سرائیوو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
سرائیوو شہر کا مرکزی علاقہ، بوقت شب

سرائے وو، (انگریزی: Sarajevo) جو عام طور پر سرائیوو لکھا جاتا ہے، بوسنیا و ہرزیگووینا کا دارالحکومت اور سب سے بڑا شہر ہے۔

تاریخ[ترمیم]

عثمانی سلطان محمد ثانی نے 1463ء میں فتح بوسنیا کے بعد "ورہ بوسنہ" نامی ترک قلعے کے گرد یہ شہر بسایا اور اس کا نام "سرائے بوسنہ" رکھا۔ اسے بوسنہ سرائے یا صرف سرائے بھی کہا جاتا ہے۔ شہر کا موجودہ نام سرائیوو دراصل ترک لفظ "سرائے اوواسی" (saray ovası) یعنی "سرائے کے گرد میدان" سے نکلا ہے۔

پھر سولہویں صدی عیسوی کے وسط تک اس کا نام بوسنہ سرائے (سلافی نام "سرائیوو") شہرت پا گیا۔ 1464ء کے وقف نامے میں اس کا نام "سرائے مدینہ" بھی ملتا ہے۔ [1]

اگست 1887ء میں آسٹریا کے جرنیل جوزف فرائہرفون فلپووچ نے زبردست معرکے کے بعد اس شہر پر قبضہ کر لیا۔

28 جون 1914ء کو آسٹروی ولی عہد فرانز فرڈیننڈ کو اسی شہر میں قتل کیا گیا جس کے نتیجے میں پہلی جنگ عظیم کا آغاز ہوا۔

1918ء میں بوسنیا و ہرزیگووینا، جسے عربی اور ترکی زبانوں میں بوسنہ و ہرسک کہتے ہیں، نو ساختہ جنوبی سلافی ریاست یوگوسلاویہ میں مدغم کر دیے گئے۔

جنگ بوسنیا کے دوران اس شہر کا کیا گیا محاصرہ جدید تاریخ کا سب سے بڑا محاصرہ تھا۔

آجکل سرائیوو کے شہری علاقوں کی کل آبادی 4 لاکھ 21 ہزار (بمطابق جون 2008ء) ہے۔ شہر اپنے روایتی مذہبی تنوع کے باعث مشہور ہے اور اسلام، کیتھولک اور آرتھوڈوکس عیسائی اور یہودی آج بھی یہاں ساتھ رہتے ہیں۔ مذہبی تنوع کی طویل تاریخ کے باعث اسے بسا اوقات "یورپ کا القدس" بھی کہا جاتا ہے۔ [2]

جڑواں شہر[ترمیم]

نگار خانہ[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ اٹلس فتوحات اسلامیہ، مرتبہ احمد عادل کمال، دارالسلام پبلیکیشنز، 1428ھ، ریاض، سعودی عرب ISBN 9960-9984-4-2
  2. ^ Stilinovic, Josip (3 January 2002). In Europe's Jerusalem Catholic World News.