عثمان ڈار

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

عثمان ڈار
وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے امور نوجوانان
مدت منصب
29 اپریل2021 – 10 اپریل2022
صدر عارف علوی
وزیر اعظم عمران خان
مدت منصب
3 دسمبر2018 – 12 فروری2021
صدر عارف علوی
وزیر اعظم عمران خان
چیئرمین وزیراعظم یوتھ پروگرام
آغاز منصب
10 اکتوبر 2018
Fleche-defaut-droite-gris-32.png لیلیٰ خان
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت پاکستان تحریک انصاف  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی شلر انٹرنیشنل یونیورسٹی
جامعہ پنجاب  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عثمان ڈار ایک پاکستانی سیاست دان ہیں جو 3 دسمبر 2018 سے وزیر اعظم کے نوجوانوں کے امور کے خصوصی مشیر کے عہدے پر ہیں اور 10 اکتوبر 2018 سے وزیر اعظم کے یوتھ پروگرام کے چیئرمین ہیں۔ ان کا خاندان وی آئی پی گروپ پرائیوٹ لمیٹڈ کے مالکان ہیں جو ایک بڑی چمڑے کی کمپنی ہے اور چمڑے کے ملبوسات اور کھیلوں کے لباس کے پاکستان کے سب سے بڑے برآمد کنندگان میں سے ایک ہے۔

تعلیم[ترمیم]

ڈار نے آکسفورڈ یونیورسٹی سے بیچلر آف کامرس کی ڈگری حاصل کی ہے۔ ان کا تعلق پنجابی کشمیری خاندان سے ہے۔

ڈار نے 2013 کے عام انتخابات کے لیے اپنے کاغذات نامزدگی میں اعلان کیا کہ انہوں نے 1997 میں شلر انٹرنیشنل یونیورسٹی، لندن سے ماسٹر آف بزنس ایڈمنسٹریشن کی ڈگری حاصل کی ہے۔

نومبر 2017 میں، ان کی شلر انٹرنیشنل یونیورسٹی کی ڈگری ایم بی اے مشکوک پائی گئی جب برطانیہ کے محکمہ تعلیم نے کہا کہ وہ یونیورسٹی کو تسلیم نہیں کرتا۔

ڈار نے 2018 کے عام انتخابات کے لیے اپنے کاغذات نامزدگی میں ایم بی اے کی ڈگری ظاہر نہیں کی اور صرف پنجاب یونیورسٹی سے اپنی گریجویشن کی ڈگری کا ذکر کیا۔

سیاسی دور[ترمیم]

انہوں نے 2008 کے پاکستانی عام انتخابات میں حلقہ پی پی-122 (سیالکوٹ-II) سے آزاد امیدوار کے طور پر پنجاب کی صوبائی اسمبلی کی نشست کے لیے انتخاب لڑا لیکن وہ ناکام رہے۔ انہوں نے صرف 54 ووٹ حاصل کیے اور وہ نشست چوہدری محمد اخلاق سے ہار گئے۔ [1]

انہوں نے 2013 کے پاکستانی عام انتخابات میں حلقہ این اے 110 (سیالکوٹ-I) سے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے امیدوار کے طور پر پاکستان کی قومی اسمبلی کی نشست کے لیے انتخاب لڑا لیکن وہ ناکام رہے۔ انہوں نے 71,573 ووٹ حاصل کیے اور خواجہ محمد آصف سے نشست ہار گئے۔ [2]

انہوں نے 2018 کے پاکستانی عام انتخابات میں حلقہ این اے 73 (سیالکوٹ-II) سے پی ٹی آئی کے امیدوار کے طور پر قومی اسمبلی کی نشست کے لیے حصہ لیا لیکن وہ ناکام رہے۔ انہوں نے 115,464 ووٹ حاصل کیے اور خواجہ محمد آصف سے نشست ہار گئے۔ [3]

10 اکتوبر 2018 کو وزیراعظم عمران خان نے ڈار کو وزیراعظم یوتھ پروگرام کا چیئرمین مقرر کیا۔ 12 اکتوبر کو پنجاب کی صوبائی اسمبلی میں ڈار کی مشکوک ڈگری کے باعث تقرری کے خلاف قرارداد جمع کرائی گئی۔ قرارداد میں یہ بھی کہا گیا کہ تقرری میرٹ کی صریح خلاف ورزی اور ناقابل قبول ہے کیونکہ انہیں عام انتخابات میں زبردست شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ 13 اکتوبر کو پاکستان ٹوڈے نے بھی نوٹ کیا کہ ڈار کی بطور چیئرمین وزیراعظم یوتھ پروگرام لاہور ہائی کورٹ کے 2014 کے حکم کی خلاف ورزی ہے۔

3 دسمبر 2018 کو وزیراعظم عمران خان نے انہیں وزیراعظم کا معاون خصوصی برائے امور نوجوانان مقرر کیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "2008 election result" (PDF). ECP. 05 جنوری 2018 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2018. 
  2. "2013 election result" (PDF). ECP. اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2018. 
  3. "NA-73 Result - Election Results 2018 - Sialkot 2 - NA-73 Candidates - NA-73 Constituency Details - thenews.com.pk". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2018.