محمد بن ابراہیم فرازی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
محمد بن ابراہیم فرازی
(عربی میں: محمد الفزاريخاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
معلومات شخصیت
پیدائش صدی 8ء  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
کوفہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات صدی 9ء  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
بغداد  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Black flag.svg خلافت عباسیہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
والد ابراھیم الفزاری  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں والد (P22) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ ماہر فلکیات،ماہرِ لسانیات،ریاضی دان،مترجم،فلسفی،منجم  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

محمد بن ابراہیم فرازی تقریباً 746ء میں پیدا ہوا۔ اُس وقت تک اُموی خلافت کا چراغ گل نہیں ہوا تھا۔ فرازی ابھی چار برس ہی کا تھا کہ بساط سیاست پر ایک زبردست انقلاب رونما ہوا۔ مسند خلافت بنو اُمیہ سے بنو عباس کو منتقل ہوگئی۔ اس خاندان کا پہلا خلیفہ ابو االعباس السفاح تھا۔ صرف چار سال خلافت کے فرائض انجام دے کر وہ فوت ہوگیا اور 754ءمیں اس کابھائی ابو جعفر منصور خلیفہ بنا۔ وہ خود زبردست عالم تھا اور علما و فضلا کی بے حد قدر کرتا تھا۔ اُس کا شمار اویان حدیث میں کیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ اسے علم ہیئت سے بھی خاص لگائو تھا۔ اسی شوق اور دلچسپی کا نتیجہ تھا کہ اُس نے بہت جلد ہیئت دانوں کی ایک جماعت تیار کرلی۔ فرازی کا باپ ابراہیم جندب بھی اس جماعت کا ایک رکن تھا۔ دیگر اراکین میں ماشاءاللہ، نوبخت اور یعقوب بن طارق کے نام بہت اہم ہیں۔ ابراہیم بن جندب نے اپنے ہونہار فرزند محمد بن ابراہیم فرازی کو لڑکپن ہی سے ہیئت کی تعلیم دینی شروع کردی۔ فرازی نے بھی اس علم میں کافی دلچسپی لی اور ابھی وہ نوجوانی کی منزل میں تھا کہ علم ہیئت میں اس کو ایک نمایاں مقام حاصل ہوگیا۔ خلیفہ منصور کو اُس صلاحیت ولیاقت کا علم ہوا تو اُس نے نوجوان کو بھی اپنے ہیئت دانوں کے زمرہ میں شامل کرلیا۔ کچھ دنوں کے بعد منصور کے دربار میں سندھ کے ایک راجہ کا سفیر جس کا نام منکا تھا، دارالخلافہ بغداد میں وارد ہوا۔ وہ ایک عظیم ہیئت داں اور ماہر ریاضی تھا۔ اور اپنے ساتھ خاندان گپت کے عہد زریں کے ایک مشہور ہیئت داں ریاضی دان بر ہم گپتا کی گرانقدر تالیف سدھانتلے کر آیا تھا اس کتاب کا موضوع ہیئت الافلاکہتھا۔منصور نے اس کتاب کو پسند کیا اور اس کا ترجمہ سنسکرت سے عربی میں کرانا چاہا۔ کافی غور وغوض کے بعد اُس نے اس ترجمے کے لیے تعقوب بن طارق اور ابراہیم فرازی کو مقرر کیا۔ فرازی نے اپنے کام کو نہایت خوش اسلوبی سے انجام دیا اور منکا برہمن کی مدد سے ترجمہ کے کام کو پانچ سال میں مکمل کرلیا۔ یہ پہلی کتاب ہے جو سنسکرت سے عربی زبان میں منتقل ہوئے۔ سچ پوچھیے تو اسی ترجمہ نے ان دونوں علوم کی بنیاد دنیائے اسلام میں رکھی۔فرازی کا یہ کام بہت اہم ہے۔ اگرچہ اس کے بعد اس کتاب کے کئی ترجمے ہوئے ۔ لیکن فرازی کو اولیت کا جو شرف حاصل ہے، وہ برقرار رہا۔ خلیفہ ہارون الرشید اس ترجمہ کو بے حد پسند کرتا تھا۔ اس کی وجہ سے اُس نے فرازی کو کافی نواز ا اور اپنے دربار میں نہایت بلند مقام عطا فرمایا۔ یہ صاحب فضل وکمال شخص اپنی قابلیت کے جوہر دکھاکر ہارون الرشید کے دورخلافت میں خلیفہ سے تین سال پہلے806ء میں دارِ فانی سے دارِ باقی کی جانب رحلت کرگیا۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مسلم سائنس، سیّد قاسم محمود