بربہاری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بربہاری
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 867  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
بغداد  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات سنہ 940 (72–73 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
بغداد  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Black flag.svg دولت عباسیہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب اسلام
فرقہ اہل سنت
فقہی مسلک حنبلی
عملی زندگی
استاذ ابو بکر مروذی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں استاد (P1066) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ الٰہیات دان،  وفقیہ،  ومحدث  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل فقہ،  وعلم حدیث  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
کارہائے نمایاں شرح السنہ للبربہاری  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں کارہائے نمایاں (P800) ویکی ڈیٹا پر
P islam.svg باب اسلام

ابو محمد حسن بن علی بن خلف بربہاری عراق کے ایک مشہور مسلمان الہیات دان، عالم اور قاضی تھے۔ دسویں اور گیارہویں صدی عیسوی (چوتھی پانچویں صدی ہجری) میں انہوں نے عباسی خلافت میں شیعہ مبلغین کے خلاف انتہائی اہم کردار ادا کیا اور اعتزال کے بڑھتے اثرات کے خلاف کامیاب تحریک چلائی۔[1] ان کی کتابیں شیعوں، معتزلیوں، قدریہ اور اشاعرہ کے خلاف سخت اشتعال انگیز تبصروں سے بھری پڑی ہیں۔ نیز بربہاری دسویں صدی عیسوی میں بغداد میں متعدد فرقہ وارانہ کشیدگیوں اور قتل عام کے ذمہ دار بھی سمجھے جاتے ہیں۔[2][3] پرنسٹن یونیورسٹی کے ایک محققِ تاریخ اسلام، میکائیل کوک نے بربہاری کو واضح ”جذبات انگیز خطیب“ کہا۔[4]

بربہاری اس لیے کہلائے کیونکہ بربہار کی طرف نسبت ہے، بربہار ایک دوا تھی جو ہندوستان سے لائی جاتی تھی اور اس کے تاجر کو بربہاری کہا جاتا تھا۔ وفات سنہ 329 ہجری میں ہوئی۔

بربہاری ابتدائی دور کے حنابلہ میں سے اس لیے بھی مشہور تھے کہ وہ تقلید کرنے کا بھرپور دفاع کرتے تھے۔[5]

سیرت[ترمیم]

ان کی جائے پیدائش اور جائے پرورش کتابوں میں مذکور نہیں ہے، بعض محققین کا خیال ہے کہ بربہاری، بغداد میں پیدا ہوئے اور وہیں پرورش پائی۔ بربہاری نے کبار علما و مشائخ مثلاً احمد بن حنبل، احمد بن محمد مروزی اور سہل بن عبد اللہ تستری سے علم حاصل کیا۔ ان کے تلامذہ میں سے: امام ابو عبد اللہ بن عبیداللہ عکبری جو ابن بطہ عکبری کے نام سے مشہور ہیں، امام محمد بن احمد بن اسماعیل بغدادی، ابو الحسین بن سمعون اور احمد بن کامل ہیں۔ اہل بدعت کا ہاتھ اور زبان دونوں سے خوب رد کیا کرتے تھے، اسی وجہ سے ان کے مخالفین بڑھ گئے تھے اور عباسی خلیفہ قاہر کو ان کے تعلق سے بھڑکا دیا، خلیفہ نے انھیں طلب کیا تو وہ روپوش ہو گئے، پھر اس نے ان کے تلامذہ اور اصحاب کو گرفتار کیا اور ان سب کو بصرہ جلا وطن کر دیا۔ راضی کے عہد خلافت میں اپنے وطن آپس آئے، بغداد میں یہ اعلانِ عام کر دیا گیا کہ بربہاری کے دو شاگرد ایک ساتھ کہیں جمع نہیں ہو سکتے۔ بربہاری پھر روپوش ہو گئے اور اسی روپوشی کی حالت میں وفات پائی۔ بربہاری کے تلامذہ اور اصحاب کی اتنی کثرت تھی کہ طبقات الحنابلہ میں بیان کیا گیا ہے کہ ان کے شاگردوں کو شیخ کے چھینکنے کی خبر پہنچی تو ان کے تلامذہ نے یرحمک اللہ کا جواب اس طرح دیا کہ پورا شہر گونج گیا اور خلیفہ راضی کے محل میں آواز سنی گئی۔[6]

عقائد[ترمیم]

بربہاری اللہ کی مثل اور تشبیہ کے قائل تھے اور اللہ کی ہاتھ کی ہتھیلی اور دو پیر اور سونے کے جوتے اور گیسوؤں والا مانتے تھے اور کہتے تھے کہ اللہ آسمانوں پر اوپر جاتا ہے اور دنیا میں نازل ہوتا ہے۔[7]

علما کی آرا[ترمیم]

  • امام ذہبی نے سیر اعلام النبلا میں لکھا ہے کہ:[8] «بربہاری حنابلہ کے شیخ اور امام ہیں، زبردست فقیہ ہیں، سختی سے حق بات کہنے والے ہیں، سنت کے داعی ہیں اور اللہ کے معاملہ میں کسی ملامت کی پروا نہیں کرتے ہیں۔»
  • ابو عبد اللہ فقیہ فرماتے ہیں: «جب تم دیکھو کہ کوئی بغدادی ابو الحسن بن بشار اور ابو محمد بربہاری سے محبت کرتا ہو تو سمجھ جاؤ کہ وہ صاحبِ سنت ہے۔»
  • ابن ابو یعلیٰ کہتے ہیں: «اپنے زمانے میں جماعت کے شیخ تھے، اہل بدعت کی تردید اور زبان و ہاتھ سے ان کی مخالفت میں پیش پیش تھے، سلطان وقت تک ان کی شہرت کا غلغلہ تھا، عارفین، حفاظ اور ثقہ میں شمار کیے جاتے تھے۔»
  • ابن کثیر لکھتے ہیں: «عالم، زاہد، حنبلی فقیہ اور واعظ تھے۔ اہل بدعت و معاصی کے خلاف بہت سخت تھے۔ ہر خاص و عام ان کی تعظیم کرتا تھا۔»[9]

وفات[ترمیم]

سیر اعلام النبلا میں لکھا ہے کہ[8] بربہاری مغربی کنارے پر تھے کہ انہیں چھینک آئی جس کے جواب میں ان کے تلامذہ نے اس زور سے جواب دیا کہ خلیفہ تک آواز پہنچ گئی۔ اس نے اس تعلق سے معلوم کیا تو پتا چلا کہ بربہاری کے اصحاب و تلامذہ ہیں، اس نے اس کو گستاخی پر محمول کیا۔ پھر اس کے بعد مبتدعین اور اہل بدعت خلیفہ کو بھڑکاتے رہے، یہاں تک کہ بغداد میں اعلان کر دیا گیا کہ بربہاری کے دو شاگرد ایک ساتھ نہیں رہ سکتے، شیخ روپوش ہو گئے اور اسی روپوشی کی حالت میں رجب 328 ہجری میں وفات پائی اور توزون کے گھر میں مدفون ہوئے۔ کہا جاتا ہے کہ تکفین کے وقت صرف خادم ان کے پاس تھا اور وہ اکیلے تجہیز و تکفین کر رہا تھا کہ یکایک اس نے دیکھا پورا گھر سفید پوش لوگوں سے بھرا ہے اور وہ سب نماز جنازہ پڑھ رہے ہیں۔ وہ ڈر گیا اور خادم نے قسم کھا کر کہا کہ اس نے دروازہ نہیں کھولا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ انھوں نے اپنے والد کے ترکہ میں سے ستر ہزار میراث چھوڑی۔"

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "al-Barbahārī"۔ Brill Reference۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 جولا‎ئی 2016۔
  2. Sayed Khatab (2011-01-01)۔ Understanding Islamic Fundamentalism: The Theological and Ideological Basis of Al-Qa'ida's Political Tactics (انگریزی زبان میں)۔ Oxford University Press۔ صفحہ 47۔ آئی ایس بی این 9789774164996۔
  3. Ira M. Lapidus, Islamic Societies to the Nineteenth Century: A Global History, p. 192. Cambridge: Cambridge University Press, 2012. ISBN 9780521514415
  4. Michael Cook, Forbidding Wrong in Islam: An Introduction, p. 103. Volume 3 of Themes in Islamic History. Cambridge: Cambridge University Press, 2003. ISBN 9780521536028
  5. A Medieval Critique of Anthropomorphism: Ibn Al-Jawzī's Kitāb Akhbār Aṣ-Ṣifāt, p. 98. Ed. Merlin L. Swartz. Volume 46 of Islamic philosophy and theology: Texts and studies. Leiden: Brill Publishers, 2002. ISBN 9789004123762
  6. "البربهاري • الموقع الرسمي للمكتبة الشاملة"۔ shamela.ws۔
  7. الکامل از ابن اثیر، ج 6، ص 248
  8. ^ ا ب سير أعلام النبلاء » الطبقة الثامنة عشر - موقع إسلام ويب
  9. تراجم العلماء عرض التفاصيل الإمام الحسن بن علي البربهاري موقع التوحيد