علیم خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
علیم خان
[[سینئر وزیر پنجاب (پاکستان)] پنجاب کے سینئر وزیر]]
صوبائی وزیر برائے خوراک پنجاب
مدت منصب
13 April 2020 – 26 November 2021
گورنر
پنجاب کے صوبائی وزیر بلدیات اور کمیونٹی ڈویلپمنٹ
مدت منصب
27 August 2018 – 6 February 2019
گورنر
پنجاب کے صوبائی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی
مدت منصب
27 August 2018 – 6 February 2019
گورنر
صوبائی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی پنجاب
مدت منصب
2003 – 2007
گورنر
رکن صوبائی اسمبلی پنجاب
آغاز منصب
15 August 2018
مدت منصب
28 January 2003 – 2007
معلومات شخصیت
پیدائش 5 مارچ 1972 (50 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت پاکستان تحریک انصاف  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں


عبدالعلیم خان ایک پاکستانی سیاست دان اور تاجر ہیں جو سماء ٹی وی اور ویژن گروپ کے مالک ہیں۔ وہ پنجاب کے سینئر وزیر اور وزیر خوراک بھی رہے۔ وہ اگست 2018 سے پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے رکن ہیں۔

اس سے قبل، وہ 27 اگست 2018 سے 6 فروری 2019 تک پنجاب کے صوبائی وزیر برائے لوکل گورنمنٹ اینڈ کمیونٹی ڈویلپمنٹ اور پنجاب کے صوبائی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی کے طور پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔ وہ 2003 سے 2007 تک پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے رکن رہے اور اسی عرصے تک پنجاب کے صوبائی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی بھی رہے۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

علیم خان 5 اکتوبر 1972 کو لاہور ، پاکستان میں پیدا ہوئے۔ [1] [2] ان کا تعلق کاکازئی قبیلے کے پشتون خاندان سے ہے۔

انہوں نے ابتدائی تعلیم کریسنٹ ماڈل ہائیر سیکنڈری سکول لاہور سے حاصل کی۔

انہوں نے 1992 میں گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور سے گریجویشن کیا اور بیچلر آف آرٹس کی ڈگری حاصل کی۔ [2]

سماجی کام[ترمیم]

سیاست کے علاوہ، علیم خان نے "عبدالعلیم خان فاؤنڈیشن" کے نام سے ایک فاؤنڈیشن بنائی ہے جو اس وقت تعلیم، صحت اور سماجی بہبود کے مختلف شعبوں میں کام کر رہی ہے۔

فاؤنڈیشن اس وقت لاہور کے کم ترقی یافتہ علاقوں میں 60 سے زائد واٹر فلٹریشن پلانٹس چلا رہی ہے۔

فاؤنڈیشن دس 10 مفت ہیلتھ کیئر ڈسپنسریاں چلا رہی ہے، جو لوگوں کو مفت طبی خدمات اور ادویات فراہم کرتی ہیں۔

عبدالعلیم خان فاؤنڈیشن "اپنا گھر" کے نام سے لڑکیوں کے لیے یتیم خانہ چلا رہی ہے جو یتیم بچیوں کو مفت تعلیم اور رہائش کی سہولیات فراہم کر رہی ہے۔

عبدالعلیم خان فاؤنڈیشن صحت اور تعلیم کے شعبے میں مختلف تعلیمی اداروں اور صحت کی دیکھ بھال کے اداروں کو عطیات دے کر مسلسل مالی تعاون کرتے ہیں جیسے کہ شوکت خانم میموریل کینسر ہسپتال، INMOL، گھرکی ہسپتال، نمل یونیورسٹی، رائزنگ سن انسٹی ٹیوٹ DHA اور مغل پورہ کیمپس۔

اے اے کے فاؤنڈیشن نے خصوصی بچوں کے لیے رینسنگ سن انسٹی ٹیوٹ، ڈی ایچ اے کیمپس میں ہائیڈرو تھراپی سوئمنگ پول اور سپیچ تھیراپی ڈیپارٹمنٹ تعمیر کیا۔ فاؤنڈیشن نے خصوصی بچوں کی تعلیم کے لیے 2 کنال اراضی عطیہ کی اور جدید ترین عبدالرحیم خان کیمپس مغل پورہ کی تعمیراتی اخراجات بھی ادا کی۔ یہ کیمپس 3 منزلوں اور ایک تہہ خانے پر مشتمل ہے جس میں ہائیڈرو تھراپی پول، مینجمنٹ سینٹر اور سی پی کے بچوں کے لیے کلاس روم ہیں۔ مزید برآں، عبدالرحیم خان کیمپس، مغلپورہ میں 200 سے زائد بچوں کو فاؤنڈیشن ان کی تعلیم کے لیے سپانسر کرتی ہے۔ 100% اخراجات جیسے کہ بجلی گیس، اساتذہ اور متعلقہ عملے کی تنخواہیں اور کیمپس کی دیکھ بھال عبدالعلیم خان فاؤنڈیشن برداشت کر رہی ہے۔

عبدالعلیم خان فاؤنڈیشن نے شوکت خانم میموریل ہسپتال لاہور اور پشاور کی تعمیر/توسیع میں بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیا اور اس مقصد کے لیے خطیر رقم عطیہ کی۔ فاؤنڈیشن کے عطیات کے اعتراف میں شوکت خانم میموریل ہسپتال لاہور نے مریضوں کے وارڈ کی تیسری منزل کا نام عبدالرحیم خان فلور اور شوکت خانم میموریل ہسپتال پشاور میں داخل مریضوں کے فلور کو نسیم خان فلور(عبدالعلیم خان کی والدہ) کے نام سے موسوم کیا ہے۔ )ایس کے ایم ٹی، لاہور اور پشاور کو میموگرافی اور ایکسرے مشینیں بھی فراہم کی گئی تھیں۔

فاؤنڈیشن اس وقت کوٹ لکھپت جیل، لاہور میں 60 بستروں کے ہسپتال کی بحالی، واش رومز کی تعمیر، قیدیوں کو ڈیزرٹ کولرز وغیرہ کی فراہمی کے لیے ایک پروجیکٹ چلا رہی ہے۔ یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ عبدالعلیم خان فاؤنڈیشن نے گزشتہ پانچ ماہ کے دوران 3.9 ملین روپے کی رقم سرکاری خزانے میں جمع کرائی ہے تاکہ 44 ایسے قیدیوں کی رہائی کی جا سکے جو اپنی سزا پوری ہونے پر جرمانہ ادا کرنے کی استطاعت نہیں رکھتے۔

کاروباری حالات[ترمیم]

عبدالعلیم خان ویژن گروپ کے مالک ہیں جو پاکستان میں ایک معروف رئیل اسٹیٹ ڈویلپمنٹ کمپنی ہے۔

ویژن گروپ نے اپنا پہلا قدم اس وقت اٹھایا جب لاہور کی رئیل اسٹیٹ مارکیٹ میں پارک ویو برانڈ متعارف کرایا گیا۔ تب سے اب تک پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ پارک ویو اب قومی سطح پر رئیل اسٹیٹ ڈویلپرز کا ایک بڑا ممبر ہے۔

ویژن گروپ کے پارک ویو نے نہ صرف اپنے رئیل اسٹیٹ پروجیکٹس کو ملک بھر کے شہروں میں پیش کیا ہے بلکہ اپنے کاروبار کو بھی متنوع بنایا ہے۔

ویژن گروپ نے دی نیشنل اسکول کے ساتھ تعلیمی شعبے میں قدم رکھا جس کا مقصد نوجوانوں کو حقیقی زندگی میں بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرانا ہے۔

سیاسی حالات[ترمیم]

علیم خان نے اپنا سیاسی آغاز 2002 میں کیا اور 2002 کے پاکستانی عام انتخابات میں حلقہ این اے 127 (لاہور-X) سے پاکستان مسلم لیگ (ق) (پی ایم ایل-ق) کے امیدوار کے طور پر پاکستان کی قومی اسمبلی کی نشست پر انتخاب لڑا لیکن ناکام رہا. انہوں نے 20,545 ووٹ حاصل کیے اور محمد طاہر القادری سے نشست ہار گئے۔ [3]

وہ جنوری 2003 میں ہونے والے ضمنی انتخاب میں حلقہ پی پی 147 لاہور-الیون) سے مسلم لیگ (ق) کے امیدوار کے طور پر پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے تھے۔ متحدہ مجلس عمل (ایم ایم اے) کے۔ [3] 15 نومبر 2003 کو، انہیں وزیراعلیٰ چوہدری پرویز الٰہی کی صوبائی کابینہ میں شامل کیا گیا اور پنجاب کے صوبائی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے طور پر مقرر کیا گیا۔ [2] وہ 2007 تک پنجاب کے صوبائی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی رہے

انہوں نے 2008 کے پاکستانی عام انتخابات میں حلقہ این اے 127 (لاہور-X) سے مسلم لیگ (ق) کے امیدوار کے طور پر قومی اسمبلی کی نشست پر حصہ لیا لیکن وہ کامیاب نہیں ہوئے۔ انہوں نے 13,707 ووٹ حاصل کیے اور وہ نشست نصیر احمد بھٹہ سے ہار گئے۔ اسی الیکشن میں انہوں نے حلقہ پی پی 147 (لاہور الیون) سے مسلم لیگ (ق) کے امیدوار کے طور پر پنجاب کی صوبائی اسمبلی کی نشست پر بھی حصہ لیا لیکن وہ کامیاب نہیں ہوئے۔ [4] انہوں نے 9,493 ووٹ حاصل کیے اور وہ نشست محسن لطیف سے ہار گئے۔ [5]

جنوری 2012 میں، انہوں نے مسلم لیگ ق چھوڑ کر پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) میں شمولیت اختیار کی۔ فروری 2013 میں وہ پی ٹی آئی لاہور کے نائب صدر منتخب ہوئے۔

انہیں پی ٹی آئی نے 2013 کے پاکستانی عام انتخابات میں حصہ لینے کے لیے ٹکٹ نہیں دیا تھا۔

انہوں نے اکتوبر 2015 میں ہونے والے ضمنی انتخاب میں حلقہ این اے 122 (لاہور-V) سے پی ٹی آئی کے امیدوار کے طور پر قومی اسمبلی کی نشست پر حصہ لیا لیکن وہ کامیاب نہیں ہوئے۔ انہوں نے 72,043 ووٹ حاصل کیے اور سردار ایاز صادق سے نشست ہار گئے۔ انہوں نے ضمنی انتخاب کے نتائج کو چیلنج کرنے کے لیے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) میں درخواست دائر کی۔ انہوں نے الزام لگایا کہ حلقے میں دھاندلی کی گئی اور ثبوت ہونے کا دعویٰ کیا۔ 2016 میں ای سی پی نے کہا کہ خان نے دھاندلی کے الزام کو ثابت کرنے کے لیے جعلی حلف نامے جمع کرائے تھے۔

جولائی 2016 میں، پی ٹی آئی نے انہیں پارٹی کے وسطی پنجاب شعبے کا صدر مقرر کیا۔

وہ 2018 کے پاکستانی عام انتخابات میں حلقہ پی پی 158 (لاہور-XV) سے پی ٹی آئی کے امیدوار کے طور پر پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے تھے۔

27 اگست 2018 کو انہیں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی صوبائی کابینہ میں شامل کیا گیا اور انہیں پنجاب کا صوبائی وزیر برائے لوکل گورنمنٹ اینڈ کمیونٹی ڈویلپمنٹ مقرر کیا گیا۔ انہیں کابینہ میں سینئر وزیر کا درجہ دیا گیا۔

اکتوبر 2018 میں، وزیر اعظم عمران خان نے وزیر اعلیٰ عثمان بزدار کے ساتھ مکمل تعاون نہ کرنے پر خان کو لاہور میں وزیر اعلیٰ پنجاب کا کیمپ آفس خالی کرنے کا حکم دیا۔

فروری 2019 میں، انہیں قومی احتساب بیورو (نیب) نے گرفتار کیا تھا۔ اسی دن انہوں نے پنجاب کے صوبائی وزیر برائے لوکل گورنمنٹ اینڈ کمیونٹی ڈویلپمنٹ کے عہدے سے استعفیٰ دینے کا اعلان کیا۔

13 اپریل 2020 کو انہیں دوبارہ صوبائی کابینہ میں شامل کیا گیا اور انہیں پنجاب کا سینئر وزیر اور پنجاب کا صوبائی وزیر برائے خوراک مقرر کیا گیا۔

وہ پنجاب میں کورونا ٹاسک فورس کے چیئرمین بھی ہیں۔

نومبر 2021 میں، انہوں نے وزیر خوراک کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔ [6]

اپریل 2022 میں، وہ اپنی پارٹی پاکستان تحریک انصاف کے خلاف اپوزیشن میں شامل ہوئے۔اور پی ڈی ایم کے تحریک عدم اعتماد کا حصہ بنے ۔

اثاثے[ترمیم]

انہوں نے 2002 اور 2007 کے درمیان پنجاب کے صوبائی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی کی حیثیت سے اپنے دور میں 198 ملین روپے اور 140 ملین روپے کے دو مالیاتی لین دین کیے

2018 میں الیکشن کمیشن آف پاکستان کو جمع کرائی گئی دستاویزات کے مطابق، خان نے اپنے اثاثوں کی مالیت روپیہ 918 ملین (US$8.6 ملین) ظاہر کی ۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Biography". www.aleemkhan.pk (بزبان انگریزی). Abdul Aleem Khan. اخذ شدہ بتاریخ 05 مارچ 2021. 
  2. ^ ا ب پ "Profile". www.pap.gov.pk (بزبان انگریزی). Punjab Assembly. اخذ شدہ بتاریخ 02 ستمبر 2018. 
  3. ^ ا ب "2002 election result" (PDF). ECP. اخذ شدہ بتاریخ 02 ستمبر 2018. 
  4. "2008 election result" (PDF). ECP. 05 جنوری 2018 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 ستمبر 2018. 
  5. "PM Imran accepts Abdul Aleem Khan's resignation". 26 November 2021.