عرب بہار

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عرب بہار
تاریخ18 دسمبر 2010 – مبہم تاریخ اختتام
مقام
وجہ
مقاصد
طریقہ کار
صورتحال

  • تونس: صدر زین العابدین بن علی معزول اور حکومت کا خاتمہ۔
  • مصر: صدر حسنی مبارک معزول اور حکومت کا خاتمہ
  • لیبیا: رہنما معمر القذافی killed following a civil war that saw a foreign military intervention, اور حکومت گر گئی۔
  • یمن: صدر علی عبداللہ صالح معزول, اور power handed to a national unity government.
  • سوریہ: صدر بشار الاسد faces civil uprising against his rule that deteriorates into armed rebellion اور eventual full-scale civil war.
  • بحرین: Civil uprising against the حکومت crushed by authorities اور Saudi-le intervention.
  • کویت، لبنان اور عمان: حکومت changes implemented in response to احتجاج.
  • مراکش اور اردن: Constitutional reforms implemented in response to احتجاج.
  • سعودی عرب، سوڈان، موریطانیہ اور دیگر عرب ممالک: احتجاج.
متاثرین
اموات169,307–174,339+ (بین الاقوامی اندازہ، جاری; جدول دیکھیے)

عرب بہار، عرب دنیا میں شروع ہونے والی ایک انقلابی لہر تھی، جو تونس میں 18 دسمبر 2010ء کو شروع ہوئی، جس نے کئی ممالک کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ کئی بادشاہتوں کا تختہ الٹ گیا۔ چھوٹے اور بڑے (پر امن اور کچھ پر تشدد) کئی احتجاجی مظاہر ہوئے، یمن، لیبیا، عراف اور سوریہ میں خانہ جنگی شروع ہو گی۔ لیبیا کے حکمران معمر القذافی کو عوام نے مار ڈالا۔ 2011 ء کے اوائل میں، جب مشرق وسطیٰ کے ملکوں (تیونس، مصر، یمن، لیبیا ) میں حکمرانوں کے خلاف احتجاجی تحریکیں شروع ہوئیں اور یکے بعد دیگرے کامیاب بھی ہو گئیں، تو اسے عرب بہار قرار دیا گیا؛ یعنی عرب دنیا کو موروثی بادشاہتوں اور فوجی آمریتوں کے تسلط سے آزادی مل رہی ہے اور اس پرجمہوریت کی بہار چھا رہی ہے۔[1]

خلاصہ بلحاظ ملک[ترمیم]

  حکومت کا خاتمہ   ایک سے زیادہ بار حکومت کا خاتمہ   خانہ جنگی   احتجاج اور حکومتی تبدیلیاں
  بڑا احتجاج   چھوٹا احتجاج   دیگر احتجاج اور عرب دنیا کے باہر عسکری کارروائی
ملک تاریخ آغاز احتجاج کی حیثیت نتائج تعداد اموات صورت حال
Flag of Tunisia.svg تونس 18 دسمبر 2010 حکومت کا خاتمہ، 14 جنوری 2011 Overthrow of زین العابدین بن علی; Ben Ali flees into exile in Saudi Arabia 338[8] E Government overthrown
Flag of Algeria.svg الجزائر 29 دسمبر 2010 اختتام جنوری 2012ء
  • Lifting of the 19-year-old state of emergency[9][10]
8[11] B بڑا احتجاج
Flag of Jordan.svg اردن 14 جنوری 2011 Ended 3[16] C احتجاج اور governmental changes
Flag of Oman.svg سلطنت عمان 17 جنوری 2011 اخیر مئی 2011 &10000000000000004000000 2–6[22][23][24] C احتجاج اور حکومتی تبدیلیاں
Flag of Egypt.svg مصر 25 جنوری 2011 حکومتیں گر گئیں فروری 2011، مصری بحران مندرجہ ذیل حسنی مبارک کی حکومت کا خامتہ وہ گیا، who is later convicted of corruption اور ordered to stand trial for ordering the killing of protesters.
Sinai insurgency
  • Egyptian Armed Forces launch anti-terror military operations in the Sinai.
  • Increase in violence اور attacks by insurgents since the ouster of Morsi.[35]
&10000000000004000000000 4000+[36] Eحکومت کا خاتمہ
Flag of Yemen.svg یمن 27 جنوری 2011 حکومت کا خاتمہ فروری 2012۔ یمن بحران مندرجہ ذیل۔ Overthrow of علی عبداللہ صالح; Saleh granted immunity from prosecution. 10000+[40] Eحکومت کا خاتمہ
Flag of Djibouti.svg جبوتی 28 جنوری 2011 مارچ 2011ء میں خاتمہ 2[41] A چھوٹے درجے کا احتجاج
Flag of Somalia.svg صومالیہ 28 جنوری 2011 اختتام پزیر 0 A چھوٹے درجے کا احتجاج
Flag of Sudan.svg سوڈان 30 جنوری 2011 26 اکتوبر 2013
  • صدر بشیر announces he will not seek another term in 2015[42]
  • President Bashir nevertheless chosen as Ruling Party candidate for 2015 election [43]
200+[44] A بڑا احتجاج
Flag of Iraq.svg عراق 12 فروری 2011 جاری
  • وزیر اعظم Maliki announces that he will not run for a 3rd term;[45]
  • Resignation of provincial governors اور local authorities[46]
  • Two-third wage increase for Sahwa militia members
  • Release of 3,000 prisoners,[47] including 600 female prisoners
  • Crackdown by Security Forces results in renewed violence in Anbar
  • ISIS launches offensives in northern Iraq capturing Mosul اور large swathes of territory
  • Regional اور extra-regional hegemonic powers including Iran اور the United States enter the war on the side of the Iraqi حکومت to defeat ISIS
  • Prime Minister Haider al-Abadi اور the Iraqi parliament reform the governmental structure by reducing the size of the cabinet, eliminating various governmental positions, merging ministries, اور removing sectarian quotas in political appointments.[48][49][50]
20,000+[51] B Civil war اور governmental changes
Flag of Bahrain.svg بحرین 14 فروری 2011 18 مارچ 2011 120[57] D مسلسل اندرونی خلفشار اور حکومت تبدیل
Flag of Libya (1977–2011).svg لیبیا 17 فروری 2011 حکومت کا خاتمہ 23 اگست 2011، بحران جاری Overthrow of معمر القذافی; Gaddafi killed by rebel forces &10000000000040000000000 40,000+[60] خانہ جنگی
Flag of Kuwait.svg کویت 19 فروری 2011 دسمبر 2012ء میں اختتام 0[63] C احتجاج اور governmental changes
Flag of Morocco.svg مراکش 20 فروری 2011 مارچ اپریل 2012ء میں اختتام 6[66] C احتجاج اور حکومتی تبدیلیاں
Flag of Mauritania.svg موریتانیہ 25 فروری 2011 اختتام پزیر 3[67] A چھوٹے درجے کا احتجاج
Flag of Lebanon.svg لبنان 27 فروری 2011 دسمبر 2011ء میں اختتام 0 D احتجاج اور حکومتی تبدیلیاں
Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب 11 مارچ 2011 اختتام پزیر 24[73] A چھوٹے درجے کا احتجاج
Flag of Syria.svg سوریہ 26 جنوری 2011 Civil uprising transformed into شامی خانہ جنگی after August 2011
  • Release of some political prisoners[74][75]
  • Dismissal of Provincial Governors[76][77]
  • Resignation of the Government[78]
  • End of Emergency Law
  • Resignations from Parliament[79]
  • Large defections from the Syrian army اور clashes between soldiers اور defectors[80]
  • Formation of the Free Syrian Army اور full-scale civil war
&10000000000002206000000 230,620–320,620 خانہ جنگی
Flag of ایران صوبہ خوزستان 15 اپریل 2011 18 اپریل 2011ء میں اختتام 12 B بڑا احتجاج
اسرائیل کی سرحدیں 15 مئی 2011 5 جون 2011ء اختتام
  • Arab demonstrations on the borders of Israel
&10000000000000035000000 67[81][82] B بڑا احتجاج
Flag of the United Arab Emirates.svg متحدہ عرب امارات Arrests made in the name of national security اور some activists had their nationality revoked. Some activists deported.[83][84] 0 C چھوٹے درجے کا احتجاج
Flag of Palestine.svg فلسطینی قومی عملداری 10 فروری 2011 5 اکتوبر 2012
  • Then Palestinian prime minister Salam Fayyad states that he is "'willing to resign"[85]
  • Fayyad resigns on 13 April 2013 but because of political differences between him اور the Palestinian صدر محمود عباس over the finance portfolio[86]
0 C چھوٹے درجے کا احتجاج
کل تعداد اموات اور دیگر نتائج: 294,251+ –384,255+ (بین الاقوامی تخمینہ،> 80% سوریہ میں جاری)
  • چھ حکومتوں کا خاتمہ (مصر اور یمن میں دو دو بار)
  • تین خانہ جنگیاں (سوریہ، عراق، لیبیا)
  • حکومتی تبدیلیوں کے نتیجے میں خانہ جنگیاں
  • حکومتی تبدیلیوں کے نتیجے میں پانچ بار احتجاج
  • پانچ بڑے احتجاج
  • پانچ چھوٹے احتجاج

حوالہ جات[ترمیم]

  1. اصغر عبد اللہ. "عرب بہار ، حقیقت کچھ اور تھی". ایکسپریس نیوز، پاکستان. اخذ شدہ بتاریخ 7 جنوری 2016. 
  2. "Tunisian elections intensify focus on alliances". Al Monitor. 14 September 2014. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2014. 
  3. "Jordan's king appoints new PM to form new حکومت – CNN.com". Edition.cnn.com. 11 October 2012. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 مئی 2013. 
  4. "Region – World – Ahram Online". English.ahram.org.eg. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 مئی 2013. 
  5. "Clashes in Sinai over Morsi removal". Ahram Online. 5 July 2013. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 05 جولا‎ئی 2013. 
  6. "Egypt unrest: 846 killed in احتجاج – official toll". BBC. April 19, 2011. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  7. "Djiboutians rally to oust president". aljazeera.com. 18 February 2011. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  8. ABDELAZIZ, KHALID. "Sudan's Bashir chosen by ruling party as candidate for 2015 elections", روئٹرز, KHARTOUM, 21 October 2014. Retrieved on 21 October 2014.
  9. "UN rights monitor condemns deadly Sudan crackdown". Daily News Egypt. 4 October 2013. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  10. "Iraq protestors win first demand:Release of 3,000 prisoners". Middle East online. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جولا‎ئی 2014. 
  11. "Iraqi PM al-Abadi slashes cabinet, eliminates, merges ministries". Deustche Welle. 16 August 2015. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 اگست 2015. 
  12. "Iraqi Parliament Backs Overhaul of Government". نیو یارک ٹائمز. 11 August 2015. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 اگست 2015. 
  13. "Premier Haider al-Abadi, Facing احتجاج, Proposes Iraqi حکومت Overhaul". نیو یارک ٹائمز. 9 August 2015. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 اگست 2015. 
  14. "Casualty figures exaggerated, says Ministry". Libya Herald. 7 January 2013. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 مئی 2013. 
  15. Tensions Beneath the Stability in the U.A.E. - The New York Times
  16. "UAE: End Trial of Activists Charged with Insulting Officials". تنظیم برائے بین الاقوامی عفو عام. 17 July 2011. اخذ شدہ بتاریخ 22 جنوری 2012.