عبد اللہ بن احمد بن حنبل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبد اللہ بن احمد بن حنبل
معلومات شخصیت
پیدائش 1 ستمبر 828  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بغداد  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 22 مئی 903 (75 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بغداد  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Black flag.svg دولت عباسیہ  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
فرقہ اہل سنت
فقہی مسلک حنبلی
والد احمد بن حنبل  ویکی ڈیٹا پر والد (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
عملی زندگی
استاذ احمد بن حنبل  ویکی ڈیٹا پر استاد (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تلمیذ خاص احمد بن شعیب النسائی، ابو القاسم بغوی  ویکی ڈیٹا پر شاگرد (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ فقیہ، محدث  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل فقہ، علم حدیث  ویکی ڈیٹا پر شعبۂ عمل (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P islam.svg باب اسلام

امام الحافظ عبد اللہ بن احمد بن حنبل (پیدائش: ستمبر 828ء— وفات: 22 مئی 903ء ) محدث اور امام احمد بن حنبل کے فرزند تھے۔ امام عبد اللہ تیسری صدی ہجری کے نامور اور مشہور علمائے اسلام میں سے تھے۔

ابتدائی حالات[ترمیم]

نام و نسب[ترمیم]

نام عبد اللہ بن احمد بن حنبل اور کنیت ابوعبدالرحمٰن تھی۔ سلسلہ ٔ نسب یوں ہے: عبد اللہ بن محمد بن حنبل بن ہِلال الذھلی الشیبانی المروزی البغدادی۔[1]

پیدائش[ترمیم]

امام عبد اللہ کی پیدائش جمادی الثانی 213ھ مطابق ستمبر 828ء میں بغداد میں ہوئی۔[2][3] یہ اپنے بھائی صالح بن احمد بن حنبل سے چھوٹے تھے۔

روایت حدیث[ترمیم]

امام عبد اللہ نے بغداد کے کثیر محدثین اور علما سے حدیث روایت کی ہے اور اِس سے بڑھ کر اپنے والد امام احمد بن حنبل سے مسند احمد بن حنبل کو روایت کیا ہے۔ والد امام احمد بن حنبل کی وفات کے بعد اُن کے اصحاب سے بھی حدیث روایت کی ہے۔[4] علاوہ ازیں احمد بن ابراہیم الدورقی، ابومعمر اسماعیل الہذلی، عباس الدوری، ابوبکر بن ابی شیبہ، یحییٰ بن معین سے بھی اکتساب علم کیا۔ ابن المنادی کا قول ہے کہ اِن سے بڑھ کر کسی دوسرے نے احمد بن حنبل سے روایت نہیں کی ہے۔ اِنہوں نے اپنے والد سے تیس ہزار احادیث کو مسند احمد بن حنبل اور تفسیر کی ایک لاکھ بیس ہزار روایت کی ہیں۔ اِن میں سے براہِ راست بھی سنی ہوئی ہیں اور کچھ احادیث کی بطور اجازتِ روایت حاصل ہے۔[5] امام نسائی نے اِن سے حدیث کی روایت سنن نسائی میں بھی کی ہے۔

تلامذہ[ترمیم]

امام عبد اللہ کے مشہور تلامذہ یہ ہیں:

وفات[ترمیم]

امام عبد اللہ کی وفات 77 سال قمری کی عمر میں بروز اتوار 21 جمادی الثانی 290ھ مطابق 22 مئی 903ء کو بغداد میں ہوئی۔[2] نمازِ جنازہ میں کثیر تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ نمازِ جنازہ اِن کے بھتیجے زہیر بن صالح بن احمد بن حنبل نے اداء کروائی۔ تدفین باب التین میں کی گئی۔[5]

متاخرین کی آراء[ترمیم]

ابن المنادی کا قول ہے کہ: ہم ہمیشہ اپنے شیوخ کو یہ دیکھتے آئے کہ اُن کے بارے میں یہ گواہی دیتے تھے کہ یہ محدثین کی شناخت کی خرابیوں اور اُن کے ناموں اور کنیتوں کی شناخت کی اچھی صلاحیت رکھتے تھے اور عراق میں ہمیشہ طلبِ حدیث میں مصروف رہتے تھے۔اور کہا کرتے تھے کہ ہمارے اسلاف بھی اِن باتوں کا اقرار کرتے تھے۔ یہاں تک کہ بعض تو معرفت حدیث کے سلسلہ میں اُن کی تعریف میں اسراف سے کام لیتے تھے اور یہ کہ اُنہوں نے اپنے والد (احمد بن حنبل) سے بھی زیادہ احادیث سنی ہیں۔[5]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. شمس الدین الذہبی: سیر اعلام النبلاء: جلد 13، صفحہ 516۔
  2. ^ ا ب شمس الدین الذہبی: سیر اعلام النبلاء: جلد 13، صفحہ 523۔
  3. شمس الدین الذہبی: سیر اعلام النبلاء: جلد 13، صفحہ 517۔
  4. شمس الدین الذہبی: سیر اعلام النبلاء: جلد 13، صفحہ 517۔
  5. ^ ا ب پ ابن کثیر: البدایہ والنہایہ، جلد 11، صفحہ 190 ۔