فہرست مجددین اسلام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

اسلام میں تجدید اور مجدد کی اصطلاح اس حدیث نبوی کی بنا پر سامنے آئی جس میں پیغمبر اسلام نے کہا تھا کہ "اللہ تعالیٰ اس امت کے لیے ہر صدی میں ایک ایسے شخص کو بھیجے گا جو اس امت کے لیے اللہ کے دین کی تجدید کرے گا"۔ تجدید سے مراد یہ ہے کہ دین کو اس حالت میں لوٹا دینا جس حالت میں وہ عہد نبوی میں تھا۔ اس عہد میں اسلام ہر لحاظ سے کامل و مکمل اور خالص و مُخلَص تھا، پھر اس میں کچھ نقائص اور بدعات داخل ہونے لگیں، چنانچہ ان مجددین نے اسلام کو ان تمام نقائص و بدعات سے پاک کرکے اسے حقیقی شکل میں پیش کیا۔ نیز تجدید کا ایک مطلب یہ بھی بیان کیا گیا ہے کہ تجدید صرف علم کے احیا کا نام ہے یعنی علم کی نئی نئی پرتوں کو کھولنا اور ظاہر کرنا۔ چنانچہ احمد بن حنبل کی بعض روایتوں میں مذکورہ بالا حدیث تجدید میں "تعلیم الدین" کا لفظ بھی ملتا ہے۔[1]

تجدید کے متعلق علما کے بہت سے اقوال و نظریات ہیں جو احادیث کی کتابوں اور ان کی شروحات اور تراجم و طبقات کی کتابوں میں مذکور ہیں۔ ابن حجر عسقلانی نے تو اس موضوع پر مستقل ایک کتاب تالیف کی ہے لیکن وہ اب مفقود ہے۔ جلال الدین سیوطی کی بھی اس موضوع پر ایک عربی کتاب "التنبئہ بمن يبعثہ اللہ على رأس كل مائة" نام سے ملتی ہے۔ چونکہ تجدید کی اصطلاح، حدیث نبوی سے اخذ کی گئی ہے اس لیے حدیث کی جن کتابوں میں مذکورہ حدیث موجود ہے وہاں تجدید کے تعلق سے علما کی بہت سی آراء کو ذکر کیا گیا ہے۔ ان کتابوں میں سنن ابی داؤد اور اس کی شروحات، ابن اثیر جزری کی کتاب "جامع الاصول فی احادیث الرسول" اور سیوطی کی "الجامع الصغیر" وغیرہ قابل ذکر ہیں۔ اس موضوع کا دوسرا میدان اس تعلق سے علما کے افکار و نظریات ہیں جو تراجم و طبقات کی کتابوں میں لکھے ہوئے ہیں، مثلاً ابن عساکر کی کتاب "تبیین کذب المفتری فیما نسب الی الامام ابی الحسن الاشعری"، تاج الدین سبکی کی "طبقات الشافعیۃ الکبریٰ"، ابن حجر عسقلانی کی "توالی التاسیس بمعالی ابن ادریس" جو امام شافعی کی حیات پر لکھی گئی ہے اور زین الدین عراقی نے بھی غزالی کی شہرہ آفاق کتاب "احیاء علوم الدین" کی احادیث کی تخریج میں اس موضوع پر مبسوط بحث کی ہے۔ اس کے علاوہ بعض علما نے اس موضوع پر اپنی کتابوں میں مختصر گفتگو کی ہے، مثلاً ابن کثیر نے اپنی کتاب "شمائل الرسول و دلائل النبوۃ" میں مختصراً چند سطروں میں لکھا ہے۔

تجدید و مجدد کے مسئلہ سے مسلمان علما کی دلچسپی بہت پہلے سے رہی ہے، مراجع و مصادر کتابوں سے معلوم ہوتا ہے کہ سب سے پہلے ابن شہاب زہری ہیں جنھوں نے پہلی صدی کے مجدد کے بارے میں اپنی رائے پیش کی اور ان کی رائے بہت مشہور ہوئی۔ ان کے بعد احمد بن حنبل کا نام آتا ہے جنھوں نے پہلی اور دوسری صدی کے مجددین کو بیان کیا۔ بعض کتابوں میں لکھا ہے کہ تیسری صدی ہجری میں فقیہ ابوالعباس ابن سریج کی مجلس میں حدیثِ تجدید سنائی گئی، چنانچہ حاضرین میں سے ایک عالم کھڑے ہوئے اور انھوں نے چند اشعار سنائے جس میں پہلی اور دوسری صدی کے مجددین کا نام شامل تھا اور تیسرے نمبر پر ابن سریج کا نام تھا اور یہی معاملہ حاکم نیشاپوری کی مجلس میں چوتھی صدی میں بھی پیش آیا جہاں انھیں چوتھی صدی کا مجدد شمار کیا گیا۔ تاج الدین سبکی نے اپنی کتاب "طبقات الشافعیۃ" میں بیس اشعار پر مشتمل ایک قصیدہ لکھا ہے جس میں مجددین کے ناموں کو شمار کرایا گیا ہے۔ اسی طرح سیوطی نے بھی اٹھائیس اشعار پر مشتمل ایک کتابچہ تحریر کیا ہے جس کا نام ہے "تحفۃ المہتدین باخبار المجددین"۔[2]

مجدد[ترمیم]

ہر صدی کے مجددین کی تعیین میں علمائے اسلام کا اختلاف رہا ہے۔ ابن کثیر لکھتے ہیں: «ہر قوم کا یہی دعوی ہے کہ مذکورہ حدیث سے مراد ان کے پیشوا اور امام ہیں جبکہ حدیث کے ظاہری معنی ہر طبقہ کے علماء اور حاملینِ علم کے لیے عام ہیں، چنانچہ اس حدیث کے مفہوم میں مفسرین، محدثین، فقہا، نحوی، لغوی وغیرہ سبھی داخل ہوں گے۔» احمد بن حنبل نے یقین کے ساتھ بیان کیا ہے کہ پہلی دو صدی کے مجدد عمر بن عبد العزیز اور شافعی ہیں،[3] اس کے بعد علما نے مجدد کے اوصاف و شرائط میں مزید اضافہ سے ہی کام لیا، تاکہ ہر کسی کو یہ نہ کہا جائے کہ فلاں مجدد ہے۔ عبد المتعال صعیدی کی کتاب "المجددون فی الاسلام" میں یہی لکھا ہے، چنانچہ صعیدی نے بسطامی کی رائے کے مطابق بہت سے ایسے ناموں کو شمار کیا ہے جو مجدد کے مرتبہ پر نہیں ہیں۔[4]

مجدد کی شرطیں[ترمیم]

  • علمی کمال و مہارت، علوم میں راسخ و ماہر ہو، یعنی زیادہ سے زیادہ علوم پر مہارت اور قدرت کے ساتھ ساتھ ان علوم کے نقد و تبصرہ پر بھی قادر ہو۔ بعض علما کے مطابق مجدد کا صرف عالم یا فقیہ ہونا کافی نہیں بلکہ مجتہد ہونا بھی ضروری ہے۔
  • مجدد ان تمام کاموں کو بخوبی انجام دے سکے جو تجدید میں داخل ہیں، ان میں سب سے اہم کام یہ ہے کہ مجدد اسلام کو تمام انحرافات اور اس کی اصل میں داخل ہوئے تمام شکوک و شبہات کا ازالہ کر کے اصل کتاب و سنت سے بحال کر دے، علما نے یہ بھی لکھا ہے کہ مجدد «سنت کو عام کرنے والا اور بدعت کو مٹانے والا» ہو۔
  • نیز یہ کہ مجدد کا علم اور اس کا نفع اس زمانہ میں عام ہو، اس کی تالیفات و تصنیفات مشہور ہوں اور اس کی اصلاحی کوششوں کا اثر ظاہر ہو، کسی مجدد کی تاثیر کو پہچاننے کے لیے یہ مناسب نہیں کہ اس کے بعد اس کے شاگردوں کے ذریعہ شائع ہونے والی آرا و افکار اور ان کے ذریعہ عام کیے گئے تصنیفی و اصلاحی کاموں کو دیکھا جائے، نیز یہ بھی ضروری ہے کہ مجدد کے مرتے ہی اس کی تاثیر بھی ختم نہ ہو جائے۔

نیز شبلی نعمانی نے مزید شرطیں بھی بیان کی ہیں جو حسب ذیل ہیں:

  • مذہب، علم یا سیاست میں کوئی مفید انقلاب برپا کرے۔
  • جو خیال اس کے دل میں آیا ہو وہ کسی کی تقلید سے نہ آیا ہو، بلکہ اجتہادی ہو۔
  • جسمانی مصیبتیں اٹھائی ہوں، جان پر کھیلا ہو، سرفروشی کی ہو۔[5]

سیوطی نے اپنے عربی شعری مجموعہ میں مجدد کے شرائط کے متعلق علما کے اقوال کو جمع کیا ہے۔ لکھتے ہیں:[6]

مجدد کی شرط ہے کہ ایک صدی گزر جائے اور مجدد لوگوں کے درمیان موثر ہو۔ اس کا علم اور مقام و مرتبہ معروف و مسلّم ہو اور وہ اپنی باتوں سے سنت کو عام کرتا ہو۔ ہر فن میں اسے مہارت حاصل ہو، اور اس کا علم زمانہ والوں پر عام ہو۔ ایک حدیث میں یہ بھی مروی ہے کہ وہ اہل بیت رسول سے ہو۔ مجدد ایک صدی میں ایک ہی ہوتا ہے۔ یہی جمہور اور حدیث کی مراد ہے۔

ایک صدی میں کئی مجددین[ترمیم]

مجددین کے ناموں کی تعیین میں اختلاف کے ساتھ ساتھ بعض علما کی یہ بھی رائے ہے کہ ایک صدی میں کئی مجدد نہیں ہو سکتے صرف ایک مجدد ہوتا ہے، ہاں اس صدی کے مجدد کی تعیین میں اختلاف ہو سکتا ہے۔ سیوطی نے اس رائے کو اپنے منظوم مجموعہ میں جمہور کی طرف منسوب کیا ہے۔ سیوطی نے ایک بات بہت زور دے کر کہی ہے کہ مجدد آل بیت میں سے ہوتا ہے اور وہ اس صدی میں اکیلا مجدد ہوتا ہے، حالانکہ خود سیوطی نے جن مجددین کے ناموں کو اپنے مجموعہ میں شمار کرایا ہے وہ تمام آل بیت سے نہیں ہیں اور سبکی نے تو دوسری صدی کے بعد کے تمام مجددین کے ناموں کو شافعی مسلک کے پیروکاروں میں سے شمار کرایا ہے، مگر ان کی رائے کی مواقفت کرنے والا کوئی نہیں ہے۔

دوسری رائے یہ ہے کہ ایک ہی زمانے میں مجدد ایک یا ایک سے زیادہ ہو سکتے ہیں، یہ رائے ابن اثیر جزری، شمس الدین ذہبی، ابن کثیر اور ابن حجر عسقلانی کی ہے۔[7]

جزری کا کہنا ہے کہ عام طور سے دینی معاملات میں امت نے دیگر طبقات کے ساتھ ساتھ فقہا سے بھی خوب فائدہ اٹھایا ہے، مثلا دین کی حفاظت اور اس کو نافذ کرنے اور عدل و انصاف کو قائم کرنے میں حکام سے، احادیث (جو ادلۂ شرعیہ کا ایک اہم جز ہے) کی حفاظت کرنے میں محدثین اور اصحاب حدیث سے اور قرآت اور اس کی روایات کو محفوظ کرنے میں قراء سے، اسی طرح عابدین، زاہدین، صوفیا اور واعظین وغیرہ سے بھی امت کو خوب نفع ہوا ہے۔[8] جزری نے مجددین کی فہرست میں بعض اہل تشیع کے ائمہ کو بھی شامل فرمایا ہے، لیکن شمس الحق عظیم آبادی نے ابن اثیر کی اس رائے پر نکیر کی ہے۔[9]

محمد رشید رضا مصری نے اپنی کتاب "موسوعۃ اعلام المجددین فی الاسلام" میں ان مجددین کو بھی شمار کرایا ہے جن کا تجدیدی کارنامہ صرف کسی علاقہ یا کسی قوم تک محدود رہا ہو، بلکہ انہوں نے جنگ میں تجدیدی کارنامہ انجام دینے والے مجددین کو بھی شامل کیا ہے، اسی طرح دیگر میدانوں یا شعبوں میں تجدید کرنے والوں کو بھی اپنی کتاب میں شمار کیا ہے۔[10]

مجددین کی فہرست[ترمیم]

مندرجہ ذیل جدول میں مجددین اسلام کی فہرست ہے، جس میں ہجری صدیوں کے مطابق ناموں کو ترتیب وار لکھا گیا ہے۔ پہلے خانہ میں مجدد کا نام، دوسرے خانہ میں ولادت و وفات کی تاریخ اور پھر تیسرے نوٹ یا کیفیت کے خانہ میں یہ بتایا گیا ہے کہ کس نے اس کو مجدد شمار کیا ہے اور تجدید کی کون سی صفت (مثلا: فقیہ، حاکم، زاہد، محدث، قاری وغیرہ) اس میں پائی جاتی ہے۔

فہرست میں موجود مجددین کے نام بعض مراجع و مصادر کی کتابوں سے ماخوذ ہیں۔ فہرست کا پہلا ماخذ ابن اثیر کی کتاب "جامع الاصول" اور سیوطی کی کتاب "التنبئۃ بمن یبعثه اللہ علی رأس کل مائۃ" ہے۔ اسی طرح شمس الدین الذہبی کی کتاب "سیر اعلام النبلاء" کے بعض متفرقات کو بھی شامل کیا گیا ہے۔ نیز شمس الحق عظیم آبادی کی کتاب "عون المعبود علی سنن ابی داؤد"، محمد بن حسن حجوی ثعالبی کی کتاب " کتاب الفکر السامی فی تاریخ الفقہ الاسلامی" سے بھی استفادہ کیا گیا ہے جس میں انھوں نے اپنی رائے سے بعض مجددین کے ناموں کو شامل کیا ہے اور علما سے نقل بھی کیا ہے۔ علاوہ بریں کچھ ناموں کو محمد بن فضل اللہ محبی نے اپنی کتاب "خلاصۃ الاثر فی اعیان القرن الحادی عشر" میں شمار کیا ہے اور بعض علما سے بھی نقل کیا ہے اور تین نام محمد رشید رضا کی تفسیر المنار سے شامل کیے گئے ہیں۔ ان کے علاوہ بقیہ ناموں کو دوسری کتابوں سے نقل کیا گیا ہے۔

جدول[ترمیم]

نام زندگی ملاحظات حوالہ جات
پہلی صدی کے مجددین
عمر بن عبد العزیز (61ھ - 101ھ) تمام علما اور مؤرخین اس پر متفق ہیں کہ کہ یہ پہلی صدی کے مجدد تھے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[11][12][13]
حسن بصری (21ھ - 110ھ) شمس الدین الذہبی، ابن اثیر جزری اور شمس الحق عظیم آبادی نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[9][12][13]
ابن شہاب زہری (28ھ - 124ھ) ابن اثیر جزری اور شمس الحق عظیم آبادی نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث

[9][12]
القاسم بن محمد (36ھ أو38ھ - 106ھ أو108ھ) ابن اثیر جزری، شمس الدین الذہبی اور شمس الحق عظیم آبادی نے، پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[9][12][13]
سالم بن عبد اللہ (متوفی 106ھ) ابن اثیر جزری اور شمس الحق عظیم آبادی نے، پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[9][12]
محمد بن سیرین (33ھ - 110ھ) ابن اثیر جزری، شمس الدین الذہبی اور شمس الحق عظیم آبادی نے، پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[9][12][13]
محمد باقر (56ھ - 114ھ) ابن اثیر جزری اور شمس الحق عظیم آبادی نے، پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[9][12]
عبد اللہ بن زيد جرمی بصری (متوفی 106ھ أو107ھ) شمس الدین ذہبی نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث

[13]
مجاہد بن جبر (21ھ - 104ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[12]
عکرمہ بربری (متوفی 105ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[12]
عطاء بن ابی رباح (متوفی 115ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[12]
طاؤس بن کیسان (متوفی 106ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[12]
مکحول شامی (متوفی 112ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[12]
عامر بن شراحيل شعبی (21ھ - 100ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[12]
ابن کثیر مکی (45ھ - 120ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں پہلی صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- قاری

[12]
ابوبکر صدیق (متوفی 13ھ) محمد طاہر بن عاشور نے انھیں پہلی صدی کا مجدد قرار دیا ہے۔

صفت تجدید خلیفہ ہونا اور ارتداد کا مقابلہ، اسلامی فتوحات وغیرہ بھی شامل ہیں۔

[14]
دوسری صدی کے مجددین
ابو الاعلی مودودی نے تمام ائمہ اربعہ: ابو حنیفہ، مالک بن انس، محمد بن ادریس شافعی اور احمد بن حنبل کو دوسری صدی ہجری سے چوتھی صدی ہجری تک کے مجددین میں شمار کیا ہے، اس لیے وہ مسلمانوں میں فقہی مذاہب کے ائمہ ہیں۔[15] اسی طرح محمد طاہر بن عاشور نے بھی مالک بن انس کو مجدد شمار کیا ہے.[14]
محمد بن ادریس شافعی (150ھ - 204ھ) تقریباً تمام علما و مؤرخین کا اتفاق ہے کہ یہ دوسری صدی کے مجدد ہیں۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[9][12][13][16]
احمد بن حنبل (164ھ - 241ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12][17]
یحییٰ بن معین (158ھ - 233ھ) ابن اثیر جزری اور شمس الدین ذہبی نے دوسری صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[12][13]
يزيد بن ہارون (118ھ - 206ھ) شمس الدین ذہبی نے مجدد شمار کیا ہے۔ [13]
ابوداؤد طیالسی (133ھ - 204ھ) شمس الدین ذہبی نے مجدد شمار کیا ہے۔ [13]
اشہب فقیہ (140ھ - 204ھ) ابن اثیر جزری اور شمس الدین ذہبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ

[12][13]
مامون الرشید (170ھ - 218ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[12]
حسن بن زیاد (متوفی 204ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12]
علی رضا (148ھ - 203ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12]
یعقوب بن اسحاق الحضرمی (متوفی 205ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- قاری۔

[12]
معروف کرخی (متوفی 200ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- زہد۔

[12]
تیسری صدی کے مجددین
احمد بن شعیب نسائی (215ھ - 303ھ) ابن اثیر جزری، شمس الدین ذہبی اور شمس الحق عظیم آبادی نے تیسری صدی کے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[9][12][13]
ابن سریج (متوفی 303ھ) علما و مؤرخین کا اتفاق ہے کہ یہ تیسری صدی کے مجدد ہیں۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12][13][18]
ابو الحسن اشعری (260ھ - 324ھ) ابن سریج ہی طرح ان پر بھر علما و مؤرخین کا اجماع ہے۔

صفت تجدید:- ابن اثیر جزری اور محمد طاہر بن عاشور نے [[علم کلام] بتایا ہے.

[12][14][19]
ابو منصور ماتریدی (متوفی 333ھ) عبد المجيد بن طہ دہیبی شعبہ نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- عقائد کو جمع کرنا۔

[20]
ابو جعفر طحاوی (239ھ - 321ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12]
حسن بن سفیان (متوفی 303ھ) شمس الدین ذہبی نے مجدد شمار کیا ہے۔ [13]
المقتدر باللہ (282ھ - 320ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[12]
ابو بکر خلال (235ھ - 311ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12]
احمد بن موسٰی (245ھ - 324ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- قاری۔

[12]
ابو نعیم استر آبادی (242ھ - 323ھ) ابو سہل صعلوکی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[21]
محمد بن یعقوب الرازی (متوفی 329ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12]
ابن ابی زيد قيروانی (310ھ - 386ھ) محمد بن الحسن ثعالبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[22]
ابن ابی زمنين (324ھ - 399ھ) محمد بن الحسن ثعالبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[23]
محمد بن اسماعیل بخاری (194ھ - 256ھ) محمد الطاہر بن عاشور نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[14]
چوتھی صدی کے مجددین
حاکم نیشاپوری (321ھ - 403ھ) ابن اثیر جزری نے انھیں چوتھی صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[24]
ابوبکر باقلانی (338ھ - 402ھ) ابن اثیر جزری اور جلال الدین سیوطی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- علم کلام۔

[12][25]
ابو بکر بن فورک (330ھ - 406ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- علم کلام۔

[24]
ابو حامد اسفرایینی (344ھ - 406ھ) ابن اثیر جزری اور جلال الدین سیوطی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[12][25]
ابو سہل صعلوکی (متوفی 404ھ) جلال الدین سیوطی اور شمس الدین ذہبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[25][26]
ابن حزم اندلسی (384ھ - 456ھ) محمد رشید رضا نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[27]
ابو اسحاق شیرازی (393ھ - 476ھ) زین الدین عراقی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[28]
امام الحرمین جوینی (419ھ - 478ھ) عبد السلام بن محمد بن عبد الكريم نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[29]
القادر باللہ (336ھ - 422 هـ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[24]
الخوارزمی (متوفی 403ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[24][30]
عبد الغنی بن سعيد (332ھ - 409ھ) شمس الحق عظیم آبادی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- حافظ حدیث۔

[9]
عبد الوہاب بن نصر مالکی (362ھ - 422 هـ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[24]
ابن حامد حنبلی (متوفی 403ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[24]
ابو الحسن علی بن احمد حمامی (328ھ - 417ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- قاری۔

[24]
ابوبکر محمد بن علی دینوری - ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- زاہد۔

[24]
عبد اللہ بن محمد ہواری (متوفی 401ھ) محمد بن الحسن ثعالبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- قاضی۔

[31]
سید شریف مرتضی (355ھ - 436ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[24]
عبد اللہ بن یاسین (متوفی 451ھ) محمد بن الحسن ثعالبی نے انھیں شمالی افریقہ مجدد شمار کیا ہے۔ [32]
پانچویں صدی کے مجددین
غزالی (450ھ - 505ھ) ابن اثیر جزری اور جلال الدین سیوطی نے انھیں پانچویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[25][33]
صلاح الدین ایوبی (532ھ - 589ھ) محمد رشید رضا نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[20][34]
المستظہر باللہ (470ھ - 512ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[33]
المسترشد باللہ (485ھ - 529ھ) ابو الحسن علی بن المسلم سُلمی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[35]
ابو طاہر سلفی (478ھ - 576ھ) زين الدين عراقی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[28]
ابو الفرج ابن جوزی (508ھ - 597ھ) فؤاد عبد المنعم نے اپنی كتاب (لفتة الكبد إلى نصيحة الولد) انھیں مجدد لکھا ہے۔ [36]
عبد القادر جيلانی (471ھ - 561ھ) جمال الدین فالح کیلانی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- تصوف۔

[20]
شیخ احمد الرفاعی (512ھ - 578ھ) جمال الدین فالح کیلانی نے مجدد شمار کی ہے۔ [20][37]
فخر الدين محمد مروزی (متوفی 512ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[33]
ابو الحسن زاغونی (455ھ - 527ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[33]
رزین بن معاویہ (متوفی 535ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[33]
ابو العز قلانسی (435ھ - 521ھ) ابن اثیر جزری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- قاری۔

[33]
محمود غزنوی (360ھ - 421ھ) محمد طاہر بن عاشور نے مجدد شمار کیا ہے بھارت میں سب سے پہلے اسلام داخل کرنے کی وجہ سے۔ [14]
چھٹی صدی کے مجددین
فخرالدین رازی (544ھ - 606ھ) جلال الدین سیوطی نے انھیں چھٹی صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[38]
ابو القاسم قزوینی (555ھ - 623ھ) جلال الدین سیوطی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[38]
ابن حاجب (570ھ - 646ھ) سامح كُريِّم نے اپنی (أعلام التاريخ الإسلامي في مصر) میں مجدد شمار کیا ہے۔ [39]
عبد الغنی مقدسی (541ھ - 600ھ) شمس الدین ذہبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[13]
عز بن عبد السلام (577ھ - 660ھ) عبد السلام بن محمد بن عبد الكريم نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[40]
یحییٰ بن شرف نووی (631ھ - 676ھ) زين الدين العراقي نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- محدث۔

[28]
زمخشری (467ھ - 538ھ) محمد طاہر بن عاشور نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- مفسر لغوی۔

[41]
ساتویں صدی کے مجددین
ابن دقیق العید (625ھ - 702ھ) شمس الدین ذہبی اور جلال الدین سیوطی نے انھیں ساتویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[38]
ابن عطاء اللہ سکندری (658ھ - 709ھ) محي الدين الطعمي نے اپنی کتاب (طبقات الشاذلية الكبرى) میں مجدد لکھا ہے۔ [42]
ابو الولید اسماعیل اول (677ھ - 725ھ) محمد طاہر بن عاشور نے مجدد کہا ہے. [41]
ابن تیمیہ (661ھ - 728ھ) محمد رشید رضا نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[10]
ابن قیم جوزیہ (691ھ - 751ھ) محمد رشید رضا نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[10]
جمال الدین اسنوی (707ھ - 772ھ) زین الدین عراقی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[28]
ابو اسحاق شاطبی (متوفی 790ھ) عبد السلام بن محمد بن عبد الكريم نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[43]
آٹھویں صدی کے مجددین
سراج الدین بلقینی (724ھ - 805ھ) جلال الدین سیوطی نے انھیں آٹھویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- حافظ حدیث۔

[44][45]
عبد الرحیم عراقی (725ھ - 806ھ) جلال الدین سیوطی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- حافظ حدیث۔

[44]
ابن خلدون (732ھ - 808ھ) علی عبد الواحد وافی نے اپنی کتاب (عبقريات ابن خلدون) میں انھیں مجدد قرار دیا ہے۔ [46]
محمد ثانی (835ھ - 885ھ) عبد المجيد بن طہ دہیبی نے مجدد شمار کیا ہے۔ [20]
محمد بن یوسف سنوسی (832ھ - 895ھ) ڈاکٹر حفناوی بعلی نے اپنے مقالہ "العلامة ابن يوسف السنوسي التلمساني: خاتمة المحققين وعمدة المجددين" میں مجدد قرار دیا ہے۔ [47][48]
نویں صدی کے مجددین
جلال الدین سیوطی (849ھ - 911ھ) انھوں نے خود نویں صدی کا مجدد کہا ہے۔ [44]
زکریا انصاری (823ھ - 926ھ) عبد القادر عيدروس اور عبد اللہ بن عمر مخرمہ نے (ت 972ھ) نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[49][50]
محمد بن غازی مکناسی (841ھ - 919ھ) محمد بن الحسن ثعالبی نے مجدد شمار کیا ہے۔ [51]
طاش کبری زادہ (901ھ - 968ھ) علیان جالودی، رائد عکاشہ، فتحی ملکاوی اور ماجد ابو غزالہ نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- مؤرخ۔

[52]
سلیمان اول (900 هـ - 974ھ) ابن عماد حنبلی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- خلیفہ۔

[53]
دسویں صدی کے مجددین
شمس الدین رملی (919ھ - 1004ھ) محمد بن فضل اللہ محبٰی، محمد بن ابی بکر شلِّي (متوفی 1093ھ) اور شمس الحق عظیم آبادی نے انھیں دسویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[9][54][55]
ملا علی قاری (متوفی 1014ھ) محمد بن حسن ثعالبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[56]
مجدد الف ثانی (971ھ - 1034ھ) ابو الاعلی مودودی اور يوسف نبہانی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- مصلح۔

[57][58]
احمد المنصور ذہبی (956ھ - 1012ھ) ابو عبد اللہ محمد القصار مفتی فاس نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- حاکم۔

[59]
علی بن مطیر (950ھ - 1041ھ)[60] جمال محمد بن عبد السلام نزیلی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[61]
عبد الملک بن دعسین (952ھ - 1006ھ)[62] عبد القادر بن شيخ نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[61]
محمد بہنسی - عبد القادر بن شيخ احمد نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[61]
محمد بن محمود ونکری (تنبکتی) (930ھ - 1002ھ)[63] احمد بابا سوڈانی اور عبد اللہ بن صدیق غماری نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[64][65]
عیسی بن عبد الرحمن سکتانی (متوفی 1062ھ) ان کے شاگرد محمد بن سلیمان مغربی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[66][67]
گیارہویں صدی کے مجددین
ابراہیم کورانی (1025ھ - 1101ھ) شمس الحق عظیم آبادی نے انھیں گیارہویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔ [9]
عبد اللہ بن علوی حداد (1044ھ - 1132ھ) ڈاکٹر مصطفی حسن ابدوی نے اپنی کتاب میں مجدد کہا ہے۔ [68][69]
محمد بن عبد الباقی زرقانی (1055ھ - 1122ھ) الشهاب المرجاني نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[70]
شاہ ولی اللہ (1114ھ - 1176ھ) ابو الاعلی مودودی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- عالم و مصلح۔

[71][72]
حسن یوسی (1040ھ - 1102ھ) محمد بن حسن ثعالبی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[73]
محمد بن اسماعیل صنعانی (1099ھ - 1182ھ) ان کے بیٹے ابراہیم بن محمد صنعانی نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[74]
مجدد بارہویں صدی کے مجددین
سید مرتضی زبیدی (1145ھ - 1205ھ) شمس الحق عظیم آبادی انھیں بارہویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔ [9][75][76]
محمد بن عبد الوہاب (1115ھ - 1206ھ) محمد رشید رضا اور صالح الفوزان نے مجدد شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ و مصلح۔

[10][77]
صالح بن محمد فلانی (1166ھ - 1218ھ) شمس الحق عظیم آبادی نے مجدد شمار کیا ہے۔ [9]
احمد بن عجیبہ (1160ء1224ھ) حسن عزوزی اور مصطفی حکیم نے مجدد کہا ہے۔ [78][79]
عثمان دان فودیو (1169ھ - 1232ھ) سوڈان کے علما انھیں مجدد قرار دیتے ہیں ہیں۔ [80][81][82][83]
ابو الاعلی مودودی نے شاہ اسماعیل دہلوی وسید احمد بریلوی کو مجاہدین قرار دیکر مجدد ومصلح کہا ہے اور شاہ ولی اللہ کو انھیں کے تجدید عمل کو آگے بڑھانے والا قرار دیا ہے۔[84]
محمد شوکانی (1173ھ - 1255ھ) عبد الرحمن صنعانی اور محمد رشید رضا نے انھیں بارہویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔ [27][85]
حسن عطار (1180ھ - 1250ھ) محمود حمدی زقزوق نے اپنی کتاب (الفكر الديني وقضايا العصر) میں مجدد قرار دیا ہے۔ [86]
رفاعہ طہطاوی (1216ھ - 1290ھ) محمود حمدی زقزوق نے مجدد شمار کیا ہے۔ [86]
تیرہویں صدی کے مجددین
محمد نذير حسين دہلوی (1220ھ - 1320ھ) شمس الحق عظیم آبادی نے انھیں تیرہویں صدی کا مجدد شمار کیا ہے۔ [9]
حسین انصار (1225ھ - 1327ھ) شمس الحق عظیم آبادی نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [9]
صديق حسن خان (1248ھ - 1307ھ) شمس الحق عظیم آبادی اور محمد رشید رضا نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [9][10]
ابن المدنی جنون (متوفی 1302ھ) محمد بن حسن ثعالبی نے مجددین میں شمار کیا ہے۔

صفت تجدید:- فقیہ۔

[87]
محمد عبده (1266ھ - 1323ھ) محمد رشید رضا اور عباس محمود عقاد نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [88][89]
عبد الرحمن کواکبی (1270ھ - 1319ھ) محمد عمارہ نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [90]
بدیع الزماں سعید نورسی (1293ھ - 1379ھ) احمد خالد شکری نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [91][92]
محمد ماضی ابو العزائم (1286ھ - 1356ھ) فوزی محمد ابو زید نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [93]
محمد اقبال (1294ھ - 1357ھ) توفیق الحکیم اور محمود حمدی زقزوق نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [86][94]
محمد زاہد کوثری (1296ھ - 1371ھ) محمد ابو زہرہ نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [95][96]
محمد طاہر بن عاشور (1296ھ - 1393ھ) فتحی حسن ملکاوی نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [97][98]
محمد مصطفی مراغی (1298ھ - 1364ھ) محمود حمدی زقزوق نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [86]
مصطفی عبد الرازق (1304ھ - 1366ھ) محمد سنی نے اپنی (الثورة وبريق الحرية) میں اسلامی فلسفہ کا مجدد کہا ہے۔ [99]
عباس محمود عقاد (1306ھ - 1383ھ) فؤاد صالح سید نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [100]
محمود شلتوت (1310ھ - 1383ھ) محمود حمدی زقزوق اور محمد رجب بیومی نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [86][101]
محمد ابو زہرہ (1315ھ - 1394ھ) خالد فہمی ابراهيم اوربو الحسن جمّال نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [102]
مالک بن نبی (1323ھ - 1393ھ) محمود حمدی زقزوق نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [86]
عبد الحلیم محمود (1328ھ - 1397ھ) محمد حلمی خالد نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [103]
چودھویں صدی کے مجددین
شیخ محمد غزالی سقا (1335ھ - 1416ھ) لمعی مطیعی اور ثروت خرباوی نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [104][105]
محمد متولی شعراوی (1329ھ - 1419ھ) احمد عمر ہاشم نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [106][107]
محمد ناصر الدین البانی (1333ھ -1420ھ) عبد العزیز بن باز نے مجددین میں شمار کیا ہے۔ [108]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. بسطامي محمد سعيد. كتاب مفهوم تجديد الدين، مرجع سابق. صفحہ 21 إلى 24. 
  2. بسطامي محمد سعيد. كتاب مفهوم تجديد الدين، مرجع سابق. صفحہ 18-19. 
  3. محمد بن فضل الله المحبي (1284هـ). خلاصة الأثر في أعيان القرن الحادي عشر، الجزء الثالث (PDF). المطبعة الوهبية. صفحہ 346. 
  4. بسطامي محمد سعيد. كتاب مفهوم تجديد الدين، مرجع سابق. صفحہ 36. 
  5. مقالات شبلی جلد پنجم، شبلی نعمانی، مطبع معارف اعظم گڑھ
  6. بسطامي محمد سعيد. كتاب مفهوم تجديد الدين، مرجع سابق. صفحہ 36-37-38-39. 
  7. بسطامي محمد سعيد. كتاب مفهوم تجديد الدين، مرجع سابق. صفحہ 42-43. 
  8. ابن الأثير الجزري. كتاب جامع الأصول في أحاديث الرسول، الجزء 11، مرجع سابق. صفحہ 320-321. 
  9. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ ڑ​ ز ژ محمد شمس الحق العظيم آبادي. كتاب عون المعبود، الجزء 11. (مؤرشف) على موقع إسلام ويب. صفحہ 301 إلى 310. اخذ شدہ بتاریخ 11 صفر 1437 هـ الموافق 23 نوفمبر 2015م. 
  10. ^ ا ب پ ت ٹ محمد رشيد رضا. مجددو القرون السابقة في الدين والدنيا. مجلة المنار، تصدير التاريخ، العدد رقم (1)، جمادى الآخرة 1350 هـ 3 أكتوبر 1931م. صفحہ 3-4. 
  11. أبو الفداء عماد الدين إسماعيل بن عمر ابن كثير القرشي. كتاب طبقات الشافعيين، فصل في ذكر فضائله، وثناء الأئمة عليه، رحمهم الله. (مؤرشف) على موقع إسلام ويب. اخذ شدہ بتاریخ 11 صفر 1437 هـ الموافق 23 نوفمبر 2015م. 
  12. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ ڑ​ ز ژ س ش ص ض ط ظ ع غ ف ق ک گ ل​ م​ ن و ابن الأثير عز الدين أبي الحسن الجزري الموصلي. كتاب جامع الأصول في أحاديث الرسول، الجزء 11. على موقع كتب جوجل. صفحہ 321-324. اخذ شدہ بتاریخ 11 صفر 1437 هـ الموافق 23 نوفمبر 2015م. 
  13. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ شمس الدین الذہبی. كتاب سير أعلام النبلاء، الطبقة الثانية، الجزء الرابع عشر، ابن سریج. (مؤرشف) على موقع إسلام ويب. صفحہ 201 إلى 204. اخذ شدہ بتاریخ 12 صفر 1437 هـ الموافق 24 نومبر 2015م. 
  14. ^ ا ب پ ت ٹ فتحي حسن ملكاوي (2011). الشيخ محمد الطاهر ابن عاشور وقضايا الإصلاح والتجديد في الفكر الإسلامي المعاصر: رؤية معرفية ومنهجية (ایڈیشن الأولى). المعهد العالمي للفكر الإسلامي. صفحہ 538. 
  15. ابو الاعلی مودودی؛ ترجمة: محمد كاظم سباق ومحمد عاصم الحداد (1386ھ/1967ءم). موجز تاريخ تجديد الدين وإحيائه وواقع المسلمين وسبيل النهوض بهم (PDF) (ایڈیشن الثانية). لبنان: دار الفكر الحديث. صفحہ 70-71. 
  16. أبو بكر أحمد بن الحسين بن علي بن موسى الخراساني البيهقي. كتاب مناقب الشافعي، تحقيق: أحمد صقر (ایڈیشن 1970ءم). مكتبة دار التراث. صفحہ 55-56. 
  17. صالح بن فوزان بن عبد الله الفوزان. من أعلام المجددين الإمام أحمد رحمه الله، نشأته - علمه وفضله - محنته وصبره - آثاره (ایڈیشن العدد السابع عشر - الإصدار: من ذو القعدة إلى صفر لسنة 1406ھ 1407ھ). (مؤرشف) مجلة البحوث الإسلامية، موقع الرئاسة العامة للبحوث العلمية والإفتاء. اخذ شدہ بتاریخ 11 صفر 1437 هـ الموافق 23 نوفمبر 2015م. 
  18. جلال الدین سیوطی؛ تحقيق: عبد الحميد منير شانوحة (1410ھ). كتاب التنبئة بمن يبعث الله على رأس كل مائة (ایڈیشن الأولى). دار الثقة. صفحہ 25-26. 
  19. جلال الدین سیوطی. كتاب التنبئة بمن يبعث الله على رأس كل مائة، مرجع سابق. صفحہ 28. 
  20. ^ ا ب پ ت ٹ عبد المجيد بن طه الدهيبي الزعبي (2009). إتحاف الأكابر في سيرة ومناقب الإمام محيي الدين عبد القادر الجيلاني الحسني الحسيني (ایڈیشن الأولى). دار الكتب العلمية. صفحہ 40. 
  21. بسطامي محمد سعيد. كتاب مفهوم تجديد الدين، مرجع سابق. صفحہ 48. 
  22. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 141. 
  23. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 144-145. 
  24. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح ابن الأثير الجزري. كتاب جامع الأصول في أحاديث الرسول، الجزء 11، مرجع سابق. صفحہ 323-324. 
  25. ^ ا ب پ ت جلال الدین سیوطی. كتاب التنبئة بمن يبعث الله على رأس كل مائة، مرجع سابق. صفحہ 33. 
  26. شمس الدین الذہبی. كتاب سير أعلام النبلاء، الطبقة الثانية والعشرون، الصعلوكي. (مؤرشف) على موقع إسلام ويب. صفحہ 208-209. اخذ شدہ بتاریخ 13 ربيع الثاني 1437 هـ الموافق 23 يناير 2015م. 
  27. ^ ا ب محمد رشید رضا. تفسير المنار. (مؤرشف) على موقع إسلام ويب. صفحہ 122. اخذ شدہ بتاریخ 19 ربيع الثاني 1438 هـ الموافق 17 يناير 2017م. 
  28. ^ ا ب پ ت محمد عبد الرؤوف المناوي (1391 هـ/1972م). فيض القدير شرح الجامع الصغير، الجزء الأول (PDF) (ایڈیشن الثانية). بيروت - لبنان: دار المعرفة. صفحہ 10-11. 
  29. عبد السلام بن محمد بن عبد الكريم. التجديد والمجددون، مرجع سابق. صفحہ 196. 
  30. محمد بن الحسن بن العربيّ بن محمد الحجوي الثعالبي الجعفري الفاسي (1416ھ/1995ءم). كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني (ایڈیشن الأولى). بيروت: دار الكتب العلمية. صفحہ 110. 
  31. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 145-146. 
  32. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 245-246. 
  33. ^ ا ب پ ت ٹ ث ابن الأثير الجزري. كتاب جامع الأصول في أحاديث الرسول، الجزء 11، مرجع سابق. صفحہ 324. 
  34. تأليف: محمد رشيد رضا. مجلة المنار - المجلدات 31 - 35. صفحہ (11/2). 
  35. ابن عساکر؛ تقديم وتعليق: محمد زاهد الكوثري. كتاب تبيين كذب المفتري فيما نسب إلى الإمام أبي الحسن الأشعري (PDF). المكتبة الأزهرية للتراث - الجزيرة للنشر والتوزيع. صفحہ 53. 
  36. الدكتور محمود أحمد القيسية الندوي (1983). الإمام ابن الجوزي وكتابه الموضوعات (ایڈیشن الأولى). جامعة البنجاب. صفحہ 48. 
  37. تأليف: دكتور جمال الدين فالح الكيلاني ودكتور زياد حمد الصميدعي (2014). الإمام أحمد الرفاعي المصلح المجدد - دراسة موجزة (ایڈیشن الأولى). المنظمة المغربية للتربية والثقافة والعلوم. 
  38. ^ ا ب پ جلال الدین سیوطی. كتاب التنبئة بمن يبعث الله على رأس كل مائة، مرجع سابق. صفحہ 15. 
  39. سامح كُريِّم (1996). أعلام التاريخ الإسلامي في مصر (ایڈیشن الأولى). الدار المصرية اللبنانية. صفحہ 249. 
  40. أبي الفضل عبد السلام بن محمد بن عبد الكريم (1428ھ/2007ءم). التجديد والمجددون في أصول الفقه، دراسة موثقة لجمهور المجددين من علماء الأصول تنتهي إلى استخلاص منهج إصلاحي سديد للكتابة الأصولية (ایڈیشن الثالثة). القاهرة: المكتبة الإسلامية. صفحہ 209. 
  41. ^ ا ب فتحي حسن ملكاوي (2011). الشيخ محمد الطاهر ابن عاشور وقضايا الإصلاح والتجديد في الفكر الإسلامي المعاصر: رؤية معرفية ومنهجية (ایڈیشن الأولى). المعهد العالمي للفكر الإسلامي. صفحہ 537. 
  42. محي الدين الطعمي (1994). "طبقات الشاذلية الكبرى". المكتبة الثقافية. 
  43. عبد السلام بن محمد بن عبد الكريم. التجديد والمجددون، مرجع سابق. صفحہ 269. 
  44. ^ ا ب پ جلال الدین سیوطی. كتاب التنبئة بمن يبعث الله على رأس كل مائة، مرجع سابق. صفحہ 16. 
  45. عبد الرحمن بن عمر البلقيني؛ تحقيق: نور محمود أحمد الحيله (2012م). ترجمة البلقيني. الجامعة الإسلامية (غزة). صفحہ 70. 
  46. الدكتور علي عبد الواحد وافي (1984). عبقريات ابن خلدون (ایڈیشن الأولى). شركة مكتبات عكاظ للنشر والتوزيع. صفحہ 117. 
  47. الدكتور حفناوي بعلي (1 فبراير 2009). العلامة ابن يوسف السنوسي التلمساني: خاتمة المحققين وعمدة المجددين. مجلة المعرفة التي تصدرها وزارة الثقافة في الجمهورية العربية السورية العدد رقم 545. 
  48. الأستاذ عيسى فضة (30 يناير 2015). "الإمام المجتهد المجدّد...أبي عبد الله محمّد بن يوسف السّنوسي – الأستاذ عيسى فضة". المكتبة الجزائرية الشاملة. 
  49. عبد القادر بن عبد الله العيدروس؛ تحقيق: أحمد حالو - محمود الأرناؤوط - أكرم البوشي (2001ءم). كتاب النور السافر عن أخبار القرن العاشر (ایڈیشن الأولى). دار صادر. صفحہ (1/64). اخذ شدہ بتاریخ 17 صفر 1437 هـ الموافق 29 نوفمبر 2015م. 
  50. محمد بن أبي بكر بن أحمد الشلي باعلوي؛ تحقيق: إبراهيم أحمد المقحفي (1424 هـ - 2003م). كتاب النور السافر عن أخبار القرن العاشر (PDF) (ایڈیشن الأولى). مكتبة تريم الحديثة - مكتبة الإرشاد. صفحہ 29. اخذ شدہ بتاریخ 22 ربيع الثاني 1438 هـ. 
  51. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 314-315. 
  52. د. عليان الجالودي، د. رائد عكاشة، د. فتحي ملكاوي، د. ماجد أبو غزالة (2014). التحولات الفكرية في العالم الإسلامي: أعلام وكتب وحركات وأفكار، من القرن العاشر إلى الثاني عشر الهجري (ایڈیشن الأولى). المعهد العالمي للفكر الإسلامي. صفحہ 24. 
  53. ابن العماد الحنبلي. كتاب شذرات الذهب في أخبار من ذهب (ایڈیشن 1991ءم). على موقع المكتبة الشاملة، (مؤرشف). صفحہ (8/373). اخذ شدہ بتاریخ 20 صفر 1437 ه الموافق 2 ديسمبر 2015م. 
  54. محمد بن فضل الله المحبي (1284هـ). خلاصة الأثر في أعيان القرن الحادي عشر، الجزء الثالث (PDF). المطبعة الوهبية. صفحہ 342. 
  55. محمد بن أبي بكر بن أحمد الشلي باعلوي؛ تحقيق: إبراهيم أحمد المقحفي (1424 هـ - 2003م). كتاب النور السافر عن أخبار القرن العاشر (PDF) (ایڈیشن الأولى). مكتبة تريم الحديثة - مكتبة الإرشاد. صفحہ 27. اخذ شدہ بتاریخ 22 ربيع الثاني 1438 هـ. 
  56. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 218. 
  57. ابو الاعلی مودودی. موجز تاريخ تجديد الدين وإحيائه، مرجع سابق. صفحہ 101. 
  58. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 326. 
  59. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 323-324. 
  60. عبد الولي الشميري. موقع موسوعة الأعلام (مؤرشف). اخذ شدہ بتاریخ 25 ربيع الثاني 1438 هـ. 
  61. ^ ا ب پ محمد بن فضل الله المحبي (1284هـ). خلاصة الأثر في أعيان القرن الحادي عشر، الجزء الثالث (PDF). المطبعة الوهبية. صفحہ 347. 
  62. عبد الولي الشميري. موقع موسوعة الأعلام (مؤرشف). اخذ شدہ بتاریخ 25 ربيع الثاني 1438 هـ. 
  63. خير الدين الزركلي (2002ءم). كتاب الأعلام، الجزء السابع (على المكتبة الشاملة) (ایڈیشن الخامسة عشر). بيروت - لبنان: دار العلم للملايين. صفحہ 88. 
  64. شهاب الدين أحمد بن محمد بن أحمد بن يحيى، أبو العباس المقري التلمساني؛ تحقيق: مصطفى السقا - إبراهيم الإيباري - عبد العظيم شلبي - سعيد أحمد أعراب - محمد بن تاويت - عبد السلام هراس (1358ھ - 1939م). كتاب أزهار الرياض في أخبار القاضي عياض، الجزء الثالث (الكتاب على المكتبة الشاملة). مصر - الإمارات: مطبعة لجنة التأليف والترجمة والنشر في القاهرة - صندوق إحياء التراث الإسلامي المشترك بين المملكة المغربية، ودولة الإمارات المتحدة. صفحہ 56-57. 
  65. محمد بن عبد الرحمن السخاوي شمس الدين؛ تحقيق: عبد اللہ بن صدیق الغماری - تقديم: عبد الله محمد الصيق (1399ھ - 1979م). كتاب المقاصد الحسنة في بيان كثير من الأحاديث المشتهرة (PDF) (ایڈیشن الأولى). بيروت - لبنان: دار الكتب العلمية. صفحہ 122 (الحاشية). 
  66. محمد بن فضل الله المحبي (1284هـ). خلاصة الأثر في أعيان القرن الحادي عشر، الجزء الثالث (PDF). المطبعة الوهبية. صفحہ 235. 
  67. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 330. 
  68. "موقع المستنير: ترجمة الإمام عبد الله بن علوي بن محمد الحداد.". 18 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 فروری 2019. 
  69. تأليف: الدكتور مصطفى حسن البدوي (1994). الإمام الحداد: مجدد القرن الثاني عشر الهجري (1044-1132هـ)، سيرته - منهجه. دار الحاوي للطباعة والنشر والتوزيع. 
  70. "دعوة الحق: محمد بن عبد الباقي الزرقاني ومنهجه في شرح الموطأ.". 26 جنوری 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 فروری 2019. 
  71. ابو الاعلی مودودی. موجز تاريخ تجديد الدين وإحيائه، مرجع سابق. صفحہ 118. 
  72. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 435. 
  73. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 337-338. 
  74. عبد الحي بن عبد الكبير الكتاني؛ تحقيق: إحسان عباس (1402ھ/1982ءم). فهرس الفهارس والأثبات ومعجم المعاجم والمشيخات والمسلسلات، الجزء الأول (ایڈیشن الثانية). بيروت: دار الغرب الإسلامي. صفحہ 513. 
  75. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 223. 
  76. سامح كُريِّم (2010). موسوعة أعلام المجددين في الإسلام: من القرن السادس حتى القرن الثاني عشر للهجرة - الجزء الثاني (ایڈیشن الأولى). مكتبة الدار العربية للكتاب. صفحہ 414. 
  77. صالح بن فوزان بن عبد الله الفوزان. من أعلام المجددين الشيخ محمد بن عبد الوهاب (ایڈیشن العدد السادس عشر - الإصدار: من رجب إلى شوال لسنة 1406ھ). (مؤرشف) مجلة البحوث الإسلامية، موقع الرئاسة العامة للبحوث العلمية والإفتاء. اخذ شدہ بتاریخ 19 صفر 1437 هـ الموافق 1 ديسمبر 2015م. 
  78. أ.د. حسن عزوزي (2001). "الشيخ أحمد بن عجيبة ومنهجه في التفسير - المجلد 2". المملكة المغربية، وزارة الأوقاف والشؤون الإسلامية. 
  79. الأستاذ الدكتور مصطفى الحكيم (2007). "الرؤية الصوفية عند الشيخ الطيب بن كيران". دار الكتب العلمية. 
  80. حسن عيسى عبد الظاهر. كتاب الدعوة الإسلامية في غرب أفريقية، وقيام دولة الفولاني (ایڈیشن 1991ءم). على موقع جوجل الكتب. اخذ شدہ بتاریخ 20 صفر 1437 هـ الموافق 2 ديسمبر 2015م. 
  81. مصطفى سعد (1411ھ/1991ءم). أثر دعوة الشيخ محمد بن عبد الوهاب في حركة عثمان بن فودي الإصلاحية في غرب أفريقيا (مطبوع ضمن بحوث ندوة دعوة الشيخ محمد بن عبد الوهاب) "الكتاب على موقع الشاملة" (ایڈیشن الثانية). الرياض: عمادة البحث العلمي بجامعة الإمام محمد بن سعود الإسلامية. صفحہ 432. اخذ شدہ بتاریخ 27 ربيع الثاني 1438 هـ. 
  82. أسامة مغاجي إمام. مؤتمر العلاقات الإفريقية التركية، المحور السادس: التعليم، عنوان البحث: مؤلفات الخلافة العثمانية ودورها في تثقيف الشباب النيجيري المسلم: إصدارات مكتبة وقف الإخلاص بإستانبول نموذجاً (PDF). صفحہ 334. اخذ شدہ بتاریخ 27 ربيع الثاني 1438 هـ. 
  83. بوبكي سكينة (2009-2010م). الحركة العلمية بالهوسا في السودان الغربي خلال القرن 19م (PDF). جامعة وهران. صفحہ 80. اخذ شدہ بتاریخ 27 ربيع الثاني 1438 هـ. 
  84. ابو الاعلی مودودی. موجز تاريخ تجديد الدين وإحيائه، مرجع سابق. صفحہ 122. 
  85. محمد الشوكاني. البدر الطالع بمحاسن من بعد القرن السابع، الجزء الأول. بيروت: دار المعرفة. صفحہ 346. 
  86. ^ ا ب پ ت ٹ ث محمود حمدي زقزوق (2008). "الفكر الديني وقضايا العصر". دار الرشاد. 
  87. محمد الحجوي الثعالبي. كتاب الفكر السامي في تاريخ الفقه الإسلامي، الجزء الثاني، مرجع سابق. صفحہ 362-363. 
  88. محمد رشيد رضا. الاستاذ الإمام. مجلة المنار، تصدير التاريخ، العدد رقم (1)، جمادى الآخرة 1350 هـ 3 أكتوبر 1931م. صفحہ 8. 
  89. عاصم بكري (2016). أنيس منصور كما لم يعرفه أحد: سير وتراجم (ایڈیشن الأولى). دار سما للنشر والتوزيع. صفحہ 108. 
  90. محمد عمارة (1984). عبد الرحمن الكواكبي: شهيد الحرية و مجدد الإسلام (ایڈیشن الأولى). دار الوحدة، ودار المستقبل العربي. 
  91. أحمد خالد شكري (2004). بحوث الإعجاز والتفسير في رسائل النور (ایڈیشن الأولى). شركة سوزلر للنشر. صفحہ 77. 
  92. تأليف: حسيني عاصم (1974). سيرة إمام مجدد: قبسات من حياة الإمام العلامة بديع الزمان سعيد النورسي (ایڈیشن الأولى). شركة سوزلر للنشر. 
  93. فوزي محمد أبو زيد (1992). الإمام أبو العزائم.. المجدد الصوفي (ایڈیشن الأولى). دار الإيمان والحياة. 
  94. د. سيد بن حسين العفاني (2004). أعلام وأقزام في ميزان الإسلام - الجزء الثاني (ایڈیشن الأولى). دار ماجد عسيري للنشر والتوزيع. صفحہ 294. 
  95. محمد زاهد الكوثري. مقدمة كتاب مقالات الكوثري. المكتبة التوفيقية. صفحہ 13-14. 
  96. أ.د. عمار جيدل (العدد 06 / السنة الثانية / (يناير-مارس) 2007). "شيخ علماء الإسلام محمد زاهد الكوثري". مجلة حراء. 
  97. فتحي حسن ملكاوي (2011). الشيخ محمد الطاهر ابن عاشور وقضايا الإصلاح والتجديد في الفكر الإسلامي المعاصر: رؤية معرفية ومنهجية (ایڈیشن الأولى). المعهد العالمي للفكر الإسلامي. صفحہ 29. 
  98. الصادق كرشيد (26 أكتوبر 2004). "الطاهر بن عاشور.. رائد الإصلاح والتجديد". صحيفة الشرق الأوسط. 
  99. محمد السني (2017). الثورة وبريق الحرية (ایڈیشن الأولى). دار الأدهم للنشر والتوزيع. صفحہ 269. 
  100. فؤاد صالح السيد (2015). أعظم الأحداث المعاصرة (1900 - 2014م) (ایڈیشن الأولى). مكتبة حسن العصرية. صفحہ 465. 
  101. محمد رجب البيومي (1995). النهضة الإسلامية في سير أعلامها المعاصرين (ایڈیشن الأولى). دار القلم: دمشق. الدار الشامية: بيروت. صفحہ 447. 
  102. الدكتور خالد فهمي إبراهيم، والأستاذ أبوالحسن الجمّال (2015). مآذن من بشر.. أعلام معاصرون (ایڈیشن الأولى). دار البشير للثقافة والعلوم. صفحہ 147. 
  103. الدكتور محمد حلمي خالد (يونيو 2011). "أنا وعمرو خالد والأيام الصعبة - الجزء الأول". المكتب المصرى الحديث. 
  104. لمعي المطيعي (2003). موسوعة نساء ورجال من مصر (ایڈیشن الأولى). دار الشروق. صفحہ 650. 
  105. ثروت الخرباوي (2012). سر المعبد: الأسرار الخفية لجماعة الإخوان المسلمين (ایڈیشن الأولى). دار نهضة مصر. صفحہ 27. 
  106. تأليف: قسم الدراسات والأبحاث - دار أمواج (2012). كتاب إمام الدعاة محمد متولي الشعراوي (ایڈیشن الأولى). عمان-الأردن: دار أمواج. صفحہ 65. 
  107. سامح كريم (2010). موسوعة أعلام المجددين في الإسلام: من القرن الثالث عشر حتى القرن الخامس عشر للهجرة - الجزء الثالث (ایڈیشن الأولى). مكتبة الدار العربية للكتاب. صفحہ 338. 
  108. ابن باز، عبد العزيز بن عبد الله, سعيدي، صلاح الدين, ألباني، محمد ناصر الدين, عثيمين، محمد صالح (2006). موسوعة الأحكام والفتاوى الشرعية، الكتاب على جوجل كتب. دار الغد الجديد.