سلطنت یونانی باختر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
سلطنت یونانی باختر
ولایت بلخی
سن 256 قبل از مسیح تا 125 قبل از مسیح
Greco-BactrianKingdomMap.jpg
180 قبل از مسیح میں ولایت بلخی کی وسیع سرحدیں
دارالحکومت بلخ
آئی خانم
سیاسی حثیت
بادشاہت
قیام 256 قبل از مسیح
خاتمہ
125 قبل از مسیح

دیودوت سوتر جو سلوقی سلطنت کے ساتراپ باختر کا صوبہ دار تھا، نے آنتیوخس دوئم کی وفات کے بعد جو تیسری جنگ شام، بطلیموسی مصر و سلوقی سلطنت میں چھڑ گئی، کا فائدہ اٹھا کر اپنی خودمختاری کا اعلان کر کے سلطنت یونانی باختر قائم کیا جو یونانیائی تہذیب کا سب سے مشرقی حصہ تھا-یہ 250 قبل از مسیح سے لے کر 125 قبل از مسیح تک باختر اور وسطی ایشیا میں سغد‎ کے علاقوں پر حکومت کرتے رہے- اس سلطنت کو ولایت بلخی بھی کہا جاتا ہے- جوں جوں یہ ہندوستان پر حملے کرتے اور علاقے فتح کرتے رہے توں توں یہ وقت کے ساتھ ساتھ شمالی ہندوستان میں ہی زیادہ وقت گزارنے لگے اور 180 قبل از مسیح میں مملکت يونانی ہند قائم کی جو 10ء کے ارد گرد تک رہی-

پس منظر[ترمیم]


Wiki letter w.svg مضمون کا یہ قطعہ ابھی نامکمل ہے۔آپ اس میں اضافہ کرکے مزید بہتر بنا سکتے ہیں۔

ابتدائی تاریخ[ترمیم]


Wiki letter w.svg مضمون کا یہ قطعہ ابھی نامکمل ہے۔آپ اس میں اضافہ کرکے مزید بہتر بنا سکتے ہیں۔

عروج[ترمیم]


Wiki letter w.svg مضمون کا یہ قطعہ ابھی نامکمل ہے۔آپ اس میں اضافہ کرکے مزید بہتر بنا سکتے ہیں۔

زوال[ترمیم]

2 صدی قبل مسیح کے درمیان میں، ساکا اور پھر یوہژی، جو چین کی سرحد کی طرف سے ایک طویل منتقلی کے بعد وسط ایشیا آئے تھے، شمالی باختر و سغد پر حملہ آور ہو ئے- ہم فرض کر سکتے ہیں کہ سلطنت یونانی باختر کا آخری بادشاہ ہلی‌اکل اس حملے کے دوران لڑائی میں ہلاک کیا گیا تھا، اور مغربی تاریخ دانوں کا خیال ہے کہ پارتھیا کے ایرانی بھی سلطنت یونانی باختر کے خلاف یوہژی و ساکا کے باری باری حمایتی و اتحادی بنے- تاریخی طور پر ہندو کش کے پہاڑ باختر پر سنگین اور بڑے پیمانے پر ہونے والے حملوں کو روکنے میں قدرتی مدد دیتے، مگر ملند اعظم کی وفات کے بعد يونانی ریاستوں کے آپسی جھگڑوں کی وجہ سے نہ صرف شمال مشرقی سرحد سے توجہ ہٹی بلکہ لڑائیوں نے انہیں کسی بڑے فریق کا سامنا کرنے کے لائق نہیں چھوڑا- چنانچہ 130 قبل مسیح میں ساکا یا/اور پھر یوہژی نے پارتھیا کی مدد سے سلطنت یونانی باختر کو فتح کر لیا - باختر و سغد کے علاقے کو یوہژی کی وجہ سے تخارستان کا نام پڑ گیا- ان حملوں کی بدولت اور يونانی ریاستوں کے آپسی جھگڑوں نے يونانیوں کو شمالی ہندوستان میں دھکیل دیا جہاں وہ مزید ایک صدی تک مملکت يونانی ہند پر حکومت کرتے رہے-


Incomplete-document-purple.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کرکے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

حکمرانوں کی فہرست[ترمیم]

آل دیودوت[ترمیم]

تصویر خطاب نام دور حکومت
AgathoklesCoinWithDiodotusSotiros.JPG سوتر دیودوت یکم 250 تا 240 ؟ قبل از مسیح
دیودوت دوئم 240 تا 230 ؟ قبل از مسیح
نیکاتُر (فاتح) آنتیوخس نیکاتُر؟ 240 تا 220 ؟ قبل از مسیح
دیودوت دوئم کو مار کر ایک غاصب اوتیدم یکم، جو دراصل اسکا بہنوئ تھا نے سلطنت یونانی باختر کی تخت چھین لی-

آل اوتیدم[ترمیم]

تصویر خطاب نام دور حکومت
AgathoklesCoinWithEuthydemusTheou.JPG اوتیدم یکم 223 تا 200 قبل از مسیح
Demetrius I MET coin.jpg انکتوس (غیر مغلوبی) دیمتریوس یکم 200 تا 180 قبل از مسیح
اوتیدم دوئم 180 ؟ قبل از مسیح
Antimachos I.jpg آنٹیماکھا یکم 185 تا 170 قبل از مسیح
KingPantaleon.jpg پانطالیون 190 یا 180 قبل از مسیح کے سالوں کے دوران
Agathokles2.jpg آگاتھوکلیز 190 تا 180 ؟ قبل از مسیح
Apollodotosi.jpg سوتر (مسیحا) آپالوڈوٹس یکم 180 تا 160 ؟ قبل از مسیح
Animachusii(2).jpg نقفور (المنصور) آنٹیماکھا دوئم 160 تا 155 ؟ قبل از مسیح
Demetriosii.jpg دیمتریوس دوئم 155 تا 150 ؟ قبل از مسیح
MenandrosCoin.jpg سوتر (مسیحا) مانندر یکم 155 تا 130 ؟ قبل از مسیح
آل اوتیدم کی جگہ ایک غاصب سپہ سالار اوکراتید میغاس نے آنٹیماکھا یکم کو ہٹا کر لی اور باختر و سغد کے علاقے الگ کر لئیے جبکہ رخج ، پاروپامیز، گندھارا اور پنجاب آل اوتیدم کے زیر اثر مملکت يونانی ہند کے نام سے ہی رہے-

آل اوکراتید[ترمیم]

تصویر خطاب نام دور حکومت
EucratidesStatere.jpg اوکراتید اعظم اوکراتید میغاس 170 تا 145 قبل از مسیح
PlatoSerie1.jpg افلاتون بلخی 166 تا ؟ قبل از مسیح
اوکراتید دوئم 145 تا 140 ؟ قبل از مسیح
ہلی‌اکل 145 تا 130 ؟ قبل از مسیح
یوہژی قبائل کے خانہ بدوشوں نے وقتاً فوقتاً حملوں کے ذریعے سلطنت یونانی باختر کے آخری بادشاہ ہلی‌اکل کو جنگ میں شکست فاش کیا اور باختر و سغد پر قابض ہوئے اور علاقے کا نام تخارستان پڑ گیا-