قازقستان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش


Қазақстан Республикасы
Республика Казахстан
جمہوریہ قازقستان
قازقستان کا پرچم قازقستان کا قومی نشان
پرچم قومی نشان
شعار: ندارد
ترانہ: Менің Қазақстаным
قازقستان کا محل وقوع
دارالحکومت آستانہ
عظیم ترین شہر الماتے
دفتری زبان(یں) قازقی، روسی
نظامِ حکومت
صدر
وزیرِ اعظم
جمہوریہ (نیم صدارتی نظام)
نور سلطان نذر بایوف
کریم مسیموف
آزادی
- اعلانِ آزادی
تاریخِ آزادی
روس سے
16 دسمبر 1991ء
25 دسمبر 1991ء
رقبہ
 - کل
 
 - پانی (%)
 
2724900  مربع کلومیٹر (9)
1052090 مربع میل
1.7
آبادی
 - تخمینہ:2007ء
 - 1999 مردم شماری
 - کثافتِ آبادی
 
15,422,000 (62)
14953100
5.4 فی مربع کلومیٹر(226)
14 فی مربع میل
خام ملکی پیداوار
     (م۔ق۔خ۔)

 - مجموعی
 - فی کس
تخمینہ: 2007ء

170.3 ارب بین الاقوامی ڈالر (54 واں)
11100 بین الاقوامی ڈالر (67 واں)
انسانی ترقیاتی اشاریہ
   (تخمینہ: 2007ء)
0.794
(73) – متوسط
سکہ رائج الوقت تنگے (KZT)
منطقۂ وقت
 - عمومی
۔ موسمِ گرما (د۔ب۔و)

(یو۔ٹی۔سی۔ 6)
مستعمل (یو۔ٹی۔سی۔ 7)
ملکی اسمِ ساحہ
    (انٹرنیٹ)
.kz
رمزِ بعید تکلم
  (کالنگ کوڈ)
+7

قازقستان (Қазақстан) وسطی ایشیا کا ایک ملک ہے۔ ملک کا سرکاری نام جمہوریہ قازقستان ہے اور یہ بلحاظ رقبہ دنیا کا نواں سب سے بڑا ملک ہے۔ اس کا رقبہ 2,727,300 مربع کلومیٹر ہے جوکہ مغربی یورپ کے کل رقبے سے بھی زیادہ ہےیہ دنیا کا سب سے بڑا خشکی میں محصور ملک بھی ہے۔ [1] [2] اس کے شمال میں روس، مشرق میں چین، جنوب مشرق میں کرغیزستان، جنوب میں ازبکستان اور ترکمانستان اور جنوب مغرب میں بحیرہ قزوین واقع ہیں۔ 1997ء تک دارالحکومت الماتے تھا جسے بعد میں استانہ منتقل کردیا گیا۔ الماتے ملک کا سب سے بڑا شہر ہے۔

قازقستان کی وسیع و عریض سرزمین بڑی متنوع ہے؛ اس میں گھاس کے میدان، قطبی جنگلات، برف پوش پہاڑ، دریائی میدان، اور صحرا سب کچھ شامل ہیں۔ 1,64,00,000 آبادی کے ساتھ قازقستان بلحاظ آبادی دنیا میں 62 ویں نمبر پر آتا ہے اور اس کی کثافتِ آبادی صرف 6 افراد فی مربع کلومیٹر ہے۔

تاریخی طور پر یہ خانہ بدوشوں کا ملک رہا ہے۔ سولہویں صدی تک یہاں کے لوگ تین واضع قبیلوں کی صورت میں منظم ہو چکے تھے۔ ان قبیلوں کو مقامی زبان میں "جُز" کہتے ہیں۔ اٹھارویں صدی میں روسیوں نے قازقستان پر حملوں کا سلسلہ شروع کیا جس کے نتیجے میں انیسویں صدی کے وسط تک پورا قازقستان سلطنت روس کا حصہ بن چکا تھا۔

قازقستان نے 16 دسمبر 1991ء کو سوویت اتحاد سے اپنی آزادی کا اعلان کیا۔ یہ سوویت اتحاد سے الگ ہونے والی اس کی آخری ریاست تھی۔ سوویت دور کے رہنما نورسلطان نذربایف ملک کے نئے صدر بنے۔ آزادی کے بعد سے قازقستان ایک متوازن خارجہ پالیسی پر گامزن ہے اور اپنی معیشت، خصوصاً معدنی تیل اور اس سے متعلقہ صنعتوں، کی ترقی پر توجہ دے رہا ہے۔

فہرست متعلقہ مضامین قازقستان[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ Agency of Statistics of the Republic of Kazakhstan (ASRK). 2005. Main Demographic Indicators. Available at http://www.stat.kz
  2. ^ United States Central Intelligence Agency (CIA). 2007. “Kazakhstan” in The World Factbook. Book on-line. Available at https://www.cia.gov/library/publications/the-world-factbook/geos/kz.html


متناسقات: 48°N 68°E / 48°N 68°E / 48; 68