آدم علیہ السلام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش


آدم
مکمل نام آدم
وجۂ وفات طبعی
انبیاء میں شمار اول
منسوب دین اسلام
قرآن میں ذکر آدم کے نام سے
جانشین نبی شیث


خدا کے اولین پیغمبر۔ ابوالبشر (انسان کا باپ) اور صفی اللہ (خدا کا برگزیدہ) لقب۔ آپ کے زمانے کا تعین نہیں کیاجا سکتا۔ قرآن مجید میں ہے کہ آدم کی تخلیق مٹی سے ہوئی (اور ہم نے بنایا آدمی کھنکھناتے سنسنےگارے سے) سورت 15 آیات 26 ۔ تخلیق کے بعد اللہ تعالٰی نے آدم کو خلیفتہ اللہ فی الارض قرار دیا اور فرشتوں کو حکم دیا کہ انھیں سجدہ کرو۔ ابلیس کے سوا تمام فرشتے سربسجود ہوگئے۔ ابلیس نافرمانی کے سبب راندہء دربار ٹھہرا۔ حضرت آدم جنت میں رہتے تے۔ کچھ عرصے بعد اللہ تعالٰی نے ان کی بائیں پسلی سے ایک عورت پیدا کی۔ حوا اس کا نام رکھا۔ ان دونوں کو حکم ہوا کہ جنت کی جو نعمت چاہو، استعمال کرو مگر اس درخت کے قریب مت جانا ورنہ ظالموں میں شمار کیے جاؤ گے۔ لیکن شیطان کے بہکانے پر انھوں نے شجر ممنوعہ کا پھل کھا لیا۔ اس پاداش میں انھیں جنت سے نکال کر زمین پر پھینک دیا گیا۔

مقالہ بہ سلسلۂ مضامین

اسلام
Mosque02.svg
قرآن پاک کے مطابق اسلام میں انبیاء علیہ سلام

رسول اور نبی

آدم علیہ السلام · ادریس علیہ السلام · نوح علیہ السلام · ھود علیہ السلام · صالح علیہ السلام · ابراہیم علیہ السلام · لوط علیہ السلام · اسماعیل علیہ السلام · اسحاق علیہ السلام · یعقوب علیہ السلام · یوسف علیہ السلام · ایوب علیہ السلام · شعيب علیہ السلام · موسیٰ علیہ السلام · ہارون علیہ السلام · ذو الکفل علیہ السلام · داؤد علیہ السلام · سليمان علیہ السلام · الیاس علیہ السلام · الیسع علیہ السلام · یونس علیہ السلام · زکریا علیہ السلام · یحییٰ علیہ السلام · عیسیٰ علیہ السلام · محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم

بعض روایات کے مطابق ہبوط آدم کا مقام جزیدہ سراندیپ (سری لنکا) تھا۔ یہاں یہ دونوں دو سو سال تک ایک دوسرے سے جدا رہے۔ آخر خدا نے ان کا گناہ معاف کر دیا اور جبریل انھیں مکے کے قریب جبل عرفات پر چھوڑ آئے ۔ طبری اور ابن الاثیر کی روایت کے موجب خدا نے آدم کو یہاں کعبہ بنانے کا حکم دیا اور جبرئیل نے انھیں مناسک ادا کرنے کے طریقے بتائے۔ انھی مورخین کی روایت ہے آدم کو ایک ہزار سال کی عمر ودیعت ہوئی تھی۔ مگر اس میں سے چالیس سال انھوں نے حضرت داؤد کو بخش دیے تھے۔ اس طرح آپ نے عمر 960برس کی عمر پائی۔ اور بقول یعقوبی جبل ابوقیس کے دامن میں مغارۃ الکنوز "خزانوں کے غار" میں دفن ہوئے۔ بعض مورخین کے بقول طوفان نوح کے موقع پر آپ کی لاش یروشلم میں لا کر دفن کی گئی تھی۔

مزید دیکھیے[ترمیم]