سرگیئی یسینن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
سرگیئی یسینن

Sergei Alexandrovich Yesenin

سرگیئی یسینن (روسی شاعر).jpg
پیدائش سرگیئی الیکساندرووچ یسینن
3 اکتوبر 1895(1895-10-03)
ریازان، روسی سلطنت
وفات 27 دسمبر 1925(1925-12-27)لینن گراد (موجودہ سینٹ پیٹرزبرگسویت یونین
قلمی نام سرگیئی یسینن
پیشہ مصنف
زبان روسی
قومیت Flag of Russia.svg روس
صنف شاعری
نمایاں کام ماں کے نام خط
روس سوویت والا
پوگاچیف

دستخط

سرگیئی الیکساندرووچ یسینن روسی: Серге́й Алекса́ндрович Есе́нин, نقل حرفی Sergei Alexandrovich Yesenin (پیدائش: 3 اکتوبر 1895ء - وفات: 27 دسمبر 1925ء) روس کے غنائی شاعر ہیں۔

پیدائش و تعلیم[ترمیم]

بیسویں صدی کے اس اہم شاعر کی پیدائش روسی سلطنت کے صوبے ریازان علاقے کے گاؤں "کنستنتینووہ" میں 3 اکتوبر 1895ء میں ہوئی[1][2]۔ انھوں نے کلیسائی استادوں کے اسکول میں تعلیم حاصل کی۔

تخلیقی دور[ترمیم]

سرگیئی یسینن سولہ سترہ سال کی عمر میں پہلی نظمیں لکھیں اور سینٹ پیٹرزبرگ گئے جہاں ان کی ملاقات الکساندربلوک، گرودیتسکی، کلیوئیف اور دوسرے شاعروں ادیبوں سے ہوئی۔ ڈیڑھ سال انھوں نےسینٹ پیٹرزبرگ یونیورسٹی میں تعلیم حاصل کی اور اس کے بعد اپنے گاؤں واپس آگئے۔ انھوں نے اپنی خود نوشت میں 1925ء میں لکھا کہ:

انقلاب کے برسوں میں پوری طرح سےاکتوبر (انقلاب روس) کی طرف تھا لیکن ہر چیز کو میں نے اپنی طرح سے کسانی رجحانات کے ساتھ قبول کیا۔۔۔۔

باکو کے 26 کمیساروں کے بارے میں (جنھیں رجعت پرست انقلاب دشمنوں نے مصالحت کا دھوکا دے کر قتل کر دیا تھا) ان کی نظم یسینن کی بے مثال طبائی کی بہترین مثالوں میں ہے۔ یہ نظم انھوں نے ماورائے قفقاز میں اپنے قیام کے دوران میں لکھی [3]۔

تخلیقات[ترمیم]

نظمیں[ترمیم]

  • ماں کے نام خط
  • روس سوویت والا
  • الوداع
  • خزاں
  • میں اپنے گاؤں کا آخری شاعر ہوں
  • پوگاچیف
  • ایک خاتون کے نام خط
  • کالاشخص
  • کچلوف کا کتا

وفات[ترمیم]

روس کے غنائی شاعر سرگیئی یسینن 30 سال کی عمر میں 27 دسمبر 1925ء کو لینن گراد (موجودہ سینٹ پیٹرزبرگسویت یونین میں انتقال کرگئے[4]۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://www.geni.com/people/Sergei-Yesenin/6000000011356741531
  2. موج ہوائے عصر، ظ انصاری، تقی حیدر، مطبع "رادوگا" اشاعت گھر، ماسکو، سوویت یونین، 1985 ،ص79
  3. موج ہوائے عصر، ظ انصاری، تقی حیدر، مطبع "رادوگا" اشاعت گھر، ماسکو، سوویت یونین، 1985 ،ص79-80
  4. http://www.britannica.com/biography/Sergey-Aleksandrovich-Yesenin