دوارکاناتھ ٹیگور

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
دوارکا ناتھ ٹیگور
(بنگالی میں: দ্বারকানাথ ঠাকুর ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Dwarkanath Tagore.jpg
دوارکا ناتھ ٹیگور

معلومات شخصیت
پیدائش 1794
کلکتہ، بنگال پریزیڈنسی، برطانوی ہند (موجودہ کولکاتا، مغربی بنگال، بھارت)
وفات 1 اگست 1846(1846-80-10) (عمر  51–52 سال)
لندن, برطانیہ
قومیت برطانوی ہند
زوجہ دگامبری دیوی
اولاد دیبیندرناتھ ٹیگور
عملی زندگی
پیشہ صنعت کار

دوارکاناتھ ٹیگور (بنگالی: দ্বারকানাথ ঠাকুর, দারোকানাথ داروکاناتھ ٹھاکر) (1794–1846), پہلے ہندوستانی صنعت کاروں میں سے ایک،جنہوں نے برطانویوں کے ساتھ شراکت داری قائم کی اور ایک انٹرپرایز تشکیل دی۔وہ ٹیگور خاندان کی جوراسنکو شاخ کے بانی تھے۔ دوارکاناتھ ٹیگور؛ رابندر ناتھ ٹیگور کے دادا تھے۔

بچپن[ترمیم]

دوارکاناتھ ٹیگور کشاری (سنڈیلیا گوترا) ڈویژن کے راڑیہ برہمنوں کی اولاد تھے۔ ان کے آباؤ اجداد کو پیرالی برہمن کہا جاتا تھا ۔[1][2]


12 دسمبر 1807 کو، راملوچن کے مرنے کے بعد اس کی تمام جائیداد کا وارث اس کا لے پالک بیٹا دوارکاناتھ بنا، جو اس وقت نابالغ تھا۔ یہ جائیداد 1792 میں لارڈ کارن والیس کی طرف سے متعارف کرائے گئے مستقل آباد کاری کے پیچیدہ ضوابط کے تحت چلنے والی زمینداری جائیدادوں پر مشتمل تھی۔ اس قانون کے تحت یہ زمیندار ہندوستان میں برطانوی حکمرانی کے تحت ایک مخصوص ذیلی تقسیم یا علاقے کی حکمران اتھارٹی تھے اور انہیں (زمینداروں) کو ٹیکس جمع کرنے یا انگریزوں کی طرف سے اپنے زمینداروں کے علاقے کے اندر وہان کے مقامی رہائشی باشندوں پر حکومت کرنے کا اختیار تھا۔ لہٰذا، اپنے باپ کی چھوڑی ہوئی زمینداری کو سنبھالنے اور مستقبل کے زمیندار کے طور پر اپنا کردار ادا کرنے کے لئے، دوارکا ناتھ نے 1810 میں 16 سال کی عمر میں اسکول چھوڑ دیا اور کلکتہ کے ایک مشہور بیرسٹر رابرٹ کٹلر فرگوسن کے پاس قانونی و دیگر أمور سیکھنے چلے گئے۔ اس طرح انہوں نے کلکتہ ، بہرام پور اور کٹک میں اپنی جاگیروں کے درمیان سفر شروع کردئے۔ وہ کلکتہ تربیت کے لئے جاتے اور پھر اپنے جاگیروں پر جاتے تھے۔[3]

نیشنل لائبریری کلکتہ میں دوارکا ناتھ ٹیگور کا مجسمہ

کاروباری زندگی[ترمیم]

ٹیگور ایک مغربی تعلیم یافتہ بنگالی برہمن اور کولکتہ کے ایک معروف شہری رہنما تھے جنہوں نے برطانوی تاجروں کے ساتھ شراکت میں تجارتی منصوبوں ، بینکنگ، انشورنس اور شپنگ کمپنیوں کے قیام میں ایک اہم کردار ادا کیا۔1828 میں، وہ ہندوستان کے پہلے بینک ڈائریکٹر بنے۔ 1829 میں انہوں نے کلکتہ میں یونین بینک کی بنیاد رکھی۔انہوں نے پہلی اینگلو انڈین منیجنگ ایجنسی (صنعتی تنظیمیں جو جوٹ ملز، کوئلے کی کانیں، چائے کے باغات وغیرہ چلاتی تھیں) کار، ٹیگور اینڈ کمپنی کے قیام میں اہم کردار ادا کیا۔

وفات[ترمیم]

دوارکا ناتھ ٹیگور 1 اگست 1846 کی شام کو لندن کے سینٹ جارج ہوٹل میں "اپنی خوش قسمتی کے عروج پر" انتقال کر گئے۔

ان کی وفات پر 7 اگست کے لندن میل اخبار نے لکھا:

"ان کا خاندان ہندوستان کی اعلیٰ ترین برہمن ذات سے تعلق رکھتا ہے، وہ ایک اعلیٰ اور بلا شبہ بہترین نسب کے حامل تھے۔ لیکن یس وقت ہم ان کی قدر ومنزلت محض اس وجہ سے نہیں کر رہے کی وہ اعلیٰ نسب تھے بلکہہ اس سے کہیں بہتر بنیادوں پر ہم ان کی زندگی اور کارناموں کا جائزہ لیتے ہوئے بلاشبہ یہ کہہ سکتے ہیں کہ وہ اپنے ملک کے محسن تھے... انہوں نے ہندوستان کو فائدہ پہنچانے والے ہر سرکاری اور نجی کام کی حوصلہ افزائی کی۔[4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Thompson, Jr.، E (1926)، Rabindranath Tagore: Poet and Dramatist، Read، صفحہ 12، ISBN 1-4067-8927-5، The [Tagores] are Pirili Brahmans [sic]; that is, outcastes, as having supposedly eaten with Musalmans in a former day. No strictly orthodox Brahman would eat or inter-marry with them. 
  2. Dutta، K.؛ Robinson، A. (1995). Rabindranath Tagore: The Myriad-Minded Man. Saint Martin's Press. صفحات 17–18. ISBN 978-0-312-14030-4. 
  3. "History of the Adi Brahmo Samaj (1906)"
  4. Kripalani، Krishna (1981). Dwarkanath Tagore, A Forgotten Pioneer: A Life. New Delhi, India: National Book Trust, India. صفحات 246–7.