ابتدائی مسیحیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اِختھوس، مسیحیت کی ابتدائی علامات میں سے ایک

ابتدائی مسیحیت سے مراد مسیحیت کا وہ عرصہ جو یسوع مسیح کی وفات یعنی 33ء سے شروع ہو کر 325ء یعنی نیقیہ کونسل کے انعقاد تک پھیلا ہوا ہے۔[1] تاہم کبھی کبھی اس اصطلاح سے محض یسوع مسیح کے اولین شاگرد، ان کے معاصرین اور ان کے اخلاف ہی مراد لیے جاتے ہیں۔[2][3][4]

ابتدائی صدیوں میں جب مسیحیت یہودیت سے علاحدہ ہوئی تو کلیسیا کے لیے یہ نیا دور تھا۔ اس دور میں مسیحیوں پر لازم تھا کہ وہ سلطنت روما میں موجود دیگر ادیان کے پیروکاروں کے سامنے اپنے اعتقادات کا دفاع کریں۔ چنانچہ اس کوشش میں مسیحیوں کو سخت تکلیفوں اور مصائب سے بھی گزرنا پڑا، اس لیے مسیحیوں کی تاریخ میں اس عہد کی خاص اہمیت ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ابتدائی مسیحیت۔ اعمال کی کتاب کی روشنی میں مسیحیت کے بڑی سرعت سے پھیلاؤ کا بیان۔
  2. Catholic Encyclopedia: Proselyte: "The English term "proselyte" occurs only in the New Testament where it signifies a convert to the Jewish religion (Matthew 23:15; Acts 2:11; 6:5; etc.), though the same Greek word is commonly used in the Septuagint to designate a foreigner living in Palestine. Thus the term seems to have passed from an original local and chiefly political sense, in which it was used as early as 300 B.C., to a technical and religious meaning in the Judaism of the New Testament epoch."
  3. Dodds، E.R. (1970) [1965]۔ Pagan and christian in an Age of Anxiety۔ New York: Norton۔ صفحات 136–37۔ "A Christian congregation was from the first a community in a much fuller sense than any corresponding group of Isiac or Mithraist devotees. Its members were bound together not only by common rites but by a common way of life . ... Love of one's neighbour is not an exclusively Christian virtue, but in [this] period Christians appear to have practised it much more effectively an any other group. The Church provided the essentials of social security. ... But even more important, I suspect, than these material benefits was the sense of belonging which the Christian community could give." 
  4. "The First Apology, Chapter 61"۔ New Advent۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 دسمبر 2013۔