نطشے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نطشے
(جرمن میں: Friedrich Nietzsche ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Nietzsche187a.jpg
Nietzsche in Basel, c.  1875

معلومات شخصیت
پیدائشی نام (جرمن میں: Friedrich Wilhelm Nietzsche ویکی ڈیٹا پر (P1477) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیدائش 15 اکتوبر 1844(1844-10-15)
Röcken (near Lützen), Saxony, مملکت پروشیا
وفات 25 اگست 1900(1900-80-25) (عمر  55 سال)
وایمار, Saxony, جرمن سلطنت
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قومیت German
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ لائپزش (1865–1879)  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعلیمی اسناد ڈاکٹریٹ[1]  ویکی ڈیٹا پر (P512) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ فلسفی[2]،  شاعر،  مصنف[2]،  نغمہ ساز،  ماہر تعلیم،  استاد جامعہ،  کلاسیکی عالم،  مصنف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان جرمن[3]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل فلسفہ،  جمالیات،  اخلاقیات،  نفسیات،  علم الوجود،  شاعری،  فلسفہ تاریخ  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت جامعہ بازیل  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں زرتشت نے کہا  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مؤثر شوپنہائر،  ہیراکلیطس،  ڈارون،  بارامانیاس،  پاسکل،  نکولو مکیاویلی،  رچرڈ واگنر،  ایڈ گرایلن پو،  پروتاگورس،  سپینوزا،  زرتشت،  ڈبلیو بی . یٹس،  دی مقراطیس،  آسوالڈ اسپینگلر،  گوئٹے،  جین جیکس روسو،  ولیم شیکسپیئر،  اسٹیفن زویگ،  ایڈم میکیوچز،  امپی دوکلیز،  افلاطون،  ارسطو،  گوٹفریڈ ویلہم لائبنیز،  والٹیئر،  سقراط،  گورگ ویلہم فریدریچ ہیگل،  امانوئل کانٹ،  فیودر دوستوئیفسکی،  دیانوسس،  سکندر اعظم،  ہومر،  جولیس سیزر،  ایس کلس،  منو  ویکی ڈیٹا پر (P737) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
لڑائیاں اور جنگیں فرانسیسی جرمن جنگ 1870-71  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
Friedrich Nietzsche Signature.svg
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات[4]  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

فریڈرک نطشے یا نِیتشے[5] (Friedrich Nietzsche) (1900-1844) انیسویں صدی کا جرمن فلسفی تھا۔ اس کے خیال میں طاقت ہی انسانی معاملات میں فیصلہ کن عنصر ہے۔ اس نے فوق البشر (Superman) کے تصور کو آگے بڑھایا۔

نطشے کی تشکیل[ترمیم]

نطشے 15 اکتوبر 1844ء کو روکن پرشیا مں پیدا ہوا۔ پرشیا فوجی اور سیاسی لحاظ ایک طاقتور ریاست بنتا جا رہا تھا۔ آسٹریا کو وہ جرمن معاملات سے علاحدہ کر چکا تھا۔ 1871ء میں پرشیا نے نپولین کی فتوحات کے نشے میں چور فرانس کو بد ترین شکست دی اور ورسائی پیرس کے مقام پر تمام چھوٹی چھوٹی جرمن ریاستوں کو متحد کر کے جرمن سلطنت کی بنیاد رکھی۔ نطشے اس ابھرتی ہوئی طاقتور جرمن سلطنت کی آواز بن گيا۔

نظریات[ترمیم]

دلچسپ باتیں[ترمیم]

  • بقول امریکی فلسفی ول ڈیورنٹ کے نطشے ڈارون کا بیٹا اور بسمارک کا بھائی تھا۔
  • اقبال تعلیم کے لیے جرمنی جاتے ہے اور نطشے سے متاثر ہو کر آتے ہے یہ بات جرمنی جانے سے پہلے اور بعد میں اقبال کی شاعری میں واضح طور پر محسوس کی جا سکتی ہے۔ اقبال کا مرد مومن کا تصور نطشے کے فوق البشر کے بہت قریب ہے۔

تصانیف[ترمیم]

Friedrich Nietzsche The Birth of Tragedy (1872)

On Truth and Lies in a Nonmoral Sense (1873)

Philosophy in the Tragic Age of the Greeks (1873)

Untimely Meditations (1876)

Human, All Too Human (1878)

The Dawn (1881)

The Gay Science (1882)

Thus Spoke Zarathustra (1883)

Beyond Good and Evil (1886)

On the Genealogy of Morality (1887)

The Case of Wagner (1888)

Twilight of the Idols (1888)

The Antichrist (1888)

Ecce Homo (1888; first published in 1908)

Nietzsche contra Wagner (1888)

The Will to Power (various unpublished manuscripts edited by his sister Elisabeth; not recognized as a unified work after ca 1960)

نطشے اور اقبال[ترمیم]

فریڈرک ولہیم نطشے ۔ جرمن فلسفی‘ شاعر‘ موسیقار‘ ثقافتی نقاد اور ماہر لسانیات۔ اس کے فلسفہ قوت اور نظریہ فوق البشر کو جدید یورپ میں بڑی شہرت حاصل ہوئی۔ عموماً یہ خیال کیا جاتا ہے کہ علامہ اقبال نے تصورِ مومن شاید اسی کے تصورِ فوق البشر سے مستعار لیا تھا‘ جو سراسر غلط ہے۔ علامہ اقبال نے اپنے ایک مکتوب بنام نکلسن میں اپنے تصورات کو واضح کر دیا تھا۔ علامہ اقبال نے نطشے کے منفی اور مثبت دونوں پہلووں پر روشنی ڈالی ہے۔ نطشے کے بہت سے خیالات اسلامی تعلیمات سے مشابہ تھے لیکن وہ خدا کی ذات کا منکر تھا۔ جس کی وجہ سے اقبال نے اس کو ’قلبِ او مومن دماغش کافر است‘ کہا۔ [6]

اقبال کے نزدیک نطشے کی واردات کچھ ایسی ہی واردات تھی۔ اسے ذات انسانی میں الوہیت کی ایک جھلک تو نظر آئی لیکن وہ اس کا مطلب سمجھنے سے قاصر رہا، جس کی وجہ تھی اس کی مادہ پرستی۔ بایں ہمہ اقبال کے نزدیک اس کے ذوق طلب کا جو عالم تھا یہ:

نہ جبریلے ، نہ فردوسے ، نہ حورے ، نے خداوندے

کفِ خاکے کہ می سوزد ز جانِ آرزو مندے13؎

یہاں یاد رکھنے کی بات یہ ہے کہ اقبال کے یہاں نطشے کی قدردانی ہمدردی کی قدردانی ہے اخذ و اکتساب یا اثر پذیری کی قدردانی نہیں۔ اقبال کو یہ دیکھ کر افسوس ہوتا ہے کہ نطشے کو کوئی ایسا رہنما نہ ملا جو اس کے واردات قلب اور افکارِ دماغ کی تربیت کرتا۔ وہ بڑا ذہین و فطین اور غیر معمولی قابلیتوں کا انسان تھا۔ ایک عظیم نابغہ جو اپنے دور کی مادیت پرستی کا شکار ہو گیا۔ اقبال کے نزدیک نطشے کا معاملہ ایک ایسے مریض کا معاملہ ہے جس کا مداوا اطبا کی بجائے کوئی صاحب نظر انسان ہی کرسکتا تھا۔ وہ اگر زندہ ہوتا تو شاید اقبال خود بھی اس کی رہبری کرتا:

اگر ہوتا وہ مجذوبِ فرنگی اس زمانے میں

تو اقبال اس کو سمجھاتا مقامِ کبریا کیا ہے؎

لیکن یہ جو کچھ عرض کیا جارہا ہے اس لیے کہ اقبال اور نطشے کے ذہنی روابط کے بارے میں اب تک جو کچھ لکھا گیا بڑا غلط بلکہ سر تا سر غلط ہے، چغل فہمی اور غلط بیانی پر مبنی جس کی ذمہ داری اقبال کے انگریز ناقدین اور اپنے اہل وطن کی خود اپنی روایات سے بے خبری پر عائد ہوتی ہے۔ بہرحال اس غلط بیانی اور غلط فہمی کا نتیجہ یہ ہوا کہ اقبال اور نطشے کے خیالات میں جو سطحی مشابہت ہے اور وہ بھی صرف ایک پہلو سے اسے ضرورت سے زیادہ اہمیت دی گئی تاآنکہ لوگ بھول گئے کہ یورپ میں اقبال کا ہم نوا فی الحقیقت کون ہے۔ انھوں نے گوئٹے کو نظر انداز کر دیا اور التفات کیا تو نطشے کے فوق البشر سے۔ ایک روز یہی ذکر تھا۔ فرمایا میرے کم نظر ناقدین اس سطحی مشابہت کو ضرورت سے زیادہ اہمیت دے رہے ہیں۔ میں نے اگر نطشے کے بعض خیالات کو ہمدردی کی نگاہوں سے دیکھا یا اسرارِ خودی میں کوئی ایسی حکایت لے آیا جس کی مثال نطشے کے یہاں موجود ہے تو اس کا یہ مطلب نہیں کہ میں نطشے سے متفق الرائے ہوں یا میں نے اپنے خیالات اس سے اخذ کیے۔ ایک صاحب فن کا حق ہے جس حکایت کو جس مطلب کے لیے چاہے استعمال کرے

مذہبی تاریخ میں سطحی مشابہت حق پرستی اور فریب پرستی کے فریقین کو فارق کرنے کے لئے ضروری ہے اسی لئے انسانیت کا آخری نجات دہندہ اقبال کے قانونی اور اجتہادی پہلو کا شجر ہوگا نہ کہ شاعرانہ جدیدیت جو دراصل ایک بے لوث حکیمانہ خضری فلاحی اقدام ہے جس کا مقصد مشرقی موسویت اور جرمن حلاجیت کا اجماع ہے تاکہ انسانیت یکسو ہو کر انوار توحید و تکریم سے لطف اندوز ہو سکے

وفات[ترمیم]

نظشے کی وفات 25 اگست 1900ء ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ربط : https://d-nb.info/gnd/118587943  — اخذ شدہ بتاریخ: 2 اپریل 2015 — اجازت نامہ: CC0
  2. ربط : https://d-nb.info/gnd/118587943  — اخذ شدہ بتاریخ: 24 جون 2015 — اجازت نامہ: CC0
  3. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb11917712p — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  4. ناشر: MetaBrainz Foundation
  5. کتاب: بقول زردشت، مترجم و مصنف: ڈاکٹر ابو الحسن منصور، شایع کردہ: انجمن ترقی اردو (ہند) 1940
  6. (تحریر و تحقیق: میاں ساجد علی‘ علامہ اقبال سٹمپ سوسائٹی)
Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔