یہودی ادب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

یہودی ادب، یہود کی طرف سے، یہودی موضوعات پر تخلیقات، یہودی زبانوں میں مختلف موضوعات پر ادبی تخلیقات اور یہودی ادیبوں کے لکھے ہوئے کسی بھی زبان میں ادبی کام پر مشتمل ادب ہے۔[1] قدیم یہودی ادب بائبلی ادب اور ربانی ادب پر مشتمل ہے۔ قرون وسطی کا یہودی ادب صرف ربانی ادب پر مشتمل نہیں بل کہ اس دور کے اخلاقی ادب، فلسفیانہ ادب، متصوفانہ ادب، تاریخ اور فکشن سمیت نثر کی مختلف دیگر اقسام، مذہبی اور غیر مذہبی دونوں اقسام کی شاعری کی مختلف شکلبندیوں پر مشتمل ہے۔[1] یہودی ادب نے غیر مذہبی یہودی ثقافت کے ساتھ دور جدید کے عروج میں فروع پایا ہے۔ دور جدید کا یہودی ادب یدیش ادب، لاڈینو ادب، عبرانی ادب، (خاص طور پر اسرائیلی ادب) اور یہودی امریکی ادب پر مشتمل ہے۔

قرون وسطی کا یہودی ادب[ترمیم]

فکشن[ترمیم]

قرون وسطی کے یہودی فکشن کی ممتاز مثالوں میں، قیروان کے نسیم بن یعقوب بن نسیم ابن یعقوب شاہن کی عربی زبان میں آگادی قصوں کی بنیاد پر ایک حکایات کی کتاب مااسییوت ہے۔ بارہویں صدی کے جوزف زیبرا کی کتاب مسرت جو ظریفانہ، لوک داستان، فلسفے کے اقتباسات اور سائنس سے ترتیب دی گئی کہانی ہے۔ ابراہیم بن سیموئل ہالیوی ابن حسدی نے ہندوستانی کہانی جو گوتم بدھ کی زندگی پر مبنی ہے، اس کو بادشاہ کا بیٹا اور نذری (Ben ha-Melekh ve-ha-Nazir) کے نام سے لکھا۔

شاعری[ترمیم]

یہودی عبادتی شاعری (Piyyut) ارض اسرائیل میں ساتویں اور آٹھویں صدی میں یوس بن یوس، یانئی اور الیزر بن کلیر کی تحریروں سے پھیلی۔[1] بعد میں ہسپانوی، پروونکل اور اطالوی شعرا نے مذہبی اور سیکولر دونوں طرز کی شاعری کی۔ خاص طور پر ممتاز شاعر سلیمان بن جبریل اور یہودا لاوی تھے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ "Literature, Jewish"۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جولائی 2015۔