جامع مسجد سرینگر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جامع مسجد سرینگر
جامع مسجد
Jama Masjid, Srinagar (14363005587).jpg
مشرقی طرف سے منظر
بنیادی معلومات
مقامنوہٹہ، سری نگر
متناسقات34°05′54″N 74°48′33″E / 34.098352°N 74.809180°E / 34.098352; 74.809180
مذہبی انتساباسلام
ضلعسری نگر
صوبہکشمیر
ملکبھارت
حیثیتمتحرک
تعمیراتی تفصیلات
نوعیتِ تعمیرمسجد
طرز تعمیرہند-مغلیہ
سنہ تکمیل1402ء
تفصیلات
گنجائش33،333
لمبائی384 فٹ (117 میٹر)
چوڑائی381 فٹ (116 میٹر)
گنبد4 (منارچے)
مینارکوئی نہیں
مواددیوداریں، پتھر، اینٹیں

جامع مسجد جموں و کشمیر سری نگر کی ایک اہم مسجد ہےجو کہ  پرانے شہر کے وسط نوہٹہ میں واقع ہے۔ اس مسجد کی تعمیر کا آغاز سلطان سکندر نے سن عیسوی 1394 میں شروع کیا تھا اور سن عیسوی میں 1402 ، میر محمد ہمدانی ولد میر سید علی ہمدانی کے عہد میں اسے مکمل کیا گیا۔[1] اس کا شمار کشمیر کی  اہم مساجد میں کیا جاتا ہے۔ مسجد کا آرکیٹیکچر وسطی ایشیائی اور مغل طرز تعمیر کا مرکب ہے اور بدھ مت کے پاگوڈوں سے بھی مماثلت رکھتا ہے۔ یہ مسجد ڈاون ٹاؤن میں واقع ہے جو سری نگر میں مذہبی سیاسی زندگی کا ایک اہم مرکزہے ۔

فن تعمیر[ترمیم]

جامع مسجد ہندی ساراسینک طرز فن تعمیر سے بہت زیادہ متاثر ہے اور کہیں کہیں اس پر فارسی طرز تعمیر کا بھی اثر ہے، جو کہیں کہیں بدھ مت پوگوڈوں سے بھی مماثلت رکھتا ہے ۔ اس ڈھانچے کا کل رقبہ 384 x 381 فٹ ہے اور یہ چار برجوں کی شکل میں چوکور ہے۔ جو ہر طرف سے وسط میں ہیں اور اہرام چھتوں سے ڈھکے ہوئے ہیں۔ تمام برج وسیع و عریض ہالوں سے آپس میں جڑے ہوئے ہیں اور اس کے بیچ میں ایک مربع باغ ہے۔ مسجد کے جنوبی حصے کے داخلی راستے میں ایک  پورٹیکو شامل ہے جو اندرونی صحن کی طرف جاتا ہے۔ یہ صحن چہار باغ کے روایتی منصوبے پر مبنی ہے اور اس کے بیچ میں ایک ٹینک ہے۔ پورا صحن اینٹوں سے بنایا گیا ہے جس پر خوبصورت محراب بنے ہوئے ہیں ۔

تاریخ[ترمیم]

یہ صرف مذہب ہی نہیں ہے جس نے ریاست کے لوگوں کو مسجد کی طرف راغب کیا ہے۔ جامع مسجد ریاست میں موجودہ حالات کی وجہ سے سیاسی گفت و شنید کا ایک گرم گڑھ رہا ہے ا گرچہ کشمیر کے  سیاسی حالات کی وجہ سے یہاں اجتماعات پر پابندی لگ گئی ہے تاہم ، اس کی جڑیں تاریخ میں زیادہ گہری ہیں۔ مساجد لوگوں کے لیے وادی کشمیر میں تنازعے کے شروع ہونے سے بہت پہلے تنازع کشمیر کی سیاست پر بحث و مباحثہ کرنے کا ایک پلیٹ فارم بن گیا تھا۔ مؤرخ محمد اسحاق خان کے مطابق ، “جامع مسجد نے بنیادی طور پر دینی تعلیم فراہم کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ تاہم ، کشمیری مسلمانوں میں جدید تعلیم کے پھیلاؤ کے ساتھ ہی ، میر واعظ غلام رسول شاہ کی کاوشوں کی بدولت ، مسجد نے سیاسی شعور کی نشو و نما میں ایک مرکزی کردار ادا کرنا شروع کیا۔ در حقیقت ، شیخ محمد عبد اللہ نے اس بات کی ابتدا کی تھی کہ  جامع مسجد میں میر واعظ محمد یوسف شاہ کے ذریعہ کشمیری مسلم سیاسی شعور اجاگر کیا جائے۔ "

انتظامی امور[ترمیم]

جامع مسجد انجمن اوقاف کے نجی دائرہ کار میں ہے۔ مسجد کا نگراں بورڈ 1975 میں تشکیل دیا گیا تھا۔ آمدنی کا بڑا ذریعہ مسجد کے آس پاس 278 دکانوں (اوقاف کی ملکیت ہے) کے کرایہ اور عوامی فنڈنگ ​​کے دیگر ذرائع سے حاصل ہوتا ہے۔ محصول مقررہ نہیں اور ہر سال مختلف ہوتا ہے۔ اوقاف کے آغاز سے قبل ، مسجد کے لیے آمدنی ریاست کے اشرافیہ شہریوں کی طرف سے آتی تھی۔ مسجد کی فلاح و بہبود کے لیے ، انٹاچ نے حال ہی میں تزئین و آرائش کی باگ ڈور سنبھالی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Jama Masjid Srinagar – Biggest Mosque in Kashmir Valley". Tour My India. Tour My India Pvt. Ltd. اخذ شدہ بتاریخ 9 جنوری 2019.