بابل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
Babylon
بابل
From the foot of Saddam Hussein's Summer Palace a Humvee is seen driving down a road towards the left. Palm trees grow near the road and the ruins of Babylon can be seen in the background.
صدام حسین کے محل سے شہر بابل کے کهنڈرات کا جزوی منظر
Babylon lies in the center of Iraq
Babylon lies in the center of Iraq
محل وقوع Iraq
مقام حلہ ، ولایت بابل ، عراق
علاقہ بین النہرین/میسوپیٹیمیا
متناسقات 32°32′11″N 44°25′15″E / 32.53639°N 44.42083°E / 32.53639; 44.42083متناسقات: 32°32′11″N 44°25′15″E / 32.53639°N 44.42083°E / 32.53639; 44.42083
قسم آباد
رقبہ 9 کلومیٹر2 (3.5 مربع میل)
تاریخ
معمار عموریہ
قیام 1894 ق م
مقام کے بارے میں
حالت تباہ شدہ
ملکیت عام
عوامی رسائی ہاں


بابل (Babylon) میسو پوٹیمیا (موجودہ عراق) کا ایک قدیم شہر ہے جو سلطنت بابل اور کلدانی سلطنت کا درالحکومت تھا ۔ یہ موجودہ بغداد سے 55 میل دور، بجانب جنوب ، دریائے فرات کے کنارے آباد تھا۔ چار ہزار سال قبل مسیح کی تحریرں میں اس شہر کا تذکرہ ملتا ہے۔ 175 قبل مسیح میں بابی لونیا کے بادشاہ حمورابی نے اسے اپنا پایہ تخت بنایا تو یہ دنیا کا سب سے بڑا اور خوب صورت شہر بن گیا۔ 689 ق م میں بادشاہ بنوکدنصریا بخت نصر دوم نے اسے دوبارہ تعمیر کرایا۔ پرانا شہر دریائے فرات کے مشرقی کنارے پر آباد تھا۔ بخت نصر نے دریا پر پل بنوایا اور مغربی کنارے کا ایک وسیع علاقہ بھی شہر کی حدود میں شامل کر لیا۔ اس کے عہد میں شہر کی آبادی 5 لاکھ کے قریب تھی۔ معلق باغات، جن کا شمار دنیا کے سات عجائبات میں ہوتا ہے ، اسی بادشاہ نے اپنی ملکہ کے لیئے بنوائے تھے۔ 539 ق م میں ایران کے بادشاہ سائرس نے بابل پر قبضہ کر لیا۔ 275 ق م میں اس شہر کا زوال شروع ہوا اور نئےتجارتی مراکز قائم ہونے سے اس کی اہمیت ختم ہو گئی ۔ اب اس کے صرف کھنڈر باقی ہیں۔


شہر بابل کا ایک منظر
برلين کے عجائب خانہ محفوظ شدہ شہر بابل کا عشتار پھاٹک
شہر بابل کے آثار جو بغداد کے 85 کلو میٹر جنوب میں واقع ہے.
1932 ء میں بابل
حمورابی کے دورِ حکومت ( 1792 ق.م. تا 1750 ق.م. ) میں سلطنتِ بابل کا نقشہ
جنگ بابل کے موقع پر اشوریہ کا بادشاہ سناحاریب
عشتار پھاٹک کی تفصیل