مجدد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

ایک اسلامی اصطلاح، مجدد سے مراد وہ خاص شخص جو ایک صدی کے شروع میں اپنے علمی و فکری کارناموں سے دین اسلام کو تازگی عطا کرتا ہے۔

حدیث مجدد[ترمیم]

یہ ایک حدیث کا مفہوم ہے کہ بے شک اللہ تعالیٰ اس امت کے لیے ہر صدی کے سرے پر ایسے بندے (مجدد )بھیجتا رہے گا جو اس کے لیے دین کی تجدید کریں گے[1]۔ جسےابو داؤد کے علاوہ دوسرے آئمہ حدیث نے بھی بیان ہے۔ حاکم نے اپنی مستدرک میں اس کو روایت کیا ہے۔ حضرت ملا علی قاری رحمۃ اللہ علیہ نے مرقاۃ شرح مشکوٰۃ میں ابو داؤد اور مستدرک حاکم کے علاوہ طبرانی کی معجم اوسط نے بھی ذکر کیا ۔ امام بیہقی کی کتاب معرفۃ السنن والآثار میں بھی یہ حدیث موجود ہے۔ اس کے علاوہ مولانا عبدالحئی فرنگی محلیؒ نے مجموعۃ الفتاوی میں اس حدیث کی تخریج میں حلیہ ابو نعیم، مسند بزار مسند حسن بن سفیان اور کامل بن عدی کا بھی ذکر کیا۔ علامہ جلال الدین سیوطی رحمۃ اللہ علیہ نے مرقاۃ الصعود میں لکھا کہ اِتَّفَقَ الحُفَّاظُ عَلٰی تَصحِیحِہٖ یعنی حفاظ حدیث کا اس کی صحت پر اتفاق ہے۔ اس حدیث مبارک میں مَن یُجَّدِدُ لَھَا دِینَھَا کے الفاظ بڑے غور طلب ہیں۔ یہ الفاظ معیار مجددیت کو قائم کرنے کے لیے کافی ہیں۔ ان الفاظ میں دین کی تجدید کا ذکر ہے۔حضرت ملا علی قاری رحمۃ اللہ علیہ حدیث تجدید کی شرح کرتے ہوئے مجدد کی صفت بیان کرتے ہیں کہ اَی یُبیِّنُ السُّنَّۃِ مِنَ البِدعَۃِ وَ یُکتِّرُ العِلمَ وَ یُعِزُّ اَھلِہٖ و یقمع البدعۃ ویکسراہلھا۔ یعنی مجدد سنت کو بدعت سے ممتاز کرے گا۔ علم کو کثرت سے شائع کرے گا اور اہل علم کی عزت بڑھائے گا ، بدعت کا قلع قمع کرے گا اور اہل بدعت کا زور توڑ دے گا۔ مولانا عبدالحئی رحمۃ اللہ علیہ نے مجموعۃ الفتاوی میں فرمایا کہ مجدد کی علامات و شروط یہ ہیں کہ وہ علوم ظاہری و باطنی کا عالم ہو گا۔ اس کی تدریس و تالیف اور وعظ ونصیحت سے عام نفع ہو گا۔ وہ سنتوں کو زندہ کرنے اور بدعتوں کے مٹانے میں سرگرم ہو گا۔ [2]

مجددین کی تاریخ[ترمیم]

ابن جریر ، حکیم تر مذی نے نوادر الاصول میں ابو خولانی (رض) سے روایت کیا کہ میں نے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں اور دوسرے لفظ میں یوں ہے اللہ تعالیٰ اس دین میں ہمیشہ کچھ ایسے پودے اگاتا رہے گا۔ جن سے اپنی تابعداری کے کام لے گا۔ یعنی ہر دور میں کچھ صالحین اور مجدددین پیدا ہوتے رہیں گے جو دین اسلام کے احیاء کے لیے کام کرتے رہیں گے[3]۔ ∗حضرت موسیٰ علیہ السلام کے زمانہ سے حضرت عیسیٰ (علیہ السلام) تک متواتر انبیاء آتے رہے ان کی تعداد چار ہزار بیان کی گئی ہے یہ سب حضرات شریعت موسوی کے محافظ اور اس کے احکام جاری کرنے والے تھے چونکہ خاتم الانبیاء کے بعد نبوت کسی کو نہیں مل سکتی اس لیے شریعت محمدیہ کی حفاظت و اشاعت کی خدمت ربانی علماء اور مجددین ملت کو عطا ہوئی[4]۔

معیار مجددیت[ترمیم]

اگر تجدید کا فریضہ کوئی ایسی ہستی سر انجام دے جس کو وحی کی رہنمائی اور معجزہ کی تائید حاصل ہو تو اس کو نبی یا رسول کہتے ہیں، جبکہ یہی فریضہ اگر کسی امتی کے ہاتھوں انجام پائے تو علم و فضل میں اعلیٰ مقام اورعلوم ظاہریہ و باطنیہ میں یکتائے روزگار ہوتا ہے۔ حامئ سنت اور قامع بدعت ہوتا ہے گویا وہ ایک نابغہ عصر ہوتا ہے جس کو فراست میں حصہ و افر ملا ہوتا ہے، اس کے ساتھ ساتھ اس کو کرامت کی تائید بھی حاصل ہوتی ہے۔ نبی اور مجدد کے کام کی یکسانی کے باوجود ان کے مقام و مراتب میں زمین و آسمان کا فرق ہوتا ہے، نبی کی نبوت منصوص من اللہ ہوتی ہے ، نبی وحی کی ہمہ وقت رہنمائی میں کام کرتا ہے ، نبی اپنی نبوت کا اعلان کرنے کا پابند ہوتا ہے اس سلسلے میں وہ کسی شخص کی تائید و حمایت کا محتاج نہیں ہوتا۔ جبکہ مجدد کو اپنی صداقت کا ثبوت اپنے عزم و استقلال اور کام کی انجام دہی سے دینا ہوتا ہے۔ مجدد کے لیے اپنی مجددیت کا اعلان کرنا لازم نہیں ہوتا بلکہ اس کے ہم عصر علماء و صوفیا اس کے علم و فضل اور تجدیدی کام کو دیکھ کر اس کے مجدد ہونے کا حکم لگا سکتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ بہت سے مجددین رحمۃ اللہ علیہم اجمعین کی تجدیدی کوششوں کو ان کی زندگی میں معلوم نہ کیا جا سکا بلکہ بعد میں آنے والے علماء نے ان کے مجدد ہونے کی تصدیق کی۔ دین میں بدعات کو ختم کر کے روشن سنت کو تازہ کر دینے کا نام تجدید ہے اور اس کام کو سرانجام دینے والی ہستی کو مجدد کہتے ہیں جو بالفاظ حدیثِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالیٰ کی طرف سے مبعوث کیا جاتا ہے، اس کا مطلب ہے کہ کوئی شخص اپنی ذاتی کوششوں یا اپنی جماعت کے پروپیگنڈے کے زور پر مجدد کے مرتبہ پر فائز نہیں ہو سکتا ، یہاں تک کہ وہ علم و فضل ،فقاہت، علم اور کشف وکرامت میں اعلیٰ مقام کیوں نہ رکھتا ہو ، مجدد کے فرائض میں سے ہے کہ وہ کتاب و سنت کے مطابق ان اعمال کو زندہ کرے جو متروک ہو چکے ہوں، افراط و تفریط ، تحریفات و تاویلات اور بدعات سے دین کو پاک کرے، حق و باطل میں تمیز کرا کے دین کو حضور علیہ الصلوۃ والسلام اور صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کے دور کے مطابق بنائے ، اس کے ساتھ ساتھ اپنے روحانی فیضان سے لوگوں کو مستفیض کرے۔ جس طرح خلفائے راشدین کو مقام نیابت حاصل تھا اور ان حضرات کو حضور ختمی مرتبت صلی اللہ علیہ وسلم کا ظاہری و باطنی فیض حاصل تھا اور وہ ان فیوضات کو تقسیم کرنے والے تھے۔ جنھوں نے اسلامی نظام کے قیام کے ساتھ ساتھ روحانی فیضان سے بھی تشنگان حقیقت کو فیض یاب کیا۔ اسی طرح مجدد چونکہ نبی کا ظل ہوتا ہے اور اس کو حسب فرق مراتب اولی الامر کا مرتبہ و مقام حاصل ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جہاں وہ نظام اسلامی کو قائم کرنے کی کوششیں کرتا ہے اور اس بگاڑ کو ختم کرنے میں اپنی صلاحیتیں صرف کرتا ہے جو زمانہ گزرنے کے ساتھ پیدا ہو جاتا ہے وہ باطنی فیض کو بھی تقسیم کرتا ہے اور اپنے وقت کے غوث واقطاب واوتاد ، ابدال ونجبا اور اولیائے کاملین اس سے روحانی فیض حاصل کرتے ہیں۔ بلکہ ان اولیاء کو جو مقام و مرتبہ ملتا ہے اس کے وسیلے سے ملتا ہے۔ مجدد چونکہ نظام اسلامی کو قائم کرنے میں کوشاں ہوتا ہے لہذا وہ اس سلسلے میں حائل ہونے والی طاغوتی اور باطل قوتوں کے خلاف نبرد آزما ہوتا ہے۔ وہ ان رکاوٹوں کو خاطر میں لائے بغیر اپنے مقصد کے حصول کے لیے سرگرم عمل ہوتا ہے۔ بالآخر وہ نظام اسلامی کو تمام بدعات و خرافات سے پاک کر کے اصل حالت میں لانے میں کامیاب ہو جاتا ہے۔ نبی کا منکر خارج از اسلام ہوتا ہے اور آخرت کے انعامات سے محروم کر دیا جاتا ہے جبکہ مجدد کا منکر اسلام سے خارج نہیں ہوتا لیکن وہ کتاب و سنت کی ترجمانی سے محروم کر دیا جاتا ہے[2]۔

مجدد ہونے کے دعوے دار، علماء و عوام کی طرف سے نامزد کردہ اور ممکنہ مجددین کی فہرست[ترمیم]

پہلی صدی ہجری بمطابق (3 اگست، 718ء)[ترمیم]

دوسری صدی ہجری بمطابق (10 اگست، 815ء)[ترمیم]

تیسری صدی ہجری بمطابق (17 اگست، 912)[ترمیم]

چوتھی صدی ہجری بمطابق (24 اگست، 1009ء)[ترمیم]

پانچویں صدی ہجری بمطابق (1ستمبر، 1106ء)[ترمیم]

چھٹی صدی ہجری بمطابق (9 سمتبر، 1203)[ترمیم]

ساتویں صدی ہجری بمطابق (5 ستمبر، 1300)[ترمیم]

آٹھویں صدی ہجری بمطابق (23 ستمبر، 1397)[ترمیم]

نویں صدی ہجری بمطابق (1 اکتوبر، 1494)[ترمیم]

دسویں صدی ہجری بمطابق (19 اکتوبر، 1591)[ترمیم]

گیارویں صدی ہجری بمطابق (26 اکتوبر، 1688)[ترمیم]

بارہویں صدی ہجری بمطابق (4 نومبر، 1785)[ترمیم]

تیرہویں صدی ہجری بمطابق (14 نومبر، 1882)[ترمیم]

چودویں صدی ہجری بمطابق (21 نومبر، 1979)[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. سنن ابوداؤد:جلد سوم:حدیث نمبر 898
  2. ^ 2.0 2.1 http://www.churasharif.com/index.php?option=com_content&view=article&id=44&Itemid=50
  3. تفسیر در منثور - جلال الدین سیوطی سورۃ البقرہ آیت 250
  4. تفسیر خزائن العرفان - علامہ نعیم الدین مراد آبادی سورۃ البقرہ آیت نمبر87
  5. ^ 5.0 5.1 5.2 "Mujaddid Ulema"۔ Living Islam۔ 
  6. ^ 6.0 6.1 6.2 6.3 Josef W. Meri, Medieval Islamic Civilization: An Encyclopedia, (Routledge 1 Dec 2005)، p 678. ISBN 0-415-96690-6.
  7. ^ 7.0 7.1 7.2 Waliullah، Shah۔ Izalatul Khafa'an Khilafatul Khulafa۔ صفحہ 77, part 7۔ 
  8. ^ 8.0 8.1 8.2 8.3 8.4 8.5 8.6 8.7 Nieuwenhuijze، C.A.O.van (1997)۔ Paradise Lost: Reflections on the Struggle for Authenticity in the Middle East۔ صفحہ 24۔ آئی ایس بی این 90 04 10672 3۔  Cite error: نادرست <ref> ٹیگ؛ نام "Paradise Lost" مختلف مواد کے ساتھ کئی بار استعمال ہوا ہے۔
  9. ^ 9.0 9.1 Josef W. Meri, Medieval Islamic Civilization: An Encyclopedia, (Routledge 1 Dec 2005)، p 678. ISBN 0-415-96690-6
  10. "Imam Ghazali: The Sun of the Fifth Century Hujjat al-IslamThe Pen۔ فروری 1, 2011۔ http://www.thepenmagazine.net/imam-ghazali-the-sun-of-the-fifth-century-hujjat-al-islam/۔ 
  11. Jane I. Smith, Islam in America, p 36. ISBN 0-231-51999-0
  12. Dhahabi, Siyar, 4.566
  13. Willard Gurdon Oxtoby, Oxford University Press, 1996, p 421
  14. "al-Razi, Fakhr al-Din (1149–1209)"۔ Muslim Philosophy۔ 
  15. "Ibn Hajar Al-Asqalani"۔ Hanafi.co.uk۔ 
  16. Azra، Azyumardi (2004)۔ The Origins of Islamic Reformism in Southeast Asia part of the ASAA Southeast Asia Publications Series۔ University of Hawaii Press۔ صفحہ 18۔ آئی ایس بی این 978-0-8248-2848-6۔ 
  17. Glasse، Cyril (1997)۔ دائرۃ المعارف الاسلامیہ۔ AltaMira Press۔ صفحہ 432۔ آئی ایس بی این 90 04 10672 3۔ 
  18. "A Short Biographical Sketch of Mawlana al-Haddad"۔ Iqra Islamic Publications۔ 
  19. Cite error: حوالہ بنام جنوب مشرقی ایشیا میں اسلامی اصلاح پسندی کی ابتداء کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  20. "Gyarwee Sharif"۔ al-mukhtar books۔ 
  21. O. Hunwick، John (1995)۔ African And Islamic Revival in Sudanic Africa: A Journal of Historical Sources۔ صفحہ 6۔ 
  22. Rippin، Andrew۔ Muslims: Their Religious Beliefs and Practices۔ صفحہ 282۔ 
  23. "Services As A Mujadid"۔ Alahazrat Imam Ahmed Raza Khan۔