شبہ علم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(کاذب سائنس سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search

شِبہ علم (Pseudoscience) وہ دعوے، اعتقادات اور کام ہیں،جن کا سائنسی طریقہ کار سے کوئی تعلق نہیں مگر انہیں سائنس بنا کر پیش کیا جاتا ہے۔[1] دوسرے الفاظ میں غیر سائنسی باتوں کو ثابت کرنے کے لیے سائنسی اصطلاحات کو توڑ موڑ کر اور من پسند تشریحات کے ساتھ پیش کرنا شِبہ علم (سوڈو سائنس) کہلاتا ہے۔

شِبہ علم اکثر متضاد، مبالغہ آمیز یا غیر معقول دعووں پر مشتمل ہوتا ہے۔ تردید پر سخت کوششوں کے بجائے تصدیق اور تعصب پر انحصار؛ دوسرے ماہرین کے ذریعہ تشخیص کے لئے کھلے پن کی کمی؛ مفروضے تیار کرتے وقت منظم طریقوں کی عدم موجودگی بھی شِبہ علم کی نشانیاں ہیں۔ مفروضوں کے تجرباتی طور پرغلط ثابت ہونے کے بعد بھی ڈٹے رہنا بھی اس کی نشانیوں میں سے ہے۔[2]

علم اور شِبہ علم کے درمیان حد بندی فلسفیانہ، سیاسی اور سائنسی مضمرات رکھتی ہے۔ [3] صحت عمومی، رائے عامہ، ماحولیاتی پالیسیاں، اور سائنس کی تعلیم کے معاملے میں علم اور شبہ علم میں فرق کے عملی مضمرات ہیں۔[4] سائنسی حقائق اور نظریات کو شبہ علم سے الگ کرنا سائنس کی تعلیم اور خواندگی کا ایک اہم مقصد ہے۔ [5]

شِبہ علم کے مضر اثرات ہو سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر ویکسین کی ٹیم پر جان لیوا حملے، ہومیوپیتھک علاج کو فروغ دینے کی مہمات، جادو ٹونہ، دست شناسی، علم جفر، جنتری، ماحولیاتی تبدیلی سے انکار، نسل پرستانہ خیالات، دہشتگردی وغیرہ جیسے کئی نتائج جو بڑی تعداد میں لوگوں کی صحت اور جان کو خطرے میں ڈال سکتے ہیں ۔ [6] مزید برآں، جو لوگ متعدی بیماریوں کے جائز طبی علاج سے انکار کرتے ہیں وہ دوسروں کو بھی خطرہ میں ڈال سکتے ہیں۔ نسلی اور نسلی درجہ بندی کے بارے میں سائنس کے نظریات کی غلط تشریح نسل پرستی اور نسل کشی کا باعث بنی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Cover JA, Curd M, eds. (1998), Philosophy of Science: The Central Issues, pp. 1–82
  2. Hansson، Sven Ove (2008)، "Science and Pseudoscience"، Stanford Encyclopedia of Philosophy، Metaphysics Research Lab, Stanford University، Section 2: The "science" of pseudoscience  نامعلوم پیرامیٹر |name-list-style= ignored (معاونت)
  3. Lakatos، Imre (1973)، Science and Pseudoscience، The London School of Economics and Political Science, Dept of Philosophy, Logic and Scientific Method، (archive of transcript)، مورخہ 25 جولا‎ئی 2011 کو اصل (mp3) سے آرکائیو شدہ  نامعلوم پیرامیٹر |name-list-style= ignored (معاونت)
  4. Hansson، Sven Ove (September 3, 2008). "Science and Pseudo-Science, Section 1: The purpose of demarcations". Stanford Encyclopedia of Philosophy. Stanford University. اخذ شدہ بتاریخ April 16, 2011. From a practical point of view, the distinction is important for decision guidance in both private and public life. Since science is our most reliable source of knowledge in a wide variety of areas, we need to distinguish scientific knowledge from its look-alikes. Due to the high status of science in present-day society, attempts to exaggerate the scientific status of various claims, teachings, and products are common enough to make the demarcation issue pressing in many areas. 
  5. "Scientific literacy: New minds for a changing world". Science Education 82 (3): 407–16. June 1998. doi:10.1002/(SICI)1098-237X(199806)82:3<407::AID-SCE6>3.0.CO;2-G. Bibcode1998SciEd..82..407H. 
  6. "How anti-vax pseudoscience seeps into public discourse".