal Post۔ 31 مارچ 2013۔ http://www.globalpost.com/dispatch/news/afp/130331/religious-radicals-driving-myanmar-unrest-experts۔