محمد شاہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد شاہ
Nidha Mal Jharokha portrait of Muhammad Shah holding an emerald and the mouthpiece of a huqqa ca. 1730 The San Diego Museum of Art.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 17 اگست 1702  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
فتح پور سیکری  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 26 اپریل 1748 (46 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
لال قلعہ،  دہلی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
زوجہ قدسیہ بیگم  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شریک حیات (P26) ویکی ڈیٹا پر
اولاد احمد شاہ بہادر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں اولاد (P40) ویکی ڈیٹا پر
والد خجستہ اختر جہاں شاہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں والد (P22) ویکی ڈیٹا پر
خاندان تیموری خاندان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں خاندان (P53) ویکی ڈیٹا پر
مناصب
مغل شہنشاہ   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں منصب (P39) ویکی ڈیٹا پر
دفتر میں
27 ستمبر 1719  – 26 اپریل 1748 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png شاہجہان ثانی 
احمد شاہ بہادر  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
دیگر معلومات
پیشہ خطاط  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

محمد شاہ، المعروف محمد شاہ رنگیلا، روشن اختر، نصیر الدین شاہ، مغلیہ سلطنت کا چودھواں بادشاہ (پیدائش: 17 اگست 1702ء— وفات: 26 اپریل 1748ء)۔ محمد شاہ اورنگ زیب عالمگیر کے بعد قیادت اور سیاسی ابتری کے بحران میں طویل المدت بادشاہ گزرا ہے۔ محمد شاہ رنگیلا نے اپنی مدتِ حکومت کا زیادہ تر وقت عیش و نشاط پرستی میں گزارا۔ سلطنت مغلیہ کے زوال کا پہیا جو اورنگ زیب عالمگیر کے بعد سے چلنا شروع ہو چکا تھا اس کا سد باب محمد شاہ کے 27 سالہ طویل دور میں کیا جاسکتا تھا۔ مگر بدقسمی کہ بادشاہ کی عیش پسندی اور بے فکری کے سبسب نظم و نسق کی ذمہ داری وزراء کے کاندھوں پر تھی جن کی سیاسی چشمک نے ملک کو سیاسی اور اقتصادی بحران سے دوچار کر رکھا تھا۔ نظام الملک آصف جاہ نے جو ایک مخلص امیر تھا حالات پر قابو پانے کی بہت کوشش کی مگر وہ بھی مایوش ہو کر دکن واپس چلا گیا ۔[1] مرہٹوں اور سکھوں کی بغاوت جسے اورنگ زیب عالمگیر نے کچل کر رکھ دیا تھا دوبارہ سر اٹھانے لگیں تھیں لیکن محمد شاہ ان سے بے خبر عیش و طرب میں وقت گزارتا رہا۔ جب محمد شاہ کو نادر شاہ کے حملہ کی اطلاع ملی تو اس نے نہایت بدحواشی میں زوجہ بہادر شاہ (حضرت مہر پرور) سے مشورہ طلب کیا۔ حادثہ نادر شاہی کے معاصر مولف نے اس معمر خاتون کے جواب کو محفوظ رکھا ہے جو صحیح ترین تجزیے پر مبنی ہے، ملاحظہ ہو:

"شخصی کہ از ایام طفولیت عمر در صحبتِ زنان بسر بردہ باشد، از اور در میدان نبرد چہ دلیری می تواند شد؟ و صریح می دانند کہ جمیع امرایان بنا بر بے خبری و سستی عمل شما ملک پادشاہی را متصرت شدہ، خزانہ و جواہر بے شمار جمع کردہ اند و ہیچ کس تابیع و حکم والا نیست، شما ہمیں چہار دیواری قلعہ ارک را سلطنت خود تصور فرمودہ سیر باغات وصحبت اوباش غنیمت شمردہ، از مملک محروسہ، مطلق بے خبر ہستید۔" [2]

کردار[ترمیم]

اس کا اصل نام روشن اختر تھا‘ وہ شاہ جہاں حجستہ اختر کا بیٹا اور شاہ عالم بہادر شاہ اول کا پوتا تھا‘سید برادران نے اسے جیل سے رہا کرایا اور 17 ستمبر 1719ء کو تخت پر بٹھا دیا‘ اس نے اپنے لئے ناصر الدین محمد شاہ کا لقب پسند کیا لیکن تاریخ نے اسے محمد شاہ رنگیلا کا نام دے دیا‘محمد شاہ رنگیلا ایک عیش طبع غیر متوازن شخص تھا‘ چوبیس گھنٹے نشے میں دھت رہتا تھا اور رقص و سرود اور فحاشی و عریانی کا دل دادہ تھا‘ وہ قانون بنانے اور قانون توڑنے کے خبط میں بھی مبتلا تھا‘ وہ ایک ایسا پارہ صفت انسان تھا جو اچانک کسی شخص کو ہندوستان کا اعلیٰ ترین عہدہ سونپ دیتا تھا اور جب چاہتا وزیراعظم کو کھڑے کھڑے جیل بھجوا دیتا تھا۔ وہ اکثر دربار میں ننگا آ جاتا تھا اور درباری بھی اس کی فرمانبرداری اور اطاعت گزاری میں کپڑے اتار دیتے تھے‘ وہ بعض اوقات جوش اقتدارمیں دربار میں سرے عام پیشاب کر دیتا تھا اور تمام معزز وزراء‘ دلی کے شرفاء اور اس وقت کے علماء اور فضلاء واہ واہ کہہ کر بادشاہ سلامت کی تعریف کرتے تھے‘ وہ بیٹھے بیٹھے حکم دیتا تھا کل تمام درباری زنانہ کپڑے پہن کر آئیں اور فلاں فلاں وزیر پاؤں میں گھنگرو باندھیں گے اور وزراء اور درباریوں کے پاس انکار کی گنجائش نہیں ہوتی تھی‘ وہ دربار میںآتا تھا اور اعلان کردیتا تھا جیل میں بند تمام مجرموں کو آزاد کر دیا جائے اور اتنی ہی تعداد کے برابر مزید لوگ جیل میں ڈال دیئے جائیں‘ بادشاہ کے حکم پر سپاہی شہروں میں نکلتے تھے اور انہیں راستے میں جوبھی شخص ملتا تھا وہ اسے پکڑ کر جیل میں پھینک دیتے تھے‘ وہ وزارتیں تقسیم کرنے اور خلعتیں پیش کرنے کا بھی شوقین تھا‘ وہ روز پانچ نئے لوگوں کو وزیر بناتا تھا اور سو پچاس لوگوں کو شاہی خلعت پیش کرتا تھا اور اگلے ہی دن یہ وزارتیں اور یہ خلعتیں واپس لے لی جاتی تھیں‘ وہ طوائفوں کے ساتھ دربار میں آتا تھا اور ان کی ٹانگوں‘ بازوؤں اور پیٹ پر لیٹ کر کاروبار سلطنت چلاتا تھا‘ وہ قاضی شہر کو شراب سے وضو کرنے پر مجبور کرتا تھا اور اس کا حکم تھا ہندوستان کی ہر خوبصورت عورت بادشاہ کی امانت ہے اور جس نے اس امانت میں خیانت کی اس کی گردن مار دی جائے گی اور اس نے اپنے دور میں اپنے عزیز ترین گھوڑے کو وزیر مملکت کا سٹیٹ دے دیا اور یہ گھوڑا شاہی خلعت پہن کر وزراء کے ساتھ بیٹھتا تھا‘ محمد شاہ رنگیلا کثرت شراب نوشی کے باعث 26 اپریل 1748ء کو انتقال کر گیا

جنگ کرنال اور دہلی کی بربادی[ترمیم]

1738 میں نادر شاہ نے قندھار پر قبضہ کر کے ہوتکی سلطنت کا خاتمہ کر دیا تھا۔ میر وایس ہوتک نے 1709 میں صفوی سلطنت کو شکست دے کر قندھار میں ہوتکی سلطنت کی بنیاد رکھی جو 1738 نادر شاہ حملہ تک قائم رہی۔ قندھار پر نادر شاہی قبضہ کے بعد افغان باغیوں کی حوالگی کے مطالبے اور اس پر عمل درآمد نہ ہونے پر نادر شاہ کابل کو فتح کرتا ہوا دہلی کی جانب بڑھنا شروع ہوا۔ محمد شاہ اور نادر شاہ کے درمیان جنگ 1739ء   میں کرنال  کے مقام پر  ہوئی جو دلی کے شمال میں تقریباً 110 کلو میٹر پر واقع ہے۔ محمد شاہ کی 100،000 سے زائد فوج نادر شاہ کی 55000 فوج کا مقابلہ نہ کر سکی۔ ایک بات جو اہم تھی وہ یہ کہ نادر شاہ کی فوج جدید توپوں، بندوقوں اور زمبورک (ایک طرح کی کم وزن توپ جسے اونٹوں پر لگا کر داغا جاسکتا ہے) سے لیس تھی جو کم وزن اور آسانی سے منتقل و نسب کی جا سکتی تھیں۔ جبکہ محمد شاہ کی فوج کے ہتیار بھاری بھرکم اور پرانی طرز کے تھے جن کی کثرت نادر شاہ کی چست اور منظم فوجی اقدام کے مقابل بے سود ثابت ہوئی۔ بھاری بھرکم ہتیار اور غیر منظم فوج اگر کثیر ہو تو وہ چست اور متحرک فوج کا آسانی سے نشانہ بن جاتی ہے۔ جنگ کرنال میں بھی یہی ہوا اور محمد شاہ کو اس کی ناتجربہ کاری اور کمزور جنگی حکمت عملی کے سبب شکت فاش ہوئی۔ محمد شاہ گرفتا ہو کر نادر شاہ کے ساتھ دلی میں داخل ہوا، اب مغل خزانوں کی چابی نادر شاہ کے ہاتھ تھی۔ اہلیان شہر کی بغاوت اور نادری فوجیوں کے قتل کے واقع پر نادر شاہ نے قتل عام کا حکم دیا اور دلی میں لوٹ مار اور غارت گری شروع ہوئی۔ نادر شاہ جب دلی سے لوٹا تو اس کے ہمراہ بیش بہا دولت تھی، دریائے نور، کوہِ نور، تختِ طاؤس ہزاروں ہاتھی اور جنگی گھوڑے اور جواہرات اس میں شامل تھے۔ جو مال و جواہر اس کے ہاتھ لگا اس کی قیمت کروڑوں کے قریب بتائی جاتی ہے، اس کی قیمت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ نادر شاہ نے اپنی سلطنت میں 3 سال تک ٹیکس وصول نہ کیا۔  نادر شاہ کے ہاتھوں مغل سلطنت کو شکست کے بعد پھر سنبھلنے کا موقع نہیں ملا، بتدریج حالات دگرگوں ہوتے چلے گئے۔

افسوس کہ سلطنت مغلیہ کے جانشین اس قدر نا اہل اور کند ذہن ہو چکے تھے کہ اس شکست سے زرا بھی سبق نہ سیکھا چہ جائیکہ ملک کا نظم و نسق سنبھالتے۔ نیز یہ کہ مغل امرا کی سیاسی کشمکش نے بھی سلطنت کو خاصہ نقصان پہنچایا، ان کی زاتی مفاد و خود غرضی پر مبنی گروہبندیوں  نے رہی سہی کسر بھی نہ چھوڑی لحٰذا بادشاہوں کی کم عقلی اور بے خبری کا فائدہ رزیل اور کم ظرف لوگ شاہی دربار میں مصائب و امرا کی جگہ پاتے رہے اور مخلص اور قابل امرا بے اثر ہوتے چلے گئے۔

وارد تہرانی نے لکھا ہے کہ محمد شاہ اپنے ستائیس سالوں میں سوائے سیر و شکار کے دہلی سے باہر نہیں نکلا۔[3] اورنگ زیب نے جن خلاف شریعت رسوم کو ختم کر دیا تھا ان بے پروا بادشاہوں کے دور میں پھر شروع ہو گئی تھیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مقاماتِ مظہری - تالیف: حضرت شاہ غلام علی دہلوی، تحقیق وتعلیق وترجمہ: محمد اقبال مجدّدی
  2. حادثہ نادر شاہی مرتبہ رضا شعبانی، ص 46۔
  3. وارد تہرانی - تاریخ نادر شاہی (نادر نامہ) مرتبہ رضا شعبانی
ماقبل 
شاہجہان ثانی
مغل شہنشاہ
1719–1748
مابعد 
احمد شاہ بہادر