کابینہ پاکستان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
پاکستان

مقالہ بسلسلہ مضامین:
پاکستان کی حکومت اور سیاست



پاکستان کی کابینہ وزیر اعظم کی زیر قیادت وزراء کی وہ جماعت ہے جو حکومت چلانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔

وزرا کی مجلس کی صدارت وزیر اعظم کرتا ہے ۔ تکنیکی طور پر یہ حکومت پاکستان کی کلی خود مختار مجلس ہے۔

2009ء میں کابینہ تبدیلیاں[ترمیم]

26 جنوری 2009ء کو چار نئے وفاقی وزراء کی جانب سے عہدے سنبھالنے کے بعد وفاقی وزراء کی کل تعداد 41 ہو گئی تاہم 16 دسمبر 2009ء کو نئے اعلان کے بعد یہ تعداد 39 رہ گئی۔ ان چار وزراء میں سے دو کا تعلق متحدہ قومی موومنٹ اور دو کا جمعیت علمائے اسلام ف سے تھا۔ یہ پہلا موقع ہے کہ متحدہ قومی موومنٹ مرکز میں اتحادی حکومت کا حصہ بنی ہے۔ متحدہ قومی موومنٹ کے لیے حکومت نے وزارت محنت، افرادی قوت اور سمندر پار پاکستانی کو دو حصوں میں تقسیم کر دیا اور اس طرح محنت و افرادی قوت کی وزارت الگ اور سمندر پار پاکستانیوں کی وزارت الگ کر دی گئی۔ موخر الذکر وزارت کے علاوہ بندرگاہوں اور جہاز رانی کی وزارت بھی متحدہ قومی موومنٹ سے تعلق رکھنے والے وزراء کو ملی۔ ان وفاقی وزراء کے علاوہ وزرائے مملکت کی تعداد 17 ہے۔ اس تازہ ترین تبدیلی کے بعد کابینہ کے اراکین میں پاکستان پیپلز پارٹی کے 42، جمعیت علمائے اسلام ف اور عوامی نیشنل پارٹی کے 3،3، متحدہ قومی موومنٹ، پاکستان مسلم لیگ ف اور قبائلی علاقہ جات کے 2،2 اور بلوچستان نیشنل پارٹی عوامی کے ایک، ایک رکن کابینہ کا حصہ ہیں جبکہ ایک رکن آزادامیدوار ہیں۔ اس طرح وزراء کی کل تعداد 58 ہے۔

فروری 2009ء میں خواجہ محمد خان ہوتی نے اپنی جماعت عوامی نیشنل پارٹی کی قیادت سے اختلافات کے باعث انسداد منشیات کی وزارت سے استعفی دے دیا۔

2009ء میں ہی رحمٰن ملک کو مشیر داخلہ سے وزیر داخلہ قرار دے دیا گیا کیونکہ ایوان بالا سینیٹ کے رکن بن گئے۔ علاوہ ازیں فاروق نائیک کے چیئرمین سینیٹ بننے کے بعد سید مسعود کوثر کو مشیر قانون و انصاف قرار دے دیا گیا۔ اسی سال رضا ربانی اور شیری رحمٰن نے بھی مبینہ طور پر جماعت کی قیادت سے اختلاف کے باعث کابینہ سے استعفے دے دیے [1][2]۔ شیری رحمٰن کی جگہ قمر زمان کائرہ کو وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات بنایا گیا۔

ڈاکٹر عاصم حسین کے استعفے کے بعد حکومت نے اگست 2009ء میں وزیر برائے تیل و قدرتی وسائل سید نوید قمر کو وزارت نجکاری کا اضافی عہدہ عطا کیا [3] تاہم دسمبر 2009ء میں وفاقی کابینہ میں ایک مرتبہ پھر رد و بدل کرتے ہوئے حکومت نے ان سے یہ عہدہ وقار احمد خان کو منتقل کر دیا گیا جو پہلے وزیر سرمایہ کاری کے فرائض انجام دے رہے تھے[4]۔ علاوہ ازیں دسمبر 2009ء میں دیگر تبدیلیوں میں میر ہزار خان بجارانی سے وزارت تعلیم کا قلمدان واپس لے کر انہيں وزیر صنعت و پیداوار بنا دیا گیا جبکہ وزیر صنعت و پیداوار منظور وٹو کو وزارت امور کشمیر و شمالی علاقہ جات کا قلمدان سونپ دیا گیا۔ حکومت نے ساتھ ہی وزارت سرمایہ کاری اور وزارت ترقیات و منصوبہ بندی کے خاتمے کا بھی اعلان کیا اور ان محکموں کو وزیر اعظم کے ماتحت کر دیا[4]۔

اراکین کابینہ[ترمیم]

وفاقی وزراء[ترمیم]

شمار وزیر جماعت عہدہ
1 امین فہیم Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر تجارت
2 ارباب عالمگیر خان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر مواصلات
3 احمد مختار Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر دفاع
4 عبد القیوم جتوئی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر دفاعی پیداوار
5 میر ہزار خان بجارانی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر صنعت و پیداوار[4]
6 حمید اللہ جان آفریدی قبائلی علاقہ جات وزارت ماحولیات
7 شوکت ترین [5] آزاد وزیر خزانہ
8 شاہ محمود قریشی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر خارجہ
9 نذر محمد گوندل Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر خوراک و زراعت
10 میر اعجاز حسین جکھرانی[6] Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر کھیل
11 رحمت اللہ کاکڑ Flag of JUI.svg جمعیت علمائے اسلام ف وزیر تعمیرات (ہاؤسنگ اینڈ ورکس)
12 سید ممتاز عالم گیلانی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر انسانی حقوق
13 منظور وٹو Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر امور کشمیر و شمالی علاقہ جات[4]
14 رحمٰن ملک Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر داخلہ
15 وقار احمد خان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر نجکاری[4]
16 قمر زمان کائرہ Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر اطلاعات و نشریات
17 سید خورشید شاہ Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر محنت و افرادی قوت
18 ہمایوں عزیز کرد Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر ترقیات مویشیان و دودھ
19 عبد الرزاق تھہیم Flag of Muslim League.png پاکستان مسلم لیگ ف وزیر مقامی حکومت و دیہی ترقی
20 شہباز بھٹی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر اقلیتی امور
21 فاروق ستار Flag of the Muttahida Qaumi Movement.svg متحدہ قومی موومنٹ وزیر سمندر پار پاکستانی
22 بابر اعوان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر پارلیمانی امور، وزیر قانون و انصاف[7]
23 سید نوید قمر [8] Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر تیل و قدرتی وسائل[4]
24 مخدوم شہاب الدین[6] Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر صحت
25 فردوس عاشق اعوان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر بہبود آبادی
26 اسرار اللہ زہری Flag of BNP.svg بلوچستان نیشنل پارٹی وزیر ڈاک
27 بابر خان غوری Flag of the Muttahida Qaumi Movement.svg متحدہ قومی موومنٹ وزیر بندرگاہ و جہاز رانی
28 غلام احمد بلور Red flag.svg عوامی نیشنل پارٹی وزیر ریلوے
29 حامد سعید کاظمی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر مذہبی امور
30 اعظم خان سواتی Flag of JUI.svg جمعیت علمائے اسلام ف وزیر سائنس و ٹیکنالوجی
31 ثمینہ خالد گھرکی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر سماجی بہبود و خصوصی تعلیم
32 آفتاب احمد شاہ جیلانی[6] Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر بین الصوبائی رابطہ
33 نجم الدین خان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر ریاست و سرحدی علاقہ جات
34 لعل محمد خان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر خصوصی اقدامات
35 رانا محمد فاروق سعید خان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر صنعت پارچہ بافی
36 مولانا عطاء الرحمٰن Flag of JUI.svg جمعیت علمائے اسلام ف وزیر سیاحت
37 راجا پرویز اشرف Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر آب و بجلی
38 شاہد حسین بھٹو Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر امور نوجوانان
39 نور الحق قادری قبائلی علاقہ جات وزیر زکوٰۃ و عشر

وزرائے مملکت[ترمیم]

شمار وزیر جماعت قلمدان
1 چودھری امتیاز صفدر وڑائچ Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر مواصلات
2 ارباب محمد ظاہر خان Red flag.svg عوامی نیشنل پارٹی وزیر دفاع
3 سردار سلیم حیدر خان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر دفاعی پیداوار
4 غلام فرید کاٹھیا Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر تعلیم
5 حنا ربانی کھر Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر خزانہ
6 رفیق احمد جمالی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر خوراک و زراعت
7 نوابزادہ ملک عماد خان Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر امور خارجہ
8 محمد طارق انیس Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر تعمیرات (ہاؤسنگ اینڈ ورکس)
9 آیت اللہ درانی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر صنعت و پیداوار
10 سید صمصام علی شاہ بخاری Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر اطلاعات و نشریات
11 تسنیم احمد قریشی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر داخلہ
12 قمر زمان کائرہ [9] قبائلی علاقہ جات امور کشمیر و گلگت بلتستان
13 مسعود عباس Red flag.svg عوامی نیشنل پارٹی وزیر مقامی حکومت و دیہی ترقی
14 مہرین انور راجا Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر پارلیمانی امور
15 نبیل گبول Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر بندرگاہ و جہاز رانی
16 محمد جادم منگریو Flag of Muslim League.png پاکستان مسلم لیگ ف وزیر ریلوے
17 شگفتہ جمانی Flagge der Pakistanischen Volkspartei.svg پاکستان پیپلز پارٹی وزیر مذہبی امور

خالی وزارتیں[ترمیم]

شمار وزارت تبصرہ
1 وزارت اقتصادی امور و شماریات عارضی طور پر وزیر خزانہ شوکت ترین کے زیر نگرانی
2 وزارت اطلاعاتی طرزیات (انفارمیشن ٹیکنالوجی) عارضی طور پر وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے زیر نگرانی
3 وزارت انسداد منشیات فروری 2009ء میں خواجہ محمد خان ہوتی کے استعفے کے باعث خالی
4 وزارت ثقافت
5 وزارت سرمایہ کاری 15 دسمبر 2009ء کو ختم کر دی گئی، محکمہ وزیر اعظم کے ماتحت کر دیا گیا[4]
6 وزارت منصوبہ بندی و ترقیات 15 دسمبر 2009ء کو ختم کر دی گئی، محکمہ وزیر اعظم کے ماتحت کر دیا گیا[4]

حوالہ جات[ترمیم]


متعلقہ مضامین[ترمیم]