مرزا علی اظہر برلاس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مرزا علی اظہر برلاس
معلومات شخصیت
پیدائش 15 دسمبر 1900  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
کولکاتا،  برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 5 فروری 1989 (89 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
کراچی،  پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
مذہب اہل تشیع
عملی زندگی
تعليم بی۔اے ،ایم۔اے ایل ایل بی[1]
مادر علمی پریزیڈنسی یونیورسٹی، کولکاتا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ مؤرخ،  صحافی،  سیاست دان،  وکیل  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

مرزا علی اظہر برلاس لکھنؤ کے ایک متمول اور ذی علم خاندان سے تعلق رکھتے تھے۔ ان کی پیدائش کلکتہ، برطانوی ہندوستان میں 15 دسمبر 1900ء کو ہوئی تھی۔ مرزا کے والد کا نام مرزا محمد شاہ تھا۔ مرزا علی اظہر صاحب نے کلکتہ کے پریسِڈینسی کالج سے 1920ء میں تعلیم مکمل کی اور بعد میں وکالت کی ڈگری یونیورسٹی لا کالج کلکتہ سے لی۔[3] 1925 ءمیں آپ نے اپنی وکالت شروع کی اور اپنا نام بطور وکیل ہائی کورٹ الہ آباد میں درج کرایا۔ بعد میں انہوں نے بطور وکیل چیف کورٹ آف اودھ (لکھنؤ) میں اپنا نام درج کرایا۔[3]

حالات[ترمیم]

1926 ءمیں آپ بہرائچ آئے اور بہرائچ بار ایسوسی ایشن کو جوائن کیا اور یہاں وکالت شروع کی۔آپ بہرائچ بار کے صدر بھی رہے۔1938 ءمیں آپ بہرائچ میونسپل بورڈ کے چیئرمین بلامقابلہ منتخب ہوئے اور کچھ سالوں بعد استعفی دیکر بحیثیت ڈسڑکٹ جج ریاست جے پور چلے گئے۔1946 ء میں آپ کو نواب زادہ لیاقت علی خان (پاکستان کے اولین وزیر اعظم)نے مسلم لیگ کے اخبار ڈان (دہلی)میں بطور جنرل مینجر نامزد کیا ۔[3] ۔وطن کی تقسیم کے ساتھ ہی مرزا صاحب پاکستان چلے گئے اور پاکستان ٹائمز لاہور کے جنرل مینجر ہوئے۔1949 ءمیں آپ نے اپنا اخبار نیشن ویکلی شروع کیا۔آپ پاکستان ہسٹاریکل سوسائٹی کے بانی رکن تھے۔آپ آل پاکستان ایجوکیشن کانفرینس کے بانی رکن تھے۔اس کے علاوہ آپ ایرانی سیکنڈری اسکول کے بانی چیئرمین اور کراچی کے مشہور کالج عبد اللہ کالج برائے خواتین کے بانی صدر تھے۔[3] ۔

تصانیف[ترمیم]

مرزا علی اظہر برلاس کا شمار پاکستان کے مشہور و ممتاز صحافی، مورخ، محقق، ماہر تعلیم اور قانون دانوں میں ہوتا تھا۔ انہوں نے نوابین اودھ پر تاریخی کتاب King Wajid Ali Shah انگریزی زبان میں اور اردو زبان میں اودھ پر انگریزوں کا غاصبانہ قبضہ نامی کتابیں لکھیں۔[4]

وفات[ترمیم]

آپ کی وفات 5 فروری 1989 ء کو کراچی پاکستان میں ہوئی۔آپ کے دوبیٹے تھے۔ایک مرزا اطہر برلاس اور دوسرے مرزا صفدر برلاس۔صفدر برلاس پاکستان کے مشہور اخبار ڈان کے ایڈیٹر تھے۔آپ کے دونوں بیٹے اس دنیا سے رخصت ہو چکے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ وفیات ناموان پاکستان مطبوعہ 2006ء
  2. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ نقوش رفتگاں از عبرت بہرائچی نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  3. ^ ا ب پ ت https://groups.google.com/d/topic/soc.culture.indian/_o1gTUf86qA
  4. نفوش رفتگاں از عبرت بہرائچی