جگدیش چندر بوس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جگدیش چندر بوس
(بنگالی میں: জগদীশ চন্দ্র বসু خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
J.C.Bose.JPG 

معلومات شخصیت
پیدائش 30 نومبر 1858[1][2][3][4]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
وفات 23 نومبر 1937 (79 سال)[1][5][2][3]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
گرڈی[5]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
رکن رائل سوسائٹی،  انڈین نیشنل سائنس اکیڈمی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں رکن (P463) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی کرسٹس
جامعہ لندن
ہیئر اسکول  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
ڈاکٹری مشیر جان ولیم سٹرٹ[6]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں ڈاکٹورل مشیر (P184) ویکی ڈیٹا پر
قابل ذکر طلبا ست یندرا ناتھ بوس  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شاگرد (P802) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ماہر نباتیات،  استاد جامعہ،  طبیعیات دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
مادری زبان بنگلہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مادری زبان (P103) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان بنگلہ،  انگریزی[7]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل طبیعیات،  حیاتی طبیعیات،  نباتیات،  آثاریات  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
ملازمت پریزیڈنسی یونیورسٹی، کولکاتا،  کیمبرج یونیورسٹی،  جامعہ لندن  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں نوکری (P108) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
Knight Bachelor ribbon.svg نائٹ بیچلر  (1916)
کمپینین آف دی آرڈر آف دی انڈین ایمپائر (1902)
رائل سوسائٹی فیلو
United-kingdom361.gif آرڈر آف دی اسٹار آف انڈیا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وصول کردہ اعزازات (P166) ویکی ڈیٹا پر
دستخط
Signature of J.C.Bose signature.png 

جگدیش چندر بوس (بنگالی: জগদীশ চন্দ্র বসু جاگودیش چاندرو بوشو) (30 نومبر، 1858ء – 23 نومبر 1937ء) ہندوستان کا ماہر طبیعیات کلکتہ اور کیمبرج میں تعلیم پائی۔ 1896ء میں کیمبرج یونیورسٹی سے ڈی۔ ایس۔ سی کی ڈگری حاصل کی۔ 1885ء سے 1915ء تک کلکتہ کالج میں طبیعیات کا پروفیسر رہا۔ 1917ء میں کلکتہ میں ’’بوس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ‘‘ کے نام سے ایک تحقیقی ادارہ قائم کیااور وفات تک اس کا ناظم رہا۔ بوس نے برقی شعاع کاری کے بارے میں تحقیق کرکے طبیعیات کے میدان میں اہم حصہ لیا۔ روشنی کے انعطاف اور انعکاس کے عالمگیر کلیوں کی توثیق کی اور تجربات کے بعد نتیجہ اخذ کیا کہ روشنی کی شعاعوں پرایسا اثر ڈالنا ممکن ہے کہ ان کے دونوں سروں پر مختلف خاصیتیں پیدا ہو جائیں (یعنی دو شعاعوں کے مخالف سرے یکساں خاصیت رکھتے ہیں) حیوانی عضویات، بالخصوص نباتاتی عضویات کے میدان میں اس کی تحقیقات اپنے وقت سے بہت آگے تھیں۔ اس نے ثابت کیا کہ درخت اور پودے بھی زندگی رکھتے ہیں۔ اس نے تجربے کرنے کے لیے نئے طریقے وضع کیے اور دواؤں کے اثرات ریکارڈ کرنے کا ایک آلہ ایجاد کیا۔ کئی ضخیم سائنسی کتابوں کے مصنف ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12153083w — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: http://snaccooperative.org/ark:/99166/w6cz3z9n — بنام: Jagadish Chandra Bose — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. ^ ا ب ISFDB author ID: http://www.isfdb.org/cgi-bin/ea.cgi?195052 — بنام: Jagadish Chandra Bose — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  4. دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Jagadish-Chandra-Bose — بنام: Sir Jagadish Chandra Bose — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  5. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12153083w — اخذ شدہ بتاریخ: 25 فروری 2017 — مدیر: الیکزینڈر پروکورو — عنوان : Большая советская энциклопедия — اشاعت سوم — باب: Бос Джагдиш Чандра — ناشر: Great Russian Entsiklopedia, JSC نقص حوالہ: نادرست <ref> ٹیگ؛ نام "9b72f3849a27f5ea940388519f9306a3e21c20b3" مختلف مواد کے ساتھ کئی بار استعمال ہوا ہے۔
  6. http://www.genealogy.ams.org/id.php?id=145985 — اخذ شدہ بتاریخ: 30 اگست 2018
  7. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12153083w — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ