زکوٰۃ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
Basmala.svg

Allah-green.svg
مقالہ بہ سلسلۂ مضامین
اسلام

تاریخ اسلام

عقائد و اعمال

خدا کی وحدانیت
قبولیت اسلام
نماز · روزہ · حج · زکوٰۃ

اہم شخصیات

محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم
ابوبکر صدیق · عمر فاروق · عثمان غنی · علی حیدر
احباب حضور اکرم
حضور اکرم کا خاندان
حضور اکرم کی ازواج
دیگر پیغمبران

کتب و قوانین

قرآن · حدیث · شریعت
قوانین · کلام
سیرت ۔ فقہ

مسلم مکتبہ ہائے فکر

اہل سنت · اہل تشیع · صوفی

معاشرتی پہلو

اسلامیات · فلسفہ
فنون · اسلام اورسائنس
قران اور جدید سائنس
فن تعمیر · مقامات
اسلامی تقویم · تعطیلات
خواتین اور اسلام · رہنما
سیاسیات · جہاد · آزاد خواہی

اسلامی سیاسی نظام

خلافت
امامت
ولایت ،
بیعت
خلیفہ
امیرالمومنین،
الشوریٰ

اسلامی اقتصادی نظام

اسلامی اقتصادی نظام
سود کی ممانعت،
قمار کی ممانعت ،
غرر کی ممانعت،
اسلامی زر (پیسہ)،
ودیعہ (بینک کا متبادل)،
اسلامی وکالہ،
اسلامی آزاد بازار ،
اسلامی نجکاری،
اسلامی میزانیہ یا بجٹ،
اسلامی تجارت،
بیت المال،
اسلامی محصول،
زکوٰۃ، جزیہ،
نصاب، خمس،
صدقہ، وقف،
اسلامی اصول برائےبنیادی ضروریات زندگی
اسلامی بینکاری، مرابحہ،
تکافل، صکوک

مزید دیکھیئے

اسلامی اصطلاحات
اسلام پر مضامین کی فہرست


زمرہ جات



زکوٰۃ اسلام کے پانچ ارکان میں سے ايک اہم رکن ہے، جس کے لغوی معنی پاکیزہ کرنا یا پروان چڑھانا ہیں۔ اس کا بنیادی مقصد غریبوں کی مدد، معاشرتی فلاح و بہبود میں صاحب ثروت لوگوں کا حصہ ملانا اور مستحق لوگوں تک زندگی گزارنے کا سامان بہم پہنچانا ہے۔

اسلام کا تیسرا اہم رکن ہے۔زکوۃ کے معنی پاکیزگی اور بڑھنے کے ہیں۔

پاکیزگی سے مراد اللہ تعالٰی نے ہمارے مال و دولت میں جو حق مقررکیا ہے اس کو خلوص دل اور رضامندی سے ادا کیا جاۓ۔نشونما سے مراد حق داروں پر مال خرچ کرنا اپنی دولت کو بڑھانا ہے ،جس سے مال میں برکت پیدا ہوتی ہے۔

دین اک اصطلاح میں زکوۃ ایسی مالی عبادت ہے جو ہر صاحب نصات مسلمان پرفرض ہے۔

مصارف زکوۃ[ترمیم]

زکوۃ تو بس محتاجوں ‘ مسکینوں‘ عاملین صدقات اور تالیف قلوب کے سزا واروں کے لیے ہے اور اس لیے کہ یہ گردنوں کے چھڑانے ‘ تاوان زدوں کے سنبھالنے ‘ اللہ کی راہ اور مسافروں کی امداد میں خرچ کی جائے ۔ یہ اللہ کا مقرر کردہ فریضہ ہے اور اللہ علم والا اور حکمت والا ہے۔(9۔60)


زکوۃ کی فرضیت[ترمیم]

زکوٰۃ فرض ہونے کے لیے چند شرطیں ہیں:

  • مسلمان ہونا، کافر پر زکوٰۃ واجب نہیں۔
  • بالغ ہونا، نابالغ پر زکوٰۃ فرض نہیں۔
  • عاقل ہونا، بوہرے(مجنون) پر زکوٰۃ فرض نہیں جبکہ اسی حال میں سال گذر جائے اور کبھی کبھی اسے افاقہ ہو جاتا ہے تو فرض ہے۔
  • آزاد ہونا، غلام پر زکوٰۃ نہیں اگرچہ اس کے مالک نے تجارت کی اجازت دے دی ہو۔
  • مال بقدرِ نصاب اس کی ملک میں ہونا، اگر نصاب سے کم ہے تو زکوٰۃ نہیں۔
  • پورے طور پر اس کا مالک ہونا، یعنی اس پر قبضہ بھی ہو۔
  • نصاب کا دین (قرض) سے فارغ (بچا ہوا) ہونا۔
  • نصاب کا حاجتِ اصلیہ سے فارغ ہونا۔
  • مال کا نامی ہونا یعنی بڑھنے والا، خواہ حقیقتہً ہو یاحکماً۔
  • نصاب پر ایک سال کا مل کا گذر جانا ۔(عامۂ کتب)

اللہ تعالٰی نے قراآن کریم میں ارشاد فرمایا : اقیموا الصلوۃ واتوا الزکوۃ ۔ (البقرۃ) ترجمہ:نماز قائم کرو اور زکوۃ ادا کرو ۔ اس آیۃ کریمہ میں زکوۃ کی فرضیت کا ثبوت مل رہا ہے.

اس کے علاوہ خود حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے زکوۃ کا اہتمام فرمایا اور لوگوں کو زکوۃ کا حکم فرمایا اور اسی طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ نے بھی اہتمام فرمایا حتی کہ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ جس نے زکوۃ کا انکار کیا اس کو قتل کر دیا جائے گا اس طرح سے بہت بڑے اٹھنے والے فتنے کا سد باب ہو گیا ۔

زکوۃ تو اسلام نے غربا کی مدد اور ان کی مشکلات کو حل کرنے کے لئے امرا پر فرض کی ہے۔ اور یہ غربت کو ختم کرنے کا بہترین طریقہ ہے ۔ خیال رہے کہ اگر سارے امیر لوگ زکوۃ دیں تو غربت ہمیشہ کے لئے دفن ہو جاتی ہے۔ اسلام کے اس زریں اصول سے ہر مسلمان اور غیر مسلم فائدہ اٹھا سکتا ہے۔


وجوب زکوۃ سے مثتنی چیزیں[ترمیم]

جس چیز کی طرف زندگی بسر کرنے میں آدمی کو ضرورت ہے، اسے حاجتِ اصیلہّ کہتے ہیں، اس میں زکوٰۃ واجب نہیں جیسے رہنے کا مکان ، جاڑے گرمیوں میں پہننے کے کپڑے ، خانہ داری کا سامان، سواری کے جانور ، پیشہ وروں کے اوزار، اہل علم کے لیے حاجت کی کتابیں، کھانے کے لیے غلہ، (ردالمحتار) یونہی حاجتِ اصیلہّ میں خرچ کرنے کے لیے روپے پیسے۔

نصابِ زکوٰۃ[ترمیم]

سونے کی زکوٰۃ :
نصاب : 20 مثقال = 20 دينار =85 گرام
پاکستان ، بنگلاديش اور ہندوستان کے اوزان کے مطابق 7.29تولے سونا کيونکہ
1 تولہ = 11.6638 گرام
تو 20 مثقال = 85 گرام = 7.29 تولہ
شرح : 2.5فيصد يعنی اگر آپ کے پاس20 دينار ہو تو آدھا دينار زکوٰۃ ميں دينا ہو گا ۔
شرط : قمری سال کا پورا ہونا

چاندی کی زکوٰۃ
نصاب : 200 درہم = 595 گرام
يا 595 گرام = 51.01 تولہ
شرح : 2.5فيصد يعنی اگر آپ کے پاس دو سو دراہم ہو تو آپکو پانچ دراہم زکوٰۃ ميں دينا ہو نگے ۔
شرط : قمری سال کا پورا ہونا

اموال تجارت پر زکوٰۃ :
نصاب : مال کی اتنی مقدار جسکی قيمت 20 دينار يعنی 85 گرام سونے کے قيمت کے برابر ہو ۔
شرح : 2.5 فیصد
شرط : قمری سال کا پورا ہونا ۔